نجم الہدیٰ (عارفہ رانا)

اک اجنبی چاہت



اک اجنبی چاہت۔۔اک آشنا دکھ۔۔زندگی دکھا رہی اب مجھے۔۔جانے اپنا کونسا رخ۔۔۔۔۔
خواب مسلسل میں،،چاہت کا تسلسل ہے،،پھر بھی میں تھک گئی۔۔زندگی اوڑھ کے سونے کی چاہت میں،،نجانے کیوں رک گئی۔۔
اور جب چلی تو۔۔یادوں کے سفر میں،،مٹ گۓ سب ہمراہی،،حرف غلط مانند۔۔اورجو آشنا تھے۔۔ یوں میرے پاس سے گزر گۓ،دیکھ کر بھی اندیکھا کر گۓ۔۔جیسے جانتے نہیں، پہچانتے نہیں۔۔
پھر بس تنہائی ہمسفر تھی۔۔اور میرے سایہ کی مانند۔۔میرے قدموں سے لپٹی۔۔اک اجنبی چاہت۔۔اور اک آشنا دکھ۔۔۔۔



کاش دل اک شجر ہوتا



کاش دل بھی اک شجر ہوتا۔۔۔۔۔کی ہر بدلتے موسم میںگرتے پتوں کی طرحاسکی نرم ٹہنیوں سے بیتی محبتیں، بیتی یادہں،بیتے لمحے، بیتی باتیں،کچھ بے اعتناٰئیاں، کچھ لاپروائیاں،کچھ بے وجہ شناسائیاں،کچھ چھو کر گزرنے والوں کی پر چھائیاں،خزاں رسیدہ ہو کر زمیں پر گرتی،اور مٹی میں مل جاتی،
پھر نئے موسموں میں۔۔۔ نئی چاہتوں کی نرم کونپلیں،نئی الفتوں کے شگوفے،اور خلوص کے گل کھلتے،اور دھیرے دھیرے پورے ماحول کو مہکاتے۔۔اور اسکے گھنیرے سایہ میں پل دو پل،کچھ اجنبی کچھ شنا سا قدم ،آتے رکتے اور چلے جاتے۔۔۔

کاش دل بھی اک شجر ہوتا۔۔۔۔۔۔کاش انسان میں بھی یہ ہنر ہوتا۔۔۔۔

تمہاری یاد




رفتار ماہ سال سے نکل کر بھی،گردش حالات سے نکل کر بھی،تمہارے ساتھ کی شبنمیں سا عتیں،                                           بہت ستاتی ہیں۔۔۔۔                                          تمہاری یاد دلاتی ہیں۔۔۔                                    
ویراں برآمدوں کی رونق،کمرے میں ترتیب سے بکھری چیزیں،ٹوٹے کواڑوں کی دستکیں،                                          بہت ستاتی ہیں۔۔۔۔                                        تمہاری یاد دلاتی ہیں۔۔۔                        



کتابوں میں پھولوں کی خوشبو،امربیل کی شادابی،اور سوکھے پتوں کی ہریالی                                         بہت ستاتی ہیں۔۔۔۔                                        تمہاری یاد دلاتی ہیں۔۔۔                       

لہجے میں کھنکتی جدائی کا خمار،آنکھوں سے چھلکتی اداس شوخیاں،ہونٹو ں سے جھانکتی گیلی مسکراہٹیں،                                        بہت ستاتی ہیں۔۔۔۔                                        تمہاری یاد دلاتی ہیں۔۔۔
خنک ہواؤں کی گرم سر گوشیاں،اداس چاندنی کے گونجتے قہقہے،تشنہ کامی لیے برستی بارشیں،                                        بہت ستاتی ہیں۔۔۔۔                                        تمہاری یاد دلاتی ہیں۔۔۔   
آج پھر اسے دیکھا ہجوم شکستہ دلاں میں،وہی تجھ سا خمیر محبت میں گندھا چہرہ،وہی لب و رخسار وہی آنکھیں جو،،،،،                                             بہت ستاتی ہیں۔۔۔۔                                            تمہاری یاد دلاتی ہیں۔۔۔                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                  

جدائی




زعم محبت میں ،سوچا نہ تھا کبھی ،کہ تم سے جدا ہو کر ،ھم جی پائیں گے  ،مگر دیکھ لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زمیں بھی وہی ہے ،آسماں بھی وہی ہے ،مکیں بھی وہی ہے ،مکاں بھی وہی ہے ،مگر تم نہیں ، کہیں بھی نہیں ،اور ہم تمہا رے بنا جئے جا رہے ہیں،زہر زندگی کا پئے جا رہے ہیں

