محمد بلال اعظم (نقش فریادی)

Riazuddin: The Self-Effacing Quintessential Physicist of Pakistan


IT WAS tumultuous 1947 when the world observed the violent partition of India. Bloodthirsty savages put up communal riots all over the country. Religiously divided Ludhiana was also engulfed. Meanwhile, a lower middle-class family left the city for good and migrated to the newly established Pakistan. There were 17 years old twins in the family, Riazuddin and Fayyazuddin, who schooled in Islamia High School ran by Anjuman-i-Islamia philanthropy. Their inquisitiveness and appetite for knowledge were out of bounds. It was an ultimate sign of their dedication towards the beloved homeland that after losing all material possession in migration, they didn’t bemoan but ready to construe dreams with the hope of bright future. So the family enrolled the children in Government Muhammadan Oriental (MAO) College but soon got admission in Government College Lahore (now Government College University, Lahore) in 1949.
Source: King Fahd University of Petroleum and Minerals
In Government College Lahore, they started studying engineering but they couldn’t make their way spectacular and stunning. So a teacher there suggested them to study physics rather than engineering. Riazuddin gave his assent. Although it was quite disturbing and uninteresting situation for Riazuddin yet it was the outset of a celebrated career in the cosmos of physics. It was Government College Lahore, where Riazuddin met with his mentor Abdus Salam, in 1951. Salam’s sharp-witted personality and perspicacity to deal with theories in physics made him the rising star in the physics community all over the world. It was not only Riazuddin but the nations who spurred by Salam. After declining the offer of professorship at Cambridge, Salam joined Government College, Lahore and at the same time, he started a new course of Quantum Mechanics in Punjab University, Lahore. It was Salam’s repute who drew the attention of students. But only Riazuddin and Fayyazuddin got success in surviving the thicket of mathematical equations involved in quantum mechanics. Although it was a disheartened experience for Salam yet the twins made their identification as best students in that course.
Riazuddin got his Master’s degree in mathematics from Government College Lahore under the mentorship of Abdus Salam and joined his alma mater in 1954 as a lecturer in mathematics. Riazuddin left for Cambridge in 1955 on the invitation of Dr. Abdus Salam to pursue his doctorate under his supervision. His dissertation entitled Charge Radius of Piongot published in Physical Review Letters on May 15, 1959. It dealt with certain regularities underlying nuclear forces. It was an influential research paper but something more outstanding was yet to come.
After his return to Pakistan in 1959, he joined Punjab University Lahore as an associate professor of mathematics. In 1963, Norman March and Michael Duff awarded him a fellowship in the United States and he became a research associate professor at University of Rochester. He stayed there until 1965. His stay extended there and in 1965, he joined the University of Pennsylvania to teach physics until 1966. Meantime, his brother Fayyazuddin also completed his doctorate on “Preliminary Analysis of Photoproduction of K Mesons in the Mandelstam Representation”. On his way to University of Chicago’s Enrico Fermi Institute, Riazuddin convened his brother along with Faheem Hussain (late)* in Illinois. In 1966, Riazuddin and Fayyazuddin published an authoritative research paper entitled “Algebra of Current Components and Decay Widths of ρ and K* Mesons” in PhysicalReview Letters on July 29, 1966. It is the widely used Kawarabayashi-Suzuki-Riazuddin-Fayyazuddin (KSRF) relation. Actually, this fruitful relation was separately derived by Japanese scientists Ken Kawarabayashi and Mahiko Suzuki and Pakistani twin scientists Riazuddin and Fayyazuddin. According to Pervez Hoodbhoy, “The Relation (KSRF) has stood the test of experiment, but even today continues to tantalize physicists—because it works so much better than it really should”.
           Riazuddin found 1968, an efficacious year, for him. He came back to Pakistan on the request of Abdus Salam and joined Quaid-e-Azam University Islamabad’s Institute of Physics (now National Centre for Physics). Vibrant research groups on relativity, particle physics, and string theory were brought about in those days. On Salam’s postulation, Enrico Fermi Institute had also engaged its scientists in such groups. It was the start of an entirely new epoch in the field of physics in Pakistan. But still there is one more thing was to come into being on the part of Riazuddin in 1969, which made him acknowledged all over the world. It was his classical and well-founded textbook in particle physics Theory of Weak Interactions in Particle Physicscoauthored with C. P. Ryan and Robert E. Marshak. He also penned two widely recognized textbooks, together with Fayyazuddin, Quantum Mechanics in 1990 and A Modern Introduction to Particle Physics in 1992.
Source: AmazonSalam’s relation with Riazuddin was lenient and unparalleled. Two nonpareil physicists of the homeland enthralled the physicists of all castes and creeds all over the world. International Centre for Theoretical Physics (ICTP) Trieste, Italy shortly after its establishment became world’s leading cornerstone research institute. Riazuddin, along with Salam’s other students, created theoretical physics group there.
Astonishingly, it was ICTP, where Salam summoned Riazuddin and advised him to meet Munir Ahmed Khan upon his return to Pakistan to start the progress for the designing of the atomic bomb. In Salam’s views, the creation of theoretical physics group in Pakistan was mandatary to explore the technical aspects of fissile core and triggering mechanics of fissile material. Riazuddin made himself busy in the collection and analysis of data, which he procured from research papers, Manhattan project, Los Alamos laboratory etc. and started working day and night with sagacious engineers and canny physicists. Now, the rest was history. By shrugging off conspiracies, Pakistan made its way towards success. There was mass jubilation on May 28, 1998.

