نجم الہدیٰ (عارفہ رانا)

کوئی تو ہو




کوئی تو ہو جو لمحے بانٹے۔۔۔میری تنہائیوں کے دھاگےکاٹے۔۔۔
دکھوں سے چھلنی وجود کے ،ہر زخم کو اپنی توجہ سے دھوئے۔۔۔میری حسرتوں پہ میرے ساتھ رؤۓ۔۔۔پلکوں کی دہلیزوں سے ستاروں کو چنے۔۔۔دل کی دھڑکنوں کو سنے۔۔۔پھر وہ پھولوں سے راستے سجاۓ۔۔۔۔خو شیوں سے آشنا کرواۓ۔۔۔بادلوں پہ چلنا سکھاۓ۔۔۔ پنچھیوں سا اڑنا سکھاۓ۔۔۔
کوئی تو ہو۔۔۔

جو میری تنہا ئی سے ۔۔۔۔
مجھے آزاد کرواے۔۔۔

آن ملو ہم سے


 رک جا ۓ نا سفر زندگی کا۔۔۔ زندگی کا بھروسہ ہی کیا ہے۔۔۔اک تییرے پیار کے سوا میں نے۔۔۔دل کو دیا دھوکا ہی کیا ہے۔۔۔
خواہشوں کو سراب ہیں ،تنہائیوں کے عذاب ہیں ،دکھ بے شما ر ہیں ،چا ہت کے اثمار ہیں ۔۔۔
سنو ذرا غور سے ،خشک پتوں ک شور سے ،ٹوٹی ڈالیوں کے ڈھیر سے ،گزرتے لمحوں کے ہیر پھیر سے ،سب کہ رہے ہیں تم سے ،آن ملو ہم سے ۔۔۔۔
ڈر ہے مجھے کہ پھر یوں نہ ہو ،تم آؤ اور میں نہ رہوں ،نجانے کون سے پل ،ٹھر جا ئیں میری آنکھوں کی پتلیاں ،ہاتھوں سے نہ چھوٹ جائیں ،سب امیدوں کی تتلیاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

اور پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔سانسوں کی ڈور ٹوٹ جا ۓ۔۔۔۔۔۔آخر زندگی کا بھروسہ ہی کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

پورا چاند



آدھی رات کا پورا چاند ،  مجھ سے باتیں تمھاری کرتا ہے۔۔۔اس کو دیکھوں تو وہ  ، آ نکھیں تمھاری لگتا ہے۔۔۔اور پھر مجھ پہ یوں ،اپنی چاندنی پھیلاتا ہے۔۔۔جیسے تو مجھے ۔۔۔۔۔۔۔ اپنی با ںہوں میں بھرتا ہے۔۔۔اب کے آنا تو اماوس کی رات میں آنا ، یہ چاند تو بہت شرارت کرتا ہے۔۔۔پھر میں اور تم رات بھر تاروں کی باتیں سنیں گے ،پیار کے سپنے بنیں گے ،مگر یاد تو پھر بھی رہے گی ،ہمیشہ مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ رات اور  ،آدھی رات کا پورا چا ند ،تمھارا پیار بھرا ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

محبت خود فریبی ہے

یہ جو تم ہر وقت ، محبت کا راگ الاپتے ہو میر ے سامنے۔۔۔۔جان لو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔محبت اذیت ہو تی ہے۔۔۔۔یہ تم نہیں جا نتے ، یہ میں جانتی ہوں۔۔۔۔میں نے محبتوں کے ، عذاب دیکھے۔۔۔۔سراب دیکھے ، خواب دیکھے ،نارسائی دیکھی ، بے اعتنائی دیکھی۔۔۔۔پل پل پگھلتا دل ، آنکھوں سے بہتا دیکھا۔۔۔زندگی سے بھر پور انسانوں کو ، اس سزا کو سہتا دیکھا۔۔۔۔جسم و جاں و روح کو بے جان کر کے ، محبت میں کسی کی تبا ہی کا اطمینان کر کے ،فتح شکستِ محبت کا جشن منا تے ، انسان دیکھے۔۔۔۔مجھے بتاؤ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کون کہتا ہے محبت زندگی یے ، یہ تو صرف درندگی ہے۔۔۔۔عجب انسان ہو تم ما ن کے نہیں دیتے ، میں کہتی ہوں اجاڑ دیتی ہے ، تم کہتے ہو سنوار دیتی ہے۔۔۔۔دیکھو لوٹ جاؤ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مکاں خا لی پڑا ہے مکیں جا چکا ہے ،اس کی بوسیدہ چھت سے حسرت ٹپکتی ہے ، کڑیا ں اور دروازے یادوں کی دیمک کھا گئی ، صحن میں بکھرے پیپل کے پتے ،وصل کے انتظا ر میں سوکھ گئے ،کتنے موسم گزرے ، یہی ویرانی مجھے بھا گئ ، واپسی کے سب راستے دکھوں کی دھول میں اَٹے ہیں ،کو ئی نہیں جا نتا یہ دن رات کیسے کٹے ہیں۔۔۔۔۔۔بس کرو یہ بحث مجھ سے ، تمھارا میرا کیا واسطہ ، نہیں ملتا کہیں تیرا میرا یہ راستہ۔۔۔۔اور اگر مان بھی لوں تمھاری بات کہ ، محبت اذیت نہیں ،تو یہ خو د فریبی تو ہے۔۔۔۔۔۔۔۔اور سچ ہے یہی ، اچھا ہے جو مان لو تم بھی۔۔۔۔۔۔۔۔