میرے خواب سارے بکھر گئے





حروف کا جنگل ڈرا رہا ہے،مجھے ذرا اذن بیان دے ۔۔کہ میں کہہ سکوں تیرے روبرومیرے خواب سارے بکھر گئے۔۔۔۔۔
چاہا تھا میں نے ان خوابوں میں کہ,
جگنو چنتے ہیں راتوں میں.. ہاتھوں کو لے کر ہا تھوں میں..
یا پھر رقص عشق کریں,مستی گل کے ساتھ جھومیں..تتلیوں کی سی بے چینی،خود میں سموئے گھومیں۔۔
گھٹاؤں کی دھنک کو بنا کر جھولاھم ان کے ساتھ ہی ہو لیں۔۔۔
یا ساکت پانیوں کی جھیل میں، دیکھیں عکس اپنا۔۔۔اور پھر اس میں مار کر پتھر، دیکھیں رقص اپنا۔۔۔۔
یا پربتوں پر جہاں چھوتا ہے ابر،وہاں سے چرائیں لمس کی نمی۔۔ادا کریں یوں نماز عشق، کہ رہ نہ جائے کوئی کمی۔۔
لیکن سن اے بے خبر۔۔۔۔۔۔۔۔میرے خواب سارے بکھر گئے۔۔
اب تو رہ گئی شعور میں، بس صحرا کی پر شور ہوائیں۔۔جو میرے بکھرے خوابوں کو،مانند ریت اڑائیں۔۔
اور اس طوفانِ بازگشت میں سانسوں کے خیمے اکھڑ گئےمیرے خواب سارے بکھر گئے۔۔۔۔۔۔۔

بارش(ایک خیال)









وہ بارشوں کی دیوانی۔۔۔محبت تھی جس کی کہانی۔۔۔
اک خواہش کر بیٹھی۔۔۔
ہر دم خود کوبوندوں میں بگھونے کی۔۔۔

پھر اس کے اندر بارش ہونے لگی۔۔۔اور اس کی روح کو بگھونے لگی۔۔۔

بلا عنوان





یہ جو بے نام سی اداسی ،گھیرے ہوئے ہے دل کو ،اسے کیا نام دوں۔۔۔۔
یہ جو بے رنگ سے آنسو ،ہیں ما نند باراں برس رہے ،انہیں کیا رنگ دوں۔۔۔۔۔
یہ جو بے ربط سی سوچیں ،بھنور کیے ہیں میجھے  ،انہیں کیسے ربط دوں۔۔۔۔
یہ بے کیف سے لمحے ،جو سایہ فگن ہیں مجھ پہ ،انہیں کیسے سرور دوں۔۔۔
یہ جو بے موسم اداسی ،جو ڈالے ہے دل میں ڈیرے ،اسے کیسے دور کروں۔۔۔۔
یہ جو بے آباد سی ویرانی ،بنائے ہے میری زندگی کو سرائے ،اسے کیسے آباد کروں۔۔۔۔
یہ جو تنہائی کی خوشی،گھیرے رہتی ہے مجمع میں مجھے،اسے کیسے ناشاد کروں۔۔۔
یہ جو زندگی تمھارے بعد ،بلا عنوان ہو گئی ہے ،اسے کیا عنوان دوں۔۔۔۔

