میرا بلاگ ۔ ںعیم خان

Sharbat-e-Gond Kateera شربت گوند کتیرہ


خوشبودار پھول پتیوں، مربوں، مغزیات اور جڑی بوٹیوں سے تیار کردہ اس شربت کی نہ صرف خوشبو آپ کو اپنی طرف راغب کرتی ہے بلکہ اس کا رنگ اور بہت سارے مغزیات کی جھلک بھی آپ کو ایک خوشگواراحساس دلاتی ہے اور دل کرتا ہے کہ اس کو پی کر کھا لیں یا کھا کر پی لیں اور گرمیوں کی شدید پیاس کا علاج کرلیں۔اس تمہید کے پیچھے میرا بھی خوشگوار تجربہ ہی ہے، پشاور کے مشہور قصہ خوانی بازار سے گزرتے ہوئے ایک تنگ سی گلی کے نکڑ پر چند رنگ برنگی بوتلوں کو سجائے ہوئے ایک نوجوان کو دیکھا تو کچھ تو تجسس اور کچھ پیاس کی شدت نے اُس کی طرف توجہ مبذول کروادی۔ اگرچہ دکھنے میں صفائی ستھرائی کی حالت کچھ اتنی خاص نہیں تھی مگر اپنی سی کوشش وہ کر ہی رھاتھا۔ ابھی اپریل میں جو گرمی کی لہر آئی تھی اُس نے اچھے اچھوں کو اپنی پہچان کروا دی تھی، اور ہم جو اتوار کے دن اوارہ گردی کرنے نکلے تھے پھر تو ہماری کیا مجال جو ایسی گرمی کا سامنہ کرسکیں۔ گرمی اور پیاس نے صفائی ستھرائی اور مکھیوں کی موجودگی پر منہ چڑانے والے دل کی آنکھوں پر کالے پیاس کر پردہ ڈال کر شربت والے ۔کوآرڈر دیا۔ اُس نے ہمارے سامنے ہی رنگ برنگی مربوں، مغزیات، خوشبودار اور خوش رنگ پھول پتیوں نے ہماری اشتہا اور بڑھا دی۔ سننے میں آرہا تھا کہ  بدن میں گرمی کی شدت کم کرنے اور گرمیوں کے موسم میں گرمی سے بچنے کیلئے گوندکتیرہ کے استعمال کی بہت افادیت ہے۔ اس شربت کا اہم جز گوند کتیرہ ہی ہے۔ اب تو یہ شربت کئی جگہوں پر ملنا شروع ہوچکا ہے اگر آپ بھی اس سے استفادہ کرنا چاہیں تو ضرورت نوش فرمائیں اور اگر کسی کے پاس گوند کتیرہ کے بارے میں بھی معلومات ہوں تو ضرور شیئر کیجئے گا میں اس کو اپنے بلاگ کا حصہ بنا دونگا۔ میں نے تو بغیر ناک منہ بسورے اس شربت کو پیا اور جتنا خوش رنگ نظر آرہا تھا اُتنا ہی خوش ذائقہ بھی تھا۔ جسم کی گرمی کم ہوئی کہ نہیں ، یہ نہیں معلوم ہاں البتہ اُس وقت شدید پیاس میں بڑی تسکین اور راحت محسوس کی۔ آزاما لیجئے اور اپنے تجربے کو دوسروں کے ساتھ شیئر کیجئے۔



Fresh Curly Icecream



جیم فوڈ ٹی وی چینل پر ایک ویڈیو دیکھی تھی جس میں بازار میں ایک آدمی توے نما کوکنگ ٹیبل پرٹکاٹک سٹائل میں فریش فروٹ اور دودھ سے آئس کریم بنا رہا تھا۔ کچھ دن پہلے لاہور میں فورٹریس سٹیڈیم میں یہی چیز دیکھی تو دل للچایا کہ اس کو بھی ٹرائی کریں۔ اپنے سامنے تازہ آئس کریم بنتے اور پھر اس کو کھانے کا الگ ہی مزہ ہے۔ 

Preserving Fruits & Vegetables - Urdu Guide پھلوں اور سبزیوں کو محفوظ کرنے کے طریقے

Preserving Fruits & Vegetable
Every year a large quantity of fruits and vegetable being expired due to not utilizing them on time. The shelf life of many fruits and vegetable is very limited. The best way to keep your vegetables and fruits is to preserve them and use them for long time. Pakistan Council of Scientific & Industrial Research (PCSIR) published a very useful guide in Urdu language. Here, I am sharing this booklet in the best of public interest.Download here: eBook in PDF








How to Grow Asparagus Officinal - Liliaceae a Medicinal Plant

A complete informative post about Asparagus Officinal (Liliaceae) in Urdu language.
Asparagus is not only a healthy veg, but also keeping a treasure of medicinal value in it.Swat valley's climate is very suitable for growing Asparagus. Many farmers cultivate asparagus in Marghuzar Valley (Swat). The source of this article is Agriculture Department of Baltistan's facebook page.



Public Service Commission Advertisement No. 05/2016


حکومت خیبر پختونخوا کے مختلف محکموں نے نئی/خالی آسامیوں کیلئے خیبر پختونخوا پبلک سروس کمیشن کے ذریعے درخواستیں طلب کی ہیں۔آخری تاریخ 9/12/2016ہے ۔  http://kppsc.gov.pk/advertisement/index.phpاشتہار نیچے کاپی کیا گیا ہےدرخواست دینے کا طریقہ:۔اشتہار میں مطلوبہ تعلیمی قابلیت کے مطابق آسامی کا انتخاب کیجئے۔صوبہ خیبر پختونخوا کو پانچ زونز میں تقسیم کیا گیا ہے۔ آسامیوں کی تقسیم زونز کے حصاب سے ہوتی ہے یا اوپن میرٹ پرجس کیلئے ہر علاقے سے اپلائی کی جاسکتی ہے جبکہ زونل تقسیم کے مطابق صرف متعلقہ زون کے اُمیدوار درخواستیں دے سکتے ہیں۔(پبلک سروس کمیشن کی ویب سائٹپر زونز کی تفصیلات موجود ہیں)۔درخواست دینے کیلئے فارم نیشنل بینک آف پاکستان کی مخصوص شاخوں پر دستیاب ہیں(جن کی تفصیل بھی ادارے کی ویب سائٹ پر موجود ہے) جو کہ مطلوبہ فیس جمع کرکے وصول کی جاسکتی ہے۔ جبکہ آن لائن بھی فارم دستیاب ہے، اس کو ڈاؤنلوڈ کرکے بھرا جاسکتا ہے۔آن لائن فارم کے ساتھ بینک چالان فارم بھی موجود ہے جس کو بھر کر مطلوبہ فیس بینک میں جمع کرکے چالان فارم اور چالان فارم کی تفصیلات آن لائن فارم میں درج کی جاتی ہیں۔ہر درخواست کے ساتھ درخواست دہندہ کے تین پاسپورٹ سائز تصاویر، قومی شناختی کارڈ، تعلیمی اسناد، ڈومیسائل کی فوٹو کاپیاں کسی بھی کلاس ون آفیسر سے تصدیق کرواکر منسلک کی جاتی ہیں۔ جبکہ اپنے علاقے کے دو افراد سےاچھے اخلاق کا سرٹیفیک (کریکٹر سرٹیفکیٹ) لیا جاتا ہے جس کا متن کچھ یوں ہوتا ہے:۔
تصدیق کی جاتی ہے کہ مسمی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ولد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سکنہ۔۔۔۔۔(ایڈریس)۔۔۔۔۔۔۔ کا مستقل باشندہ ہے اور یہ کہ مسمی۔۔۔۔(نام)۔۔۔۔۔اچھے اخلاق و کردار کا مالک ہے۔
نام۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔            نام۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شناختی کارڈ نمبر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔            ۔شناختی کارڈ نمبر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایڈریس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔          ایڈریس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فارم کے آخر میں تفصیل سے مطلوب دستاویزات کی لسٹ موجود ہوتی ہے۔ فارم ایک نمبر پر اور دیگر دستاویزات دیئے گئے نمبرز پر فارم کے ساتھ منسلک کئے جاتے ہیں۔ جبکہ دیگر متعلقہ دستاویزات بھی منسلک کئے جاتے ہیں جو مطلوبہ آسامی کے مطابق ہوتے ہیں۔ سرکاری ملازمین کیلئے ایک علیحدہ فارم ساتھ ہوتا ہے جس کو فارم ڈی کہتے ہیں۔ اس فارم کو الگ سے اپنے محکمہ کے ذریعہ پبلک سروس کمیشن کو بھیجا جاتا ہے جس کا مقصد درخواست دہندہ کا آسامی کیلئے درخواست دینے پر حکومت کی طرف سے اجازت نامہ ہوتا ہے۔ جس کو تھرو پراپرچینل اپلائی بھی کہتے ہیں۔تمام ڈاکیومنٹس کی تصدیق شدہ کاپیاں فارم کے ساتھ لگا کر کمیشن آفس میں آخری تاریخ سے پہلے پہلے جمع کریں یا ڈاک کے ذریعے بھیجے جاسکتے ہیں
Dated: 10.11.2016ADVERTISEMENT NO.  05 / 2016.

            Applications, on prescribed form, are invited for the following posts from Pakistani citizens having domicile of Khyber Pakhtunkhwa / F.A.T.A by 09.12.2016. Incomplete applications and applications without supporting documents required to prove the claim of the candidates shall be rejected.

AGRICULTURE LIVESTOCK, FISHERIES & COOPERATIVE DEPTT: 1.     one (01) (leftover) POST of junior scale stenographer in livestock & dairy development DEPARTMENT (RESEARCH wing).
QUALIFICATION: (a) Intermediate or equivalent qualification from a recognized Board, (b) A speed of 60 words per minute in shorthand in English and 35 words per minute in typing; and (c) Knowledge of computer in using MS-Word and MS Excel.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: Zone-2.
environment, Forest and Wildlife Department 2.     Five (05) POSTs of sub-divisonal wildlife officers in the office of chief conservatOR of wildlife.
QUALIFICATION: (i) Master Degree in Wildlife, Forestry or National Park Management from a recognized University / Institute; OR(ii) M.Sc Zoology or Botany in 2nd Division from a recognized University; OR(iii) B.Sc Wildlife / Forestry or Bachelor of Veterinary Science / B.Sc Animal Husbandry or Doctor of Veterinary Medicine from a recognized University / Institute:
Note-1: - Qualification at Serial No. (ii) & (iii) will only be considered when no suitable candidate with the qualification at Serial No. (i) is available.Note-2: - Appointment of candidates selected for the posts by the Public Service Commission shall be made subject to the following conditions: -
1)    The selected candidates shall undergo and successfully complete the training at the Pakistan Forest Institute leading to M.Sc Forestry Degree. Those already having M.Sc Forestry Degree from Pakistan Forest Institute shall be exempted from such training.2)    The selected candidates shall produce certificate from the standing Medical Board at Peshawar’ regarding their physical and mental fitness for performing the duties required of them.3)    The selected candidates undergoing training at Pakistan Forest Institute shall execute a bond with the Wildlife Department to the effect that on successful completion of the training they shall serve the Government for at least five years or in default shall refund all the expenses incurred in connection with their training and education.
AGE LIMIT: 21 to 32 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:            Male.
ALLOCATION: One each to Merit, Zone-2, 3, 4 & 5. 3.     one (01) POST of community development officer in cde & gad directorate of forest department.
QUALIFICATION: At least 2nd class Master’s Degree in Rural Development, Sociology, Rural Sociology, Social Work, Anthropology, Agriculture Extension, Mass Communication or equivalent qualification from a recognized University.
AGE LIMIT: 22 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-16       ELIGIBILITY:  Female.
ALLOCATION: Merit.
4.     one (01) POST of FEMALE RESEARCH officer in RESEARCH AND DEVELOPMENT directorate, forest department
QUALIFICATION: At least 2nd class Bachelor’s or B.Sc. (Hon) Degree in Forestry or Agriculture with subject of Economics, Sociology or equivalent qualification from a recognized University.
AGE LIMIT: 22 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-16       ELIGIBILITY:  Female.
ALLOCATION: Zone-2. 5.     FIVE (05) POSTS of DIGITIZING OPERATOR in cde & gad directorate of forest department
QUALIFICATION: At least 2nd class BA or B.Sc. in Geographic Information Technology or Computer Science (BCS) or Bachelor’s of Information Technology (BIT) or equivalent qualification from a recognized University.
AGE LIMIT: 22 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-12       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: One each to Zone-1,2,3,4 and 5.

establishment Department 6.     thirty (30) (leftover) POSTS of junior scale stenographer.
QUALIFICATION: (i) Intermediate or equivalent qualification from a recognized Board, and (ii) A speed of 50 words per minute in English shorthand and 35 words per minute in English typewriting and knowledge of Computer in using MS Word and MS Excel.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: 14 to Zone-3 and 16 to Zone-5.
finance department 7.     twenty two (22) POSTs of sub accountant in finance department.
QUALIFICATION: (i) 2nd Class Bachelor Degree in Commerce, Business administration or ACMA from recognized University.(ii) Candidates with IT skill will be given preference.
AGE LIMIT: 18 to 25 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes. ALLOCATION:  Five each to Zone-1, 2 & 3, Three to Zone-4 and Four to Zone-5.
8.     three (03) POSTs of sub accountant (minority quota) in finance department
QUALIFICATION: (i) 2nd Class Bachelor Degree in Commerce, Business administration or ACMA from recognized University.(ii) Candidates with IT skill will be given preference.
AGE LIMIT: 18 to 25 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes. ALLOCATION:  Merit. 9.     ONE (01) LEFTOVER POST of JUNIOR SCALE STENOGRAPHER in DIRECTORATE OF TREASUREY AND ACCOUNTS
QUALIFICATION: (i) Intermediate or equivalent qualification from a recognized Board; and (ii) A speed of 50 words per minute in shorthand in English and 35 words per minute in typing and knowledge of computer in using MS Word and MS Excel.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes. ALLOCATION:  Zone-3.
HIGHER EDUCATION, ARCHIVES & LIBRARIES DEPTT 10.      one (01) (leftover) POST of male lecturer in economics (minority quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION: 2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Male. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
11.      one (01) (leftover) POST of male lecturer in computer science (minority quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION: 2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Male. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
12.      one (01) (leftover) POST of male lecturer in phisics (minority quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION: 2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university.

AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Male. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
13.      two (02) (leftover) POSTs of male lecturer in political science (minority quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION: 2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Male. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
14.      one (01) (leftover) POST of male lecturer in english (MINORITY QUOTA) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION:  2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university (OR)
FOR ENGLISH: 3rd Class Master’s Degree in English with Post Graduate Diploma in English Language from Allama Iqbal Open University.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Male. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
15.      one (01) (leftover) POST of female lecturer in computer science (minority quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION: 2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Female. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
16.      one (01) (leftover) POST of female lecturer in english (minority quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION:  2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university (OR)
FOR ENGLISH: 3rd Class Master’s Degree in English with Post Graduate Diploma in English Language from Allama Iqbal Open University.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Female. ALLOCATION:  Merit (Minority Quota).
17.      one (01) (leftover) POST of female lecturer in physics (disabled quota) IN HIGHER EDUCATION DEPARTMENT
QUALIFICATION: 2nd Class Master Degree in relevant subject or equivalent qualification from a recognized university.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Female. ALLOCATION:  Merit (Disabled Quota). 18.      two (02) POSTs of assistant director IN DIRECTORATE OF ARCHIVES AND LIBRARIES
QUALIFICATION: Second Class Master Degree or equivalent qualification from recognized University.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-17       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION:  One each to Zone-1, 2.
19.      four (04) POSTs of computer operator IN DIRECTORATE OF ARCHIVES AND LIBRARIES
QUALIFICATION: (i) Second Class Bachelor’s Degree in Computer Science / Information Technology (BCS / BIT 04 years) from a recognized University; OR(ii) Second Class Bachelor’s Degree from recognized University with one year Diploma in Information Technology from a recognized Board of Technical Education.
AGE LIMIT: 20 to 32 years. PAY SCALE:  BPS-16       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION:  One each to Merit, Zone-1, 2, & 3.
20.      one (01) (leftover) POST of junior scale stenographer IN DIRECTORATE OF ARCHIVES AND LIBRARIES
QUALIFICATION: (i) Intermediate or equivalent qualification from a recognized Board, and (ii) A speed of 50 words per minute in shorthand in English and 35 words per minute in typing (iii) Three months certificate in MS Officer from an Institution affiliated with the Board of Technical Education.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: Zone-1.
home & t.a. department 21.      one (01) (leftover) POST of senior scale stenographer in INSPECTORATE OF prisons.
QUALIFICATION: (i) Bachelor’s Degree or equivalent qualification from a recognized University.(ii) A speed of 100 words per minute in shorthand in English and 40 words per minute in type.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-16       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: Merit.   Information DEPARTMENT 22.      two (02) POSTs of assistant producer/ ASSISTANT INFORMATION OFFICER.
QUALIFICATION: (i) At least Second Class Bachelor’s Degree from a recognized University, with Journalism as one of the subject; OR(ii) At least Second Class Bachelor’s Degree from recognized University with two years practical experience in Journalism.
AGE LIMIT: 21 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-16       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION:  One each to Merit & Zone-1. 23.      one (01) (leftover) POST of junior scale stenographer in fm radio information department.
QUALIFICATION: (i) Intermediate or equivalent qualification from a recognized Board, and(ii) A speed of 50 words per minute in English / Urdu Shorthand and 35 words per minute in English / Urdu typing Speed and(iii) MS Word and MS Excel for English and Inpage for Urdu Stenographer.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: Zone-3. 24.      one (01) (leftover) POST of photographer cum-cameraman.
QUALIFICATION: Intermediate with three years experience of still working in Computer Photoshop and video Photography with an established Agency.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-12       ELIGIBILITY:  Male.
ALLOCATION: Zone-3.
law DEPARTMENT 25.      two (02) (leftover) POSTs of senior scale stenographer.
QUALIFICATION: (i) 2nd Class Bachelor’s Degree from a recognized University.(ii) A speed of 70 words per minute in shorthand in English and 45 words per minute in typing, and(iii) Knowledge of Computer in using MS Word and MS Excel.
AGE LIMIT: 20 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-16       ELIGIBILITY:  Both Sexes.
ALLOCATION: One each to Merit and Zone-1.
POPULATION WELFARE DEPARTMENT 26.      three (03) (leftover) POSTs of junior scale stenographer.
QUALIFICATION: (i) Intermediate with 50/40 words per minute in shorthand and Typing respectively having Diploma / Certificate in Computer / Information Technology.
AGE LIMIT: 18 to 30 years. PAY SCALE:  BPS-14       ELIGIBILITY:  Both Sexes.ALLOCATION:  One each to Zone- 1, 3 & 5.

Night-Flowering Jasmine - Coral Jasmine - Nyctanthes Arbor-Tristis - Parijat - ہارسنگھار

Night-Flowering Jasmine or Coral Jasmine is a very beautiful orange-red centered tail white flower with amazing refreshing perfumed smell, usually five to seven petals. It is plant is medium size tree or shrub. These flowers open at dusk and remains till dawn, means it is night flower. It is national flower of West Bangal (India) and Kanchanaburi (Thailand). It is called Parijat (پری جات) in Hindi & Haarsinghar (ہارسنگھار) in Urdu and its botanical name is "Nyctanthes Arbor-Tristis". It has many medicinal values too. Night-Flowering Jasmine (Wikipedia)Our friend Tariq Tufail wrote a very beautiful piece about Night-Flowering Jasmine on his facebook wall, copying as it is here:
باغِ جناح ان دنوں اک تیز مٹھاس والی بھینی سی خوشبو سے مہک رہا ہے، یہ خوشبو ہے برصغیر کی کلاسک داستانوں میں پائے جانےوالےپھول ہار سنگھار کی۔ اسےہندی میں پری جات ( Parijatham) بھی کہتے ہیں،اس کا بوٹینیکل نام ہے (Nyctanthes Arbor Tristis)
نازکی اور خوبصورتی میں بے مثال یہ پھول ایک درمیانے سے قد کاٹھ کے درخت پر رات کے وقت کھلتے ہیں،چند گھنٹے بہار دکھا کر مہکتے ہوئے علاالصبح گرنے لگتے ہیں۔ پانچ پتیوں والے یہ سفید پھول شاخ سے ٹوٹ کر گھومتے ہوئے ہمیشہ الٹے گرتے ہیں، اورنج رنگ کی ان کی ڈنڈی اوپر کی طرف رہتی ہے۔
باغِ جناح میں کچھ لوگ ان پھولوں کوچن کر اکٹھا کر تے دکھائی دیتے ہیں، یہ انہیں پنساریوں کے ہاتھ بیچ کر کچھ پیسے کما لیتے ہیں
ہار سنگھار کے درخت کو آیورودیک طریقہ علاج میں شیاٹیکا یا عرق النساء کے درد میں اکسیر مانا جاتا ہے،اس درخت کا ہر حصہ دوا میں استعمال ہوتا ہی ۔گزرے وقتوں میں خواتین اس پھول سے دوپٹے رنگنے اور میٹھے چاولوں کو رنگ اور خوشبو دینے کا کام بھی لیتی رہی ہیں۔





Prickly Pear - Cactus Fruit - Opuntia - انار پھلی - Nagphani - ناگ پھنی

Prickly Pear is the fruit of commonly available cactus species "Indian Fig Opuntia" in all over the world. Botanical name of this plant is "Opuntia" a member of Cactus family known as "زقم" in Pashto & "Nagphani ناگ پھنی" in Urdu & Hindi. This cactus grows in dry lands everywhere in the world specially in hard warmer areas. The fruit of this cactus is edible and most commonly in India & Pakistan large number of people consume it. It has many medicinal values and use for cure of a number of diseases in not only in Herbal Medicine but in the modern way of treatment too. We can feel the presence of this plant in many landscapes and natural theme parks, even in lawns and pots in garden too.Mr.Akhlak Khan Karak collected some useful information and medicinal uses of this plant and its fruit.
Prickly Pear: In Urdu: انار پھلی 
کولیسٹرال کی سطح کو کم کرتی ہے۔ عمل انہضام کے عمل کو بہتر بناتی ہے۔ ذیابیطس کے خطرے کو کم کرتی ہے۔ مدافعتی نظام بہتر بناتی ہے۔ خون کی وریدوں کو مضبوط کرتی ہے۔ الزائمر کا خطرہ کم کرتی ہے، وزن میں کمی کی کوششوں میں مدد، اور پورے جسم میں سوجن کو ختم کرتی ہے۔ اسہال، یہ بھی وائرل انفیکشن سے لڑنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے.Prickly pea Cactus is a plant. It is part of the diet in Mexican and Mexican-American cultures. Only the young plant is eaten; older plants are too tough. Prickly pear cactus is also used for medicine.Prickly pear cactus is used for type 2 diabetes, high cholesterol, obesity, alcohol hangover, colitis, diarrhea, and benign prostatic hypertrophy (BPH). It is also used to fight viral infections.In foods, the prickly pear juice is used in jellies and candies.Most research on this product has been performed in Mexico by one research group.How does it work?Prickly pear cactus contains fiber and pectin, which can lower blood glucose by decreasing the absorption of sugar in the stomach and intestine. Some researchers think that it might also decrease cholesterol levels, and kill viruses in the body.
--------------------------------------Some of the health benefits of prickly pear include its ability to lower cholesterol levels, improve the digestive process, decrease the risk of diabetes, boost the immune system, stimulate bone growth, strengthen blood vessels, prevent certain cancers, reduce the risk of Alzheimer’s, aid in weight loss attempts, and eliminate inflammation throughout the body.
‘Prickly pear’ is the common name of the fruit that grows at the tops of the leaves of Nopales cacti. Spread throughout North and South America, about 200 different species of Nopales (scientific name Opuntia) cacti are found, all of which have some form of this prickly pear fruit, although not all varieties are edible. The most commonly used species in terms of eating and cooking would be the O. ficus-indica, also known as the Indian Fig Opuntia. The most interesting thing about this fruit is that it grows at the very edge of the spiny leaves of these imposing cacti, which are some of the hardiest lowland cacti in the world, a trait also taken on by its fruit. The fruits are oval in shape, and can range in color from yellow and light green to orange, pink, and red, depending on the variety and ripeness.Before eating a prickly pear, it is very important to remove the skin and peel it off so all of the spines are removed. If they aren’t, the glochids can lodge themselves in your lips, gums, and throat, which can be very painful. After that, however, the fruit can be used for a variety of things, either eaten raw or dry, and made into various jellies and jams, candies, or alcoholic beverages like vodka.
Photo Source: Google