Source: Pakistan Science ClubOverlooking minute details, in my opinion, the nation has forgotten the man who adept at complex calculations involved in the set-up of a nuclear arsenal. Riazuddin played a seminal and catalytic role, on the advice of Abdus Salam, in Pakistan’s nuclear program. He awarded with Hilal-i-Imtiaz by the Government of Pakistan but it can never be the meed of Riazuddin’s diligence.
           Once Riazuddin dreamt that he would transform and develop National Centre for Physics on the lines of ICTP. He became the director of NCP but unluckily owing to administrative and political reasons, he could not have expounded his dream and removed by authorities from the directorship of NCP.
Riazuddin remained in search of something new. He wanted to find modern ways to look at. Being a dignified professor, it was his commitment and passion which made him the great Riazuddin. He knew how to evolve in the essence of theoretical physics. Around 165 research papers in reputed journals all over the world, more than 1900 citations along with a number of books, Riazuddin became one of the ever-leading physicists of the country.
One can easily recognize his thirst for knowledge by the fact that this self-effacing quintessential physicist published his last paper on August 20, 2013 at the age of 82 just 29 days before his demise. On September 9, 2013, this archetypal scientist took his last breath but had left an unexampled legacy. Motherland produced only a handful of physicists like Riazuddin who have exceptional advocacy and subservient innovation. He left this materialistic world but his affection and services will remain forever with us.
Source: National Centre for PhysicsRiazuddin made us proud. We cannot pay his debt for the services, he offered for us. But we can tribute to his intentness by following his footsteps with great zeal, glorious knack, coherent allegiance and continuous hard work.
He often said that “It was the idealism of the youth which not only enabled many of us, who could have stayed abroad, to return, but also infused a great enthusiasm to succeed in the pioneering role of establishing a new institution from scratch”.
(* Faheem Hussain was recently awarded Spirit of Abdus Salam Award (2016) along with Seifallah Randjbar-Daemi and Galileo Violiniby The Abdus Salam International Centre for Theoretical Physics (ICTP) Trieste, Italy.)
References:
  1. The Man Who Designed Pakistan’sBomb by Pervez Hoodbhoy, Newsweek. 
  2. Riazuddin by M. Zafar Iqbal 
  3. Riazuddin: In Memoriam by Asghar Qadir
Muhammad Bilal Azam