نیا سال نئے وعدے



ارے سنو جوانوں اور حکمرانوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ جو تم جشنِ سال نو منا رہے ہو ،کیا خود سے کیے وعدے نبھا رہے ہو ؟؟؟؟کس با ت کی خوشی ، کس بات کا جشن،انداز امارت ہے یہ ٹشن ،نئے سال کے آتے لمحوں کی خوشی مناتے ہوئے،جذبِ جشن میں گم ہوتے ہوئے ،کبھی گزرے خود احتسابی سے کیا۔۔۔۔؟؟؟؟؟وہ جو پچھلے سالِ نو پر کیے تھے دوستوں کے جلو میںوعدے سب بدلنے کے، وہ پورے کیے کیا؟؟؟؟
یا پھر وہ ایفائے عہد کے وعدےاک دکھاوا تھا۔۔۔۔
ارے ناراضی کیسی ، کیسا غصہ ،سنو زرا بتلا ؤ تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے چند سوالوں کا جواب دے کے دکھلاؤ تو،
کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بچہ جو چنتا تھا کو ڑے میں ردی ،جا پایا سکول کبھی؟؟؟؟وہ جو چوک پر بوڑھا بیٹھا تھا کا سہ غریبی تھامےوہ ایک وقت بھی پیٹ بھر روٹی کھا پایا کبھی؟؟؟؟وہ ماں جس کا جواں سال بیٹا بچھڑا تھا نا گہاں دھما کے میںاس کی آنکھوں سے بہتا سیلِ رواں رک پایا کبھی؟؟؟؟وہ جس نے گھر کا چولہا جلانے کو ایندھن کی جگہکر ڈالا ڈگری کو استعمال ، مل پایا کبھی ؟؟؟؟وہ جو اک راہ گیر جو تھا واحد کفیل ، بنا اندھی گولی کا شکار ،اس کا کوئی قاتل مل پایا کبھی؟؟؟؟وہ جس کے بالوں مین زر کے پجاریوں کی وجہ سے چاندی اتر آئیاس غریب کی بیٹی کا رشتہ مل پا یا کبھی؟؟؟؟وہ ساری عمر وطن پر نثا ر کر دی جس نے اور پھر ،کھو گیا گمنامی میں ، وہ ھمارا ہیرو کون تھاجان پایا کوئی؟؟؟؟
خیر چھوڑو ان سب شعور کی باتوں کو، احسا س کے قصوں کو،جن کو سوچیں تو یہ بانٹ دیتے ہیں دل و دماغ کے حصوں کو ،کیا فائدہ یہ سب دھرانے کا ، تم سب تو مست ہو اپنے آپ میں،بھلے آگ لگے سب کو ، بدل جائیں راکھ میں،مناؤ جشن تم آنے والے دنوں کا، کرو نئے وعدے خود سےتم،یہی دستور زمانہ ہے۔۔۔۔۔۔
مگر اگر ملے فرصت تو زرا،میرا اک کام کرنا، اس سال کے اختتام پر میرے سب سوالوں کےجواب سنبھال رکھنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور یہ بھی کہ عذرِ عہد عدولی،زرا اچھا سا نکال رکھنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔




دل


یہ جو خواہش ہوتی ہے ،یہ دل کی سازش ہوتی ہے،جب نہ ملے دل کو من چا ہی چا ہت ،تو دل کی اس حرکت پر ،پھوٹ پھوٹ کر ۔۔۔۔۔
روتی تو آنکھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر اس بات سے بے پرواہ ،پچھلی مسافت کی تھکن بھول کر،یہ نئی خواہشیں چنتا ہے ،پھر ان کےخواب بنتا ہے ،پھر بے وفائی سے چور ،وجود کے بے جان لاشے کو،بے سمت راہوں پہ لے چلتا ہے،اور دل کی اس بے وقوفی پہ ،روتی تو آنکھ ہے،
لیکن پھر بھی یہ باز نہیں آتااس کو صبر کا انداز نہیں آتا
کیوںکہ یہ نادان تو صرف خواہش کرتا ہے،اس کو کیا فرق پڑتا ہے.
 روتی تو آنکھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

زرد پتہ


راہوں میں رک رک کر ۔۔۔۔تکتے ہیں ان درختوں کو۔۔۔۔جن کے پتے ٹوٹ کر گرے۔۔۔۔جدائی میں زرد ہوئے،اور آخر مٹ گئے۔۔۔۔۔۔۔
مگر ان درختوں نے بنا لیےروابط نئے پتوں سےاور راہ وفا میں اٹھنے کی چاہ میںبکھر گئے بچھڑ گئےان کا ذکر کسی فسانے میں نہیں پورے ذمانے میں نہیں۔۔۔۔۔
تم نے بھی وفا نبھائی مجھ سے مگر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میرے وجود کو بنا ڈالا۔۔۔ایسا ہی زرد پتہ،ٹوٹا ہوا ، بچھڑا ہوا،بکھرا ہوا راہوں میں،اور میری سوچوں میں تمہارے نام کی بجائےخا لی پن کی باز گشت رہ گئی۔۔۔۔