Clammy Cherry - Cordia Obliqua - لسوڑا


Clammy Cherry is a medium size flowering/fruit Tree plant. It is a Medicinal Plant, having round shaped leave with small size off-white creamy color sticky pulp berry type fruit with strange sweeten taste. The pickle of its fruit is popular in India and Pakistan. This tree is providing a well shad. Clammy Cherry is called لسوڑا in Urdu (in Pakistan). Its botanical name is Cordia Obliqua. It belongs to medium sized tree family. Its fruits getting ready for harvest in August (in some areas in September). The native areas of Clammy Cherry - Cordia Obliqua - Lasoora لسوڑا are Bengal, India & some areas of Pakistan. Mr. Akhlak Khan Kakar posts a valuable note on this plant and its medicinal values which I am sharing here as it is:، لسوڑا، ایک پھل. کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے اور پھیپھڑوں کی بیماریوں کے علاج میں موثر ہے. خام پھل کی حالت میں ایک بہت اچھا اچار بھی بنایا جاتا ہے.پھل کھانسی، سینے کی بیماریوں، اور دائمی بخار کے علاج میں مفید ہیں. وہ پیاس کم، اور پیشاب کے کھولتے ہوئے، جوڑوں اور حلق کے جلنے سے درد کو ہٹاتا ہے اور تللی اور باسو کی بیماریوں کے علاج میں موثر ہے. پھل جنوبی ایران میں تسکین بخش کے طور پر استعمال کیا جاتا ہےپاکستان اور بھارت میں، روایتی ادویات میں استعمال کیا جاتا ہے: پھل کھانسی اور پھیپھڑوں کی بیماریوں کے لئے ایک expectorant کے طور پر استعمال کیا جا سکتا. خام پھل ایک سبزی کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے.
Medicinal properties

The fruit is sweet and have effects like slightly cooling, anthelmintic, purgative, diuretic, expectorant, and useful in diseases of the chest, urethra, dry cough, biliousness and chronic fever. It lessens thirst and the scalding of urine, removes pains in the joints, bad humours, burning of the throat and also good in diseases of the spleen (As per Yunani system).
The juice of the bark is given in gripes, along with coconut oil. The bark and unripe fruit are used as a mild tonic.
The kernels are a good remedy in treatment of ringworm. The leaves are useful as an external application to treat ulcers and headache.
The Santals use a powder of the bark for external application in prurigo. The Javanese use the bark in treatment of fevers

Adiantum Capillus-Veneris Fern

Adiantum capillus-veneris is a species of ferns. This fern is cultivated and widely available around the world for planting in natural landscaping in gardens, in indoor & outdoor in container as houseplant. This fern grows from 6 to 12 inches in height. It is found in temperate climates, from warm to tropical, where the moister content is high. It grows well in the moist, well-drained sandy soil, including rainforest, woodland, near wet/moist area near by springs, shaded & sheltered area.Adiantum capillus - veneris is also a medicinal plant. Mr. Akhlaq Khan Kakar wrote a detailed noted on its medicinal values, sharing here as it is:
Medicinal uses:Antidandruff, Antitussive, Depurative, Emmenagogue, Expectorant, Galactogogue, Refrigerant, Stings, Tonic, Vermifuge. The maidenhair fern has a long history of medicinal use and was the main ingredient of a popular cough syrup called 'Capillaire', which remained in use until the nineteenth century. The plant is little used in modern herbalism. The fresh or dried leafy fronds are antidandruff, antitussive, astringent, demulcent, depurative, emetic, weakly emmenagogue, emollient, weakly expectorant, febrifuge, galactogogue, laxative, pectoral, refrigerant, stimulant, sudorific and tonic. A tea or syrup is used in the treatment of coughs, throat afflictions and bronchitis. It is also used as a detoxicant in alcoholism and to expel worms from the body. Externally, it is used as a poultice on snake bites, bee stings etc. In Nepal, a paste made from the fronds is applied to the forehead to relieve headaches and to the chest to relieve chest pains. The plant is best used fresh, though it can also be harvested in the summer and dried for later use.:Parts UsedLeaves, above ground parts.Quality/TemperamentWarm and dry in first order/normal or balanced in warmness and dryness.Functions and Properties (Pharmacological Actions)Resolvent, demulcent, concoctive for phlegm and atrabile, expectorant, deobstruent, detersive, diuretic, anticatarrhal, emmenagogue.Specific ActionConcoctive, expectorant and purgative for bile and atrabile, anticatarrhal.Medicinal UsesBeing concoctive and expectorant useful in pleurisy, acute pneumonia, influenza, bronchitis and asthma. In fevers due to excess phlegmatic humour used as concoctive with other suitable drugs. Being diuretic and emmenagogue given for expelling the placenta. As detersive and desiccative applied on sores, ulcers, alopecia, alopecia furfuracea, for this purpose bruised to powder and applied on oral sores, stomatitis, pustules and boils of children. Resolves hard swellings, scrofulous glands and other local inflammations. Burnt into ashes, the herb has been regarded as effective when hairs are washed with it in headache and insanity (of temporary origin). Mostly its decoction is used in Unani medicine and not used alone because it brings desiccation.Compound PreparationsMatbookh Bukhar, Laooq Sapistan, Sherbet Mudir Tams, Sherbet Ustukhudus, Sherbet Faryad Ras, Sherbet Kaknaj, Sherbet Mushil.Dosage5 to 10 g.CorrigentPistacia lentiscusLinn. and flowers of Viola odorataLinn.TenediumViola odorataLinn. (Banafsha), Glycyrrhiza glabraLinn.CommentsDescribed as harmful if administered to patients suffering from spleen disorders. Regular use may cause dessication.

Chines Honeysuckle - Rangoon Creeper - Combretum Indicum - Quisqualis Indica - جھمکہ بیل

This is not only an ornamental plant/vine but it keeps a rich treasure of medicinal values in it. Rangoon Creeper a beautiful climber vine with lovely red, pink whitish bunches of flowers, refreshing the air with its frezzy type perfume smell. Its botanical name is Combretum indicum also known as Chines Honeysuckle, synonyms Quisqualis Indica. Mr. Akhlak Khan Kakar wrote a very informative research report on its medicinal values, am sharing here as he wrote on his facebook wall.Quisqualis Indica: Rangoon Creeper: جھمکہ بیل :
جھمکہ بیل نہ صرف ایک خوبصورت پھولوں کی بیل ہے جو کہ اپنے خوبصورت سرخ، گلابی اور سفید پھولوں کی خوشبو سے ہوا کو اپنی بھینی بھینی خوشبو سے معطر کرتی ہے بلکہ بہت سارے طبی خواص کا مالک پودا بھی ہے۔ ورم گردہ، جڑ جوڑوں کے درد کوآرام دیتی ہے ،اسہال،دست، بخار، کھانسی کا علاج، پتے سر درد کا علاج، پتوں کا جوشاندہ پَیشاب کا تَکلیف کے ساتھ آنا ۔ پَیشاب کی نالی میں رُکاوَٹ ، زَخَم ، سوزاک یا بَد گوشت یا پَتھری میں پلایا جاتا ہے، پیٹ کے کیڑوں کو خارِج کرنے والی دوا ، اپھراو، ریاح ، گیس سے معدہ اور آنتوں کا پھیلاؤ، شکم کا اپھارا، نفخ شکم ،
Medicinal Uses of Rangoon Creeper:
• Flowers, seeds, Roots and Leaves are edible.
• Anthelmintic: Dried seeds preferable for deworming.• Adults: Dried nuts-chew 8 to 10 small- to medium-sized dried nuts two hours after a meal, as a single dose, followed by a half glass of water. If fresh nuts are used, chew only 4-5 nuts. Hiccups occur more frequently with the use of fresh nuts.• Children 3-5 years old: 4-5 dried nuts; 6 - 8 years old: 5-6 dried nuts; 9-12 years old: 6-7 dried nuts.• Roasted seeds for diarrhea and fever.• Plant used as a cough cure.• Leaves applied to the head to relieve headaches.• Pounded leaves externally for skin diseases.• Decoction of boiled leaves used for dysuria.
• Ifugao migrants use it for headache.• Ripe seeds roasted and used for diarrhea and fever.• In Thailand, seeds used as anthelmintic; flowers for diarrhea.• In India and Ambonia, leaves used in a compound decoction to relieve flatulent distention of the abdomen. Leaves and fruits are reported to be anthelmintic; also used for nephritis.• In India and the Moluccas, seeds are given with honey as electuary for the expulsion of entozoa in children.• In Indo-China, seeds are used as anthelmintic and for rickets in children.• The Chinese and Annamites reported to use the seeds as vermifuge.• In China, seeds macerated in oil are applied to parasitic skin diseases. Seeds are also used for diarrhea and leucorrheal discharges of children.• In Amboina compound decoction of leaves used for flatulent abdominal distention.• In Bangladesh, used for diarrhea, fever, boils, ulcers and helminthiasis.
Studies• Polyphenols / Antioxidant: Flower extract yielded high polyphenol contents and showed strong antioxidant activity.• Anti-Acetylcholinesterase Inhibitor: Acetylcholine is one of the most important neurotransmitters in the central or peripheral nervous system. The methanolic extract of Q indica flower dose-dependently inhibited acetylcholinesterase activity.• Fixed Oil Storage Effect: Study showed one year storage does not significantly affect the physical constants of the fixed oil.• Larvicidal Activity / Aedes aegypti Mosquito: In a study screening 11 plant species of local flora against the IV instar larvae of Aedes aegypti, Quisqualis indica was one of the plants that showed some larvicidal activity against Ae aegypti, albeit, at comparatively higher doses.• Antipyretic: Study evaluated the antipyretic activity of the methanolic extract of leaves of Q. indica in brewer yeast-induced pyrexia model in rat. Results showed significant dose-dependent antipyretic activity.• Anti-Inflammatory: Study evaluated the anti-inflammatory activity of a hydroalcoholic extract in Wistar rats. Oral administration of the extract showed dose-dependent and significant anti-inflammatory activity in acetic acid- induced vascular permeability and cotton-pellet granuloma model, comparable to Diclofenac. the anti-inflammatory activity was attributed to bradykinin and prostaglandin synthesis inhibition property of the polyphenols.• Immunomodulatory: Study evaluated the immunomodulatory activity of a hydroalcoholic extract of flowers in Wistar rats in a cyclophosphamide-induced myelosuppression model. Results showed significant immunomodulatory activity.• Phytochemicals / Anti-Inflammatory / Analgesic / Anticonvulsant / Antihyperglycemc / Antipyretic:Phytochemical studies floral volatiles and leaves were done. (See constituents above) Alcoholic extract showed remarkable anti-inflammatory, analgesic, anticonvulsant and antipyretic effects. The isolated mucilage exhibited significant anti-hyperglycemic effect. Antimicrobial testing showed pronounced effects against most of the tested microorganisms.• Intestinal Ascariasis / Comparative Study with Pyrantel Pamoate: In a comparative study of Q. indica and pyrantel pamoate in the treatment of intestinal ascariasis, 85% complete cure was seen with Quisqualis indica and 90% for Pyrantel pamoate. There was 15% and 10% decrease in ova count for Q. indica and P. pamoate, respectively. A second dose resulted in compete eradication. QI had 10% side effects compared to 55% with PP.• Anti-Diarrheal / Leaves: Study evaluated a petroleum ether extract of leaves of Q. indica against experimentally induced diarrhea. The plant extracts showed dose-dependent significant anti-diarrheal effects in all treated groups, with results compared to loperamide PO and atropine sulfate IP.• Analgesic / Anti-Inflammatory / Leaves: Study evaluated a methanolic extract of Q. indica leaves in rodents. Results showed significant anti-inflammatory and both central and peripheral analgesic activities.• Hypolipidemic Effect/ Aerial Parts: Study evaluated the hypolipidemic effect of methanolic extracts of aerial parts and flowers on passive smoking induced hyperlipidemia in rats. Results showed significant concentration- and dose-dependent reduction of harmful lipid layer in blood serum. There was reduction of LDL, VLDL, cholesterol, and triglycerides with elevation of HDL.• Antimicrobial Effect / Flowers: In a study of methanol extract of flowers of Q. indica, C. gigantea, P. tuberose, the dry flower extract of Quisqualis indica showed the best antimicrobial property of the flowers studied.• Antimutagenic: Expressions from 17 plants, including Quisqualis indica, reduced the mutagenicity potential of mitomycin C, dimethylnitrosamine and tetracycline and exhibited antimutagenic effects.Reference:http://www.eijppr.com/may2012/15.pdf
Photo Source: Google Search 

Wild Mock Strawberry - Duchesnea fragiformis - جنگلی سٹرابیری

Mock Strawberry is known as Wild Strawberry too. Its Latin name is Duchesnea indica, it is a medicinal plant. Its medicinal values and other details are here in English & Urdu:
Synonyms: Duchesnea fragiformis, Fragaria indica, Potentilla indica
Family: Rosaceae (Rose Family)

