سائنسیات

آگ لگنے اور پھٹنے سےمحفوظ نئی سالڈا سٹیٹ بیٹری

امریکی ٹیکساس یونیورسٹی کی انجنیئرنگ ٹیم نے ایک نئے بیٹری  سیل کا  ابتدائی نمونا) پروٹوٹائپ  (تیار کیا ہےجو کہ نہ صرف پھٹنے اورآگ پکڑنے سے محفوظ ہے بلکہ یہ آج کی مروجہ لیتھیم آئن بیٹریوں کی نسبت سستی اور دیر پا بھی ہو گی۔خاص بات یہ ہے کہ یہ نئی بیٹری سالڈ سٹیٹ ٹیکنالوجی کے ذریعے تیار کی گئی ہے۔جبکہ لیتھیم آئن بیڑیاں مائع الیکٹرو لائیٹ سے تیار کی جاتی  ہیں۔94 سالہ پروفیسر جون گاڈون
مذکورہ بیٹری ٹیکساس یونیورسٹی کے 94 سال  پروفیسر جوہن گاڈوِن کی زیر نگرانی تیار کی گئی ہے۔بتاتے چلیں کہ یہی صاحب  مقبول ترین لیتھیم آئن بیٹری کے شریک موجد بھی ہیں۔جو کہ  آج کل نہ صرف  موبائل ولیپ ٹاپ بلکہ  برقی گاڑیوں  تک میں استعمال ہو رہی ہیں ۔مگرکثرت استعمال کے باوجود انکی  ایک بڑی خامی یہ ہے کہ کچھ خاص حالا ت میں یہ آگ پکڑ سکتی ہیں۔جو کہ کسی  حادثے کا سبب بن سکتی ہے۔سیمسنگ نوٹ 7 بیٹری پھٹنے کے بعد
لیتھیم بیٹری کی اسی خامی کی وجہ سے سیمسنگ نوٹ 7 کی بیٹریاں پھٹنے اور آگ پکڑے کے کئی  واقعات رونما ہوچکے ہیں،جس وجہ سے سیمسنگ کو کروڑوں ڈالرکا نقصان اٹھانا پڑھا تھا ۔بات سیمسنگ نوٹ 7 تک محدود  نہیں بلکہ  پچھلے دنوں ایپل کے مہنگے ترین آئی فون 7 پلس کے پھٹنے کی وڈیو بھی سامنے آ چکی ہے۔اگرچہ دورانِ تیاری  ان موبائلز میں بیٹری کو محفوظ رکھنے کیلئے بہت سی حفاظتی تدابیر اختیار کی جاتیں ہیں لیکن ماہرین کے مطابق ان تمام تر حفاظتی  اقدامات کے باوجود بھی لیتھیم آئن بیٹری میں  آگ پکڑےیا پھٹنے کی کچھ نہ کچھ امکان ضرور موجود رہتا ہے۔

لیٹھیم بیٹریوں میں مسلسل چارج ذخیرہ (Charging)اور استعمال ہونے (Discharging) کے دوران لیتھیم آئن پر ایک خاص تہہ بنتی رہتی ہےجو بیٹری کی عاجز(Insulating layer) کو نقصان پہچاتی ہے جس وجہ سے شارٹ سرکٹ اور بیٹری  میں آگ لگنے کا خطرہ ہمیشہ رہتا ہے۔
اسکے علاوہ لیتھیم ان  عناصر میں شامل ہے جن کی دستیابی اگلے 100 سال بعد زمین پر انتہائی ناپید ہو چکی ہوو گی۔یہی وجہ ہے کہ بہت سے ادارے  مروجہ لیتھیم آئن  بیٹری ٹیکنالوجی کو پختہ کرنے کے ساتھ ساتھ متبادل ٹیکنالوجی پر بھی کام کر رہے ہیں۔
یہ بھی پڑھیں: منٹوں میں چارچ ہونے والی موبائل بیٹر
اسی تناظر میں ماہرین اس نئی سالڈ اسٹیٹ بیٹری  کو ایک اہم پیش رفت قراردے رہے ہیں۔بیٹری کی موجد انجنئیرنگ ٹیم کے مطابق سالڈ اسٹیٹ  بیٹری  میں  چارج ذخیرہ کرنے کی صلاحیت لیتھیم آئن بیڑی سے تین گناہ ذیادہ ہو گی۔جس وجہ سے مستقبل میں مزید پتلےاور ذیادہ دیرپا بیٹری لائف والے موبائل تیار کیے جائیں سکیں گے۔اس کے علاوہ  الیکٹرک گاڑیاں  بھی انکی  بدولت  ایک مکمل چارجنگ کے بعد ذیادہ فاصلہ طے کر سکیں گی۔
عام استعمال بیٹریوں میں مائع لیتھیم آئن استعمال کیا جاتا ہے جو کہ مثبت اور منفی بروقیروں کے درمیان برقی آئن کی ترسیل کرتا ہے۔اس کے برعکس سالڈ اسٹیٹ  بیٹری میں  گلاس الکٹرو لائٹ استعمال کیے  گئے ہیں جس وجہ  سے ان میں لیتھیم کے علاوہ کسی  بھی الکی دھات (پوٹاشیم،کیلشیم وغیرہ)  کو مثبت برقیرے کے طور پر استعمال کی جا سکے گی ۔کیونکہ باقی الکی گروپ کی دھاتیں لیتھیم کی نسبت سستی ہیں اس لئے یہ بیٹریاں کم قیمت بھی ہو ں گی۔
آج موبائل ، لیپ ٹاپ اور الیکٹرک کاروں کی بڑھتی ہوئی مانگ کی وجہ سے بیٹریوں کی مانگ بھی اپنے عروج پر ہے۔اس لئے بہت سے ادارے نئی  پیشرفت کے دعوے ماضی میں بھی کرتے رہے ہیں مگر دعوں کے برعکس کوئی متبادل  پروڈکت متعارف نہیں کرا سکے۔اس لئے دیکھنا یہ ہےکہ سالڈ اسٹیٹ بیڑی لیتھیم آئن کی اجارہ داری کو چیلنج کر سکے گی یہ پھر ایک دعویٰ تک ہی رہے گی۔

چلتے ہو تو چاند کو چلیے

ہائی سکول کی درسی کتاب میں ابن انشاء کے سفر نامے 'چلتے ہو تو چین کو چلیے ' میں سے ایک اقتباس پڑھا تو  دل میں  چین کی سیاحت کی خواہش پیدا ہو گئی تھی۔ لیکن اب نیا دور ہے اور اس کے تقاضے بھی نئے ہیں۔  یہ چین سے بھی  آگے جانے کا زمانہ ہے بلکہ  اب انسان دوبارہ چاند پر کمند ڈالنے کا سوچ رہا ہے۔
اس تمہید کی وجہ امریکی کمپنی اسپیس ایکس کا  اعلان  ہے کہ وہ دو 'عام شہریوں' کو اگلے سال چاند کی سیاحت کے لئے لے کر جائے گی۔ یعنی اب آپ نے کسی نئی جگہ جانا ہی ہے تو چاند کی سیاحت کیلئے جانے کا سوچیں۔اسپیس ایکس کے سی ای او ایلون مسک 
خاص بات یہ ہے کہ اس مشن میں دو مسافر جن کا ابھی تک نام ظاہر نہیں کیا گیا، کسی بھی طرح کے خلا باز یا سائنسدان  نہیں ہیں۔یہ  ایک نجی سیاحتی سفر میں چاند کے گرد چکر پورا کریں گے۔ اس سفر  کا پہلا حصہ زمین سےخلاء اور پھر وہاں سے اصل ایڈونچر ایک خاص سواری بردارڈریگن کیپسول کے ذریعے چاند کی گرد چکرکی صورت میں مکمل ہو گا۔دوران سفر یہ سیاح چاند پر اتریں گے نہیں، بلکہ اس کے ثقلی میدان میں گردش کے دوران  چاند کو قریب سے دیکھنے کا لطف حاصل کریں گے۔
یہ بھی پڑھیں:مریخ پر اکیلے بے یارو مدد گار خلا نورد کی داستان
اگر سب کچھ توقعات کے مطابق رہا تو اگلے سال کے آخری دنوں میں یہ خلائی سیاح کینیڈی خلائی سٹیشن سے اپنے سفر پر روانہ ہونگے۔یہ وہی تاریخی سٹیشن ہے جہاں سے اپالو مشن کے زریعے ناسا نے چاند کو تسخیر کیا تھا۔اس مشن کے لانچ کیلئے فالکن راکٹ استعال کیا جائے گا جو کہ اسپیس ایکس کا اپنا تیار کردہ ہے۔ چاند تک چلنے کا یہ سفر ایک ہفتے پر محیط ہو گا اور اس دوران خلائی جہاز تین سے چار لاکھ میل کا فاصلہ طے کرے گا۔
اس سفر کے درست اخراجات ابھی ظاہر نہیں کیے گئے مگر اندازہ ہے کہ اس سفر کیلئے ایک انسانی بردار خلائی مشن جتنا خرچ آئے گا۔موازنے کیلئے بتاتے چلیں کہ روسی سویز کیپسول کے ذریعے ایک خلاء باز کو خلا میں لے جانے کیلئے ناسا کو 8 کروڑ ڈالر خرچ کرنے پڑھتے ہیں۔
اس مشن کے متعلق کمپنی کے مالک ایلون مسک بہت پرجوش ہیں ۔ایلون نے خلائی سفرمیں حکومتی اجارہ داری کوختم کرنے اور خلائی تسخیر  عام انسانوں کی دسترس میں لانے کیلئے ہی اس کمپنی کی بنیاد رکھی تھی۔
اس موقع پر ایلون کا کہنا تھا کہ 'ہمارے یہ کلائنٹ اس بات کا مکمل ادراک رکھتے ہیں کہ چاند تک کا خلائی سفر خطروں سے بھرپور ہو گا۔مگر ہماری پوری کوشش اس بات پر مرکوز رہے گی کہ اتنے بڑھے خلائی سفر کیلئے ممکنہ خطراک کو کم سے کم کیا جائے۔
ان کے مطابق اور بھی بہت سے افراد نے خلائی سفرمیں دلچسبی کا اظہار کیا ہے۔اس مشن کی کامیابی کی صورت میں اسے کو وسعت دے جائے گی،جس سے نہ صرف کمپنی کو مالی فائدہ حاصل ہو گا ، بلکہ انسان کی خلائی دسترس کا ایک نیا باب بھی شروع ہو گا۔

نوکیا3310 کی غیر متاثر کن واپسی

نوکیا ایک عرصے کی 'رسوائی 'کے بعد دوبارہ موبائل فون مارکیٹ میں واپسی کر رہی ہے۔سپین کے شہر بارسلونا میں جاری موبائل ورلڈ کانگرس میں نوکیا نے جہاں   اپنی ضد سے کنارہ کشی کرتے ہوئے تین اینڈرائڈ فون متعارف کرائے ہیں۔وہیں  ساتھ ہی کمپنی نے اپنےپرانے صارفین کی ہمدردیاں سمیٹے(اور پرانے گاہک واپس لانے) کیلئے نوکیا 3310کو نئے انداز میں متعارف کرایا ہے۔ 
نیا نوکیا 3310
کیا واقعی نیا نویلا نوکیا 3310 اس قابل ہے کہ اس خریدا جائے، آئیے دیکھتے ہیں۔۔۔
نوکیا 3310  جو کہ آج دوتقریباً دہائی پہلے2000 پیش کیا گیا ۔اسکی 13 کروڑ50 لاکھ  کاپیاں فروخت ہوئیں۔اس بےمثال کامیابی پر نوکیا مزیدعروج پر پہنچی۔لیکن پھر تقریباً ایک دہائی بعد  یہی نوکیا  کا آسمان سے زمین تک آ پہنچی ۔نوکیا کی ناکامی کا باعث آئی فون تھا۔باقی کمپنیوں نے جہاں آئی فون سے مقابلے کیلئے اینڈرائڈ کو اپنا لیا اور اپنے مارکیٹ ویلیو بچانے اور بڑھانے میں کامیاب ہوئیں، وہیں نوکیا نے نئے آپریٹنگ سسٹم کو اپنانے میں پہلے تو تذبذب کا مظاہرہ کیا۔جب آخر کار نئے آپریٹنگ سسٹم کا انتخاب کیا بھی تو مائیکروسافٹ' ونڈوز فون 'کو چنا۔
 مزید پڑھیں:پہلا مائیکروسافٹ فون لیکن۔۔۔اسی مائیکروسافٹ نے نوکیا کو ہی خرید لیا ۔ اوریہ سودا بھی کارگر نہ ہوا،نوکیا کا نام ونڈوز فون کو کامیاب نہ بنا سکااور مسلسل خساروں کے بعد مائیکروسافٹ کومجبوراً نوکیا  ہی کو بیچنا پڑا۔اب ایچ ایم ڈی گلوبل  نوکیا موبائل کی مالک ہے جو کہ نوکیا کی موبائل لیگسی کو کیش کرنا چاہتی ہے، تا کہ نوکیا کو واپس اپنے پیروں پر کھڑا کر سکے۔
اسی سلسلے کی کڑی نوکیا 3310کی شکل میں ہمارے سامنے آئی ہے۔ نیا 3310 دیکھنے میں دیدہ زیب اورنئے ڈیزائن  پر مشتمل ہے۔16 جی میموری ، بلیو ٹوٹھ اور اضافی میموری کارڈ کی گنجائش کے ساتھ اس میں کیمرہ اور رنگین سکرین میں موجود ہے۔اسکی قیمت 49 یورو تقریباً 5500 روپے کی قریب ہو گی۔
ڈیزائن کے علاوہ نئے نوکیا 3310 کی ایک واحد خوبی اس کی بیٹری لائف ہےجو کہ  22 گھنٹے کا ٹاک ٹائم مہیا کر سکتی ہے(اگر آپ اتنے ٹائم  کسی سے بات کرنا چاہیں تو) اس کے علاوہ یہ  ایک مہینے تک فون کو  سٹینڈ بائی پر رکھ سکتی ہے جو کہ بہت ذبردست فیچر ہے۔ 
مزید پڑھیں: موبائل ورلڈ کانگرس 2016
مگر دیکھنا یہ ہے کہ  موبائل آج کے اسمارٹ فونز کا مقابلہ کیسے کر سکتا ہے؟اس میں وائی فائی موجود نہیں۔ اگرچہ اس میں کیمرہ ہے بھی تو صرف 2 میگا پکسل کا۔ ساتھ ہی پرانا 3310 مظبوطی اور پائیداری کی علامت تھا،جسے یار دوست 'کھوتا سیٹ' بھی کہتے تھے،کیانیا 3310 بھی اپنے سے پہلے موبائل کی روایت  پر پورا اتر سکے گا۔یہ ابھی تک سوالیا نشان ہے۔
ذیادہ تر ناقدین کے خیال میں یہ نیا والا  نوکیا 3310 ان بچوں کیلئے ہی ہےجن کو والدین پہلا موبائل خرید کر دے رہے ہیں، یا پھر ان بابوں کیلئے جو اپنا آخری موبائل استعمال کر رہے ہیں۔ اس کے علاوہ باقی عمر کے لوگوں کیلئے مارکیٹ میں ایک سے ایک بڑھ کر فون موجود ہیں۔