کبھی ملیں فرصتیں


کبھی جو تمہیں ملیں فر صتیں ،میرے پاس چلے آؤ۔۔۔۔

یہ گھر ویراں پڑا ہے،دیواروں میں یادوں کے جالے لگے ہیں،حسرتوں کی گرد سے اٹا پڑا ہے،دروازوں کی درزوں سے آتی ،تمناؤں کی روشنی کی کرنیں ،اب بے دم ہونے لگی ہیں اپنا وجود کھونے لگی ہیں

سبھی باتیں جو کہنی ہیںتمہاری بے رخی کی چادر سے ڈھکی ہیں

وہ جو اک آئینہ دکھلاتا تھا عکس تیرا میراوقت کی رفتار سے دھندلا گیا ہے

اک آسیب تنہائی کامیری روح کو کھا گیا ہے

کبھی جو تمہیں ملیں فرصتیں چلے آؤ گزرتے سال کے جا تے لمحوں میں کہ شا ئد کم ہو جا ئیں اس دل کی وحشتیں

خا موشی

بہت خا موشی ہے ،دل کے آنگن میں،
ہوائیں بھی چپ سی ہیں ،فضا ئیں بھی لب بمہر ،دھڑکنیں بھی اب کر تی نہیں شور ،
رات میں دیکھا تھا چاند جو پچھلے پہر کا ،خاموش تھا وہ بھی ،صبح جو ہوئی تو سورج بھی ،چپ چاپ اپنے کام میں لگ گیا ،دھیرے دھیرے رات کا اندھیرا نگل گیا ،
ہوا چلی تو لیکن پتوں کی جھنکار سنائی نہ دی ،پنچھی چہچہانے لگے مگر ان کی آواز میں ،چہکار سنائی نہ دی ۔
اور یونہی دن ڈھل گیا چپ چاپ ،اک دن اور گزر گیا چپ چاپ ،

بنا کسی امید کے بنا کسی آس کے

تیرے بنا






شام ساکن آسمان چپفضا خا موش اور اندھیرا گھپکیسے جلاؤں میں کو ئی شمع سر شام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تیرے بنا۔۔۔
خا ر راہ و پتھر وہی،راستے وہی لیکن منزلیں نہ رہیں ،کٹ رہا ہے لڑ کھڑاتے تنہا میرا سفر ۔۔۔۔ تیرے بنا۔۔۔۔
لوگوں کی بے اعتنائیاں، اپنوں کی بے وفا ئیاں ،اور راہ وفا میں میری آبلہ پائیاں،
مگرپھر بھی چل رہی ہوں۔۔۔  تیرے بنا۔۔۔۔۔
گھر ہے سنسان اور اک مہیب سنا ٹا ،تیری یادوں کے سوا کوئی نہ آتا نہ جاتا ،کن قدموں سے میں جاؤں وہاں ۔۔۔ تیرے بنا۔۔۔
تھامے تھے ملن کے لمحے مظبوطی سے،انہی کے تلےدبے ہیں ارماں تیری بے رخی سے،زندہ محبت کی لاش دفناؤں کیسے۔۔۔۔۔ تیرے بنا۔۔۔

                                                                                                             