عید 'اپنوں' کے ساتھ

صبح سویرے شبنم کی روپہلی بوندوں کا لمس پا کر سرکاری ٹی وی کے کارٹون دیکھ کر ماں کی دعاؤں کے سائے میں  باپ کی انگلی پکڑے اسکول جانے والے بچے نجانے اتنے بڑے کب سے ہو گئے کہ ماں باپ کی آسائشوں کا خیال نہ رکھ پائیں! دوپہر کو سکول سے واپسی پر اگر ماں نظر نہ آتی یا رات کو کام کا بوجھ لئے باپ کبھی دیر سے گھر آتا تو اندیشوں میں گھِر جانے والے بچے شعور کی سیڑھی کو ایسے عبور کر گئے کہ پھر سالوں ماں باپ کی شکل بھی نہیں دیکھی۔ سکول سے تھکے ہارے واپس آ کر ماں کے ہاتھ سے کھانا کھانے کی شرط لگاتے بچے شاید دنیا کے جھمیلوں میں اس قدر مصروف ہوئے کہ ماں باپ کے لئے دو وقت کی روٹی کا بند و بست بھی مشکل ہو گیا۔ کبھی صبح سویرے گھر کی چھت پہ دانا چگتے چوزے اچھے لگتے تھے کہ ان سے اپنائیت کا احساس ہوتا تھا مگر پھر نہ وہ چوزے رہتے ہیں نہ وہ اپنائیت۔
منظر بدلتا ہے اور چوزوں کو دانہ چگتے دیکھ کر خوش ہونے والے بچوں کو کہیں یتیمی کا داغ لگ جاتا ہے تو  کہیں فکرِ معاش کھلونے توڑ دیتی ہے۔ کبھی وہ  بوٹ پالش کرتے نظر آتے ہیں تو کبھی برتن دھوتے ہوئے۔ رنگ تو رنگ ان آنکھوں سے تو خواب بھی مٹتے جاتے ہیں۔ دوستوں کے ساتھ نئے کپڑے پہن کر  عید منانے کی خواہش زندگی کی بے رحم ضروریات تلے کہیں دب جاتی ہے۔ یہاں شماریات کا محل نہیں کہ رزق کی تلاش میں نکلے ہوئے ایک بچے کی آہ بھی تمام قوم کی عشرت و آسائش پہ بھاری ہے۔
بھوک چہروں پہ لئے چاند سے پیارے بچےبیچتے پھرتے ہیں گلیوں میں غبارے بچےکیا بھروسہ ہے سمندر کا، خدا خیر کرےسیپیاں چننے گئے ہیں مرے سارے بچے
اب نہ سرخ پانی کا عذاب آئے گا، نہ ٹڈی دل چھوڑے جائیں گے کہ اب دلوں پہ مہر لگتی جا رہی ہے۔ بے حسی عذابِ الٰہی ہے۔۔۔ بے حسی عذابِ الٰہی ہے۔۔۔  اور اس سے بڑھ کر بے حسی کیا ہو گی کہ جنت اولڈ ہومز میں خود اپنے مکینوں کا، اپنے راج دلاروں کا رستہ تک رہی ہے۔ بے قیاس  و ناشناس لوگوں کے ہجوم میں بچوں کی اداس آنکھیں سراپا سوال ہیں۔۔۔
گھر تو کیا، گھر کی شباہت بھی نہیں ہے باقیایسے ویران ہوئے ہیں در و دیوار کہ بس
کتنی آنکھیں ایسی ہیں جو اولڈ ہومز میں اپنے پیاروں کے، اپنے بیٹوں، بیٹیوں کے آنے کی آس لگائے دھندلا جائیں گی مگر آنے والے نہیں آئیں گے! بابا ماضی کے سفر پہ نکل جائیں گے اور کس دل کے ساتھ تصور میں لائیں گے کہ کاش میرا بیٹا آئے، جیسے بچپن میں مَیں اس کی انگلی پکڑے سکول لے جاتا تھا، وہ مجھے گھر لے جائے! ماں اب بھی رات کو اولڈ ہوم کے دروازے پہ کھڑی دعاؤں کا ورد کرتی سوچ رہی ہو گی کہ اتنی رات ہو گئی، پتہ نہیں بیٹا گھر بھی پہنچا ہو گا یا نہیں، خدا خیر کرے!  پھولوں جیسے کتنے ہی معصوم سورج سے بھی پہلے تلاشِ رزق میں نکلیں گے اور رات کو تھکے ہارے ہاتھوں کا تکیہ بنائے خواب آنکھوں میں لئے سو جائیں گے!
کیا یہ انتظار، انتظارِ لاحاصل ہی رہے گا؟ آئیے! اس عید پر ہمارا ساتھ دیجیے کہ کہیں یہ عید بھی بوڑھی آنکھوں میں انتظار اور احساسِ محرومی کے مزید نئے کانٹے نہ چبھو جائے۔ اگر یہ آنکھیں بے نور ہو گئیں تو ہم کیسے دیکھیں گے! یہ لب خاموش ہو گئے تو ہمارے لئے دعائیں کون مانگے گا! یہ پھول مرجھا گئے تو کہیں باغبان ہم سے ناراض نہ ہو جائے! اگر یہ کلیاں تعلیم اور اپنائیت سے محروم رہیں تو کہیں کمھلا نہ جائیں! کہیں ہم منزل پہ پہنچ کے بھی بے آسرا، بے سر و سامان ہی نہ ٹھہریں!
عید سب کے لئے --- پازیٹیو پاکستانآئیے! اولڈ ہومز میں اپنے پیاروں کے لئے متلاشی آنکھوں کے ساتھ عید منائیے۔ آئیے! کتابوں کی بجائے ہاتھوں میں اوزار تھامے پھولوں کے ساتھ عید منائیے۔ آئیے! موسم ہو یاکوئی تہوار، کسی چیز کی پرواہ نہ کرتے ہوئے ہماری خاطر اپنا وقت سڑکوں پہ گزارنے والے ٹریفک وارڈنز اور سیکیورٹی گارڈز کے ساتھ عید منائیے  کہ رشتے صرف خون کے ہی تو نہیں ہوتے۔ بعض اوقات دل کے رشتے خون کے رشتوں سے کہیں زیادہ سَچے اور سُچے ہوتے ہیں۔
اولڈ ہومز میں بسے محبت کے ان فرشتوں کو آپ کے روپے پیسے کی خواہش نہیں، سکول کی بجائے دکانوں پہ جانے والے بچے آپ کی جائیداد میں حصہ نہیں مانگتے، سڑکوں پہ اپنے فرائض انجام دیتے اہلکاروں کو آپ سے کسی صلے کی تمنا نہیں کہ انہیں صرف آپ کے وقت کی ضرورت ہے اور ہم اتنا تو کر ہی سکتے ہیں۔ وہ بناوٹ سے عاری ہیں، دستار کا بوسہ لینا نہیں جانتے، ان کی دعائیں آپ کی پیشانی کا بوسہ لیتی ہیں۔ آپ کے نام سے، آپ کے لئے ان کی آنکھیں وضو کرتی ہیں۔ ان کے شب و روز آپ کی زکوٰۃ ادا کرتے ہیں۔ آئیے! ان کے ساتھ عید منائیں اور انہیں یقین دلائیں کہ "ہم زندہ قوم ہیں، پائندہ قوم ہیں"۔
تمام عمر سلامت رہیں، دعا ہے یہیہمارے سر پہ ہیں جو ہاتھ برکتوں والے (محمد بلال اعظم)