اسمارٹ آڈیو بک پلیئر،ایپ ریویو

اسمارٹ آڈیو بک  پلئیر ایک اسمارٹ فون ایپ ہے جس سے آپ اپنےاسمارٹ فون میں موجودصوتی کتب( آڈیو بکس) سننے کیلئے استعمال کر سکتے ہیں۔ اس وقت یہ ایپ  اینڈرائڈ  کیلئے ہی دستیاب ہےاور یہ  دو مختلف ورژن میں موجود ہے۔ایک نسخہ مفت جبکہ دوسرا قیمتاً دستیاب ہے۔اچھی بات یہ ہے کہ مفت ورژن میں بھی تمام فیچرزکو ایک ماہ کیلئے  آزمائشی طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے ۔ایک ماہ کے بعد نسبتاً ایڈاوانس فیچر جن میں آڈیوایفیکٹس ، ساؤنڈ انہانسر اور کرداروں کا خاکہ لکھنے کی سہولت وغیرہ غیر فعال ہو جائیں گے۔ اگر آپ چاہیں تو یہ سب فیچر قیمتاً خرید کر استعمال کر سکتے ہیں۔اسمارٹ آڈیو بک پلئیر سکرین شاٹس
اسمارٹ آڈیو بک پلیئر کا انٹرفیس بہت سادہ ہے ۔پہلی دفعہ انسٹال ہونے کےبعد یہ آپ کی فون میموری اور ایس ڈی کارڈ کو سکین کرتے ہوئے تمام آڈیو فائیلز کو کھنگال کر آپکے سے سامنے لے آئے گا۔لیکن یہ ایپ تمام صوتی میڈیا کوصوتی کتاب ہی سمجھتی ہے۔اس لئے سود مند یہی ہو گا کہ آپ آڈیو کتابیں کسی ایک فولڈر میں اکٹھی کر لیں لیں اور اس کے بعد اسمارٹ آڈیوپلئیر کی پراپرٹینز  ٹیب میں جا کر اسی فولڈر کوسلیکٹ کر لیں جہاں آپ کی کتب موجود ہیں۔یوں ایپ آپ کوصرف آڈیو کتابیں ہی دکھائے گی اوراس میں موسیقی  یا کوئی دوسری آڈیو فائل نہیں موجود ہو گی۔
اس ایپ کومکمل طور پر صوتی کتابیں سننے کیلئے تیار کیا گیا ہے اسلئے صوتی کتب سننے کیلئے اس میں بہت خاص خصوصیات موجود ہیں۔ یہاں موجود کچھ خاص فیچر کا تعارف ضروری ہے۔
آٹو سلیپ رات کو سونے سے پہلے اگر آپ ہیندفری سےکتاب سن رہے ہیں اور اسی دوران سو جاتے ہیں تو خدشہ یہی ہے کہ ساری رات کتاب چلتی رہے گی ،اس لئے ایپ میں سلیپ کافیچر ہے جس میں آپ طے کر سکتے ہیں کہ کتنے منٹوں بعد اگر موبائل کو حرکت نہ دی گئی تو ایپ خود بخود بعد ہو جائی گی۔سونے سے پہلے کتابیں سننے والوں کیلئے یہ ایک بہت عمدہ فیچر ہے۔کرداروں کاخاکہبہت سے ناولوں میں  کچھ کردار آپ  کی پسندیدہ لسٹ میں شامل ہو جاتے ہیں،اور بعض اوقات ایک ہی ناول میں بہت سے مختلف کردار موجود ہوتے ہیں۔ہر کردار کو الگ الگ یاد رکھنے  اسکا تعارت اور اپنے پسندیدکرداروں کےمتعلق اپنے احساسات کو فوری طور پر قلم بندکرنے کیلئے آپ کریکٹرفیچراستعمال کر سکتے ہیں۔بک مارکسبک مارکے فیچر میں آپ کسی بھی کتاب کے اندر کسی اپنے پسندیدہ جگہ  کو نشانذہ کر کے اسے دوبارہ سن سکتے ہیں۔

اب اگر آپ کے پاس کوئی آڈیوبک موجود ہے تو سفر میں اور فارغ اوقات میں اس ایپ کے ذریعے  کتابیں سننا شروع کر دیں،ایک دفعہ آپ کو آڈیوکتابیں سننےکا چسکا پڑھ گیا تو پھر آپکو موسیقی کی بجائے آپکا شوق بن جائے گا۔لیکن یہاں ایک قباحت ہے کہ اردومیں آڈیو بکس ایک تو ہیں ہی بہت کم اوردوسرا جو دستیاب ہیں ان میں بھی ریکارڈنگ کا معیار اور صداکاری کا معیار بہت کمتر ہے۔ مگر ضیاء محی الدین کی پر وجاہت آواز میں اردو ادب کے کچھ مشہور افسانے اور مضامین  یو ٹیوب پر موجود ہیں ،جن کو آپ ایم پی 3 میں کنورٹ کر کے سن سکتے ہیں۔
(میں نے توابھی تک کوئی معیاری اردو آڈیوبک نہیں سنی ہے۔اگرقارئین میں سے کوئی اردو زبان میں دستیاب معیاری آڈیو بک سے آگاہ ہے تو برائے مہربابی اپنے تبصرے میں مجھے اس سے ضرور آگاہی دیجئے گا۔)
مفت آڈیو بکساس لئے اگر آڈیو بکس سننی ہیں تو آپکو انگریزی زبان میں ہی کتابوں کا انتخات کرنا ہوگا۔اس سے ایک تو آپ کا انگریز ی زبان پر عبور بڑھے گا اور دوسرااردو کے مقابلےمیں انگریزی زبان میں مختلف موضوعات پر لاکھوں آڈیوبکس اس وقت دستیاب ہیں۔
Librvox سے آپ تقریباً سینکڑون کلاسیکس میں سے کوئی بھی کتاب مفت ڈواؤن لوڈکرسکتےہیں۔اسکے علاوہ اگر نئی کتابیں سننے کادل کرےتو وہ آڈیبل سے مل تو جائیں گے مگر مہنگی ہوں گی۔اظہار تشکرایک عرصہ پہلے 2012جب محترم شاکر عزیز کے گلوبل سائنس میں شائع مضامین کے  توسط سےاردو بلاگنگ سے آشنائی ہوئی تو بلاگ پڑھنے شروع کیے۔اپنے ایک بلاگ میں شاکر صاحب نے ایک انگریزی آڈیو بک غالباً" ویل آف ٹائم" کا ذکر کیا تھا۔سو بلاگنگ کے بعد انہی کی وساطت سے آڈیو بکس کی دنیا سے بھی روشنائی ہوئی اور میرا تو ان میں ایسا دل لگا ہے کہ اب میرے موبائل میں موسیقی کے بجائے آڈیو بکس کی بھرمار ہوتی ہے۔
اس کے علاوہ محترم عدنان مسعود نے بھی اسی عرصہ میں 52 ہفتے 52 کتابیں کاسلسلہ شروع کیاتھا،وہیں انھوں نے ہنگر گیمزپر اپنا تبصرہ لکھا۔انھیں دنوں اسی فلم پر ہنگرگیمزکی پہلی فلم کی نمائش بھی شروع تھی ، اس لئے انٹرنیٹ پر یہ آڈیوبک مل گئی، اسے سنا توواقعی بہت اچھی لگی اور اس کے بعد پھر یہ سلسلہ چل نکلا۔آج جب اسمارٹ آڈیو بک پلئیر کے بارے میں  لکھنا چاہاتو سوچا یہی بہتر موقع ہے کہ دونوں حضرات کا شکریہ بھی ادا کر دو ، جن کی بدولت اس مفید اوردلسچب مشغلے  سے روشنائی ہوئی۔
مزید پڑھیے:گوگل میپس اب آفلائن سرچ اور نیویگیشن کے ساتھ

موبائل ورلڈ کانگرس 2016

بارسلونا میں اس وقت موبائل  دنیا کی سب سے بڑی نمائش جاری ہے، جس میں  تقریباً تمام مشہور موبائل ساز ادارے اپنی  جدید مصنوعات  کی رونمائی کر رہے ہیں۔ 21 فرووری سے جاری نمائش میں سیمسنگ کی جانب سےگلیکسی ایس 7 اور گلیکسی ایس 7 ایج متعارف کرائے گئے ، جو کہ تمام افراد کی توجہ کا مرکز ہیں۔اس کے  علاوہ بھی تقریباً تمام بڑی  موبائل کمپنیاں اپنی مصنوعات کے ساتھ صارفین کےدل جیتنے کیلئے موجود ہیں۔موبائل ورلڈ کانگرس 2016 کی کچھ اہم جھلکیاں   یہ ہیں۔موبائل ورلڈ کانگرس  2016
سیمسنگ گلیکسی ایس 7 اور ایس 7ایجسیمسنگ گلیکسی ایس بلاشبہ کمپنی کی سب سے اہم  موبائل پروڈکٹ ہے۔پچھلے سال کی طرح اس مرتبہ بھی سیمسنگ نے ایس 7 سیریز کے دوموبائل گلیکسی ایس 7 اور گلیکسی ایس 7 ایج متعارف کرائے ہیں۔لیکن خاص بات یہ ہے کہ اس دفعہ گلیکسی سیریز میں مائیکروایس ڈی سلاٹ موجود ہے ، پچھلے سال یہ سہولت دستیاب نہیں تھی۔اس کے علاوہ دونوں موبائلوں میں بیٹری کی گنجائش میں اضافے کے ساتھ ساتھ کیمرہ، ریم ، سکرین اور پروسیسر میں بہت ذیادہ بہتری پیدا کی گئی ہے۔اس وجہ سے گلیکسی سیریز  کے یہ موبائل سال کے بہترین موبائلوں میں شمار ہونگے۔سیمسنگ گلیکسی ایس 7 اور ایس 7 ایج
ایل جی :جی 5علاوہ جنوبی کوریاہی کی دوسری کمپنی ایل جی نے بھی اپناسب سے بہترین فون جی 5 بھی پیش کیا ہےجو کہ بہت سی اختراعات کی وجہ سے بہت پزیرائی حاصل کر رہا ہے۔جی 5 کے ڈیزائن کو ایل جی نے ازسر نو تیار کیا ہے جو کہ پچھلے تمام جی سیریز کے موبائلوں سے بہت مختلف اور خوبصورت ہے۔یہ جی سیریز کا پہلا مکمل میٹل باڈی موبائل ہے۔
اس کے علاوہ ایل جی جی5  کی سب سے خاص بات ماڈیولر سلاٹ ہے جس کی مدد سے آپ موبائل ایل جی یا کسی تھرڈ پارٹی کی تیار کردہ اضافی پرزہ جات شامل کر سکتے ہیں۔تعارفی طور پر ایل جی نے کیمرہ کنٹرولر ماڈیول اور بہترین معیار کی ساونڈ ریکارڈنگ جیسے ماڈیول شامل ہیں۔
اس کے علاوہ G5 میں  دو کیمرہ لینس موجود ہیں،ایک 16 میگا پکسل نارمل کیمرہ اور دوسرا 8 میگا پکسل کیمرہ سنسر 135ڈگری کے وسیع زاویہ میں تصویر بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔اس کے علاوہ جی 5 میں اس دفعہ ہمیشہ آن رہنے والی سکرین بھی شامل ہے۔ایل جی جی5 کی ماڈیولر سلاٹ
سونی  ایکسپیریا X سیریزسونی نے اس دفعہ ایکسپریا Z کی بجائے  ایک نئی موبائل سیریز ایکسپیریا X اور XAمتعارف کرائی ہیں۔یہ دونوں اقسام مکمل میٹل باڈی اور اعلی معیار کے کیمرہ سینسر کے ساتھ پیش کی گئی ہیں۔ایکسپیریا ایکس میں Z سیریز موبائلوں سے مختلف ڈیزائن میں پیش کی گئی ہے۔ یہ موبائل مکمل میٹل باڈی کے ساتھ کچھ خمدار بھی ہیں تا کہ ہاتھ میں گرفت رکھنا آسان رہے۔
یہ موبائل  فوٹو گرافی کے شوقین حضرات کیلئے خاص طور پر بنایا گیا ہے کیونکہ اس  میں 23 میگاپکسل بیک کیمرہ موجود  ہونےکے ساتھ 13 میگاپکسل فرنٹ کیمرہ بھی موجود ہے۔ایکسپیریا ایکس سیریز

اس کے علاوہ سونی نے نمائش میں ایکسپریا ائیر نامی وائرلیس ہیڈ سیٹ بھی متعارف کرایا ہے ۔ مصنوعی ذہانت سے لیس معاون کی بدولت ایکسپریا ائیر آپ کے آواز کے تابع ہو گا۔آپ اپنی آواز سے کال ملا نے کے ساتھ انٹرنیٹ سرچ ، ٹیکسٹ میسج  بھی بھیج سکتے ہیں۔
ان تمام بڑے ناموں کے علاوہ اس نمائش میں بہت سی چینی کمپنیاں بھی اپنی مصنوعات کے ساتھ موجود ہیں۔ان میں ہواؤے اور زی ٹی ای جیسے نام شامل ہیں لیکن موبائل سازی میں ابھرتی ہوئی چپنی کمپنیاں مثلاً ون پلس ، اوپو ، میزو ، زیامی اور آنر موجود نہیں، یہ کمپنیاں کم قیمت اور معیاری موبائل بنا رہی ہیں اور مغربی منڈیوں میں ان کی مصنوعات سیمسنگ اور سونی کو لئے سخت مقابلہ پیدا کر سکتی ہیں۔

دی ماریشین ؛ مریخ پر اکیلے بے یارو مدد گار خلا نورد کی داستان

دی مارشین اکتوبر 2015 میں نمائش کیلئے پیش کی گئی سائنس فکشن فلم ہے۔ اس فلم میں مریخ پر بھیجے گئے ایک خلائی مشن کو موضوع بنایا گیا ہے،جسے ایک ناگہانی طوفان کی وجہ سے فی الفور ختم کر دیا جاتا ہے۔اس ہنگامی انخلاء کے دوران ایک مریخ نورد 'مارک واٹنی ' ایک حادثے کا شکار ہو کر بے ہوش ہو جاتا ہے اوراسکا باقی ساتھیوں سے ریڈیو  رابطہ بھی ٹوٹ جاتا ہے ۔طوفان کی سنگینی کی وجہ سے خلائی  ٹیم مارک واٹنی کو مردہ سمجھ کر مریخ پر اکیلا چھوڑ کر واپسی اختیار  کر لیتی ہے۔

دی ماریشین، فلم پوسٹرفلم کی کچھ کہانی۔۔۔لیکن ۔۔۔مارک اس حادثے میں شدید زخمی ہو کر  بے ہوش ضرور ہو تا ہے مگر زندگی کی بازی نہیں ہارتا۔ہوش میں آنے کے بعد اسے مریخ جیسے بے آب و گیاہ ،سنسان اور ویران سیارے پر زندہ رہنے کیلئے جدو جہد کرنی پڑھتی ہے۔مگرخاص بات یہ ہے کہ یہ جدوجہد دوسری مصالحہ سائنس  فکش فلموں کی طرح ایک انتہائی ترقی یافتہ ، بھیانک اور انسان دشمن مریخی مخلوق کی بجائے مریخ کے انتہائی شدید ماحول،آکسیجن سے عاری فضا، خوراک کی کمی   اور بنجرزمین کے ساتھ ہوتی ہے۔

ایسا سیارہ جس پر زندگی کیلئے حالات انتہائی غیر موافق ہیں وہاں امید کی واحد صورت زمین سے ناسا(NASA) کے ریسکیو مشن کی آمد ہے۔جبکہ مسئلہ یہ ہے کہ زمین پر کسی کو مارک کے زندہ نچ کا علم نہیں اور مریخ پر  ترتیب شدہ اگلا خلائی مشن 4 سال ترتیب دیا گیا ہے۔ ان  حالات میں  مارک واٹنی پر یہ بےرحم حقیققت واضح ہوتی ہے کہ مریخ پرمرنے والا پہلا انسان مارک خور ہی  ہوگا۔ لیکن خود کو حالات کے دھارے پر چھوڑنے کےبجانے وہ حالات سے لڑنے کا فیصلہ کرتا ہے۔

سیارہ مریخ پر ناسا کے  ایڈوانس خلائی پروگرام کی بدولت واٹنی کے پاس  رہائش کیلئے ایک جدید خیمہ ، ساتھی عملے کی خلائی سوٹ اور تحقیقی مقاصد کیلئے استعمال ہونے والی مریخی گاڑیاں تو دستیاب ہوتی ہیں  لیکن مریخ پر زندہ رہنے کیلئے  خوراک اور پانی  انتہائی کم مقدارمیں  موجود ہوتے ہیں ۔

یہاں واٹنی کو  مریخی اسٹیشن پر موجود اشیاء کو استعمال کرتے ہوئے  اپنے  لئے آلو اگانا پڑھتے ہیں ، اس کے ساتھ ہی آلوؤں فصل اور ایک لمبے قیام کیلئے اسے  ہائیڈوجن کو جلا کر پانی بھی حاصل کرنا پڑھتا ہے۔لیکن ان سب کے باوجود  زندہ زمین پر واپسی کیلئے اس کو زمین پر موجود ناسا کی خلائی اڈے سے رابطہ کرنا بہت ضروری  ہوتا ہے اور  وہاں موجود مریخی اڈے سے زمین  رابطے کیلئے کوئی زریعہ موجود نہیں ہوتا۔اس مقصد کیلئے مارک کو کلومیٹر دور موجود ایک مریخی کھوجی "پاتھ فائینڈر" کو تلاش کرنا پڑھتا ہے۔