آؤ کربلا عام کریں





سنو ذرا۔۔۔۔۔۔۔۔تم کیا سمجھتے ہو۔۔یہ جو ماتم و گریہ زاری ہے۔۔۔یہ جو غمِ اہلِ بیت ہے ، یہ صرف ایک روائیت ہے۔؟؟؟
                                نہیں ایسا نہیں ہے۔۔۔
سوچا جس نے یہ کہ ۔۔۔ غمِ حسیں گزر چکا۔۔ بے درد وقت اپنی چال چل چکا۔۔۔کیا فائدہ اب غم منانے کا۔۔ بیت چکا یہ سب ایک زمانے کا۔۔
             مگر سن اے بے خبر۔۔۔۔۔۔ایسا نہیں ہے۔۔۔۔
آج بھی ظلم ہے ، بربریت ہے۔۔۔آج بھی دیکھو کتنی یزیدیت ہے۔۔۔آج بھی کوچہ کوچہ گلی گلی ،کوئی پاک بی بی ہے بے پردہ کھڑی۔۔۔کسی کا گھر کا گھر اجڑا ہے ،کو ئی اپنوں کے ہجر میں تڑپا ہے۔۔۔دیکھو زرا غور سے صبر کا مجسم ۔تمہارے ارد گرد کوئی اور بھی ہو گا۔۔۔
                  یہاں تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھائی کی محبت میں تڑپتی زینب بھی ملے گی۔۔باپ کے فراق میں سسکتی سکینہ بھی ملے گی۔۔کہیں نہ کہیں اکبر سا لاشہ بھی ملے گا۔۔۔کہیں نہ کہیں اصغر سا پیاسا بھی ملے گا۔۔۔عون و محمد سے جانثار بھی ملیں گے۔۔اسیر زنداں پابہ زنجیر سجاد بھی ملیں گے۔۔۔دیکھو گے زرا غور سے تو وفا کی راہ میں ،کٹے یدِعباس بھی ملیں گے۔۔اور حر جیسے احسا سات بھی ملیں گے۔۔ذوالجناح اور ذوالفقار جیسے مددگار بھی ملیں گے۔۔
            اور سوچو تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہاں اس میدانِ کرب و بلا میںاس تپتے بے آب و گیا صحرا میں۔۔۔شہید کرنے والا بھی مسلماں تھا۔۔شہید ہونے والا بھی مسلماں تھا۔۔
          اور آج بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہے اِک میدانِ کربل سجا ،مرنے والا بھی مسلمان ہے ۔۔۔مارنے والا بھی مسلمان ہے۔۔۔
        لگتا ہے کبھی غور تو نے نہیں کیا۔۔
نوکِ سناں پر بلند پکار رہا ہے حسین۔۔۔جب تک یزیدیت نہ ہو ختم ۔۔۔ مناتے رہو میرا غم۔۔۔میرا درس ۔۔۔۔ انصاف محبت قربانی۔۔۔جب تک ایک بھی یزید ہے باقی۔۔۔اے عاشقانِ اہلِ بیت۔۔۔۔۔ یہی بات ہے پھیلانی۔۔۔میرا عاشق حسین یے اندر ذات ۔۔۔پھر کیوں نہیں سمجھتے میری بات۔۔۔آؤ اس دور کے یزید کا کام تمام کریں۔۔۔آؤ کربلا عام کریں۔۔۔۔۔۔

لہجہ



میرا ہا تھ تھام کر ،اس نے کہا مجھے ۔۔۔۔۔
میں ہمیشہ کے لیے تمھارا ہوں ۔۔۔۔۔۔
پھر کئی لمحے بیتے ،کئی موسم بدلے ،آج پھر بھرا ہے چاندنی سے آسماں ،ہے پھر وہی پیار بھرا سماں ،
آج پھر تھاما ہے اس نے ہاتھ میرا ۔۔۔۔۔
 آج پھر اس نے کہا کہ وہ ہے میرا ۔۔۔۔

مگر وہ یہ نہیں جانتا کہ 


لہجہ بدلنے سے  مفہوم بدل جاتے ہیں۔۔۔۔۔

وہ لمحہ تھا




وہ اک لمحہ تھا جو آکہ گزر گیا۔۔۔۔میرا ہر خواب پھر بکھر گیا۔۔۔۔
تیرا ساتھ تھا ۔۔۔ ہا تھوں میں ہا تھ تھا ۔۔۔راتیں سہانی تھیں ،مسکراتی زندگانی تھی ،ہر شے گنگنا تی تھی ،پیار کی ترنگ میں لہراتی تھی ،
پھر یو ں ہوا ،،،،
زمانے کی ہوا تیز چلی ،ہا تھوں سے ہا تھ چھوٹا ،تیرا حسیں سا تھ چھوٹا ،
 طوفاں کی رات تھی،جدائی کی بات تھی ،میں نے تو صرف تم سے ،پیا ر کی مانگی خیرات تھی ،
مگر اب۔۔۔۔۔۔۔
وہ راتیں ، وہ باتیں ،وہ لمحے،بن گئی ہیں یادیں۔۔۔۔۔

ساتھ





تلخی ایام سے تھک کہ جب بھی گری۔۔۔۔اک خواہش شدت سے بیدار ہوئی ،پھر حسرتوں میں وہ شما ر ہو ئی ،کا ش کہ تم تھام لو ہا تھ ہما را ، گرتے حو صلے کو دو سہارا ،پھر آںکھیں بند کر کے ،تمہیں محسوس کرتی ہوں ،
پھر آہ بھر کے اٹھتی ہوں۔۔۔۔۔
سوچتی ہوں کہ۔۔۔۔۔
کچھ خواب حقیقت بن نہیں سکتے ،میں اور تم کبھی ساتھ چل نہیں سکتے ۔۔۔۔