جنگلی سٹرابیری
جنگلی سٹرابیری ٹھنڈے علاقوں میں قدرتی طور پر اُگنے والی قسم ہے۔ سوات، مالاکنڈ، ہزارہ، مری و ملحقہ علاقوں کے پہاڑوں اور سرد علاقوں میں پایا جاتا ہے۔ زیادہ تر جزوی سایہ دار جگہوں اور ڈھلوانوں پر پائی جاتی ہے۔ سوات و ملحقہ علاقوں میں کسانوں کے فصلوں کو دیگر جڑی بوٹیوں سے پاک کرنے کیلئے زہریلی ادویات کے بے دریغ استعمال نے جہاں دیگر حیاتیاتی نظام کو تباہ کردیا ہے وہاں جنگلی سٹرابیری اور اس جیسی دیگر کئی اقسام کی جنگلی جڑی بوٹیوں کی بقاء کیلئے بھی خطرات کھڑے کردیئے ہیں بلکہ بہت حد تک تو اب یہ جڑی بوٹیاں ناپید ہوچکی ہیں۔ مجھے یاد ہے بچپن میں جب ہمارے گھر دودھ دینے والی خاتون (گوالن)آتی تھیں تو وہ اپنے ساتھ میرے لئے اپنے کھیتوں سے جنگلی سٹرابیری توڑ کر لاتی تھیں۔ جنگلی سٹرابیری کو سوات کی مقامی زبان میں "دہ زمکی توتان" یعنی زمین کے توت کہا جاتا تھالیکن اب تو بدقسمتی سے ہمارے بچے کیا بڑے بھی اس نام سے ناآشنا ہیں۔ہمارے ہردلعزیز دوست اخلاق خان کاکڑ صاحب نے جنگلی سٹرابیری کے طبی خواص کا بہت خوبصورتی سے جائزہ لے کر درج ذیل تحقیق درج کی ہے:جنگلی سٹرابیری کے بہت سارے طبی خواص ہیں۔ یہ خون کے گاڑھا ہونے کو روکنے والی دوا یا زریعہ، جراثیم کش اور دافعِ عفونت دوا جو زخموں میں جراثیم پیدا ہونے سے روکتی ہے۔ بخار اُتارنے کی دوا، اس کے پتوں کو مسل کر زخموں، پھوڑے پھنسی، یا جلے ہوئے زخم پر مرہم کے طور پر لگایا جاتا ہے۔ داد/دھدری، جو کہ جلدی مرض ہے جو عام طور پر برسات اور زیادہ پسینے والے موسم میں ہوتا ہے ، ورم دہن، منہ کی سوزش، منہ کے چھالوں (پک جانا)، گلے کے غدود کے ورم، سوجن کے علاج کیلئے مفید ہے۔ اس کے پھولوں کا جوشاندہ خون کی گردش کو بڑھانے میں مددگار ہے۔
Medicinal use of Mock Strawberry: 
The whole plant is anticoagulant, antiseptic, depurative and febrifuge. It can be used in decoction or the fresh leaves can be crushed and applied externally as a poultice. It is used in the treatment of boils and abscesses, weeping eczema, ringworm, stomatitis, laryngitis, acute tonsillitis, snake and insect bites and traumatic injuries. A decoction of the leaves is used in the treatment of swellings. An infusion of the flowers is used to activate the blood circulation. The fruit is used to cure skin diseases. A decoction of the plant is used as a poultice for abscesses, boils, burns etc.Habitat of the herb: Shady places in woods, grassy slopes, ravines in low mountains, all over Japan.Edible parts of Mock StrawberryFruit - raw. Dry and insipid. Certainly rather tasteless, but it is not dry. A flavour somewhat like a water melon according to some people, but this is possibly the product of a strained imagination.The fruit contains about 3.4% sugar, 1.5% protein, 1.6% ash. Vitamin C is 6.3mg per 100ml of juice. The fruit is about 10mm in diameter with the appearance and texture of a strawberry but very little flavour. A clump 2.5m? yields about 150g of fruit annually. Leaves - cooked.
Other uses of the herbA good ground cover plant, spreading quickly by means of runners. It is rather bare in winter though and should not be grown with small plants since it will drown them out. A good cover for bulbous plants.Propagation of Mock StrawberrySeed - sow spring in a sunny position in a greenhouse. Germination usually takes place within 1 - 6 weeks or more at 15C. A period of cold stratification may speed up germination. When large enough to handle, prick the seedlings out into individual pots and plant them out in the summer. Division of runners in spring or late summer. Very easy, they can be planted out straight into their permanent positions.
Cultivation of the herbShady places in woods, grassy slopes, ravines in low mountains

Mattar Jarri - Trillium Govanianum - مترجڑی



 Trillium Govanianum / Mattar Jarri is an endangered medicinal plant found in temperate forest zones of Khyber Pakhtunkhwa (Hazara and Malakand regions) between the elevation range of 2500  to 4000 meters. Locally it is called Mattar Jarri, Tri Patti or Dood Bacha. It is identified by
its three leaves in one whorl at the summit of the stem and a solitary purple flower in the center. The extraction isolated from the plant are used in various preparations like sex hormones, rheumatism and regulation of menstrual cycle. Also used in stomach related problems.

Sea Buckthorn - Hippophae Rhamnoids - Mirghenz میرغِنز

Sea-Buckthorn is native plant of Northern Areas of Pakistan. Sea-Buckthorn is a medicinal plant. It is a hardy, deciduous shrub or medium size tree having 2.5m to 6 m height. Sea-Buckthorn shrubs/trees are found in Chitral and Gilgit Baltistan areas and known as Mirghenzمیرغنز in Chitrali Language. Its botanical name is Hippophae Rhamnoids. It bears yellow to orange berries, which have been used for different medicinal purposes. The plant is primarily valued for its golden-orange fruits. These berries are rich source of vitamin C, Vitamin E, and other nutrients. Also used for improving blood pressure and lowering cholesterol and preventing blood vessel diseases and boosting immunity.

Nazar Panra - Skimmia Laureola - نظرپانڑہ

Skimmia Laureola locally named as "Nazar Panraنظرپانڑہ" (in Pashto, Khyber Pakhtunkhwa and Afghanistan) is an evergreen shrub found in Hazara region, Murree Hills, Kashmir Upper Swat and Shangla in Pakistan. According to Dr. Parshant Jha, this plan is found in Himalayan region of India and known as "Nehar" in Uttranchala, India. It is a medicinal plant. The leaves gives a strong aromatic smell. It has been used for the treatment cold, fever, headache and coughs. Smoke of leaves and twig are used as demon repellent but in actual its leaves contains some essential oils which kills many microscopic bodies like bacteria etc in the households. In the form of smoke, dry leaves have been employed for nasal tract clearness. Leaves used in food as flavoring agent, in traditional healing and cultural practices, being made into garlands and considered sacred.In Swat (Mingora) dried and fresh leaves are easily available at shops in bazar specially in dry fruits shops. In our area many people use its smoke after every family / friends gathering in houses. In the near past, in every wedding and other domestic gathering of the families, this smoked is used to prevent demon (Nazar Bad). The leave of this plant is used to safe cloths from bugs. It is a plant which is the part of tradition and culture.


سکیمیہ لاوریولاجو کہ پشتو میں "نظرپانڑہ" کے نام سے جانا جاتا ہے ایک صدابہار پودا ہے جو کہ جھاڑی نما ہوتا ہے اور ہزارہ ریجن، کوہسارمری، کشمیر، اپرسوات اور شانگلہ کے علاقوں میں پایاجاتا ہے۔ ڈاکٹر پرشانت جاہ کے مطابق نظرپانڑہ انڈیا کے ہمالین ریجن کے علاقوں میں بھی پایاجاتا ہے اوراُترانچالا میں "نَہر" کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اس کے پتے اور ٹہنیاں تیز خوشبودار ہوتی ہیں۔ اس پودے کے مختلف حصوں سے کئی قسم کے تیل کشید کئے جاتے ہیں جو کہ کافی ادویات میں استعمال ہوتے ہیں۔ یہ پودا زکام، سردرد، کھانسی وغیرہ کے علاج کیلئے زیادہ استعمال کیا جاتا ہے۔ پختون روایات اور کلچر میں اس پودے کی اپنی ایک خاص اہمیت ہے۔اس کی خشک و تازہ پتوں اور ٹہنیوں کا دھواں دیا جاتا ہے۔ اس کی دھونی نظربد سے بچانے اور نظربد کو ختم کرنے کیلئے استعمال کی جاتی ہے۔ اصل میں اس پودے کے پتوں اور ٹہنیوں میں ایسے قدرتی تیل پائے جاتے ہیں جن کی دھویں سے گھروں کے کونے کدروں، ہمارے لباس و کپڑوں وغیرہ میں نظر نہ آنے والے خوردبینی اجسام کا خاتمہ ہوتا ہے اور چونکہ یہ کئی قسم کی بیماریوں جیسے کہ نزلہ زکام، کھانسی کے جراثیم کو بھی ختم کرتا ہے اس لئے لوگ اس کے پتوں اور ٹہنیوں کی دھونی دیتے ہیں۔ اس پودے کی چراثیم کش خواص کی بدولت اس کو کئی اقسام کی جراثیم کش ادویات میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ہمارے علاقے مینگورہ (سوات) میں عام بازاروں میں نظرپانڑہ خشک و تازہ بہ آسانی دستیاب ہے خاص کر درائی فروٹس کی دکانوں میں موجود ہوتا ہے۔ مینگورہ جنرل بس سٹینڈ کے آس پاس کی دکانوں میں تو دستیاب ہے ہی کیونکہ یہاں سے لوگ جہاں بھی جاتے ہیں اپنے ساتھ لے جاتے ہیں۔ (میں بھی لایا ہوں اپنے ساتھ)ہمارے ہاں اکثر شادی بیاہ اور دیگر تقریبات میں نظربد سے بچنے کیلئے نظر پانڑہ کی دھونی دی جاتی تھی مگر اب یہ رواج ختم ہوتا جا رہا ہے۔ اب بھی گھروں میں لوگ اس کی دھونی دیتے ہیں۔ مجھے بذات خود اس کی خوشبو پسند ہے تو جب بھی میں سوات جاتا ہوں اپنے ساتھ ضرور لاتا ہوں اور کبھی کبھار گھر میں اس کی دھونی دلواتا ہوں۔ چونکہ اس کا پودا ایک صدابہار پودا ہے اور خوشنما بھی ہے اس لئے اگر ٹھنڈے علاقوں کے لوگ اس کو اپنے گھروں باغیچوں میں لگائیں تو بہ آسانی اُگایاجاسکتا ہے۔ میدانی علاقوں میں بھی اُگ سکتا ہے لیکن چونکہ یہ سرد آب و ہوا اور سطح سمندر سے زیادہ اُونچائی پر پایا جاتا ہے تو ہوسکتا ہے کہ اس کے کیمیائی خواص میں کچھ کمی ہو یا اس کی بڑھوتری اور پودے کی صحت میں فرق ہوسکتا ہے۔ ہاں البتہ پودا حاصل کرنا تھوڑا سا مشکل اس لئے ہوگا کہ جنگلات کی بے دریغ کٹائی اور قدرتی جنگلی پودوں کے صفایا نے اس پودے کی بقاء بھی مشکل میں ڈال دی ہے۔ یہ اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہمارے لئے بہترین تحائف ہیں جن کو ہم ضائع کررہے ہیں۔ ان پودوں اور نباتات کی اہمیت کو جاننا ضروری ہے اور ان کے صحیح استعمال کو اپنانا بھی اہم ہے۔ آب جب دنیا ایلوپیتھی سے واپس ہربل پراڈکٹس کے استعمال کی طرف آرہی ہے تو ہمیں بھی اپنے اس قدرتی تحفے کی حفاظت، کاشت اور استعمال کو بہتر بنانا ہوگا۔