اسی اثناء میں مریخ  کے گرد گردش کرنے والے مصنوعی سیارچوں سے لی گئی تصویروں کی بدولت ناسا کو بھی مارک کے زندہ  ہونے کا علم ہو جاتا ہے ،لیکن ناسا کے پاس بھی مارک واٹنی کے ساتھ رابطے کا کوئی طریقہ موجود نہیں ہوتا۔ اس کے  بعد  فلم میں ایک طرف  زمین پر مارک کو بچانے اور زندہ کوششون واپس  لانے کیلئے کوششوں کا ذکر ہے تو دوسری طرف مریخ پر مارک کی انتہائی مشکل حالات میں زندہ رہنے کی جدجہد دکھائی گئی ہے۔جبکہ تیسری جانب واٹنی کے ساتھ مشن پر جانے والی ٹیم کی  اسے بچانے کیلئے تگ و دو اور قربانی آپ کو فلم کے اختتام تک سکرین سے نظریں ہٹانے کا موقع نہیں دیتی۔
کچھ ذکر کتاب کا۔۔۔فلم کی کہانی اینڈی وئیر کے ایک اسی نام سے لکھے گئے ایک ناول سے ماخود ہے اورناول نگار فلم کے سکرپٹ میں بھی شریک لکھاری کی حثیت سے شامل رہے ہیں۔اینڈی وئیر کا یہ ناول "دی ماریشین" انکی آنلائن ویب سائٹ پہ  ایک عرصہ موجودرہا اور اس کو بہت پسند کیا گیا بعد ازاں 2014   میں یہ  کتابی صورت میں شائع ہوا ۔ اصل زندگی کے قریب تر مریخی  کی منظر کشی کی وجہ سے اسے بے پناہ مقبولیت حاصل ہوئی اور اسی وجہ سے اس کے کہانی کو پردہ سکرین پر پیش کرنے کیلئے چنا گیا۔
فلم کاسٹ اور دیگر عملہفلم  میں نا مصائب حالات میں ہار نہ ماننے والے خلانورد' مارک واٹنی' کا کردار مشہور اداکار میٹ ڈیمن نے  نہایت خوبصورتی سے ادا کیا ہے۔اپنی پرفارمنس سے میٹ ڈیمن نے ثابت کیا ہے کہ سرخ سیارے پر  ایک کے  تنہا مگرباہمت اور مستقل مزاج خلا باز کے کردار  کیلئے  ان سے بہتر کوئی اور انتخاب نہیں ہو سکتا تھا۔

فلم کے ڈائکٹر مشہور رڈلی سکاٹ ہیں جوکہ "بلیک ہاک ڈاؤن "، "گلیڈی ایٹر" اور" کنگڈم آف ہیون" جیسی یادگار فلمیں بنا چکے ہیں۔دی ماریشین ان کی بہترین فلموں میں ایک اور شاندار اضافہ ہے۔ اس فلم میں انھوں نے بہت خوبصورتی کے ساتھ نہ صرف 'سرخ سیارے' یعنی مریخ کے ماحول کو پیش  کیا ہےبلکہ اس کے ساتھ خلائی جہازوں اور راکٹ لانچر کے ذریعےسفر کو حقیقی زندگی کے قریب تر انداز میں پردہ سکرین پر پیش کیا ہے۔
باکس آفس کارکردگی اور پزیرائیاس فلم کی تیاری پر 108 ملین ڈالر لاگت آئی اور اس کو 2 اکتوبر 2015 میں نمائش کیلئے پیش کیا گیا۔فلمی شائقین کی طرف سے فلم کو زبردست رسپائس ملا اور دنیا بھر میں اس نے 614 ملین ڈالر کا برنس کیا۔
باکس آفس پر ہٹ ہونے کے  ساتھ فلم ناقدین کو بھی پسند آئی اور اسی وجہ سے آسکر 2016 میں اس فلم کو سات مختلف کیٹیگریز میں ایوارڈ کیلئے نامزد کیا گیا جن میں بہترین لیڈ رول، بہترین  بصری اثرات اور سال کی بہترین فلم جیسی اہم شامل ہیں۔

مزید سائنس فکش ریویوز:  1۔ گریوٹی      2۔  انٹرسٹیلر

چھ سادہ طریقوں سے اردو کے فروغ میں حصہ لیں

اردو ہماری قومی زبان ہونے کے ساتھ ملک بھر میں رابطے کا واحد ذریعہ بھی ہے۔ اس وجہ سے اردو کی ترقی اور ترویج کی ذمہ داری ریاست کے ساتھ ہم شہریوں پر بھی عائد ہوتی ہے۔ حال ہی میں عدالت عظمیٰ نے اردو کو دفتری زبان قرار دینے کے لیے ایک عدالتی حکم نامہ بھی جاری کیا تھا مگر اس پر ابھی تک قابل ذکر کام نہیں ہو سکا۔ دفاتر کے علاوہ انٹرنیٹ پر اردو زبان میں قابل ذکر مواد صرف نیوز ویب سائٹس کی حد تک ہی ہے، یہاں تک کہ حکومت پاکستان کی سرکاری ویب سائٹ بھی اردو میں دستیاب نہیں، جبکہ دنیا کے ہر ملک کی سرکاری ویب سائٹ اس کی قومی زبان میں موجود ہے۔ یہاں ریاست کی بے حسی کا رونا رونے کے بجائے ہمیں کچھ عملی کام کرنے کی ضرورت ہے۔ ایک عام شہری کی حثیت سے ہم اردو کے فروغ اور اس کو دیگر عالمی زبانوں کے ہم پلہ بنانے کے لیے باآسانی اپنا کردار ادا کر سکتے ہیں۔ انٹرنیٹ کے پھیلاؤ کی وجہ سے اردو کا آن لائن فروغ ان چھ طریقوں سے باآسانی ممکن ہے۔ یقیناً بہت سے قاری ان سے واقفیت رکھتے ہوں گے مگر انہیں غیر اہم سمجھ کر نظر انداز کر دیتے ہیں۔1: اپنے کمپیوٹر اور اسمارٹ فون میں اردو نصب کریںاردو کے آن لائن فروغ کے لیے سب سے پہلا قدم اپنے ذاتی کمپیوٹر یا اسمارٹ فون میں اردو کی بورڈ کی انسٹالیشن ہے تاکہ آپ کسی بھی جگہ اردو ٹائپ کرنے کے قابل ہو سکیں۔ اگر آپ ونڈوز آپریٹنگ سسٹم استعمال کر رہے ہیں تو ونڈوز 8 اور 10 میں اردو کی سپورٹ پہلے سے موجود ہوتی ہے، آپ نے صرف لینگوئج آپشنز میں جا کر اسے فعال کرنا ہوتا ہے۔ لیکن اگر یہ آپ کو مشکل محسوس ہو تو گھبرائیے نہیں، بلکہ انٹرنیٹ سے "پاک اردو انسٹالر" اتار کر نصب کر لیں۔ اس سے آپ کو اردو لکھنے کے لیے 'ان پیج' جیسے سافٹ وئیر کی ضرورت نہیں رہے گی، بلکہ آپ مائیکروسافٹ آفس اور گوگل سرچ بار تک ہر جگہ اردو لکھ سکتے ہیں۔پاکستان میں فروخت ہونے والے بہت سے موبائل فونز اور آئی فون میں اردو سپورٹ پہلے سے موجود ہوتی ہے۔ اگر آپ کے اینڈرائیڈ سیٹ میں اردو کی بورڈ موجود نہیں تو ایپ سٹور سے 'ملٹی لنگ کی بورڈ' ڈاؤن لوڈ کر لیں اور پھر اس کے ساتھ اردو زبان کا پلگ ان نصب کرنا ہوگا۔ اس کے بعد آپ اپنے اینڈرائیڈ ہینڈ سیٹ میں بھی ہر جگہ باآسانی اردو لکھ سکتے ہیں۔2: انٹرنیٹ سرچ اردو میںاپنے موبائل/کمپیوٹر پر اردو کی بورڈ نصب کرنے کے بعد اس کا سب سے مؤثر استعمال یہ ہوگا کہ آپ گوگل، یاہو یا بنگ، کوئی بھی سرچ انجن استعمال کریں تو سرچ باکس میں رومن کے بجائے اردو زبان استعمال کریں۔ اگر آپ نے پہلے انٹرنیٹ کی تلاش میں اردو استعمال نہیں کی تو سرچ رزلٹس سے ظاہر ہونے والے مواد کی تعداد سے حیرت ضرور ہو گی۔ اس کا ایک فائدہ تو یہ ہے کہ سرچ رزلٹس اردو میں ہونے کی وجہ سے آپ آسانی سے معلومات حاصل کر سکتے ہیں اور دوسرا فائدہ براہ راست اردو کو ہوگا کیونکہ اردو میں جتنی زیادہ سرچ بڑھے گی اتنے ہی زیادہ ادارے اردو میں معلومات مہیا کرنے کی کوشش کریں گے۔3: پیغامات اور سوشل میڈیا پوسٹیں اردو میںآجکل اردو داں طبقہ سوشل میڈیا اور ذاتی پیغامات میں رومن اردو کا استعمال کرتا ہے، جس کے لیے کوئی باضابطہ قواعد نہ ہونے کی وجہ سے اردو زبان کا معیار مسلسل زوال پزیر ہے۔ اپنے موبائل/کمپیوٹر پر اردو میں انٹرنیٹ سرچ شروع کرنے کے بعد جیسے ہی آپ اردو ٹائپنگ میں روانی حاصل کریں، اپنی فیس بک اور ٹوئٹر پوسٹس کے ساتھ دوستوں سے پیغامات کے تبادلے میں اردو کا استعمال کریں۔4: اردو وکی پیڈیا پر لکھیںفرض کیا کہ آپ نے ہماری پہلی دو گزارشات مان لیں ہیں اور آپ نے انٹرنیٹ پر تلاش اردو میں شروع کر دی ہے، تو پھر نتائج میں آپ کا واسطہ سب سے زیادہ اردو وکی پیڈیا سے پڑے گا۔ اس وقت اگرچہ اردو وکی پیڈیا پر ایک لاکھ سے زیادہ مضامین موجود ہیں، لیکن ان میں سے اکثریت کا معیار وکی پیڈیا پر دوسری عالمی زبانوں میں موجود مضامین کے مقابلے میں بہت کمتر ہے۔ اس لیے آپ اپنے فارغ وقت میں یہاں پر موجود مضامین کی نوک پلک کے ساتھ ان میں موجود مواد میں اضافہ کر سکتے ہیں۔ یہ آپ کے وقت کا بہترین مصرف ہوگا اور ساتھ ہی مختلف موضوعات پر آپ کی اپنی معلومات میں بھی بے پناہ اضافے کا باعث بنے گا۔5: گوگل ٹرانسلیٹ کی مدد کریںوکی پیڈیا پر مضامین کے بعد اردو کی ترویج کی سب سے اہم جگہ گوگل ٹرانسلیٹ ہے۔ گوگل ٹرانسلیٹ مشینی ترجمہ کرنے کی ایک ہمہ گیر ویب سائٹ ہے جہاں آپ دنیا کی تمام بڑی زبانوں کا ایک سے دوسری میں ترجمہ کر سکتے ہیں۔ لیکن اس مشینی ترجمے کے لیے گوگل کو پہلے سے ایک زبان سے دوسری زبان میں ترجمہ کی گئی فائلیں درکار ہوتی ہیں۔ یہ ترجمہ شدہ فائلیں جتنی زیادہ ہوں گی اور ترجمے کا معیار جتنا اچھا ہوگا، ان دو زبانوں کے لیے گوگل ٹرانسلیٹ اتنا ہی بہتر ترجمہ کر سکے گا۔ اس لیے اگر آپ اردو کے ساتھ کسی اور زبان مثلاً انگریزی، فارسی، عربی یا ہندی پر عبور رکھتے ہیں تو گلوگل ٹرانسلیٹ پر جائیے اور گوگل ٹرانسلیٹ کمیونٹی کا حصہ بن کر چھوٹے چھوٹے جملے ترجہ کر کے حسبِ توفیق اردو کی ترویج میں اپنا حصہ ڈالیے۔6: اپنا اردو بلاگ لکھیںاگر آپ اردو ٹائپنگ میں روانی رکھتے ہیں اور اپنے خیالات اردو داں طبقے تک پہنچانا چاہتے ہیں تو اس کے لیے سب سے آسان راستہ اردو بلاگ ہے۔ بلاگ ایک آن لائن ذاتی ڈائری کی طرح ہے جس میں آپ اپنی خواہش اور مرضی کے مطابق کسی بھی موضوع پر لکھ سکتے ہیں۔بلاگ لکھنے کے لیے آپ کو بہت سی مفت ویب سائٹس مل جائیں گی جن میں سب سے مشہور بلاگر ڈاٹ کام اور ورڈ پریس ڈاٹ کام ہیں، جن میں اردو کی مکمل سپورٹ موجود ہے۔ اس کے علاوہ اگر آپ چاہیں تو حالات حاضرہ یا پاکستانی معاشرے کے بارے میں آن لائن اردو نیوز ویب سائٹس پر بھی بلاگ لکھ سکتے ہیں، جس سے آپ کی تحریر زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچ سکے گی۔ 
نوٹ: یہ مضمون سب سے پہلے ڈان اردو میں شائع ہوا۔ 

گوگل سیلف ڈرائیونگ کارکیلئے قانونی راستے ہموار

ایک عرصہ سے سیلف ڈرائیونگ کاروں کی تیاری اور اس میدان میں مختلف کمپنیوں کی طرف سے ہونے والی پیش رفت خبروں کا حصہ ہے۔ لیکن سیلف ڈرائیونگ گاڑیوں کی سڑکوں پرآمد اور کمرشل دسیتابی کے حوالے سے 'گوگل کار' باقی حریفوں پر بازی لے گئی ہے۔سٹرکوں اور ہائی ویز کے لئے اصول ضوابط تیار کرنے والے امریکی ادراے"بیشنل ہائی وے ٹریفک سیفٹی انڈمنسٹریشن" نے گوگل کار کو انسانی ڈرائیور کے ہم پلہ قرار دینے کی منصوبہ بندی کر لی ہے۔اس طرح  گوگل کی بغیر سٹیرنگ وییل اور بریک و سپیڈ پیڈل  سے عاری گوگل کار  کی سڑکوں پر آمد کی راہ ہموار ہو گی۔گوگل سیلف ڈرائیونگ کار،جس میں سٹیرنگ وہیل اور بریک اور سپیڈ پیڈل موجود نہیں۔
اس سے پہلےقانون کے مطابق کوئی بھی کار بغیر"انسانی  ڈرائیور "کے کسی بھی ہائے وے یا سڑک پرچلنے کی اہل نہیں تھی، مگر امریکی ادارے کےسربراہ کا کہنا ہے کہ  ٹیکنالوجی  میں تیز رفتار اضافے کی وجہ سے اب صورتحال پہلےسے بہت مختلف  ہو چکی ہے۔ اسی لئے ہم مروجہ  قوانین اور معیارات  میں اضافہ و تبدیلیاں کرنے جا رہے ہیں۔ 
مزید پڑھیں:آڈی کی نئی کار 900 کلومیٹر کاسفر بغیر ڈرائیور کےکرنے کو تیار
انکا  مزید کہنا تھا کہ "اگر کسی کار کو ڈرائیو کرنے کیلئے انسانی ڈرائیور کے متبادل کوئی سسٹم نصب ہو تو ہم اسی خودکار سسٹم کو کار کا قانونی ڈرائیور قرار دیں گے۔کیونکہ گاڑی کی باگ دوڑ اس  میں موجود سواری کی بجائے  خود کار سسٹم کے کنٹرول میں ہوتی ہے۔"
سیلف ڈرائیونگ کاروں کیلئے مثبت پیش رفتاس پیش رفت کے بعد گوگل اپنی  سیلف ڈرائیونگ کار جس میں روایتی گاڑیوں کے برعکس کوئی بھی سٹیرنگ یابریکنگ و سپیڈ پیڈل نصب نہیں  کو شاہراوں پر لانے سے ایک قدم مزید قریب ہو گیا ہے۔ان تمام قانونی تبدیلیوں کے بعد گوگل کار امریکہ میں رائج وفاقی موٹر گاڑی کے حفاظتی معیارات (Federal Motor Vehicle Safety Standards) کے ٹیسٹ میں شامل ہونے کی اہل ہو جائے گی اور ٹیسٹ میں کامیابی کے بعد گوگل کار امریکہ بھر کی سڑکوں پر چلنے کیلئے قانونی طور پر منظوری حاصل کر سکے گی۔
یاد رہے کہ دنیا بھر میں بہت سے اداروں کی جانب سے سیلف ڈرائیونگ کاروں کی تیاری  کی کوششیں ایک عرصہ سے جاری ہیں ، اسی کو مد نظر رکھتے ہوئے  جنوری 2016 میں سیلف ڈرائیونگ گاڑیوں کی  سڑکوں پر آمد کے حوالے سے اصول و ضوابط اور حفاظتی معیارات وضع  کرنے کیلئے امریکی حکومت نے 4 ارب ڈالرکی خطیررقم مختص کی تھی۔
 تنقیدبہت سے ناقدین نے سیلف ڈرائیونگ گاڑیوں کو قانونی طور پر ڈرائیونگ کے قابل قرار دینے کیلئے جاری پیش رفت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ان میں سے ایک کیلیفورنیا میں موجو دڈیپارٹمنٹ آف موٹر وئیکلز کے سربراہ بھی شامل ہیں جن کا ماننا ہے کہ "ہر کار میں ایک انسانی ڈرائیور ہر صورت میں موجود ہوتا چاہیے۔"  انکے ردعمل میں  گوگل کا کہنا ہے کہ اس طرح کابیان سیلف ڈرائیونگ گاڑویوں کی قانون سازی  کیلئے پہلے سے ہی مبہم اور غیر واضح  صورتحال کو پیچیدہ کرنے کا باعث بنے گا۔مزید پڑھیں:نیویارک انٹرنیشنل آٹو شو 2015