بنا آگ لگے راکھ





دھواں اٹھا بنا آگ لگے ، چوٹ لگی جو دل پر ،آنکھوں میں کچھ خواب تھے .........  ٹوٹ گئے۔۔۔
زندگی بھرے خوشیوں کے ساحل ،درد کے سمندر میں ڈوب گئے  ،امیدوں کی تتلیوں کے سب رنگ چھوٹ گئے.......
جب ہوش آئی تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پایا خود کو ،ہجومِ شکستہ دلاں میں ،اب ہم بھی ہیں شامل انہی ،نصیبِ حرماں میں ،
اور 
تنہا کھڑے اپنا دل ٹٹولتے ہیں ،کہ اب جا نی یہ حقیقت ،پہلو میں جو دل تھا کبھی ،اب وہا ں راکھ بھی نہ بچی۔۔۔۔۔

زندگی حکائیت ہے




 
زندگی تیرے رنگ ہزار۔۔۔  کو ئی ہے خوش کوئی بے زار۔۔۔کہیں رنگ وآہنگ ۔۔۔کہیں ساز کا سنگ۔۔۔کبھی وصا ل ، کبھی جدائی ،کبھی وفا ر کبھی بے وفائی  ، کبھی چا ہت ، کبھی راحت ،اور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کبھی ہے تنہا ئی۔۔۔۔۔اے زندگی ۔۔۔۔۔۔ تو کبھی سمجھ نہ آئی۔۔۔۔جب چا ہا کو لمحہ ایسا ، کہ جب خو شی سنگ ہو ۔ دل میں امنگ ہو ۔خواب تعبیر ہوں ، لفظ تا ثیر ہوں ،ہا تھ چھڑا ئے تو ہم سے ، دل پہ لگا کر زخم سے ،
ہم پھر بھی چپ رہے ،کہ یہ تیری عنا ئیت ہے ،لب پہ نہ کوئی شکائیت ہے ،
اے زندگی۔۔۔۔۔۔۔۔ تو واقعی حکا ئیت ہے ،یا پھر لمحہ ہے ،جو آکے گزر جا تا ہے ۔۔۔

عشق ایسے نہیں ہوتا




عشق میں ہار کر۔۔۔۔۔۔۔روزنِ دیوار سے دیکھا ما ضی میں تو۔۔۔۔۔یاد آۓ وہ گزرے زمانے۔۔۔۔سب قصے نئے پرانے ۔۔۔۔جب ہوا کی روانی سی بہتی تھی ہنسی ،جب کسی کے دکھ پہ اشک بار نہ ہوتے تھے ،جب کسی کے ناکام عشق پہ ، بے فکری سے کہتے تھے ،یہ عشق تو ایسے نہیں ہوتا ،جتنا تم آسان سمجھتے ہو ویسے نہیں ہرتا ،اس دنیا میں سچا عاشق نہیں ملتا ،دل کا کنول ہر پا نی میں نہیں کھلتا ۔۔۔۔ہم نے سنی ہے جو اس کی کہا نی ،اس کی آبیاری کو ،آنکھوں میں بھرنا پڑتا ہے پانی ،اس میں بہت درد ہے ،اپنے زخم اپنے ہاتھوں کریدنے پڑتے ہیں ،اس کو پا نے کی خا طر ،دوستوں میں دشمں خریدنے پڑتے ہیں ،ہر قدم پہ ہوتی ہے آزمائش،ہر لمحے عشق کی نئی فرمائش۔۔۔۔
اور مجھے جواب ملتا تھا ۔۔۔۔ کہ۔۔۔۔۔۔۔تم جو اپنا دل ھاتھ میں لیۓ پھر رہے ہو ،ایسا محسوس ہوتا ہے ،عشق نہیں ہوا تمہیں ابھی ،ہو جا ئے تو کچھ بھی نہیں رہتا اختیار میں ،نہ جیت میں نہ ھار میں ،سکوں آتا نہں ،نہ بے چینی میں نہ قرار میں ۔۔۔۔
اور میں ہنس کر کہتی۔۔۔۔۔۔چھوڑو دفع کرو اس کمبخت کو ،کیا ملتا ہے اس قصہِ نا پائیدارمیں ،
لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج ہارے ہیں عشق میں تو محسوس ہوا  ،کہ واقعی عشق ایسے نہیں ہوتا۔۔۔جتنا میں آساں سمجھتی تھیویسے نہیں ہوتا۔۔۔

Pages