میری عید تم ہو

کسی نے کہا۔۔۔۔۔ عید مبارک ۔۔۔۔یہ سن کہ میں ہنس دی ۔۔۔۔ اور پھر اپنے ھاتھوں کو د یکھا۔۔۔شا ئد کہ اس عید پہ ہو تم سے ملن کی ریکھا۔۔۔مگر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری ہتھلی پہ خواہش کی مہندی ،سوکھ کے بے رنگ ہو چکی تھی۔۔۔حسرتوں کی ٹو ٹی چوڑ یوں کے ٹکڑ ے ،دل کی ویراں دہلیزوں پہ بکھرے ہیں۔۔۔آسما ں کے سارے تارے  ،میر ی پلکوں پہ اترے ہیں۔۔۔اور میں ایسے۔۔۔ڈھونڈوں اپنا چا ند کیسے۔۔۔جس کو دیکھ کر کہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ عید مبارک۔۔۔۔تم کبھی تو آؤ اس ویرانے میں۔۔۔میرے گھر ، میرے ٹھکا نے میں۔۔۔کہ تم کو دیکھوں تو کہوں۔۔۔۔۔ عید مبارک۔۔۔۔چا ہے وہ کو ئی دن ہو۔۔۔کو ئی سماں ہو ،  کوئی پل ہو۔۔۔۔ کیو ں کہ میرا چا ند تو تم ہو۔۔۔۔میر ی عید تو تم ہو۔۔۔۔

یاد یں


میرے ویراں دل میں تیری یادیں،اماوس کی راتوں کو،تاروں کے جلو کی طرح۔۔

 چٹکتی چاندنی میں ،چاند کے چہرے پہ،بادل کی پر چھا ئیں کی طرح۔۔۔

برستے موسم میں،آسماں سے گرتے،موتیوں کی طرح۔۔۔۔

تپتی دوپہروں میں،گھنے پیڑوں کے،چھتنار سائیوں کی طرح۔۔۔

ٹھٹھرتی سردیوں میں،نرم گرم روئی کے،گالوں کی طرح۔۔۔

ھر موسم تیری یادوں کا ھے،کس موسم میں کس پل میں ،اس دل کی ویرانیاں جائیں گی،تیری یادیں کبھی تو ،تیری مجسم صورت بن جائیں گی،اب تو یہ یادیں دیے ھوۓ ھیں سہارا مجھے،انتظا ر کے لمحوں میں،سانسوں کی ڈور کی طرح۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔                       عارفہ رانا

چائے کا کپ

قسمت کا لکھا بدل نھیں سکتے
ہم اور تم مسلسل مل نھیں سکتےمگر پھربھیجب  بھی تم ملے ہوہم بھول گئے ہیںاپنے سارے درد و غمزند گی کے ستمنہ جانے کیوں آج دل میں خواہش ہوئیمیں آنکھیں کھولوں اور تم  ہوسامنےآگے بڑھو مےلو تھامنےدل کی تھم جاۓ بے قراریگھر کا سونا پن گم ہو جاۓچاۓ کے ایک کپ پہپھر ہوں بہت سی باتیںقصے ادھورے پورےآنکھوں کے گوشوں میں چھپی شرارتہونٹوں میں دبی مسکراہٹمگر اک چاۓ کا کپ سامنے رکھےمیں سوچ رہی ہوںکاشابھی آہٹ ہو اور تم آ جاؤکاش کہ تم آجاؤآج پھر بھت اکیلی لگ رہی ھے زندگی

Pages