وٹس ایپ کی بے پناہ مقبولیت اور کچھ دلچسب حقائق

اگر آپ موبائل پر انٹرنیٹ  استعمال کرتے ہیں اور خاص طور پر اگر اسمارٹ فون کے مالک ہیں  تو لازمی طور  آپ وٹس ایپ کے صارف بھی ہونگے۔وٹس ایپ  نے ایک کراس پلیٹ فارم میسجنگ سروس  کی حثیت سے اپنے سفر کاآغاز کیا اور تقریباً ہر موبائل پلیٹ فارم پر دستیاب ہونے کی وجہ سے یہ آج ہر موبائل صارف کی ضرورت بن گئی ہے۔وٹس ایپ کو استعمال کرتے ہوئے صرف انٹرنیٹ کنکشن کے زریعے  آپ کسی بھی وٹس ایپ صارف  کے ساتھ ٹیکسٹ میسج، تصاویر ،وڈیوز اور وائس کال کا  فوری تبادلہ کر سکتے ہیں۔یہاں ہم اس انتہائی مقبول انسٹنٹ میسجنگ سروس کے بارے میں کچھ دلچسب حقائق بیان کرتے ہیں۔وٹس ایپ : سب سے ذیادہ استعمال ہونے والی میسجنگ ایپ1۔ 19 ارب ڈالر میں فیس بک کو فروختگذشتہ سال فروری 2014 میں وٹس ایپ کی مقبولیت کی وجہ سے فیس بک نے اس کو 19 ارب ڈالر کی ناقابل یقین قیمت میں خریدلیا تھا۔ 19 ارب ڈالر کتنی بڑی قیمت ہے ؟ اسکا اندازہ اس بات سے لگا لیں کہ نوکیا جیسی معروف کمپنی کا موبائل ڈویژن مائیکروسافٹ نے تقریباً ساڑے 7 ارب ڈالر میں خریدا تھا، اسکے علاوہ گوگل نے ایک اور موبائل ساز ادارے مٹرولا موبلیٹی کو صرف پونے 3 ارب ڈالر میں چینی کمپنی لینوو کے ہاتھ بیچا تھا۔اسی وجہ سے وٹس ایپ کی فروخت ٹیکنالوجی کی دنیا کی آج تک کی سب سے مہنگی قیمت میں ہوئی ہے۔وٹس ایپ اب فیس بک کی ملکیت ہے۔2۔ ایک ارب فعال صارفیناس ماہ وٹس ایپ نے اعلان کیا ہے کہ وٹس ایپ کے فعال صارفین کی تعداد ایک اارب سے تجاوز کر چکی ہے۔یعنی دنیامیں ہر 7 میں سے ایک آدمی کےپاس وٹس ایپ کا اکاؤنٹ موجود ہے۔یہ بات دلچسبی سے پڑھی جائے گی کہ ایک سال پہلے کمپنی نے 50 کروڑ صارفین حاصل کرنے کا سنگ میل عبور کیا تھا۔اس کا مطلب یہ ہوا کہ صرف ایک سال میں وٹس ایپ پر 50 کروڑ افراد نے اکاؤنٹ بنایا ہے یعنی اس ایپ کی مقبولیت مزید تیزی سے بڑھ رہی ہے ۔3۔روزانہ 42 ارب پیغامات کی ترسیلوٹس ایپ کے مطابق اس ایپلیکیشن کے صارفین روزانہ 42 ارب میسجز کا تبادلہ کرتے ہیں یہی نہیں بلکہ وٹس ایپ کے پلیٹ فارم کے ذریعے ہر 24 گھنٹوں میں ڈھائی کروڑ وڈیوز بھی ایک دوسرے سے شئیر کی جاتی ہیں۔4۔ بالکل مفت سروسوٹس ایپ کی خاص بات یہ ہےکہ اب یہ سروس بالکل مفت دستیاب ہے۔ کچھ عرصہ پہلے تک اس سروس کی فیس صرف ایک ڈالر سالانہ تھی مگر کمپنی نے جنوری 2016 سے وہ بھی ختم کر دی ہے اور اب ہر صارف زندگی بھر بغیر کسی فیس اور اشتہارات کی جھنجٹ کے وٹس ایپ استمال کر سکتا ہے۔5۔ وٹس ایپ وائس کالوٹس ایپ نے کتوبر 2014 میں مفت وائس کال فراہم کرنے کی سروس کا آغاز کیا ہے اور بہت سے لوگوں کیلئے اب یہ فون کال کا متبادل ہے اورمفت انٹرنیٹ وائس کال فیچر کی وجہ سے یہ مائیکروسافٹ کی مقبول عام سروس "سکائپ" کے بالمقابل بھی آ چکی ہے۔5۔ بڑھتا ہوا مقابلہگرچہ وٹس ایپ بین الاقوامی طور پر سب سے ذیادہ استعمال ہونے والی میسجنگ سروس ہے لیکن اس کے باوجود بہت سے ملکوں مقامی میسجنگ ایپس کی حکمرانی ہے،جیسا کہ میسجنگ ایپ"    وی چیٹ" کے چین میں 50 کروڑ صارفین ہیں۔ اسی طرح "لائن " جاپان جبکہ" کاکئو ٹک "کوریا میں مقبول ترین میسجنگ ایپس ہیں۔6۔ پیسے بنانے کی نرم پالیسیوٹس ایپ میں دیگر ایپس کی طرح سبسکرپشن فیس،اشتہارات یا سٹکرز بیچ کر پیسے نہیں کمائے جاتے بلکہ اس کی ایک ڈالر سالانہ قیمت کو بھی وٹس ایپ  جنوری 2016  سے  ختم کر دیا ہے یوں یہ اب ایک بالکل مفت سروس بن گئی ہے۔کمپنی کے بانی کم جان قوم کا کہنا ہے کہ " ہماری کوشش ہے کہ ہر انسان کو قابل بھروسہ اور کم خرچ سروس کی زریعے دنیا بھر سے رابطہ رکھنے کے قابل بنایا جائے۔"
7۔آغاز اور فروخت کی دلچسب کہانی وٹس ایپ کے بانی جان کوم اور برائن ایکٹن نے 2007 میں یاہو میں ملازمت سے استعفیٰ دیا اور اسکے بعد انھوں سے فیس بک میں ملازمت کیلئے درخواست دی ،جس کو نظر انداز کر دیا گیا۔فروری 2009 میں انھوں نے وٹس ایپ کا آغاز کیااور صرف پانچ سال بعد فیس بک نے ان کی بنائی ہوئی ایپ کو 19 ارب ڈالر میں خریدا جن میں سے 4ارب کیش جبکہ باقی رقم فیس بک شئیر کی صورت میں دی گئی ،یوں اب  یہ دونوں فیس بک میں 12 فیصدشئیر کے مالک ہیں۔
مزید پڑھیے: اسرار جہاں

فیس بک "لائیک بٹن" بالآخر اپگریڈ ہونےکے قریب

فیس بک کی سہہ ماہی میٹنگ کے اختتام پر  کمپنی کے بانی مارک زکربرگ  نے اعلان کیا ہے کہ کسی بھی فیس بک پوسٹ پر  مناسب ردعمل کے اظہار کے لئے فیس بک لائیک بٹن کے علاوہ نئے 6 ایموجی متعارف کرانے کی منصوبہ بندی مکمل کر چکی ہے اور جلد ہے تمام پلیٹ فارم کیلئے لائیک بٹن کو اپڈیٹ کر دیا جائے گا۔
دیکھا جائے تو ایک  عرصے سے فیس بک ڈسلائیک بٹن کےحوالےسے مختلف افوائیں گردش میں تھیں،پھر یہ خبر چلی کی فیس بک میں ڈسلائیک کی بجائے اظہار ہمدردی کیلئے بٹن متعارف کرایا جائے گا ۔لیکن اب کمپنی انتظامیہ نے اپنے یوزرز کیلئے ایک سے ذیادہ آپشن مہیا کرنے کا اعلان کیا ہے۔


فیس بک صارفین کی ایک عرصہ سے خواہش تھی کہ کسی پوسٹ پر ردعمل کے اظہار کیلئے لائیک بٹن کے علاوہ دوسرے بھی آپشن موجود ہونے چاہیں تا کہ کوئی بھی پوسٹ کی نوعیت کے لحاظ سے اپنا مناسب ردعمل ظاہر کر سکے۔اگر آپ فیس بک کے صارف ہیں تو  یقیناً بعض اوقات آپ خود بھی مختلف پوسٹوں پر ردعمل کے اظہار میں مشکل کا شکار ہوئے ہونگے۔اکثر کسی  بے فائدہ، اکتا دینے والی یا  بے تکی  پوسٹ کو "ڈسلائیک " کرنے کو دل کرتا ہے،مگر ناپسندیدگی کے اظہار کی کوئی صورت نہ ہونی کی وجہ سے کچھ کیا نہیں جا سکتا۔یا پھر کسی افسردہ اور غمگین پوسٹ کو "لائیک" کرنا بھی مناسب معلوم نہیں ہوتا۔اسی لئے آپکے جذبات کے اظہار میں  حائل "لائیک بٹن" میں اضافہ کرتے ہوئے پانچ اضافی بٹن متعارف کرائے گی تا کہ پوسٹ کی مناسبت سے آپ اپنے ردعمل کو درست طریقے سے بیان کر سکیں۔ردعمل کے لئے اضافی بٹن:اب کسی بھی پوسٹ پر آپ ردعمل  میں ناراضگی کا اظہار کرنا چاہیں(Angry)،کوئی پوسٹ دل میں اتر جائے(Love)، کوئی قہقہ لگانے پہ مجبورکردے(Haha)، آپ کو حیرت میں گم کر دے(Wow) یا کوئی پوسٹ آپ کو افسردہ کر دے(Sad)آپ ان تمام جذبات کا اظہار مناسب ایموجی کے ذریعے دے سکتے ہیں۔
فیس بک کے نئے ایموجی بٹن
فیس بک کی دوسری میجسنگ سروسز مثلاً میسنجراوروٹس ایپ پر پہلے سے جذبات کے اظہار کیلئے بیسیوں ایموجی موجود ہیں اور پیغامات کے تبادلے میں ان کا استعمال بھی انتہائی ذیادہ کیا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ فیس بک انتظامیہ مکمل پر اعتماد ہے کہ ان بٹنوں کے اضافے سے فیس بک کے ڈیڑھ ارب صافین مقبول سوشل نیٹ ورک کو مزید  سہولت سے استعمال کر سکیں گے۔
مزید پڑھیے:مارک زکربرگ اس سال مصنوعی ذہانت کی تیاری میں منہمک

نئے کمپیوٹر پروسیسر صرف ونڈوز 10 کو سپورٹ کریں گے: مائیکروسافٹ

اگست 2015 میں ونڈوز 10 کی رونمائی کی بعد مائیکروسافٹ کی کوشش ہے کہ کسی بھی طرح سے ذیادہ سے ذیادہ صارفین کو ونڈوز 10 کے پلیٹ فارم تک لایا جائے۔خبر یہ ہے کہ ا س مہم  میں مائیکروسافٹ  نے اب اپنےساتھ سی پی یو مینوفیکچررز کو بھی شامل کر لیا ہے اور اعلان کیا ہے کہ انٹل ،اے ایم ڈی اور کوالقام جیسے اداروں کے تیار کردہ نئے سی پی یو صرف اور صرف ونڈوز 10 کے ساتھ ہی مکمل مطابقت رکھیں گے۔اس وجہ سے  نئے کمپیوٹرز پر ونڈوز10 ذیادہ بہتر اندازاور برق رفتاری سے کام کر سکے گی مگرونڈوز  کے پرانے ورژن  مثلاً ونڈوز7 اور ونڈوز 8سہولت سے نہیں چل سکیں گے۔ ونڈوز10 کا سکرین شاٹمائیکروسافٹ کی نڈوز 10 کی ریلیز سے ہی  کوشش تھی کہ جلد از جلد ذیادہ سے ذیادہ کمپیوٹرصارفین ونڈوز 10 پر منتقل ہو جائیں۔ اسی لئے مائیکروسافٹ نے تاریخ میں پہلی دفعہ صارفین کو آفر دی کہ وہ مفت اور بلا معاوضہ  اپنے  کمپیو ٹر کو  ونڈوز 10 پراپگریڈ کر سکتے ہیں۔یوں بہت سے صارفین نے اس سہولت سے فائدہ اٹھاتے ہوئے نئے آپریٹنگ سسٹم پر منتقل بھی ہوئے لیکن شاید  مائیکروسافٹ ابھی بھی ونڈوز 10 کے صارفین کی تعداد سے مطمئن نہیں ہے۔اس لئے ساتھ کچھ ماہ پہلے مائیکروسافٹ  نےتاحال  ونڈوز 8 اور 7 استعمال  کرنے والے صارفین کو ایک نوٹیفیکیشن کے ذریعے خبردار کیا کہ وہ جلد از جلد  ونڈوز 10 پر منقتل ہو جائیں یا پھر  تاخیر کی صورت میں وہ کبھی نئے آپریٹنگ سسٹم پر منتقل نہیں ہو سکیں گے۔مزید پڑھیے:پہلا مائیکروسافٹ فون  اب  مائیکروسافٹ کے اس اعلان کے بعد وہ  پرسنل کمیپوٹرز  جن پر ونڈوز 8 یا 7 نصب ہو گی ان کو 2017 میں یہ پیغام بھیجا جائے گا کہ "آپ کا کمپیوٹر صرف انتہائی سنگین سیکورٹی خدشات  سے روک تھام کیلئے اپڈیٹ حاصل کر ے گا۔" مگریہ نئی حکمت علمی مائیکروسافٹ کی پالیسی کےخلاف ہے جس میں کمپنی نے اعلان کیا تھا کہ وہ ونڈوز 7 کی سپورٹ 2020 جبکہ ونڈوز 8 کی سپورٹ 2020 تک جاری رکھی گی۔یہ تمام  پیش رفت اس بات   کا ثبوت ہے کہ کمپنی اپنے پرانے آپریٹنگ سسٹم کو نظرانداز کر کے اپنی توجہ صرف ونڈوز 10 پرمرکوز کرنا چاہتی ہے۔ تنقید:مائیکروسافٹ جس طرح سے جارحانہ پایسی کے زریعے اپنے صارفین کو ونڈوز 10 پر منقتل کرنا چاہ رہی ہے اس سے وہ مسلسل تنقید کی زد میں ہے۔ماہرین کا خیال ہے کہ ان پالیسیوں کی وجہ سے صارفین کی ایک بڑی تعداد ونڈوز کےمتبادل سسٹمز لینکس اور ایپل میک پر منقتل ہو جائے گی جو کہ کمپنی کیلئے سود مند نہیں کیونکہ پہلے ہی اسمارٹ فون اور ٹیبلٹ کمپیوٹرز کی بڑھتی ہوئی مانگ کی وجہ سے پرسنل کمپیوٹرز کی فروخت مسلسل گراوٹ کا شکار ہے  ۔کم کمپیوٹرفروخت ہونے کی وجہ  سے ونڈوز آپریٹنگ سسٹم کے صارفین بھی کم ہو رہے ہیں۔
مزید پڑھیے:ونڈوز 10کی تنصیب اور پہلا تاثر  