Chrysanthemum گل داؤدی




گل داؤدی Chrysanthemum

جاڑوں میں بہار رنگ پھولخزاں اور ابتدائی موسم سرما کا دلکش پھول۔ جب موسم کے پھیکے رنگ کہر میں لپٹی چادر کے ساتھ سرمئی رنگ میں رنگے ہوتے ہیں ، عین اسی موسم میں گل داؤدی اپنے دلفریب اور خوبصورت حسین رنگوں سے خزاں کے موسم کو بہار کا تڑکا لگا رہا ہوتا ہے۔ سرخ، گلابی،نیلے، پیلے، سفید، کاسنی، جامنی، نارنگی اور دوسرے ہزار ہا رنگوں سے مزین اس پھول کو اگر خزان کے موسم کا بادشاہ اور جھاڑوں کا شہزادہ کہیں تو کوئی مضائقہ نہیں۔ اس کے ہزاروں رنگ، نمونے اور قسمیں ہیں۔ اس وقت دنیا میں اس پھول کے تقریباً 5000(پانچ ہزار) اقسام موجود ہیں۔قدیم یونانیوں نے اس کا نام دو الفاظ گولڈن اور پھول کو ملا کر رکھا ہے۔ جاپان میں گل داؤدی کو مقدس پھول کی حیثیت حاصل ہے۔ چین میں ایک خاص تہور پر گل داؤدی سے مشروب تیار کیا جاتا ہے اور گھروں سے باہر گل داؤدی کی کیاریوں کے پاس بیٹھ کر یہ مشروب پیا جاتا ہے۔ گل داؤدی کی بعض اقسام کی پنکھڑیاں چائے کی پتی کے طور پر بھی استعمال ہوتی ہیں۔ یہی پتیاں تکیوں میں روئی کی جگہ بھی بھری جاتی ہیں۔ ایسے تکیے موسم گرما میں اپنی مخصوص خوشبو کے باعث روح کو ٹھنڈک اور فرحت پہنچاتی ہیں۔ گل داؤدی اپنیخوبصورت بناوٹ اور نیم دائرہ پتیوں کی بدولت عہدِقدیم سے لے کر اب تک چینیوں کا دل پسند پھول ہے ۔ آج بھی یہ اپنی اصل جنگلی صورتمیں ہانگ کانگ اور چائنا کےدرمیانی علاقے میں پایا جاتا ہے۔

یہ پھول انتہائی خوبصورت ہوتے ہیں اور نہ صرف گملوں اور کیاریوں میں نہیں بلکہ گلدانوں میں بھی کئی کئی دن تک تازہ رہتے ہیں۔ گل داؤدی کے پھول تقریباً تین سے چار مہینوں تک کھلتے رہتے ہیں اور ان کی صحت متعلقہ آب وہوا اور موسم کے مطابق ہے۔ یہ بنیادی طور پر ایک جھاڑی نما پودا ہوتا ہے جس کو سہارا دے کر کھڑا کیا جاتا ہے۔ یوں تو گل داؤدی کا پودا سارا سال ہی زندہ رہتا ہے مگر قلموں سے اس کی کاشت اگست کے اواخر اور ستمبر کے اوائل میں ہوتی ہے۔ گرمی کا زور ٹوٹتے ہی جیسے موسم خنکی کی طرف جھکنے لگتا ہے تو گل داؤدی کی کونپلیں سر اُٹھانا شروع کردیتی ہیں۔ آج کل نرسریوں میں گل داؤدی کی کئی اقسام دستیاب ہیں جن کو آپ آسانی سے اپنے گھر کے آنگن میں خوبصورت گملوں میں لگا سکتے ہیں۔ گل داؤدی کے پھول کئی اقسام کے ہوتے ہیں ، چھوٹے بڑے سب سائزز میں دستیاب ہیں، بڑے پھول اکثر ٹہنیوں پر ایک سے چار کی تعداد میں لگتے ہیں جبکہ چھوٹے پھول گچھوں کی شکل میں بھی ہوتے ہیں۔اگر آپ کے پاس گل داؤدی کے پرانے پودے موجود ہیں تو نہایت آسانی سے ان سے نئے پودے لئے جاسکتے ہیں۔ پرانے پودے کی لمبی شاخوں کو کاٹ کر کسی بوتل یا گلاس وغیرہ میں پانی بھر کر رکھ لیں ، کچھ ہی دنوں بعد جڑیں نکل آئیں گی جن کو آپ گملوں میں منتقل کرکے نئے پودے لے سکتے ہیں۔دوسرا طریقہ یہ ہے کہ صحت مند شاخوں کو پودے کے تنے سے مناسب فاصلے پر کاٹ کر ان کو مٹی میں لگا دیں، کچھ دنوں بعد یہ بھی نئے پودے بن جائیں گے۔سب سے بہترین طریقہ یہ ہے کہپودے کی لمبی شاخوں کو پودے سے کچھ فاصلے پر مٹی میں اس طرح دبایں کہ ایک سر ا تو پودے کے ساتھ جڑا رہے اور دوسرا حصہ سرا مٹی سے باہر رہے جبکہ درمیان والا حصہ مٹی میں دبا ہوا ہو، اس طرح سے کچھ دنوں کے بعد مٹی میں دبے ہوئے حصے سے جڑیں نکلنا شروع ہوجائیں گی اور نیا پودا بن جائے گا، پھر احتیاط سے بڑے پودے والے تنے کی طرف سے شاخ کو کاٹ دیں اورنئے پودے کو ضرورت کے مطابق دوسری جگہ منتقل کردیں۔
اسی طرح اگر اس کے بیج آپ اکٹھے کرلیں تو ان کو بو کر بھی نئے پودے حاصل کرسکتے ہیں۔ ٹھنڈے علاقوں میں اکتوبر جبکہ میدانی علاقوں میں نومبر کے درمیان گل داؤدی کے پودے پر کلیاں نمودار ہونا شروع ہوجاتی ہیں چونکہ یہ ایک جھاڑی نما پودا ہے اس لئے ٹہنیوں کو سہارا دینے کے لئے لکڑی کی چھڑیوں یا بھاڑ لگا کر یا رسی ،تاروں وغیرہ سے سہارا دیا جاتا ہے۔ جب کلیاں نمودار ہورہی ہوتی ہیں تو ان کو سہارادیا جاتا ہے تاکہ ٹہنیاں ایک خوبصورت انداز میں نمایاں ہوکر پھولوں کی بہاربکھیرتی رہیں۔
ہر سال دنیاں کے بیشتر ممالک میں گل داؤدی کی نمائشیں منعقد کی جاتی ہیں ۔ چین ، جاپان اور بعض دیگر ایشیائی ممالک میں بہت بڑے پیمانے پر یہ نمائش ہوتی ہے۔ ان نمائشوں میں گل داؤدی کے پھولوں کو خوبصورت سجاوٹی سانچوں اور ڈھانچوں پر چڑھاکر خوبصورت ماڈل بنائے جاتے ہیں جو دیکھنے کے قابل ہوتے ہیں۔ پاکستان میں بھی گل داؤدی کی نمائش ہر سال اسلام آباد، راولپنڈی ، جہلم، لاہور، پشاور اور کراچی میں ہوتی ہے۔ پشاور میں گل داؤدی کی نمائش ہر سال دسمبر کے مہینے میں پشاور کینٹونمنٹ بورڈ کے زیر اہتمام منعقد کی جاتی ہے جس میں کئی کیٹیگریز میں ان خوبصورت پھولوں کی سجاوٹ کے مقابلے ہوتے ہیں، جن میں طلبہ طالبات سے لے گھریلوخواتین کے درمیان ان پھولوں سے گھر کے اندر گلدانوں میں سجاوٹ کے مقابلے، گھروں اور باغات کی کیٹیگری میں مقابلے اور مختلف دفاتر، کالجوں اور یونیورسٹیوں کے درمیان بھی مقابلے رکھے جاتے ہیں اور باقاعدہ انعامات بھی تقسیم کی جاتی ہیںجن سے پھولوں سے محبت کرنے والے لوگوں کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔



Photo Source: Google.com

Health Benefits of Berberis Aristata Simloo Sumblo Herb Health Benefits سُملو بوٹی زیڑلرگے

سُمبلُو بُوٹی/زیڑلرگے کے طبی خواص اور مہلک امراض کا علاج
تحریر و تحقیق اخلاق خان کاکڑسُملو کا لاطینی نام بربیرس اریسٹاٹا ہے اور یہ نباتات کے خاندان زرشکیہ سے تعلق رکھتی ہے۔ یورپ کیSimloo Flowers عام زرشک کا لاطینی نام بربیرس دیگرس ہے۔ پاکستان اور انڈیا میں اسی کو سُمبل، سُمبلو یا سُملو کہتے ہیں ۔ ہندی میں اس کو دار ہلد بھی کہا جاتا ہے۔ یہ پودا عام کانٹے دار جھاڑی ہے، جس کی جڑ زرد رنگ کی ہوتی ہے۔ پاکستان کے شمالی علاقوں مانسہرہ، بالاکوٹ، کشمیر اور شمالی وزیرستان میں بھی پائی جاتی ہے۔ بلوچستان کے علاقوں زیارت ، باباخرواری، دوزخ تنگی، لورالائی، درگئی، قلعہ سیف اللہ اورسنجاوی کے اطراف میں بھی پائی جاتی ہے۔ وہاں کے لوگ اسے زرل کہتے ہیں۔ بعض جگہ اسے کورئے بھی کہا جاتا ہے۔
یہ خودرو جھاڑی ہے۔ اس کے پرانے پودوں کا قد سات آٹھ فٹ ہوتا ہے۔ شاخیں اطراف میں پھیلی اور کانٹوں سے بھری ہوتی ہیں۔ ہر کانٹا سہ شاخہ ہوتا ہے۔پرانے پودوں کے تنے کا قطر تین چار انچ ہوتا ہے۔ جڑیں گہری بلکہ آٹھ دس فٹ زمین میں ہوتی ہیں۔ یہی جڑ کارآمد ہے۔ اسے کاٹ کر اس پر سے چھلکا اتارتے اور سائے میں خشک کر لیتے ہیں۔ یہ چھلکا زرد رنگ کا اورذائقے میں کڑوا ہوتا ہے۔ سُملوکے زرد پھول گچھوں کی شکل میں لہلہاتے ہیں۔ پتے Simloo Fruitsلمبوترے اور نوکیلے ہوتے ہیں۔ پھول چند دن بعد جھڑ جاتے ہیں۔ ان کی جگہ چھوٹے چھوٹے سبز دانے نکلتے ہیں جو پکنے پر سیاہ ہو جاتے ہیں۔ بچے اور بڑےانہیں شوق سے کھاتے ہیں۔اس کےپھول اور پتے بھی کھائےDaruhaldi-Berberis-Aristata-Simloo جاتے ہیں جن کا ذائقہ ترش ہوتا ہے۔یہ منہ اور گلے کے امراض کا علاج ہے۔ اس کی جڑ خزاں کے آخر میں نکالی جاتی ہے تاہم ضرورت پڑنے پر کسی وقت بھی تازہ جڑ کا چھلکا اتار کر استعمال کر سکتے ہیں۔ سمبل کی جڑ کے سفوف سے سرطان کے مریضوں کا شفا بخش علاج ہوسکتا ہے۔
سرطان (کینسر) ہر قسمسُملواور ہموزن ہلدی کوباریک پیس کر ڈبل زیرو کے کیپسول بھر لیں اور ایک کیپسول صبح وشام بعد از غذا، ہمراہ تازہ پانی یا دودھ استعمال کریں۔ انشأاللہ ایک ماہ میں کینسر کا نام نشان نہ رہے گا۔چھاتی کا سرطانچھاتی کے سرطان (کینسر) میں کشتہ سنکھ، ہلدی اور سُملو ہم وزن باریک پیس کر ایک ایک ماشہ کے کیپسول بھر لیں اور صبح، دوپہر، شام بعد از غذا استعمال کریں۔ بفضلہٖ تین ماہ میں آرام آ جائے گا۔
صبح کو تین ماشے سُملو ایک پیالی پانی میں بھگودیں اور شام کو کھانے کے آدھ گھنٹے بعد پی لیں۔ اسی طرح شام کو بھگو کر صبح پی لیں۔ ایک ماہ کے استعمال سے چھاتی کا سرطان ختم ہو جائے گا۔دماغی رسولی (برین ٹیومر) کا خاتمہدرخت سَرس کی چھال، کشتہ سنکھ، سُملو اور ہلدی میں ہم وزن چینی شامل کر کے زیرو کے کیپسول میں چاررتی کے برابر بھر لیجئے۔ صبح، دوپہر اور شام بعد غذا عرق دھماسہ کے ساتھ ایک ایک کیپسول استعمال کریں۔ ذیابیطس کے مریض چینی شامل نہ کریں۔ تین سے چار ماہ تک دوا کا استعمال جاری رکھیں۔ یہ دماغی رسولی (برین ٹیومر) کا شافی علاج ہے۔ناسور کا پھوڑاناسور کاپھوڑا نکل آئے توروزانہ صبح دوپہر اور شام بعد غذا ایک ایک ماشہ سُملو باریک پیس کر تازہ پانی کے ساتھ صبح و شام نوش فرمائیں۔ بیس دن میں شفا ہو گی۔منہ کا سرطانمنہ کے سرطان کے لئے کشتہ سنکھ، ہلدی اور سُملو ہم وزن باریک پیس کر ایک ایک ماشہ کے کیپسول بھر لیں اور صبح، دوپہر، شام بعد از غذا ، تین ماہ استعمال کریں۔منہ کے امراضسُملو کومنہ کے مختلف امراض میں استعمال کیا جاسکتا ہے مثلاً گلے میں تکلیف ہو تو اس کا چھلکا منہ میں رکھ کر سو جائیے۔ اس کا کڑوا پانی حلق سے اترتا رہتا ہے اور صبح تک تکلیف رفع ہو جاتی ہے۔ منہ میں چھالے ہوں تو ایک چٹکی سُنمبلو پوڈر منہ میں رکھنے سے گھنٹہ بھر میں تکلیف رفع ہو جاتی ہے۔دانت کا درددانت کا درد دور کرنے اور ہلتے ہوئے دانت قائم رکھنے کے لئے سُملو، جڑ پان اور عناب ہم وزن ملا کر ۲-۲ ماشہ صبح و شام بعد غذا لیں۔گردن کے مہرے یا پسلیوں کا درداگر پسلیوں یا گردن کے مہروں میں درد ہو تو سُملو کا پوڈر، ایک ماشہ رات کونیم گرم دودھ سے لیں۔بہترین منجناگر دانتوں میں درد ہو یا مسوڑھوں سے خون آتا ہو، تو کسی اچھے منجن میں اس کی نصف مقدار کے ہم وزن سُملو ملائیں اور دانتوں پر بطور منجن ملیں، ان شاء اللہ دنوں میں خون رک جائے گا اور دانتوں کا درد بھی کافور ہو گا۔غدہ درقیہ (تھائیرائڈ گلینڈز) کی سوجناگر غدہ درقیہ (تھائرمائڈ گلینڈز) بڑھ جائے تو کشتہ سنکھ، ہلدی ، سُملوپوڈر اور آرسینک پاؤڈر نمبر ۲ ہم وزن لیں اور صبح و شام بعد از غذا زیرو کا کیپسول بھر کر استعمال کریں۔ دو سے تین ماہ میں بڑھا ہوا غدہ معمول پر آ جائے گا۔ بڑھے ہوئے ٹانسلز میں سُملو بوٹی ورم دور کرتی ہے، اس کے چھلکے کا چھوٹا سا ٹکڑا منہ میں رکھ کر رات کو سونے سے اس کا رس آہستہ آہستہ ٹانسلز کو ختم کر دیتا ہے۔پرانے زخمسُملو کا سفوف روزانہ چھڑکنے سے پرانے سے پرانا زخم ہفتہ بھر میں ٹھیک ہو جاتا ہے۔ ساتھ ہی دن میں دو بار کھانے کے بعد پانی کے ہمراہ سفوف کی دو تین چٹکیاں لینی چاہییں۔ذیابیطس (شوگر)ذیابیطس کے مریض سُملو پوڈر کی دو تین چٹکیاں دن میں دو بار دودھ سے پھانک لیں، تو شکر کی سطح معمول پر آ جاتی ہے۔ ذیابیطس سے نجات پانے کے لئے،سُملو ۳ ماشہ کا ٹکڑا رات کو ایک پیالی پانی میں بھگو دیں، صبح ناشتہ سے آدھ گھنٹہ پہلےیہ پانی پی لیں۔پھرپیالی میں مزید پانی ڈال دیں۔ اسے نماز عصر کے بعد پیجئے۔ اب بوٹی ضائع کر دیں اور رات کو نئی بوٹی پانی میں بھگوئیے۔ یہ نسخہ پندرہ، بیس روز استعمال کریں۔
گورکھ پان، برگ نیم، سُملو کی جڑ کا چھلکا، کرنجوا، گڑمار بوٹی، رسونت مصفّیٰ، چاکسو چرائتہ نیپالی اور نرکچور، ہر ایک دس تولہ لیجئے اور سب کو باریک پیس کر ملا کر رکھ لیں اور ۳-۳ ماشہ صبح و شام بعد غذا استعمال کریں۔ یہ دوا ذیابیطس دور کرنے کے علاوہ پیشاب کی بدبو اور زیادتی سے بھی نجات دلاتی ہے۔
یہ نسخہ ایک ماہ استعمال کریں: سُملو، کلونجی، تخم میتھی، کاسنی ہندی ہم وزن لے کر ۵-۵ ماشہ یعنی ۱-۱ چمچ صبح و شام بعد غذا استعمال کریں۔ رات کو خشخاش ایک چمچ دودھ کے ساتھ کھا لیں۔داغ دھبے اور چھائیاںنوجوانوں کے چہروں پر اکثر سیاہ چھائیاں اور داغ دھبے پڑ جاتے ہیں یا دانےنکل آتے ہیں۔ اس کے لئے کشتہ سنکھ، سُملو، ہلدی اور آم کے درخت کی چھال چاروں ہم وزن باریک پیس کر چہرے کی کسی اچھی کریم میں ملا لیں اوررات کو چہرے پر لگائیں۔ کریم ان چاروں کے مجموعے کے برابر ہونی چاہیے۔ صبح ڈیٹول، نیم یا گندھک کے صابن سے منہ دھو لیں۔خارش، داد، پھوڑےجسم پر خارش، داد چنبل، پھوڑے پھنسی ہوں یا سر پر دانے نکل آئیں، تو سُملو کی جڑ ۵ تولہ باریک پیس کر بیس تولہ سرسوں کے تیل میں ملا کر متاثرہ جگہ پر لگائیں۔ پندرہ دن میں فائدہ ہو گا۔ مرض پرانا ہو، تو نسخہ ایک تا دو ماہ استعمال کریں۔گردے بہتر بنائیےاگر گردے میں رسولی ہو یا ان کی صفائی (ڈائیالیسس) ہو رہی ہو تو، ایک چاول کشتہ سونا، ایک چاول آرسینک نمبر ۲، ایک رتی کشتہ سنکھ، ایک ماشہ سُملو ملا کر ایک ایک ماشہ کے کیپسول بھریں اور صبح و شام بعد غذا، عرق منجشٹھا کے ساتھ استعمال کریں۔ اگر ڈائیالیسس روزانہ بھی ہو رہا ہو تو نسخے کے ایک ہفتہ استعمال سے ہر دوسرے روز ہونے لگے گا اور چالیس روز کے استعمال سے ہر پندرہ روز بعد۔جسمانی درد سے نجات پائیےدرد جسم کے کسی بھی حصے میں ہو، جوڑوں کا درد ہو یا کندھوں کا، ٹانگوں میں ہو یا کولہوں میں، عرق النساء ہو یا سر درد ، مندرجہ ذیل نسخہ استعمال کرنے سے بالکل ختم ہو جاتا ہے۔ کشتہ سنکھ ۴ تولہ، سُملو ۴ تولہ، کچلہ مدبر ایک تولہ، کشتہ شنگرف ۶ ماشہ، کشتہ بارہ سنگھا ۶ ماشہ، آرسینک پاؤڈر نمبر ۲ ایک تولہ۔
یہ ادویہ باریک پیس کر ایک ایک ماشہ کے کیپسول میں بھر لیں اور صبح و شام بعد از غذا ایک پاؤ دودھ کے ساتھ استعمال کریں۔ ایک ماہ تک کھانے سے ہر قسم کا درد ختم ہو جائے گا۔جوڑوں کا دردجوڑوں کے درد میں سوتے وقت دو تین چٹکیاں سفوف پدودھ سے لے لیں۔ تین چار روز یہ عمل دہرانے سے درد رفع ہو جاتا ہے۔
سُملو کی ٹہنیوں کو جوش دے کر پینے سے پسینہ اور دست آتے ہیں اور جوڑوں کا درد رفع ہو جاتا ہے۔ جوڑوں کے ہر قسم کے درد، گنٹھیا اور بولی تیزاب (یورک ایسڈ) سے نجات پانے کے لئے، سملو ۳ ماشہ کا ایک ٹکڑا رات کو ایک پیالی پانی میں بھگو دیں، صبح ناشتہ سے آدھ گھنٹہ پہلےیہ پانی پی لیں۔پھرپیالی میں مزید پانی ڈال دیں۔ اسے نماز عصر کے بعد پیجئے۔ اب بوٹی ضائع کر دیں اور رات کو نئی بوٹی پانی میں بھگوئیے۔ یہ نسخہ پندرہ بیس روز استعمال کریں۔بانجھ پن دور کیجئےبانجھ پن اور اٹھرا کے لئے کشتہ سنکھ، ہلدی اور سُملو ہم وزن باریک پیس کر ایک ایک ماشہ کے کیپسول بھر لیں اور صبح، دوپہر، شام بعد از غذا ، چھ ماہ تک دودھ کے ساتھ استعمال کریں۔خون کا زہر (سیرم ٹرائی گلیسرائڈ)خون میں اگر سیرم ٹرائی گلیسرائیڈزبڑھ جائے تو سنکھ کا کشتہ، سُملو اور ہلدی ہم وزن ملا کر ایک ایک ماشہ کے کیپسول عرق ذیابیطس چوتھائی پیالی کے ساتھ صبح و شام، بعد غذا، استعمال کریں۔امساکسُملو کی گولیاں امساک کے مریضوں کو فائدہ دیتی ہیں۔ ۵ تولہ سملو ایک کلو پانی میں بارہ گھنٹے تک بھگو ئیں، پھر اسے آگ پر چڑھا دیں۔ جب آدھا پانی رہ جائے تو سُملو چھان کر خشک کر لیں اور چنے کے برابر گولیاں بنا لیں۔ رات سوتے وقت دو گولی ہمراہ ڈیڑھ پاؤ دودھ استعمال کریں۔بلند فشار خون معمول پر لائیےسُملو بلند فشار خون (ہائی بلڈ پریشر) میں بھی مفید ہے۔ ایک پاؤ سُملو باریک پیس لیں، اس میں پانچ تولہ تازہ کھجور کی گھٹلی نکال کر ملائیں اور چنے کے برابر گولیاں بنا لیں۔ پہلے ایک ہفتہ صبح، دوپہر اور شام بعد غذا، ایک ایک گولی استعمال کریں۔ دوسرے ہفتے صبح و شام بعد غذا لیں۔ تیسرے ہفتہ صرف شام کو بعد غذا ایک گولی استعمال کریں۔ بفضلہٖ تعالیٰ خون کا دباؤ معمول پر آجائے گا۔تپ دق اور پرانا بخارسُملو، کشتہ گئودنتی، ست گلو اور افسنتین دس دس تولہ، اجوائن خراسانی دو تولہ اور نمک خوردنی ایک تولہ، ان سب کو ملا کر باریک پیس لیں اور ایک ایک ماشہ صبح و شام بعد غذا ہمراہ چائے استعمال کریں۔ چند دن میں بخار ہمیشہ کے لیے دور ہو جائے گا۔ٹوٹی ہڈیاگر کسی انسان کی ہڈی ٹوٹ جائے تو انڈے کی سفیدی میں سُملو پیس کر لگائیں اور اگر ممکن ہو تو کَس کر باندھ بھی دیں۔ انشاٗاللہ بیس دن میں ٹھیک ہو جائے گی۔
اگر کسی جانور کی ہڈی ٹوٹ جائے تومکئی کے آٹے میں سُملو ملا کر پانی میں آمیزہ تیار کریں اورجانورکی ٹوٹی ہوئی ہڈی پر لیپ کر دیں۔ اللہ کے فضل سے بیس دن میں ہڈی بالکل ٹھیک ہوجائے گی۔
ٹوٹی ہوئی ہڈی پر سُملو اور ارجن کا چھلکا ہم وزن باریک پیس کر انڈے کی سفیدی میں ملا کر صبح اور رات لگائیں۔ بیس دن میں ٹوٹی ہوئی ہڈی ٹھیک ہو جائے گی۔عرق النّساءعرق النّساء عورتوں کی کوئی بیماری نہیں بلکہ ایک رگ ہے جو کولہےکی ہڈی سے لے کر پاؤں تک جاتی ہے، جب اس میں شدید درد ہو تو انسان چلنے پھرنے سے قاصر ہو جاتا ہے۔ سُملو، چاکسو، سونٹھ اور مرچ سیاہ۵-۵ تولے لے کر ایک کلو شہد میں حل کر دیں اور صبح دوپہر شام ۲-۲ چھوٹے چمچ استعمال کریں۔ پندرہ دن میں عرق النّساء کی تکلیف ختم ہو جائے گی۔
ایک پاؤ سُملو باریک پیس کر چار کلو دودھ میں ملا کر پکائیں۔ جب دو کلو رہ جائے تو اسے برفی کی طرح کاٹ کر صبح و شام بعد غذا ایک ایک ٹکڑا کھائیں۔ دودھ میں حسب ذائقہ چینی شامل کی جا سکتی ہے۔
عرق النّساء، جوڑوں کے ہر قسم کے درد، گنٹھیا اور بولی تیزاب (یورک ایسڈ) سے نجات پانے کے لئے سُملو ۳ ماشہ کا ایک ٹکڑا رات کو ایک پیالی پانی میں بھگو دیں، صبح ناشتہ سے آدھ گھنٹہ پہلےیہ پانی پی لیں۔ پھرپیالی میں مزید پانی ڈال دیں۔ اسے نماز عصر کے بعد پی لیں۔ اب بوٹی ضائع کر دیں اور رات کو نئی بوٹی پانی میں بھگودیں۔ یہ نسخہ پندرہ بیس روز استعمال کریں۔یرقان سے نجاتیرقان (ہیپاٹائٹس) سے نجات پانے کے لئے،سُملو ۳ ماشہ کا ٹکڑا رات کو ایک پیالی پانی میں بھگو دیں، صبح ناشتہ سے آدھ گھنٹہ پہلےیہ پانی پی لیں۔پھرپیالی میں مزید پانی ڈال دیں۔ اسے نماز عصر کے بعد پیجئے۔ اب بوٹی ضائع کر دیں اور رات کو نئی بوٹی پانی میں بھگوئیے۔ یہ نسخہ مکمل آرام آنے کے بعد بھی چھ ماہ تک مزیداستعمال کریں۔تلی یا جگر بڑھناسُملوکا جوشاندہ تیار کریں اور صبح و شام بعد غذا نوش فرمائیں۔ تلی اور جگر بڑھ جانے میں بیحد مفید ہے۔
پیٹ کے کیڑے: پیٹ کے کیڑے نکالنے کیلئے صبح نہار منہ دو تین چٹکیاں سفوف پانی سے لے لیں۔ تین چار روز یہ عمل دہرانے سے پیٹ کے کیڑوں سے نجات مل جاتی ہے۔دست اور مروڑسُملو کی جڑ کی چھال اور سونٹھ ہموزن پیس کر دن میں تین بار لینے سے دست بند ہو جاتے ہیں۔تحریر و تحقیق اخلاق خان کاکڑSumblo Simloo Booti in Urdu 