آئن سٹائن کا نظریہ اضافیت

جون 1905 میں آئن سٹائن  نے  اپنے سب سے انقلابی، اثر انگیز اوربہترین نظرئیے کو ایک مقالے میں پیش کیا۔بالکل،آپ ٹھیک سمجھے ہم نظریہ اضافیت کی بات کر رہے ہیں۔مگر جیسا کہ عام خیال ہے اضافیت بذات خود ایک نیا نظریہ نہیں تھا بلکہ اضافیت کا تصور گلیلیو اور نیوٹن کے دور سے موجود تھا۔لیکن آئن سٹائن نے اضافیت کو ازسر نو ایک نہیں بلکہ دو مختلف شکلوں میں بیان کیا۔جون 1905 میں شائع مقالے میں آئن سٹائن نے پہلے خاص نظریہ اضافیت(Special Theory of Relativity ) کو پیش کیا،جس نے دو سو سالوں سے رائج نیوٹونی حرکیات کی بنیادیں الٹ دیں اور زمان ومکاں کے حوالے سے رائج ہمارے ادراک و نظرئیے کو نئے سرے سے استوار کیا۔لیکن خاص نظریہ اضافیت کو سمجھے کیلئے ہمیں حرکت اور سکون کے بارے میں مزید جاننا ہو گا اس لئے کچھ دیر 1905 سے ماضی میں چلتے ہیں۔طبیعات کی سب سے مشہور مساوات
(یہ مضمون  کے اس سلسلے کی دوسری کڑی ہے جس کو آپ یہاں ملاحضہ کر سکتے ہیں۔) ارسطو،گلیلیو ،نیوٹن اور اضافیت:اضافیت کو سمجھنے کیلئے سب سے پہلے حرکت کے تصور کو سمجھنا ضروری ہے۔بینادی طور پر تمام جاندار حرکت کا ادراک رکھتے ہیں لیکن  حرکت بذات خود کیا چیز ہے ؟اس کا جواب سب سے پہلے اسطور نے دینے کی کوشش کی۔یونانی فلسفی ارسطو کے مطابق تمام اشیاء ترجیحی طور پر حالت سکون میں موجود ہوتی ہے۔ یعنی جب آپ کسی چیز کو حرکت دیں تو وہ جلد از جلد حالت سکون میں آنے کی کوشش کرتی ہے اور کچھ وقت کے بعد دوبارہ ساکن ہو جاتی ہے۔مثال کے طور پر جب آپ کسی فٹبال کو ٹھوکر ماریں کو وہ کچھ دیر حرکت کرنے کے بعد واپس حالت سکون میں آ جائے گا۔ارسطو کایہ نظریہ صدیوں  تک رائج رہا ،یہاں تک کہ گلیلیو نے اپنی تجربات کی بدولت اس کو رد کیا۔(حرکت کے بارے میں قدیم نظریات کیلئے یہاں مزید پڑھیں۔)
گلیلیو نے  کشش ثقل کے زیر اثر آذادانہ گرتے اجسام کا مطالعہ کیا اور اپنے  عمیق مشاہدے کے باعث حرکت کے بارے میں جدیدتصورات کی بنیادرکھی۔اپنے تجربات کی بنیاد پر گلیلیو نے یہ نتیجہ نکالا کہ  کوئی بھی چیز ترجیحی طور پر حالت سکون یا حرکت میں نہیں ہو گی۔بلکہ حرکت اور سکوں ایک دوسرے کے لحاظ سے اضافی طور پر بیان کیا جا سکتا ہے۔اس کو ہم مثال کے زریعے بہتر سمجھ سکتے ہیں :فرض کریں آپ ایک دوست کے ساتھ ریل میں سوار ہو کر  کسی دوسرے شہر جاتے ہیں، ساتھ والی سیٹ پر موجودآپکا دوست آپکے حوالے سے ساکن ہے،کیونکہ اسکے اور آپکے درمیان فاصلہ تبدیل نہیں ہو رہا۔ مگر سڑک پر موجود آپکے کے والدین کے حوالے سے آپ دونوں حرکت میں ہیں،کیونکہ آپ دونوں ہر لمحہ ان سے دور ہوتے جا رہے ہیں۔امید ہے یہاں آپ سمجھ گئے ہونگے کہ حالت حرکت یا حالت سکون  حوالگی فریم (فریم آف ریفیرنس) کے   وجہ سے تبدیل ہو جاتےہیں۔


  اگر غور کیا جائے تو  آپ کسی بھی طریقے سے یکساں حرکت  یا حالت سکون میں فرق نہیں کر سکتے،اضافیت  میں یہ انتہائی  بنیادی نقطہ   ہے۔ جس کو سمجھنے کیلئے  ہم آپکو دوبارہ ایک ٹرین بلکہ  "آئیدیل ٹرین" کے سفر پر روانہ کرتے ہیں۔ آئیڈیل اس لئے کیونکہ ٹرین کا ہر ڈبہ ساؤنڈ پروف اور جمپ پروف ہے یعنی آپ آواز اور ڈبے کے ہلکوروں سے یہ نہیں جان سکتے کہ یہ ساکن ہے یا متحرک۔
فرض کریں آپ  اس ٹرین میں سوار ہوتے وقت انتہائی تھکاؤٹ کا شکار تھے،اور اپنی سیٹ پر بیٹھتے ہی آپکو اونگھ آ گئی۔اس ہلکی سے نیند کے دوران ٹرین آہستگی سے سٹارٹ ہوئی اور 350 کلومیٹر فی گھنٹہ کی انتہائی رفتار سے چلنے لگے۔(اتنی لمبی تمہید کے بعد) اب سوال یہ ہے کہ نیند سے جاگے کے بعد کیا آپ  بتا سکتے ہیں کہ ٹرین ساکن ہے یا متحرک؟  کیونکہ   روز مرہ تجربات میں ہم بہ آسانی حالت حرکت اور ساکن حالت میں فرق کر سکتے ہیں، اس لئے عقل سلیم کے مطابق کوئی ایساطریقہ ضرور ہو گا جس کو استعمال کرتے ہوئے  یہ بتانا جا سکے کہ  ٹرین حرکت میں ہے یا ساکن۔ لیکن حقیقت  اس کے بر عکس ہے،یعنی کسی بھی طبعی طریقے کو ااستعمال کرتے ہوئے  آپ کبھی یہ نہیں جان سکیں گے کہ "آیا ٹرین ساکن ہے یا متحرک؟"۔
اس ساری کہانی کا خلاصہ یہ ہے کہ دو مختلف  جگہوں پر موجود مختلف شاہدین  کے لئے یکساں والاسٹی سے حرکت اور حالت سکون میں فرق کرنا ناممکن ہے۔ہم یہ فرق کیوں نہیں کر سکتے ؟ اسکا  جواب  مشہور طبعیات دان آئزک نیوٹن نے دیا  ہے۔نیوٹن نے اوپر موجود پوری "کہانی " کو ایک جملے میں بیان کیا کہ "یکساں ولاسٹی سے متحرک  یا ساکن حالت میں  موجود جسم پر کوئی قوت عمل نہیں کر رہی ہوتی اس لئے طبعی نقطہ نظر سے دونوں  میں فرق بھی ممکن نہیں۔" اس بیان کو نیوٹن کا پہلا قانون حرکت  کہا جاتا ہے۔ریڈیائی لہریں اور روشنی کی رفتار:واپس آئن سٹائن کی طرف جانے سے پہلے ہم ایک اور پیش رفت کی جانب چلتے ہیں۔ برطانوی طبعیات دان میکسویل نے  کائنات کے دو بنیادی قوتوں  یعنی برقی قوت اور مقناطیسی قوت کو یکجا کیا، اور تمام تر برقناطیسی  مظاہر کو بیان کرنے کے لئے چار مساواتوں کو بھی جمع کیا۔ یہ مساواتیں میکسویل مساواتیں کہلاتی ہے اور آج تک کامیابی سے استعمال کی جا رہی ہیں۔ان مساواتوں کے بدولت میکسویل نے ثابت کیا کہ روشنی بھی ایک برقناطیسی موج ہے۔کیونکہ ہر موج کی پیدا ہونے کیلئے ایک واسطے کی  ضرورت ہوتی ہے اس لئے فرض کیا کہ ایک انتہائی آئیڈیل خصوصیات  کا حامل واسطہ کائنات میں ہر سمت موجود ہے جس کو ایتھر کا نام دیا گیا۔اس عرصہ میں دو امریکی سائنسدانوں مائیکلسن اور مورلے نے تجربہ وضع کیا جس سے  روشنی کی رفتار کا انتہائی درستگی کے ساتھ ناپی جا سکتی تھی۔ اسی تجربے کو انھوںنے ایتھر کا وجود  ثابت کرنے کیلئے استعمال کیا۔کیونکہ زمین سورج کے گرد مسلسل حرکت کر رہی ہےاور اس دوران وہ مسلسل ایتھر میں سے گزر رہی ہے، اس لئے سائنسدانوں کا اندا زہ تھا کہ  مختلف اطراف سے زمین پر پڑھنی والی روشنی کے رفتار مختلف ہو گی لیکن یہاں ایک حیرت انگیز نتیجہ حاصل ہوا۔مائیکلسن اور مورلے نے جس سمت سے بھی روشنی کی رفتار کی پیمایش کی ہر سمت سے ہمشہ یکساں نتیجہ حاصل ہوا۔یوں ایتھر کو ثابت کرنے کی بجائے اس تجربے نے ایتھر کے تصور کو ہی ختم کر دیا۔آئن سٹائن اور اضافیتیہاں سے اب ہم آئن سٹائن کے نظریہ اضافیت کی طرف  آتے ہیں ۔آئن سٹائن نے ایک بہت بڑا جرات کرتے ہوئے ایک  ایک مفروضہ پیش کیا ہے ہر مختلف حوالگی فریم میں موجود تمام  مشاہدین کیلئے"روشنی کی رفتار ہمیشہ مستقل ہو گی"۔ اس کی ایک دلیل ہم آئیڈیل ٹرین میں دیکھ سکتے ہیں۔فرض کریں کہ آپ اسی ٹرین میں ہیں اور آپکے پاس روشنی کے پیمائش کا ایک  آلہ موجود ہے اور آپ سے سوال کیا جاتا ہے کہ ٹرین متحرک ہےیا ساکن؟اگر روشنی کی رفتار مستقل نہ ہو تو اس کا جواب دینےآپ نے صرف روشنی کی رفتار ناپ کردے سکتے ہیں کیونکہ چلتی ہوئی ٹرین میں روشنی کی رفتار ساکن حالت سے مختلف ہو گی۔لیکن آئن سٹائن کا اس بات پر پورا یقین تھا  کہ   قدرت میں ساکن اور یکساں رفتار سے متحرک جسم میں فرق کرنا ممکن نہیں اس لئے یہ تجربہ بھی آپ کو حرکت/سکون میں فرق نہیں بتا سکتا،اس لئے روشنی کی رفتار تمام جگہوں پر مستقل ہونی چاہیے۔روشنی کی رفتار تمام شاہدین کیلئے مستقل  ہو تی ہے بظاہر بے ضرر مفروضہ لگتا ہے لیکن اس  کے بہت حیران کن اور عقل سلیم کے خلاف نتائج نکلتے ہیں۔1۔ وقت کا آہستہ ہو جاناگزرنا:نیوٹن کے دور سے متفقہ خیال یہی تھا کہ وقت تمام شاہدین کیلئے ہمشہ یکساں رفتار سے گرزتا ہے۔لیکن خاص نظریہ اضافیت کے مطابق جب بھی کوئی جسم روشنی کی رفتار کے قابل موازنہ رفتار پر حرکت کرتا ہے تو اس جسم کیلئے وقت آہستگی سے گزرے گا۔لیکن قابل مشاہد ہ فرق کیلئے جسم کی رفتار روشنی کی رفتار کے قابل موازنہ ہونی چاہیے۔یو ں دو مختلف شاہدین کیلئے وقت کی رفتار بھی مختلف ہو سکتی ہے۔یہیں سے جوڑواں بھائیوں کے تناقضے  جنہم لیتا ہے۔فرض کریں آپکے محلے میں دو جوڑاواں بھائی موجود ہیں، ان میں سے ایک بھائی ایک راکٹ میں سوار ہو کے کائنات کی وسعتوں کی سیر کیلئے چلا جاتا ہے اور 5 سال بعد واپس زمین پر آ جاتا ہے۔لیکن اپنے جوڑویں بھائی سے ملکر حیران رہ جاتا ہے کیونکہ اسکا بھائی اب بوڑا ہو چکا ہوتا ہے۔2۔ لمبائی کا سکڑنااور کمیت میں اضافہ:انتہائی تیز رفتار حرکت صرف وقت پر اثرانداز نہیں ہوتی بلکہ اس سے جسم کی لمبائی سکڑنے لگتی ہے اور کمیت بڑھنے لگتی ہے۔لمبائی  اورکمیت میں اس کمی بیشی کا مشاہدہ بھی روشنی سے قابل موازنہ رفتاروں پر کیا جا سکتا ہے۔توانائی اور کمیت کا باہمی تعلق:چونکہ ایک متحرک جسم کی کمیت ،رفتار کے ساتھ بڑھتی جاتی ہے،جس کی وجہ سے جسم کی حرکی توانائی بھی اسی نسبت سے بڑھ جائے گی۔یوں آئن سٹائن ایک اور نتیجے پر پہنچا کہ توانائی اور کمیت بھی ایک دوسرے میں تبدیل ہو سکتے ہیں۔ اس نظرئیے کو آئن سٹائن نے ستمبر 1905 میں ایک مزید پیپر شائع کیا جس میں اس نے ثابت کیا کہ کمیت اور توانائی ایک ہی سکے کے دو رخ ہیں۔ بعد ازاں یہی نقطہ  ایٹمی بموں اور ایٹمی بجلی گھروں کی بنیادبنا۔

ایپل اسمارٹ واچ ،صارف کا پہلا انتحاب

ایپل نے 2007ء میں اسمارٹ فون کے میدان میں پہلی دفعہ قدم رکھا اور آتے ہی اس نے تمام صارفین کو اپنا گرویدہ کر لیا،آٹھ سا ل بعد آج  بھی ایپل آئی فون 6ایس سب سے ذیادہ فروخت ہونے والے  موبائل فونوں میں سے ایک  ہے۔بالکل یہی صورتحال اب ذہین گھڑیوں کی مارکیٹ کی بھی ہے، ایپل نے اپرئل 2015 میں  ایپل واچ فروخت کیلئے پیش کی ا ور یہ بھی توقعات کی عین مطابق سال میں سب سے ذیادہ فروخت ہونی والی اسمارٹ گھڑی بن گئی۔
ایک جاپانی تحقیقی ادارے کی مطابق 2015 میں فروخت ہونے والی اسمارٹ گھڑیوں میں ایپل واچ کا حصہ 52 فیصد تھا۔یعنی  سیمسنگ ، ایل جی ، مٹرولا اور ہواؤے جیسی باقی تمام  اداروں کی اسمارٹ گھڑیاں ملکر بھی ایپل واچ کا مقابلہ نہیں کر سکیں۔ مارکیٹ تجزیہ کاروں کے مطابق  گذشتہ سال گوگل کے آپریٹنگ سسٹم اینڈرائد وئیر (Android Wear) پر مشتمل گھڑیوں کے لئے اچھا ثابت نہیں ہوا اور انکی مانگ میں مسلسل کمی دیکھنے میں آئی۔ایپل واچ
نومبر 2015 میں سیمسنگ نے اپنے تیار کردہ آپریٹنگ سسٹم ٹائزن (Tizen) سے لیس گھڑی گلیسی گئیر ایس 2 بھی پیش کی جو خاطر خواہ پزیرائی نہ حاصل کر سکی۔چونکہ یہ ادارے کوئی مظبوط حریف پروڈکٹ نہیں کر سکے اس لئے چھوٹی اور غیر معروف کمپنیوں کی سستی اسمارٹ گھٹریوں کی فروخت میں بھی قابل قدر اضافہ دیکھنے میں آتا۔یہ گھڑیاں کم قیمت ہونے کے باوجود ایک اسمارٹ واچ کے بنیادی فعل مثلاً نوٹیفیکیشن الرٹ اور فٹنس ٹریکنگ مہیا کرتی ہیں جب کہ بڑے ناموں کی مصنوعات  مہنگی بھی ہیں اور اپنی قیمت کے مطابق صارفین کیلئے پرکشش اضافی فیچر ز سے بھی محروم ہیں۔
مزید پڑھیے: ایپل بمقابلہ سیمسنگ اور نوکیا و مٹرولا کی فروخت
تجزیہ کاروں کےمطابق اگرچہ اسمارٹ واچ اور دوسے پہننے کے قابل آلات(وئیرایبل) فی الحال عالمی  مارکیٹ میں مستحکم جگہ نہیں بنا سکے اسی وجہ سے آئندہ برس میں بھی اسمارٹ گھڑیوں کی فروخت میں ڈرامائی اضافے کا امکان نہیں،کیونکہ ان مصنوعات کے تیار کنندگان کے پاس گھڑیوں کے ڈیزائن میں تبدیلی کے علاوہ ان کی افادیت و صلاحیت(Functionality) میں نمایاں اضافے کا امکان نہیں ہے۔
اس صورتحال میں دیکھنا یہ ہے کہ اپرئل 2016 میں پیش کیا جانے والا ایپل واچ کا اگلاورژن  کتنا بہتر ہو گا اور صارفین میں مقبولیت برقرار رکھ پائے گا کہ نہیں۔
مزید پڑھیے:  سمارٹ فون:ماضی ،حال اور مستقبل 