Blackcurrant Berries- Ribes Nigrum- زرشک شیریں - کالی کشمش

BLACKCURRANT - RIBES NIGRUM - زرشک شیریں - کالی کشمش    
تحریر و تحقیق: اخلاق خان کاکڑیہ زرشک سیاہ دماغی تقویت کیلئے نظر کی قوت کیلئے, جو اپنی یادداشت کھوبیٹھے ہوں, دماغ کمزور ہوچکا, دائمی سردرد کے مریض, ہیپاٹائٹس کا پرانے سے پرانا مریض جگر کی کوئی تکلیف‘ کالا یرقان ہو یا پیلا‘ جگر سکڑ رہا ہو یا جگر کا کینسر بتایا گیا ہو‘, جگر بالکلختم ہوچکا ہو, جس کا جگرخراب ہوگیا, جوڑوں کے درد کیلئے مفید ہے،, ہڈیوں کی چوٹ‘ہڈیوںکا توڑ پھوڑ‘, پنڈلیوں میںدرد رہتا ہو‘ہروقت اینٹھن‘ سوتے وقت بے چینی‘ , الغرض زرشک شیریں جوڑوں‘ پٹھوں اعصاب‘ معدہ قبض‘ جگر کی تمام بیماریاں‘ ہیپاٹائٹس‘ دل کی تقویت‘ دماغی کمزوری‘ قبل ازوقت بڑھاپا‘ جسم کی تھکن‘ طبیعت کی تھکن ان سب کیلئے ایک نہایت آزمودہ راز ہے۔
Women use black currant seed oil for treating symptoms of menopause, premenstrual syndrome, painful periods, and breast tenderness. It is also used for boosting immunity.Black currant berry is used for coughs and Alzheimer's disease.Black currant dried leaf is used for arthritis, gout, joint pain (rheumatism), diarrhea, colic, hepatitis and other liver ailments, convulsions, and disorders that cause swelling (inflammation) of the mouth and throat. Black currant dried leaf is also used for treating coughs, colds, and whooping cough; disinfecting the urine; promoting urine flow; treating bladder stones, and as a cleansing tea.Some people apply black currant leaf directly to the skin for treating wounds and insect bites.In foods, black currant berry is used to flavor liqueurs and other products. People also eat black currant berry.

DESCRIPTION
Ribes nigrum, known as the blackcurrant or black currant, belongs to the family of the Glossulariaceae and originates from Central and Eastern Europe plus parts of Asia. This bush has been cultivated since the 17th century and it is now only rarely found in the wild.
The thornless variety of the blackcurrant bush grows up to 2 metres in height and it flowers in April and May.
The plant produces multiseeded black berries up to 1 cm in size, which ripen in July and August.
In the 18th century, the abbot Bailly from Montaren, who was a Professor at the University of Paris (La Sorbonne), described Ribes nigrum as the “bush of a thousand virtues”. Cassis liqueur is still a famous specialty, especially in Burgundy. Crème de cassis is, of course, also a well-known liqueur that is added to the aperitif kir.
In the Second World War, the consumption of blackcurrants was recommended by the British government because of the high levels of vitamin C. Blackcurrant syrup was given out freely, especially to children, to make up for the lack of vitamin C from other fruit.It is not only these berries that are used in food; because of the health-promoting characteristics, the buds, seeds and leaves also contain many active ingredients. This monography discusses the berries and buds that are used in phytotherapy and gemmotherapy.
Action

ACTIVE INGREDIENTS 
The buds of Ribes nigrum contain the following active ingredients:proanthocyanidins: dimer and trimer prodelphinidins
flavonoids: especially flavonols: including quercetin, kaempferol
phenolic acids: including gallic acid
vitamin C: 100 mg/g in fresh buds
amino acids: including arginine, proline, glycine and alanine
enzymes
essential oil:
- monoterpenes: particularly sabinene, delta-3-carene, terpinolene, cis-β-ocimene and trans-β-ocimene
- sesquiterpenes: including β-caryophyllene
- monoterpenols: including terpinen-4-olThe berry contains the following active ingredients:anthocyanins: 135 to 250 mg/100g, more than 10 glycosides and rhamnosides of the anthocyanidins (aglycons from the anthocyanins) cyanidin, delphinidin, myricetin, peonidin, petunidin, malvidin-3: mainly delphinidin-3-O-rutinoside, cyanidin-3-O-rutinoside, delphinidin-3-O-glucoside and cyanidin-3-O-glucosideother flavonoids:
- flavonols: including quercetin, kaempferol, rutin, quercitroside, isoquercitroside
- flavanones: including hesperidin
- plus flavanols: including epigallocatechin and epicatechinvitamin C: 200 mg/100 g, approximately twice as much as in oranges.
carotenoids: beta-carotene, lutein and zeaxanthin
phenol acids: for example m- and p-coumarinic acid, salicylic acid, caffeic acid, sinapinic acid, p-hydroxybenzoic acid, cinnamic acid
polysaccharides: including cassis polysaccharide (CAPS)
tanning substances
fibres
mineralsPROPERTIES AND EFFECTSANTIOXIDATIVE PROPERTIESThe buds of Ribes nigrum have antioxidant properties. A study in 2008 investigated the effect of the method of extraction on free radicals. Especially the water extracts were active, acetone and methanol extracts were less active. In a different study, blackcurrants (Ribes nigrum) scored top marks for their ferric-reducing ability; they scored better marks than bilberries, raspberries, redcurrants and cranberries. As we know, iron is a strong pro-oxidant.
ANTI-INFLAMMATORY PROPERTIES
Proanthocyanidins from Ribes nigrum lower the secretion of pro-inflammatory chemokines stimulated by IL-4 and IL-13. IL-4 and IL-13 are known inflammatory factors in, among others, atopic asthma. A Canadian study published in June 2012 established that anthocyanins from Ribes nigrum and specifically cyanidin-3-O-glucoside inhibited the secretion of IL-6 by human macrophages. IL-6 is a cytokine that plays a role in pro-inflammatory responses.
ANTIVIRAL PROPERTIES
Ribes nigrum is also active against the herpes simplex virus: a Japanese study established an inhibition of the attachment of the virus on the cell membrane, as well as suppression of the plaque formation through inhibition of protein synthesis. This prevented the herpes simplex virus from multiplying. Blackcurrants have also been found to be active against type A and B influenza viruses, where an inhibition of plaque formation has also been established.
RIBES NIGRUM IN GEMMOTHERAPY
In gemmotherapy, Ribes nigrum is the main ingredient. The description of the uses of Ribes nigrum below is mainly based on gemmotherapeutic literature and experience-based knowledge, because the gemmotherapeutic aspects of Ribes nigrum have not undergone significant scientific research.The primary effect is on the adrenal cortex. It has a cortisone-like effect because it directly stimulates the secretion of the adrenal cortex hormones; it is also a fast-acting anti-inflammatory substance (cortisone-like effect), with no iatrogenic consequences. Ribes nigrum mainly acts on the primary inflammatory phase of inflammation, but is effective in all stages of inflammation of the mucous membranes, such as in the airways, in the digestive tract and in the urinary tract. Ribes nigrum boosts the anti-inflammatory effect of the gemmotherapy agent Sequoia gigantea.Some scientific research has been performed on the buds of Ribes nigrum at the Faculty of Pharmacy at Lyon, where the anti-inflammatory properties of the buds of Ribes nigrum were investigated. The buds significantly reduced the number of inflammatory cells in rats, which demonstrates the anti-inflammatory properties.Another test performed in Lyon using the buds of Ribes nigrum was the arthritis test. Administration of the buds normalised the elevated alpha-1-acid-glycoprotein and gamma-globulins within 7 and 10 days respectively. Alpha-1-acid-glycoprotein is an acute-phase protein, the plasma concentrations of which rise significantly in the event of inflammation.Proanthocyanidins from Ribes nigrum lower the secretion of pro-inflammatory chemokines stimulated by IL-4 and IL-13. IL-4 and IL-13 are known inflammatory factors in, among others, atopic asthma.A Canadian study published in June 2012 established that anthocyanins from Ribes nigrum and specifically cyanidin-3-O-glucoside inhibited the secretion of IL-6 by human macrophages. IL-6 is a cytokine that plays a role in pro-inflammatory responses.
Indications