مارک زکربرگ اس سال مصنوعی ذہانت کی تیاری میں منہمک

فیس بک نے بانی مارک زکربرگ ہمیشہ خبروں میں رہنے کے فن سے آگاہ ہیں ۔ وہ ہر سال کے آغاز پرنئے سال کے لئے ایک نیا کام کرنے کا اعلان کرتے ہیں تا کہ وہ نئی نہ صرف نئی چیزیں سیکھ سکیں بلکہ ایک فرد کی حثیت سے اپنی شخصیت کی نشونما بھی جاری رکھ سکیں۔ آئرن مین کا جاروس2016 کیلئے زکر برگ نے اپنی فیس بک پوسٹ میں اعلان کیا ہے کہ اس سال وہ گھر اور دفترمیں اپنی مدد کیلئے ایک مصنوعی ذہانت سے لیس معاون تخلیق کرنا چاہتے ہیں ، جو کہ ٹونی سٹارک کے ہر فن مولا پرسنل اسسٹنٹ "جاروس" کے مشابہ ہو گیا۔اگر آپ آئرن میں کہ فین ہیں تو پھر آپ جاروس سے بخوبی واقف ہونگے لیکن ایسا نہیں تو آپ کا جاروس سے تعارف کرائے دیتے ہیں۔جاروس ،مارول سٹوڈیوز کے کامک سپرہیروآئرن مین کے مصنوعی ذہانت لے لیس ذاتی معاون کا نام ہے۔اس کو ٹونی سٹارک(آئرن مین) نے اپنی مدد کیلئے تیار کیا ہے جو کہ آئرن میں کے فولادی سوٹ کے ساتھ لیبارٹری میں بھی ہمہ وقت خدمت کیلئے موجود ہوتا ہے۔ جاروس آئرن مین کے سوٹ میں اڑان بھرنے، اسلحہ، بیٹری کی معلومات کے ساتھ کسی بھی لمحے میں آئرن مین کے تحقیقی سوال کا جواب انٹرنیٹ پر موجود معمولات کو کھنگال کرسیکنڈوں میں لا دیتا ہے۔اگرچہ زکربرگ کا سافٹ وئیر جاروس جیسی ذہانت کا حامل تو نہیں تو گا مگر یہ ایک حقیقی ذہین معاون کی تیاری کیلئے ایک مثبت پیش رفت ضرور ہے۔
فیس بک سے منسلک ہونے کے باعث زکر برگ مصنوعی ذہانت کے میدان میں موجود حالیہ ٹیکنالوجی سے اچھی طرح واقف ہیں کیونکہ آپکی فیس بک وال پر موجود تمام پوسٹیں اور اشہارات مصنوعی ذہانت سے لیس سافٹ وئیر کی مدد سے ترتیب دی جاتیں ہیں۔اس لئے وہ انھیں دستیاب وسائل سے اپنے نئے منصوبے کو شروع کریں گے۔اس حوالے سے انکا کہنہ تھا کہ "اس معاون کا سافٹ وئیر لکھنا میرے لئے دلچسبی کے علاوہ ایک چیلنج بھی ہو گا۔"
پہلے مرحلے میں انکا معاون انتہائی سادہ کام کرنے کے قابل ہو گا۔جس میں وہ اسے اپنی آواز شناخت کرنے کے ساتھ گھر کے روزمرہ کام مثلاً برقی قمقموں،ہیٹر/ائیرکنڈشنر،ٹیلیوژن یا میوزک پلیئر کو کنٹرول کرنے کے قابل بنائیں گے۔جبکہ دوسرے مرحلے میں وہ اس پروگرام کو اپنے دوستوں اور رشتہ داروں کے بصری شناخت سکھائیں گے تا کہ جب بھی ان عزیز و اقارب میں کوئی انکے گھر کی گھنٹی بجائے تو یہ پروگرام از خود انھیں شناخت کر کے دروازہ کھول سکے۔
گھر کے علاوہ یہ معاون ان کے دفتر میں بھی موجود ہو گا،جہاں وہ اس کو استعمال کرتے ہوئے فیس بک، انسٹاگرام اور میسنجر جیسی سروسز کیلئے انتہائی وسیع ڈیٹا کو مجازی دنیا(Virtual Reality)میں دیکھ(Visualize) سکیں گے۔
بتاتے چلیں کہ گذشتہ برسوں میں بھی زکربرگ نئے سال کیلئے مختلف قراردادیں کر چکے ہیں جن میں سے ہر ماہ دو نئی کتابیں پڑھنے کے ساتھ، ہر دن ایک نئے آدمی سے ملاقات کرنے کی شامل ہیں۔اس لئے اگر ہم ذاتی معاون تو تیار نہیں کر سکتے مگر نئی کتابیں پڑھنے یا نئے لوگوں سے ملنے جیسا کام تو ضرور کر سکتے ہیں۔

مزید پڑھیں:  منٹوں میں چارچ ہونے والی موبائل بیٹری

1905 آئن سٹائن کا معجزاتی سال

آئن سٹائن کو بلاشبہ ہم جدید طبیعات کا بہترین دماغ گردانتے ہیں اور یقیناً سچ بھی یہی ہے۔ لیکن 1905 سے پہلے شاید ہی طبیعات داں طبقے میں کوئی یہ سوچ سکتا تھا کہ وہ  طالب علم جو اپنے اساتذہ کو متاثر کرنے میں ناکام رہااور کسی معتبر تعلیمی ادارے میں کوئی ملازمت  نہ  حاصل کر سکا دنیائے سائنس میں نئے اوراچھوتے نظریات سے ہلچل مچا دے گا۔  کسی تعلیمی ادارے میں شمولیت نہ ملنے پرمجبوراً آئن سٹائن کو ایک سوئس پیٹنٹ ہاؤس میں تیسرے درجے کے کلرک کی نوکری کرنا پڑھی۔

لیکن شاید اسی نوکری کا نتیجہ تھا کہ آئن سٹائن نے اپنا ذیادہ تر فارغ وقت  تحقیقی کام  میں صرف کیااور اپنے چند قریبی دوستوں کے ساتھ وہ مسلسل نئے نظریات پر تبادلہ خیال کرتا رہا۔اسی دوران آئن سٹائن نے کچھ معمولی اہمیت کے  تحقیقی  مقالات بھی شائع کیے۔
لیکن یہ 1905 کا سال تھا جب ایک غیر معروف کلرک نے ایک دو نہیں بلکہ  چار مختلف مضوعات پر انتہائی غیر معمولی اور انتہائی بنیادی اہمیت  کے ریسرچ پیپر شائع کیے ، جنھوں نے مروجہ  نظریات کی بنیادی ہلا دیں اورتحقیق کیلئے نئی راہیں متعین کیں۔ ان مقالات نے زماں و مکاں، توانائی و کمیت ،روشنی کی ماہیت اور ایٹموں کی موجودگی کے بارے میں ہمارے  نظریات کو یکسر تبدیل کر دیا۔
آئیے ہم دیکھتے ہیں کہ انھوں  نے کس ترتیب سے اپنے تحقیقاتی کام کو شائع کیا جس کی وجہ سے 1905 نے ایک گمنام کلرک  کو ہمارا اور آپ کا جانا پہچانا "آئن سٹائن "بنایا۔ 

1۔روشنی کا زراتی نظریہ اور فوٹو الیکٹرک ایفیکٹ:مارچ 1905 میں آئن سٹائن کے اپناپہلا کرشماتی مقالہ شائع کیا جس میں اس نے ضیاء برقی اثر(Photo Electric Effect) کی وضاحت کی۔فوٹو الیکٹرک ایفیکٹ اس وقت تک طبعیات دانوں کیلئے ایک معمہ تھا۔کیونکہ اسوقت کے مروجہ نظریات کی بنیاد پر اس کی وضاحت ممکن نہیں تھی۔اس معئمےکو حل کرنے کیلئے  آئن سٹائن نے  کہا کہ  روشنی زراتی نوعیت رکھتی ہےاور یہ توانائی کے پیکٹوں پر مشتمل ہوتی ہے جن کو "کوانٹا" کا نام دیا، اسی بنیاد پر پھر انھوں نے فوٹو الیکٹرک ایفیکٹ کی  انتہائی درست وضاحت کی۔ضیاء برقی اثریہ جاننے کیلئے کہ روشنی کی ماہیت کا زراتی نظریہ کس قدر جرات مندانہ اور راویت سے ہٹ کر  تھا ؛ ہمیں روشنی کے بارےمیں اس وقت کے مروجہ نظرئیے کو جاننا ہوگا۔ اگرچہ روشنی کی ماہیت کے بارے میں دو متضاد نظریات کئی صدیوں سے موجود تھے ۔ ایک نقطہ نظر کے ماننے والوں جن میں آئزک نیوٹن بھی شامل ہیں، کے مطابق روشنی انتہائی چھوٹے چھوٹے کیپسول نما پیکٹوں پر مشتمل ہے۔جبکہ مخالفین کے مطابق روشن بنیادی طور پر ایک موج ہے اور اس کی خصوصیات دوسری موجوں مثلاً آواز اور پانی پر بننے والی لہروں کی طرح ہیں۔حتی ٰ کہ اٹھارویں صدی میں ینگ نے مشہور دو شگافی تجربے سے یہ ثابت کیا کہ روشنی واقعی موجی خصوصیات رکھتی ہیں ۔ اس کے بعد طبعیات داں طبقہ میں یہی نظریہ مقبول رہا کہ روشنی ایک موج ہے ۔یہاں تک کہ آئن سٹائن نے اپنے مقالے میں روشنی کے زراتی ہیئت کو استعمال کرنے ہوئے فوٹو الیکٹرک ایفیکٹ کی وضاحت  کی۔(کوانٹم فزکس کی بدولت اب ہم جانتے ہیں کہ روشنی اور دوسرے بنیادی ذرات بیک وقت ذاتی اور موجی خصوصیات رکھتے ہیں۔) اگرچہ یہ آئن سٹائن کا سب سے بہترین تحقیقی کام نہیں تھا مگر اسی کے بدولت 1921 میں آئن سٹائن کو طبیعات کا نوبل انعام ملا۔اسی پیپر نے کوانٹم فزکس کی بنیاد میں مرکزی کردار ادا کیا۔  
مزید پڑھیں: سال 2015کے بہترین سمارٹ فون 2۔براؤنی حرکت کی وضاحت :دو ماہ بعد آئن سٹائن نے ایک مختلف مگر بنیادی سوال کا جواب دیا۔مئی 1905 میں شائع پیپر میں آئن سٹائن نے براؤنی حرکت کی وضاحت کی۔ تقریباً 1827 میں رابرٹ براؤن نے خوردبین کی مدد سے پانی میں موجود انتہائی باریک  پولن ذرات کا جائزہ لیا تو اس نے دیکھا کہ تمام ذرے انتہائی مسلسل مگر انتہائی بے ہنگم حرکت میں تھے، جس کی اس کے پاس کوئی وضاحت ممکن نہ تھی۔اس حرکت کو براؤنی حرکت کا نام دیا گیا اور تقریباً اگلے 80 برس اس حرکت  کی وجہ ایک راز ہی رہی ۔(جیسا کہ آپ اس تصویر میں ملاحضہ کر سکتے ہیں۔)
دو جہتوں میں براؤنی حرکتآئن سٹائن کے  براؤنی حرکت کی وضاحت اٹامک /مالیکیولر نظرئیے کی بنیاد پر دی  اور  انتہائی خوبی سے شماریاتی ریاضی کو استمال کرتے ہوئے ثابت کیا کہ پانی میں ذرات کی بے ہنگم حرکت نظر نہ سکنے والے انتہائی چھوٹے اور مسلسل متحرک ذروں یعنی ایٹموں کے ساتھ مسلسل ٹکراؤ کا نتیجہ ہے۔اس پہلے اگرچہ ایٹم کا نظریہ موجود تھا مگرایٹموں کی موجودگی کے حوالے سے مظبوط دلائل نہ ہونے کی وجہ سے بہت سے اہم سائنسداں ایٹموں کو ایک مفروضے سے ذیادہ اہمیت نہیں دیتے تھے۔یہ پیپر ایٹمی نظرئیے کے حق میں  انتہائی مظبوط دلیل ثابت ہوا۔اس کے بعد مئی اورستمبر میں شائع مقالات نے تقریباً دو صدیوں سے رائج نیوٹونی حرکیات(Newtonian Mechanics  ) کی جڑھیں ہلا دیں، اور زماں و مکاں کے بارے میں ہمارے نظریات کو یکسر بدل دیا۔آپ جان چکیں ہو نگے کہ ہم نظریہ اضافیت کی بات کر رہے ہیں،جس کے بارے میں تفصیل آپ آئندہ تحریر میں ملاحضہ کر سکیں گے۔

مزید پڑھیں: وائی فائی سے سو گناہ تیز رفتار لائی فائی ٹیکنالوجی

وائی فائی سے سو گناہ تیز رفتار لائی فائی ٹیکنالوجی کی آمد

حال ہی میں ایک کمپنی نے ریڈیو موجوں کے بجائے روشنی کے زریعے انٹرنیٹ ڈیٹا کی ترسیل کا کامیاب تجربہ کیا گیا ہے ، جس میں ایک روایتی وائی فائی راؤٹر کا کام (یعنی انٹرنیٹ سگنلز کی براڈکاسٹ )کیلئے  ایک ایل ای ڈی بلب کو استعمال کیا گیا۔یوں یہ ایل ای ڈی بلب روشنی کے ساتھ ڈیٹا کی  منتقلی کا اضافی کام بھی کر سکتا ہے۔ کیونکہ اس طریقے میں ڈیٹا کی منتقلی لائٹ  کے زریعے ہوتی ہے اس لئے  ٹیکنالوجی کو لائی فائی کا نام دیا گیا ہے۔

یہ ٹیکنالوجی یورپی ملک ایسٹونیا میں موجود ایک کمپنی ویلمنی (Velmenni) نے اپنی آفس میں متعارف کرائی ہے۔ اگرچہ ویلمنی کے دفتر میں لائی فائی کے زریعے ڈیٹا کی منتقلی کی رفتار 1 گیگا بٹس فی سیکنڈ تھی لیکن لیبارٹری ٹیسٹوں میں لائی فائی کے زریعے 224 گیگا بٹس فی سیکنڈ کی انتہائی رفتار کامیابی سے حاصل کی جا چکی ہے جو کہ وائی فائی کی بہ نسبت 100 گناہ ذیادہ تیز ہے۔
اس طریقہ کار میں ایک روشنی کا منبع( Source)  مثلاً ایل ای ڈی بلب ،انٹرنیٹ ڈیٹا کنکشن اور ایک فوٹو ڈیکٹر درکار ہوتا ہے۔یہ تمام اجزاء آجکل مارکیٹ میں بہ آسانی دستیاب ہیں۔ اس لئے امید کی جا سکتی ہے کہ جلد ہی یہ ٹیکنالوجی صارفین کیلئے دستیاب ہو گی۔
لائی فائی کا آئیڈیاایڈنبرگ یونیورسٹی کے پروفیسر ہیرالڈ ہاس نے 2011 میں منعقدہ TED کانفرنس میں پیش کیا تھا۔ اسی کانفرنس میں جہاں انھوں نے ایک ایل ای ڈی بلب کے زریعے ڈیٹا کی ترسیل کی آئیڈیا پیش کیا وہیں پروفیسر اور ان کی ٹیم نے ایک قدم آگے جاتے ہوئے ایک ایل ای ڈی  بلب کے زریعے  وڈیو اسٹیمرنگ کا عملی نمونہ  بھی پیش کیا  ۔ اس موقع پر پروفیسر ہیرالڈ کا کنہا تھا  کہ مستقبل میں یہ ٹیکنالوجی کروڑوں ایل ای ڈی بلبوں کو لائی فائی راؤٹروں میں بدل دے کی صلاحیت رکھتی ہے۔
فوائد:لائی فائی کو روایتی وائی فائی ٹیکنالوجی  کی نسبت مندرجہ ذیل فوائد دے گی۔
1۔ یہ روایتی وائی فائی راؤٹرز کی نسبت بہت ذیادہ تیز رفتار ہے، اور اس کے لیے درکا ر خام مال بھی بہ آسانی دستیاب ہیں۔
2۔ کچھ خاص  ماحولوں مثلاً  ہوی انڈسٹری اور ہوائی جہازوں  میں وائی فائی سگنل  برقی شور  (Electrical Noise) کی وجہ سے کارگر نہیں رہتے۔ اس لئے صنعتوں اور ہوائی جہازوں میں لائی فائی سے انٹرنیٹ سے منسلک ہونا آسان ہو گا کیونکہ روشنی برق مقناطیسی شور سے متاثر نہیں ہوتی۔
3۔ ریڈیو بینڈاب  انتہائی گنجان ہو چکے ہیں اور بہت مہنگے بھی ہیں۔ جبکہ مرئی  روشنی میں موجود تمام تر ریڈیو  بینڈ ابھی تک استعمال میں نہیں لایا گیا اور مفت دستیاب ہے۔نقصانات:1۔ دن کی روشنی میں لائی فائی راؤٹرز کا استعمال نہیں کیا جا سکتا کیونکہ دن کے وقت سورج کی روشنی کی وجہ سے ایل ای ڈی کی روشنی بالکل  کارگر نہیں رہتی۔
2۔ کیونکہ مرئی روشنی دیوار کے آر پار نہیں جا سکتی اس لئے ایل ای ڈی بلب سے براڈ اکاسٹ ہونے والا ڈیٹا بھی ایک ہی کمرے تک محدود رہے گا۔اگر آپ انٹرنیٹ کو ایک ہی کمرے تک محدود نہیں رکھنا چاہتے پھر اس صورت میں لائی فائی آپ کے لئے موزوں نہیں۔
ممکنہ استعمالات:اوپر بیان کردہ  لائی فائی کے مضبوط پہلوؤں اور کمزوریوں کی روشنی میں ہم اتنا کہہ سکتے ہیں  مستقبل میں یہ ٹیکنالوجی ہسپتالوں، ہوائی جہازوں اور دیگر کاروباری اداروں میں  اپنی جگہ بنانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔


منٹوں میں چارچ ہونے والی موبائل بیٹری

چینی موبائل ساز کمپنی ہواؤے نے دوایسی بیٹریاں بنانے کا اعلان کیا ہے جو کہ صرف 5 منٹ کی چارجنگ پر دو تہائی (68٪) اور تقریباً آدھی حد تک(48٪) چارج کی جاسکتی ہیں۔ امید یے کہ کمپنی اس اختراع کا استعمال جلد ہی اپنے آئیندہ آنے والے موبائل فون میں کرے گی جسکی بدولت صارفین گھنٹوں بیٹری چارج کرنے کی کوفت سے بچ سکیں گے۔ہواؤے کی فوری چارج ہوئے والی موبائل بیٹری کا عملی تعارفمذکورہ دونوں بیٹریوں کے ڈیمو میں ایک خاص چارچر استعمال کرتے ہوئےکم گنجائش رکھنے والی بیٹری 5 منٹ میں 68٪ چارج ہو گئی ،مگرکم گنجائش کی وجہ سے یہ اسمارٹ فون میں استعمال نہیں کی جا سکتی۔ لیکناس کو اسمارٹ گھڑویوں میں ضرور استعمال کیا جا سکتا ہے۔ جبکہ ذیادہ گنجائش والی بیٹری اتنی ہی وقت میں 48 ٪ چارج ہو سکی۔ مزید پڑھیں:سال 2015کے بہترین سمارٹ فون ہواؤے کا کہنا ہے کہ فون میں 5 منٹ کے ریچارج پر یہ بیٹری آپکو 10 گھنٹے کا ٹاک ٹائم مہیا کرے گی جو کہ یقیناً ایک ایسی خوبی ہے جو کہ ہر صارف اپنے موبائل میں دیکھنا چاہے گا۔کیونکہ آجکل جس طرح اسمارٹ فون کا استعال بہت ذیادہ بڑھ گیا ہےاور اسی وجہ سے موبائل کی بیٹری بھی اتنی ہے جلدی خالی ہو جاتی ہے جس کو بعض دفعہ ایک دن میں ایک سے زائد بار چارج کرنا پڑھتا ہے۔بار بار ریچارج سے بچنے کیلئے بہت سے موبائل اوسط سے ذیادہ چارچ سٹور کرنے والی بیٹری کے ساتھ مارکیٹ میں موجود ہیں لیکن مسئلہ یہ ہےکہ بیٹری کی گنجائش جتنی ذیادہ ہو گی ریچارج کا وقتبھی اتنا ہی ذیادہ ا ہو گا۔اس لئےامیدکی جا سکتی ہے کہا اس طرح کی فوری چارج ہونے والی بیٹری صارفین کو گھنٹوں موبائل ریچارج کرنے کی کوفت سے بچانے میں کامیاب ہو سکے گی ہے۔
اسمارٹ فون کے ناکافی بیٹری ٹائم کی خامی پر قابو پانے کیلئے ہر موبائل کپمنی کے انجنیئرز اور محققیین دن رات مصروف تحقیق ہیں۔اس مقصد کیلئے روایتی لتھئیم آئن بیٹری کے ساتھ غیر روایتی بیٹری میٹریلز مثلاً المونیم اور گریفین وغیرہ کو استعمال کر کے بیٹری کی گنجائش، عمر،جسامت اور چارج سٹور کرنے کی صلاحیت کو بڑھانے کی کوششیں جاری ہیں۔
ہواؤے کی یہ موجودہ ٹیکنالوجی اس لحاظ سے بھی اہم ہے کیونکہ اس میں روایتی لتھیئم آئن کا ہی استعمال کیا گیا ہےا ور ایکنئی تکینک ہیٹرو ایٹم کی بدولت کم وقت میں چارج ہونے کے باوجود بیٹری کی عمر پر فرق نہیں پڑے گا۔مزید پڑھیں:بلیک فرائی ڈے: عالمی شاپنگ فیسٹول کم وقت میں چارج ہونے کی بیٹری بنانے کی دوڑ میں ہواؤے اکیلی کمپنینہیں،سیمسنگ کا موجود ہ اسمارٹ فون گلیکسی S6 کے حوالے سے کمپنی کا دعوایٰ ہے کہ یہ فون 10 منٹ کےریچارج پر 4 گھنٹے کا ٹاک ٹائم مہیا کرسکتا ہے۔اس کے علاوہ ایک اسرائیلی کمپنی نے بھی اسی طرز کی فوری چارج ہونے والی بیٹری کی تیاری کا اعلان کر رکھا ہے۔
سیمسنگ کی ٹیکنالوجی کو دیکھتے ہوہے ہواؤے کی یہ بیٹری دیگر فریقین کے مقابلے میں بہت بہتر ہے۔ لیکن ابدیکھنا یہ ہے کہ ہواؤے چند منٹوں میں چارج ہونے والی بیٹری سے مزین موبائل کتنے عرصے میں مارکیٹ میں متعارف کرسکتی ہے اور یہ ٹیکنالوجی صارفین کی توقعات پر کس حد تک پورا تر سکی گے۔

2015 کے بہترین سمارٹ فون

سال 2015 اپنے اختتام کے بلکل قریب ہے ۔اس سال میں  ایپل ، سیمسنگ ، ایل جی ، سونی اور گوگل سمیت تمام مشہور کمپنیاں اپنے اپنے بہترین سیٹ مارکیٹ میں پیش کر چکی ہیں۔ان موبائل فونز  میں چھوٹے بڑے، مہنگے سستے اور بجٹ دوست موبائل ہر طرچ کے فون شامل ہیں ، لیکن تمام فون کے استعمال کے بعد ماہرین نے سال کے بہترین  موبائل فونز کی فہرست پیش خدمت ہے تا کہ آپ اگر نیا فلیگ شپ فون خریدنا چاہیں یا پھر کسی کو مشہورہ دینا چاہیں تو آپ اپنی ضروریات کے مطابق بہترین ہینڈ سیٹ خرید سکیں۔ تو پیش خدمت ہیں سال 2015 کے  دس بہترین موبائل فون۔10: 2 OnePlus اوایس: اینڈرائیڈ 5.1 |  سکرین سائز:  5.5  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1920 x 1080 | ریم : 3/4 جی بی | فون میموری: 16/64 جی بی|بیٹری:3300 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 13 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5 میگا پکسل
ون پلس ٹو
چین کی کمپنی ون پلس رواں برس بھی ٹاپ 10 میں جگہ بنانے میں کامیاب رہی ہے ، ون پلس ٹو بلاشبہ اپنے ہارڈوئیر اور خوبیوں سے کسی بھی فلیگ شپ فون کو مات دے سکتا ہے۔ خاص بات ون پلس ٹو کی قیمت ہے جو کہ کسی بھی فلیگ شپ کے مقابلے میں تقریباً نصف ہے۔ لیکن  بد قسمتی سے  یہ فون فی الوقت پاکستان میں متعارف نہیں کرایا گیا۔ البتہ ہے گرے مارکیٹ میں دستیاب ضرور ہے مگر بین الاقوامی قیمت سے مہنگے ریٹ پر۔مزید پڑھیں:سال 2013کے بہترین سمارٹ فون 9: Nexus 6Pاوایس: اینڈرائیڈ 6 |  سکرین سائز:  5.7  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1440 x 2560 | ریم : 3جی بی | فون میموری:  32 جی بی|بیٹری:3450 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 12 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 8 میگا پکسل
نیکسس 6پی
گوگل نے اس سال ایپل کی طرز پردو نیکسس فون متعارف کرائے ہیں، ایک نیکسس 6X اور دوسرا نیکسس 6P۔ اس فہرست میں 6P ہی جگہ بنا پایا ہے۔ 6P پچھلے سال کے نیکسس 6 کے مقابلے میں کم سکرین سائز  کا ہے جس کی وجہ سے ایک ہاتھ سے فون آپریٹ کرنا نسبتاً آسان ہے۔ساتھ ہی فون کا ڈیزائن  فل میٹل باڈی کی وجہ سےدلکش اور قیمتی دکھائی دیتا ہے۔ اینڈائنڈ صارفین کی لئے اس کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ یہ اینڈائیڈ 6 مارش میلو سے لیس پہلا فون ہے جو کہ سٹاک اینڈارائیڈآپریٹنگ سسٹم کی وجہ سے انتہائی رواں اور برق رفتار ہے۔8 : HTC One M9اوایس: اینڈرائیڈ 5.1 |  سکرین سائز:  5  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1920 x 1080 | ریم : 3 جی بی | فونمیموری:  32 جی بی||بیٹری:2840 ملی ایمپیر ہاور پرائمری کیمرہ: 20.7 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 4 میگا پکسل
ون ایم 9
تائیوانی کمپنی ایچ ٹی سی پچھلے دو برس سے سب سے بہترین فون بنا رہی تھی ، مگر امسال اپنی پوزیشن کو قائم نہ رکھ سکی۔ اس کے باوجودOne M9  ایک زبردست فون ہے۔اپنی ساخت کی بنا پر یہ اب بھی بہترین فون ہے ، جبکہ ایچ ٹی سی سینس  اور اینڈرائیڈ سے مزین ایم 9 کسی بھی موبائل صارف کا پسندیدہ فون ہونے کا حقدار ہے۔ لیکن ایم 9 اپنے پچھلے ورژن ایم 8  کی خصوصیات سے لیس ہے جن کو ایم 9 میں مزید بہتر کیا گیا۔ 20 میگا پکسل کیمرہ بھی مارکیٹ میں موجود دوسرے کیمروں کے مقابلے میں اوسط کارکردگی کا حامل ہے۔اب دیکھنا یہ ہے کہ اگلے سال ایچ ٹی سی نئے موبائل کے ساتھ کس طرح مارکیٹ میں واپس آتی ہے۔7:Samsung Galaxy S6 Edge Plusاوایس: اینڈرائیڈ 5.1 |  سکرین سائز:  5.7  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1440x2560 | ریم : 4 جی بی | فون میموری: /6416 جی بی|بیٹری:3000 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 16 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5 میگا پکسلگلیکیس ایس 6 ایج پلس
 سیمسنگ سمارٹ فونز کی گرتی ہوئی فروخت کی وجہ سے کپمنی نے اس سال بہترین پروڈکٹس  مارکیٹ میں لائی ہیں، اگرچہ سیمسنگ گلکسی ایج ایک بہترین فون ہے ، اسی فون کابڑا بھائی گلیکسی ایج پلس جو کہ 5.7 انچ فیبلٹ ہے ، جو کہ اضافی سکرین سائز کیساتھ اضافی ہارڈوئیر پاور سے لیس ہے۔بہترین کیمرہ،انتہائی نفیس ڈیزائن، دیدہ ذیب سکرین  اور ایج ڈسپلے اس کو منفرد بناتے ہیں۔اگر آپ ایک پریمیئیم فیبلٹ خریدنا چاہتے ہیں تو آپکی پہلی پسند گیکسی ایس 6 ایج پلس ہو نا چاہیے۔  6:  iPhone 6S Plusاوایس: آئی او ایس 9| سکرین سائز:  5.5  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1920 x 1080 | ریم : 2 جی بی | فون میموری:  16/64/128جی بی|بیٹری:2750 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 12 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5 میگاپکسلآئی فون 6 ایس پلس
آئی فون 6S پلس ایپل کی دوسری فیبلٹ ہے، جو اگرچہ سائز اور ڈیزائن میں آئی فون 6 پلس ہی کی طرح ہے، مگر ہارڈوئیر اور کیمرہ پہلے سے بہت بہتر ہیں۔ یہ فیلبٹ ایک مکمل ایچ ڈی سکرین کے ساتھ 12 میگا پکسل کے کیمرہ سے لیس ہے جو کہ 4K وڈیو ریکارڈنگ  کی صلاحیت رکھتا ہے۔ آپٹیکل امیج سٹیبلائزیشن کی بدولت کم روشنی میں بھی  ساکن تصاویر کا معیاربھی بہت بہتر بنایا گیا ہے۔ذیادہ سائز ہونے کی وجہ سے 6S پلس کی بیٹری بھی آئی فون 6S  سے ذیادہ گنجائش کی ہے جوکہ آپکو اضافی فون ٹائم مہیا کرتی ہے۔ان سب خوبیوں کے ساتھ یہ یقیناً ایک بہترین فون ہے لیکن اس کے ساتھ ہی یہ اس وقت دنیا کے مہنگے ترین موبائل فونوں میں سے ایک ہے  اور یہی اس فون کے سب سے بڑی خامی بھی ہے۔5: Sony Xperia Z5اوایس: اینڈرائیڈ 5.1 |  سکرین سائز:  5.2  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1920 x 1080 | ریم : 3 جی بی | فون میموری: 32 جی بی|بیٹری:2900 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 23 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5.1 میگا پکسلایکسپیریا زی 5