ANTIOXIDANT 
A randomised crossover study investigated the effects of the intake of a mixture of blackcurrant juice with apple juice (1:1) in five adults. The study subjects drank
750 ml, 1000 ml or 1500 ml a day. At a dose of 1500 ml, a significant fall in plasma malondialdehyde was seen, a marker of lipid oxidation.
The level of glutathione peroxidase, an important enzyme in our antioxidative defence system, rose after each dose, but was also the highest in the 1500-ml group.
The researchers concluded that these effects could not result from the quercetin level alone, but were on account of various ingredients in the juices.
ANTI-INFLAMMATORY AGENT
At a daily dose of 300 mg, anthocyanins from blackcurrants and bilberries have an anti-inflammatory effect. This was proven in a placebo-controlled study involving 120 men and women aged between 40 and 74 years. Anthocyanins inhibit the activation of NF-κB and therefore also the inflammatory response. The plasma concentrations of the pro-inflammatory chemokines IL-8 and IFN-alpha both fell by 25% in comparison to the placebo group. Cytokines IL-4 and IL-13 were also inhibited by 56 and 32% respectively in comparison to the placebo group.
The researchers came to the conclusion that supplementation with anthocyanins can play a role in the prevention and treatment of chronic inflammatory diseases, by inhibition of NF-κB and a fall in various inflammatory mediators.Anthocyanidins from blackcurrants reduce oxidative stress on exertion: including fewer carbonyl proteins in the plasma. Researchers have also established a decline in the pro-inflammatory cytokines TNF-alpha and IL-6 in plasma collected after exertion.
CARDIOVASCULAR DISORDERS
In a randomised crossover study, the effect of blackcurrant juice and orange juice in 144 people was investigated in comparison to a placebo drink. For a period of 28 days, the participants drank 250 ml of the fruit juice with breakfast and 250 ml with the evening meal.
Ultimately 48 participants remained at the end of the study.
The main results were a fall in C-reactive protein (CRP) by 11% and in fibrinogen by 3% whilst the reference drink increased the CRP and the fibrinogen level by 13% and 2% respectively. Increased levels of CRP and fibrinogen are associated with an increased risk of myocardial infarction, peripheral arterial diseases, strokes and cardiovascular death.
TO IMPROVE VISUAL ACUITY
The berries of Ribes nigrum contain a variety of active substances that can be beneficial to our eyes. The carotenoids lutein and zeaxanthin are known antioxidants for the retina. Beta carotene is a precursor of rhodopsin, a pigment in the retina that is important in light perception. And, of course, the bioflavonoids anthocyanins and vitamin C, which protect the small blood vessels and increase blood flow, also play a role.Oral intake of Ribes nigrum anthocyanins improves the blood flow in the optic nerve head and the retina. This was established in a two-year placebo-controlled study involving 38 people with open-angle glaucoma, the most common form of glaucoma. The participants in the study took one 25-mg capsule of anthocyanins twice a day - 50 mg a day. The researchers came to the conclusion that the anthocynanins from Ribes nigrum can be a safe and promising supplement as a supplementation to antiglaucoma drugs.Blackcurrant anthocyanins at a dose of 50 mg a day reduce the time that the eye needs to adjust to darkness. Oral intake also helped to maintain the refraction values of the dominant eye following a visual test, whilst in the placebo group the refraction values reduced significantly.
REDUCED MUSCLE STIFFNESS
Oral intake of Ribes nigrum anthocyanins at a dose of 7.7 mg/kg can combat muscle stiffness. In Japan, this was investigated in 11 people who were asked to type a text for 30 minutes. Supplementation with anthocyanins did not lead to a decline in oxyhaemoglobin and less shoulder muscle stiffness was established. By increasing the peripheral blood flow Ribes nigrum can reduce muscle fatigue and muscle stiffness.
OTHER USES
Because of the cortisol-increasing effect and the anti-inflammatory properties, Ribes nigrum is used as a gemmotherapeutic agent for the following uses (among others):Asthma, bronchitis, rhinitis, emphysema, lung fibrosis.
Allergies, hay fever, eczema, urticaria
Chronic fatigue: Quercus pedunculata is a good synergist for this.
Auto-immune diseases:
Arthritis, arthrosis, rheumatism
Recovery following illness
General drainage therapyContra-indicationsIn known allergy or hypersensitivity to blackcurrants or to one of the ingredients.In oedema caused by cardiac or renal disease.
Blackcurrants or the juice of blackcurrants is advised against for children under 4 years of age due to the level of colouring agents and salicylic acid.Side effects
When the recommended daily amount is taken, usually no adverse effects are expected. In clinical studies, adverse effects are rarely reported after oral consumption of the berries and buds of blackcurrants.
Various studies have shown that Ribes nigrum berries are well tolerated up to a dose of 1000 mg three times a day.
InteractionsCaution should be exercised when used simultaneously with antihypertensive agents.
The buds of Ribes nigrum have a diuretic effect and can bring about changes in the electrolytic balance. Therefore caution is advised if one of the following medicines is used: antiarrhythmics, cardiac glycosides, theophylline, diuretics and lithium.
DosageRibes nigrum glycerine macerate: 50 drops 3 times a day.
Ribes nigrum berries extract, standardised at 25% anthocyanins: 2 to 3 times a day 200 to 300 mg based on the type of disorder, the seriousness of the disorder and the patient’s weight.
References: http://www.naturafoundation.co.uk/monografie/Ribes_nigrum_berries.html



How to Grow Marigold Flowers - Urdu Guide

جب شدید حبس اور گرمی کے بعد موسم معتدل ہونا شروع ہوجاتا ہے جھاڑوں کی آمد آمدہوتی ہے تو ایسے موسم میں باغ باغیچوں لانوں اور کیاریوں کی رونق بڑھانے گیندہ پھول آجاتا ہے۔ جو سرمئی شام کے اندھیروں میں خود کو روشن رکھ کر دھندمیں لپٹی صبح و شام کو ایک منفرد خوشبو سے معطر کرکے آپ کو تازگی کا خوشگوار احساس فراہم کرتا ہے۔آج کل گیندہ پھول یعنیMarigoldکا سیزن شروع ہوچکا ہے۔ گیندے کا پھول نہ صرف ہمارے چمن کو خوبصورتی بخشتا ہے بلکہ یہ مشرقی روایات، تہذیب و تمدن میں بھی ایک اہم مقام رکھتا ہے۔ غمی خوشی ہر موقع پر اس پھول کو عقید کے طور پر پیش کیا جاتا ہے۔ شادی، مایوں، رسم حنا، بارات، رخصتی، سیج ، سٹیج، حجلہ عروسی، گھر،درودیوار سب کی رونق بڑھانے کیلئے گیندے کے خوبصورت وخوش رنگ پھول استعمال ہوتے ہیں۔ خواتین شادی بیاہ ، مہندی مایوں اور دیگر تقریبات میں ان پھولوں سے ہارسنگھار کرتی ہیں اور بطور زیور بھی استعمال کرتی ہیں۔ خاص کر مایوں اور مہندی کے موقع پر گیندے کے پھول کے ہار، بالیاں، گہنے دلہن کو پہنائے جاتے ہیں۔ اگر غم کی بات کی جائے تو جنازوں اور قبروں پر بھی اس کو نچھاور کیا جاتا ہے، ہندو اور بدھ مت مذاہب میں اس پھول کو ایک خاص مقدس مقام حاصل ہے۔اُردو کا ایک خوبصورت گانا "سسرال گیندہ پھول"تو آپ نے سن ہی رکھا ہوگا۔ اس پھول کے کئی طبی خواص بھی ہیں۔ جہاں یہ ہماری تقریبات کا اہم جزو ہے وہاں کئی ایک ادویات کا بھی لازمی جزو ہے۔ گیندہ پھول ایک بہترین اینٹی بایوٹک پودا ہے ، جلدی اامراض کیلئے اس کے اجزاء بہترین تصور کئے جاتے ہیں۔ گیندہ پھول میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے دیگر خواص کے ساتھ ساتھ وٹامن سی کی بھرپور مقدار بھی رکھی ہے۔ یہ پھول باریک وپتلی خون کی رگوں کی نشونما کیلئے بھی اہم ہے، اینٹی انفلی میٹری خصوصیات کی وجہ سے ایکزیما اور کئی ایک ایلرجیز میں بھی کارگر ہے۔ اینٹی آکسیڈنٹ خصوصیات کی وجہ سے جلد ، کینسر اور دل جیسی موزی امراض کی ادویات میں بھی استعمال ہوتے ہیں۔گیندے کے پودے میں ایک مخصوص قسم کی خوشبو پائی جاتی ہے اور تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ یہ خوشبو مچھروں کو بھگانے کیلئے کارگر ہوسکتی ہے۔ لانز، صحن، اور دیگر اُٹھنے بیٹھنے والی جگہوں پر ان پودوں کی موجودگی مچھروں کو بھگانے میں مدد گار ثابت ہوسکتی ہے۔
گیندے کا پودا نرسریوں میں آسانی سے دستیاب ہے جبکہ اس کے بیجوں سے بھی اس کو بڑی آسانی سے اُگایا جاسکتا ہے۔ اس کے بیج وزن میں انتہائی ہلکے اور لمبوترے ہوتے ہیں، ان سے بھی مخصوص قسم کی خوشبو ٓآتی ہے جو اس کی پہچان ہے۔ بیج کسی بھی زرعی ؍ پودوں کی دکان سے آسانی سے مل جاتے ہیں۔ گملوں، کنٹینرز یا زمین پر کیاریوں کی مٹی نرم کرکے مناسب فاصلے پر گیندے کے پھول کے بیج بکھیر دیں اور اُوپر سے ہلکی مٹی ڈال دیں ۔ زیادہ گہرائی میں بیج نہ لگائی اور نہ ہی اُوپر سے زیادہ مٹی کی تہہ لگائیں۔ مٹی میں اگر قدرتی کھاد کی مناسب مقدار پہلے سے ڈال دی جائے تو پودے کی نشوونما بہتر انداز سے ہوگی اور پھول بھی خوب صحتمند ہونگے جو اگلے نسل کی بیج کے صحت پر بھی اثرانداز ہوگی۔میدانی علاقوں میں اس کے بیج اگست کے اواخر میں لگائے جاتے ہیں اور ستمبر کے درمیان تک پنیری دوسری جگہ منتقل کرنے کے قابل ہوجاتی ہے۔ بیج لگانے کا سیزن مختلف علاقوں میں اگست، ستمبر کے درمیان مختلف ہوسکتا ہے۔ آج کل پنیری دستیاب ہے۔ گیندے کا پودا نہایت ہی ارزاں قیمت ہے اور تقریباً پانچ دس روپے میں مل جاتا ہے اور جو پودے گملوں میں ہوتے ہیں اُن کی قیمت تھوڑی سی زیادہ ہوتی ہے۔ یہ تقریباً سارا سال سرسبز رہتا ہے اور پھول بھی لگتے رہتے ہیں ۔ اس کے پودے کی اُونچائی چھ انچ اور چار فٹ کے درمیان ہوسکتی ہے جبکہ پھیلاو ۳ فٹ سے ۶فٹ کے درمیان ہوتا ہے۔ اس کا پودا جھاڑی نما ہوتا ، پتے نوکدار اورنازک ہوتے ہیں۔ پتوں کا رنگ گہرا سبز ہوتاہے۔ پھولوں کا رنگ عموماً زرد ہوتا ہے جبکہ نارنجی، ہلکے زرد، گہرے زرد ،میرون، سرخی مائل زرد کے حسین امتزاج میں پائے جاتے ہیں۔ پھولوں کے سائز بھی مختلف ہوتے ہیں اور پھولوں کی پتیاں تہہ دار بھی ہوتی ہیں اور سنگل لیئر بھی ہوتی ہیں۔ یہ تیزی سے بڑھوتری کرنے والے پودوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ و قدرتی طورپر پائے جانے والے پودوں کا سائز بڑا جبکے پھولوں کا سائز چھوٹا ہوتا ہے جبکہ ہائبرڈ کوالٹی کے پودوں کا سائز چھوٹا اور پھولوں کا سائز بڑا ہوتا ہے۔ اُردو میں اُن کو گیندہ پھول، پشاور کے علاقے میں زیڑگُلے، سوات اور ملحقہ علاقوں میں "ہمیشہ" یعنی صدا بہار کے نام سے جانا جاتا ہے جبکہ انگریزی نام میری گولڈ اور سائنسی نام ٹگیٹ ایس پی ہے۔ سوات کے پرانے گھروں کی منڈیروں پر گملوں، ناکارہ برتنوں اور دیگر کنٹینرز میں تلسی (بیسل) کے ساتھ گیندے کا پودا عام طور پر لگایا جاتاتھا۔ اب پکی تعمیرات اور باغبانی کے شوق میں کمی کی وجہ سے منڈیروں پر پودے لگانے کا رواج بھی کم بلکہ ختم ہوگیا ہے۔ نرسریز میں گیندے کے پھول کی اب ہائبرڈ اقسام دستیاب ہیں جن میں پودے کا سائز کم ہوتا ہے ، اُس پر پھول بڑے اور تعداد میں زیادہ لگتے ہیں۔ گھروں کے لانز، پارکس، تفریحی مقامات اور گملوں میں لگائے جاتے ہیں جو گہرے سبز رنگ پر خوبصورت زرد رنگ کے پھول بہار بکھیر رہے ہوتے ہیں وہ ہی گیندے کے پھول ہیں۔ گیندے کے پھول کی طلب کی وجہ سے اس کی تجارتی بنیادوں پر کاشت کی جاتی ہے۔ کاشتکاروں کیلئے یہ آمدنی کا ایک بہترین ذریعہ ہے۔ اس کے پھول جلدی مرجھاتے نہیں ، اس وجہ سے تادیر تازہ رہتے ہیں۔ اس کی فصل تقریباً سارا سال لگی رہتی ہے صرف شدید موسم کے کچھ دنوں میں اس کے پھول کم ہوجاتے ہیں باقی سارا سال اس کے پودے پھول دیتے ہیں ۔ جن کو باغبان؍کاشتکار ایک یا دو دن کے وقفے سے اکٹھے کرکے بڑے بڑے گٹھوں کی شکل میں بازار میں فروخت کیلئے لاتے ہیں اور پھر دوکاندار ان کے خوبصورت ہار اور لڑیاں بنا کر بیچتے ہیں جو ہماری تقریبات کوقدرتی خوبصورتی بخشتے ہیں

Pages