سونی نئے فون متعارف کرانے میں انتہائی فعال کمپنی ہے۔ ایکسپیریا Z3+ کے لانچ کے تقریباً 6 ماہ بعد Z5  پیش کیا گیا ہے جس میں   پچھلے ورژن کی تصریفات کو انتہائی بہترین انداذ میں اپگریڈ کیا گیا ہے۔خاص کر فون میں موجود فنگرپرنٹ سنسر اور نیا فون ڈیزائن اسکو Z3+ سے ممتاز بناتا ہے۔ واٹر پروف ڈیزائن کی بدولت  اپنے فون کو بلا ہچکچاہٹ ساحل سمندر اور تراکی کیلئے لے جا سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ یہ ایکسپیریا لائن کا پہلا فون ہے جس میں 23 میگاپکسل کا کیمرہ سنسرر استعمال کیا گیا ہے، ساتھ ہی جدید آٹوفوکس ٹیکنالوجی کی بدولت آپ اپنے فون سے بہترین تصاویر بنا سکتے ہیں۔4 : iPhone 6Sاوایس: آئی او ایس 9| سکرین سائز:  4.7  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1334 x 750 | ریم : 2 جی بی | فون میموری:  16/64/128جی بی|بیٹری:1715 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 12 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5 میگا پکسلآئی فون 6 ایس
ایپل آئی فون ،دنیا کی مشہور ترین اسمارٹ فون برانڈ ہے۔ بہت سے ایپل صارفین نئے آئی فون کی تصریفات جانے بغیر ہی نئی پروڈکت خریدنے کا فیصلہ کر لیتے ہیں۔ ایپل آئی فون 6 ایس اگرچہ سائز اور دیکھنے میں آئی فون 6 جیسا ہی ہے،لیکن اندرونی ہارڈوئیر میں ایپل نے بہت نمایاں تبدیلیاں  کی ہیں۔ ان میں 12 میگا پکسل کا نیا کیمرہ سنسراور خاص کر 3D ٹچ کی نئی اختراع اس کو  بہترین موبائل فون بناتی ہیں۔لیکن آئی فون  کی قیمت کی نسبت اس کی سکرین کم سکرین ریزولوشن ، کمتر بیٹری لائف  اس فون کی نمایاں کمزوری ہیں۔6 ایس کا 16 جی بی ورژن 12 میگا پکسل کیمرہ کے ساتھ نہایت قلیل ڈیٹاسٹوریج  کی گنجائش رکھتا ہے، کیونکہ اب 32 جی بی ورژن نہیں اسلئے کم ازکم آپ کا 64 جی بی کا ورژن خریدنا ہو گا ، جو کہ 16 جی بی آئی فون 6ایس سے 100ڈالر مہنگا پڑھتا ہے۔
مزید پڑھیں:سال 2014 کے دس بہترین سمارٹ فون3: Samsung Galaxy S6 Edgeاوایس: اینڈرائیڈ 5.1 |  سکرین سائز:  5.1  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1440 x 2560 | ریم : 3 جی بی | فون میموری: 32/64/128جی بی|بیٹری:2560 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 16 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5 میگا پکسلگلیکسی ایس 6 ایج
سیمسنگ گلیکسی ایس 6 ایج تقریباً ہر لحاظ سے اپنے ہم نام گلیکسی ایس 6 سے بہتر خصوصیات رکھتا ہے، چاہیے  وہ سکرین ریزولیشن ہو، کیمرہ یا پھربرق رفتار پروسیسنگ پاور۔یہی نہیں بلکہ اس میں سکرین ایج کی اضافی خصوصیت بھی موجود ہے۔اگرچہ آپ ایک ایسا فون چاہتے ہیں کہ جو  بہترین ہاروڈ وئیر کے ساتھ منفرد ڈیزائن کا بھی حامل ہو تو اس فون میں بلاشبہ سیمسنگ نے اعلیٰ ہارڈ وئیر کے ساتھ جمالیاتی حسن کو بھی یکجا کیا ہے۔فون کی واحد خامی اس کی قیمت ہے جو کہ گلیکسی ایس6 کی نسبت کافی ذیادہ ہے۔ 2: LG G4اوایس: اینڈرائیڈ 5.1 |  سکرین سائز:  5.5  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1440 x 2560 | ریم : 3 جی بی  |  فون میموری: 32جی بی|بیٹری:3000 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 16 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 8 میگا پکسلایل جی : جی 4
ایل جی G4 بلاشبہ کمپنی کا اب تک کا بہترین اسمارٹ فون ہے۔ اس فون میں ایل جی نے  بہترین کیمرہ،ہارڈ وئیر اور منفرد ڈیزائن جیسی خصوصیات اور بطریق احسن سمایا ہے۔ فون کا بیک کور  روایتی پلاسٹک یا  المونیم کی بجائے  چمڑے سے تیار کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ فون کا 16 میگا پکسل  لیزر آٹو فوکس کیمرہ آپ کو Raw تصاویر محفوظ کرنے کی سہولت بھی دیتا ہے۔ ساتھ ہی 8 میگا پکسل کیمرہ سیلفی کے شوقین حضرات کیلئے  ذیادہ پکسل مہیا کرتا ہے۔صرف کیمرہ ہی  نہیں  بلکہ فون کا ہارڈ وئیر بھی انتہائی برق رفتار ہے، جسکی بدولت ملٹی ٹاسکنگ انتہائی رواں اور بلا تعطل ہوتی ہے۔جی 4 کی نمایاں خصوصیت اسکی ارزاں  قیمت ہے جو کہ ذیادہ تر  فلیگ شپ موبائلوں کی نسبت بہت کم ہے۔1: Samsung Galaxy S6اوایس: اینڈرائیڈ 5 |  سکرین سائز:  5.1  انچ   |  سکرین ریزولوشن:1440 x 2560 | ریم : 3 جی بی | فون میموری: 32/64/128جی بی|بیٹری:2560 ملی ایمپیر ہاور |پرائمری کیمرہ: 16 میگا پکسل| فرنٹ کیمرہ : 5 میگا پکسلسیمنگ گلیکسی ایس 6
پچھلے برس گلیکسی ایس 5 کی ناکامی سے سبق حاصل کرتے ہوئے سیمسنگ کے از سر نو ایک نیا فون تیار کیا  جو کہ سیمسنگ کی گرتی موبائل ساکھ کو بحال کرنے میں کافی حد تک کامیاب رہا۔ گلیکسی 1یس 6 میں سیمسنگ نے QHD ڈسپلے کو 5.1  انچ سکرین  میں جمع کیا ہے، جو کہ انتہائی جاذب نظر ہے، لیکن اس قدر کثیف پکسل موبائل کی بیٹری کو بہت جلد ہضم کرنے لگتے ہیں۔ اس کے علاوہ فون کا بیک کور اس دوفعہ مکمل طور پر دھات سے تیار شدہ ہے، جس کی وجہ سے فون پریمیم اپیل رکھتاہے۔فون کا 16 میگا پکسل کیمرہ انتہائی خوبصورت تصاویر بنانے کی صلاحیت رکھتا ہےا ور سیمسنگ کی جانب سے قیمتوں میں کمی کے باعث بلاشبہ یہ اس وقت دنیا کا بہترین موبائل سیٹ ہے، جو کہ کسی بھی اسمارٹ فون صارف کا اولین انتخاب ہونے کا حقدار ہے۔
 سائنسیات نے 2014 کے اختتام پر سال کے  10بہترین سمارٹ فون پر پر فیچر پیش کیا تھا،جو کہ اس بلاگ کی مقبول ترین پوسٹوںمیں سے ایک ہے اس وجہ سے سال 2015 کے بہترین سمارٹ فون کا تعارف اور درجہ بندی پیش کی گئی یاد رہے کہ جو لسٹ آپ نے ملاحضہ کی ہے اس میں موجودموبائل سیٹ ایک عام پاکستانی موبائل صارف کیلئے انتہائی مہنگے ہیں  اس لئےہی میری یہ کوشش ہو گی کہ اگلی کسی تحریر میں بہترین بجٹ اور انٹری لیول موبائل فون کو بھی آپ کو سامنے پیش کیا جا سکے۔اپنے "کمینٹ" کے زریعے تجاویر اور آراء سے ضرور آگاہ کیجیے گا۔

گوگل میپس اب آفلائن سرچ اور نیویگیشن کے ساتھ

گوگل کو اپنی نقشہ جاتی سروس گوگل میپس کے زریعے بہترین معیار کے عالمی نقشے  مفت فراہم کرنے کےحوالے سے شہرت رکھتی ہے۔انٹرنیٹ کی موجودگی میں کوئی بھی صارف گوگل کی اس سروس سے اسمارٹ فون ایپلیکشن یا ویب کے زریعے رسائی حاصل کر سکتا ہے۔ نقشوں کے ساتھ ساتھ گوگل میپس کے زریعے آپ کسی مقام کو تلاش کرنے کے ساتھ ساتھ وہاں  تک رسائی کا راستہ بھی جان سکتے ہیں۔ جس کو نیوگیشن کہا جاتا ہے۔آفلائن گوگل میپس کی فراہمیمثلاً اگر ایک صارف کراچی میں موجود ہے تو وہ گوگل میپس کی سرچ بار مں "سیف المکوک" لکھ کر نہ صرف سیف الملوک جھیل کا محل وقوع جان سکتا ہے بلکہ جھیل تک رسائی کیلئے راستہ بھی بہ آسانی معلوم کر سکتا ہے۔یہی نہیں بلکہ گلوگل میپش آپ جھیل تک کا فاصلہ اور وہاں تک پہنچنے کا وقت بھی بتائے گا۔مگر اسی صورت میں جب آپ انٹرنیٹ سے منسلک ہوں۔اس لئےپہلے کسی مقام کی تلاش اور راستہ جاننے کیلئےصارف  انٹرنیٹ سے منسلک ہونا لازمی تھا مگر اب ایک نئی اپڈیٹ کے بعد کوئی بھی صارف اپنی موبائل میں موجود گوگل میپس کی ایپلیکیشن کو بغیر انٹرنیٹ کے سرچ اور نیویگیشن کے لئے استعمال کر سکے گا۔مزید پڑھیں: بلیک فرائی ڈے: عالمی شاپنگ فیسٹول اس سروس کے آغاز کا اعلان اگرچہ مئی 2015 میں منعقدہ گوگل آئی او کانفرنس میں کیا گیا تھا ، لیکن اس کا با قاعدہ آغاز اس ماہ شروع کیا گیا ہے۔ آفلائن میپس کی فراہمی ترقی پذیر ممالک کے صارفین کیلئے ایک اہم اقدام ہے کیونکہ اندازہ 60 فیصد  موبائل صارفین ابھی بھی ہمہ وقت انٹرنیٹ کی سروس سے محروم رہتے ہیں۔اسی وجہ سے ان ممالک میں Sygic  جیسے ایپس ذیادہ مقبول ہیں جو کہ آفلائن سرچ اور نیوگیشن کی سہولت مہیا کرتی ہیں۔اس اپڈیٹ کے بعد اب گوگل کی اسمارٹ فون ایپ پہلے سے ذیادہ موثر ثابت ہو گی اور مارکیٹ میں موجود دوسری ایپلیکشنز سے بہتر مقابلہ بھی کر سکے گی۔ خاص کر اگر آپ سیاحت کے شوقین ہیں یا کسی اور مصروفیت کی وجہ سے ایک نئی جگہ جانا چاہتے ہیں تو گوگل میپس کی یہ سروس آپ کے سفر کی بہترین معاون ثابت ہو گی۔مزید پڑھیں: کینڈی کرش اس قدر لت لگا دینے والی کیوں ہے؟ 

بلیک فرائی ڈے: عالمی شاپنگ فیسٹول

نومبر کے آمد کے ساتھ ہی بلیک فرائی ڈے کا نام تسلسل سے سننے میں آتا ہے۔خاص کر جو لوگ بیرون ملک رہائش پزیر ہیں یا آنلائن شاپنگ کا تجربہ رکھتے ہیں وہ بلیک فرائی ڈے سے واقفیت رکھتے ہیں اور شاپنگ کیلئےبھی سال بھرا س خاص موقعے کا انتطار کرتے ہیں کیونکہ اس دن بہت سے بین لاقوامی سپر سٹور اور آنلائن سٹور سال کی سب سے بڑی سیل کا اہتمام کرتے ہیں۔ یہ دن رفتہ رفتہ بین الاقوامی سیل ڈے(Sale Day) کی حثیت اختیار کرتا جا رہا ہے۔بلیک فرائیڈے امریکہ میں نومبر کی آخری جمعرات "Thanks Giving Day" کے بعد آنے والے جمعہ کو کہا جاتا ہے۔اس دن کے آغاز سے ہی مغرب میں کرسمس شاپنگ سیزن بھی شروع ہو جاتا ہے جس دوران ماریکٹوں میں گہما گہمی اپنے عروج پر ہوتی ہے اور ہر طرح کی ضروریات زندگی او ر تحائف کی خریداری اپنے عروج پر ہوتی ہے۔ ایک سٹور میں بلیک فرائی ڈے کے دن گاہکوں کا رششاپنگ کا تہوار:بلیک فرائی ڈے کا آغاز امریکہ میں سے ہوا جب ایک سٹور نے خریداری کے لحاظ سے بنجر دنوں میں صارفین کی توجہ حاصل کرنے کیلئے ایک دن میں سیل کا اہتمام کیا، حسب توقع اس دن گاہکوں کی بڑی تعداد نے خریداری کی۔ یوں کاروباری لحاظ سے ایک غیر منافع بخش سیزن میں اس دن ریکارڈ فروخت ہوئی۔اگلے سال ایک سے زائد سٹورز نے اسی دن سیل کا اہتمام کیا اور یوں رفتہ رفتہ یہ دن ایک نئی روایت اور تہوار کی حثیت حاصل کر گیا۔ 90ء کی دھائی میں انٹرنیٹ اور آنلائن شاپنگ سٹورز کی وجہ سے یہ روایت امریکہ سے دوسرے ترقی ممالک میں بھی پھیل گئی اور اب آہستہ آہستہ یہ تمام دنیا میں اپنائی جا رہی ہے۔امسال بلیک فرائی ڈے 27 نومبر 2015 کو منایا جائے گا، دنیا بھر کے بڑے آنلائن سٹورز اور سپر سٹور چین صارفین کیلئے سب سےبڑی سیل کا اہتمام کریں گے ۔جس کا دورانیہ صرف ایک دن کیلئے ہو گا۔ یہی وجہ ہے کہ ہر سٹور چاہے وہ آنلائن ہو یا کسی چین کا حصہ ہو ، کی کوشش ہوتی ہے کہ ذیادہ سے ذیادہ ڈسکاؤٹ ، اور تمام پروڈکٹس کو قیمت سے ہرممکن حد تک کم قیمت پر فروخت کیا جائے ۔ یہی وجہ ہےکہ ہر سال پہلے سے ذیادہ صارفین خریداری کیلئے اسی دن کا انتخاب کرتے ہیں ۔ریٹ کم ہونے کی وجہ سے ہر صارف کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ ضرورت کی تمام اشیاء اسی دن خرید سکے ۔ اس لئے یہ بین الاقوامی طور پر اس دن نہ صرف ماریکٹوں میں بلا کا رش ہوتا ہے بلکہ آنلائن شاپنگ سائٹس پر بھی ٹریفک اپنے زوروں پر ہوتی ہے ،یہی چیزیں بلیک فرائی ڈے کو سال کا سب سے منافع بخش دن بناتی ہیں۔یوں اشیاء سے سستے ریٹ اور اوسط سے ذیادہ خریداری کی عجہ سے سٹورز اور صارفین دونوں فریقین کو یکساں فائدہ ہوتا ہے۔اس دن نہ صرف روز مرہ استعمال کی اشیاء بلکہ جدید ٹیکنالوجی سے مزین آلات مثلاً اسمارٹ فون، کمپیوٹرز، لیپ ٹاپ ، ٹیبلیٹ اور ٹیلی وژن تک بھی انتہائی کم داموں فروخت کیلئے پیش کیے جاتے ہیں۔ بلیک فرائی ڈے پاکستان میں بھی:امریکہ،کینیڈا، برطانیہ اوردوسرے یورپی ممالک میں بلیک فرائی ڈے کی روایت کافی عرصے سے موجود ہے۔ذیادہ منافع بخش ہونے کی وجہ سے اب یہ بہت تیزی سے دوسرے ممالک میں بھی فروغ حاصل کر رہی ہے۔اس دن کی آمد سے پہلے ہی ذیادہ سے ذیادہ گاہکوں کو متوجہ کرنے کیلئے تشہیری مہم شروع کر دی جاتی ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ پاکستانی آنلائن شاپنگ سائٹ "دراز "نے اس سال پاکستان میں پہلی دفعہ بلیک فرائی ڈے سیل کیلئے تشہیری مہم شروع کر رکھی ہے،امید ہے کہ اگلے برس ایک سے ذیادہ سٹور اس منافع بخش دن میں سے اپنا حصہ حاصل کرنے کیلئے اس روایت میں شامل ہو جائیں گے۔

مزید پڑھیں: نیا لیپ ٹاپ کون سا خریدیں؟

Pages