عابد کی سال گرہ کا احوال

یوں تو کالج میں کئی بار گرم لُو کے تھپیڑے کھائے اور بارہا بارش کی بوندوں کو کوریڈور میں، الیکٹرانکس لیب کی کھڑکی کے پاس، کبھی روز گارڈن میں، کبھی سنکنگ گارڈن میں کچھ حسین دوستوں کی پُر لطف قربت میں محسوس کیا مگر جو مزہ 27 جون کی بارش میں بھیگنے کا آیا، دل اُس سے پہلے نا آشنا تھا۔
بارش کی ایک ہی منزل ہے۔۔۔ دل کی لائبریری۔۔۔ کاغذ کی کشتی، بارش کا پانی۔۔۔من آنگن میں۔۔۔  وہ ہنستے ہنستے رونے لگتی تھی، دھوپ میں بارش ہونے لگتی تھی۔۔۔ ایسے میں کچھ دکھ بھی خودرو پودوں کی طرح باہر آ جاتے مگر یہ اداسی بھی تو دل مندر کی داسی ہے۔۔۔ لطیف اور حسین۔۔۔ بارش صرف یادوں میں ہی نہیں، کھانے پینے کی چیزوں اور خیالوں میں بھی برکت ڈال دیتی ہے۔۔۔ خیال، جن کی رفتار بارش کی بوندوں کو بھی مات دے دے۔ یہ بارش بھی تو سرما کی چاندنی جیسی ہے کہ خوابوں کو مزید اُجلا کر دیتی ہے۔ کتنے ہی آفاق دوستوں کے ساتھ گزری یادوں کے حیرت کدہ میں گم ہو جاتے ہیں! دل کے شہرِ پُر فن میں احبابِ دل نگار موجود ہوں تو بارش کی بوندیں خیال و فکر کی تجسیم و تخلیق کا لمحہ عطا کرتی ہیں اور اگر ان میں کسی ایک کے لئے کوئی لمحہ خاص ہو تو وہی بوندیں متاعِ یقین کے اسباب مہیا کرتی ہیں، رم جھم ایسا احساس مہیا کرتی ہے جیسے پانی میں محبت کا امرت گھلا ہوا اور تقدیس و محبت کے تمام "عابد" و "شاہد" فرشتے اس منظر کی گواہی دینے خود آئے ہوئے ہوں۔

بچپن سے سنتے آئے ہیںاے ابرِ کرم آج اتنا برس۔۔۔۔ کہ وہ جا نہ سکیںجبکہ ستائیس جون کی رات اس قدر اثر انگیز و حیرت ناک تھی کہ دل نے بے ساختہ صدا دیاے ابرِ کرم آج اتنا برس۔۔۔ کہ "ہم" جا نہ سکیں

جہاں رونقِ محفل عابد و شاہد ہوں، محفلِ دوستاں کو منور کریں استادِ مَن مطیع الرحمان، یارِ دلآویز و مونسِ جاں عثمان بھائی، ارشد ، ضرغام اور عدنان ہوں وہاں مجھ تشنہ لباں سمیت سب ہی آسمانِ ہنر کے اُس پار "شفیق چہروں کی صبیح آنکھوں سے پھوٹتی دعاؤں کے کہر" محسوس کر رہے تھے۔ پہلے دماغ مصر رہا کہ سپورٹس آفس میں بیٹھا جائے مگر وہ دل ہی کیا جو بارش کی بوندوں اور تیز ہوا کو دیکھ کے مچل نہ جائے۔۔۔ یادگار سوئمنگ پول کے باہر کرسیاں لگائی گئیں تو سفیرانِ محبت کو دیکھ کر ہوا نے بھی اپنا رخ بدل لیا اور لگی لطیف روح کی کثیف سوچوں کو شفاف کرنے۔۔۔ بوندوں کی ہمرہی میں کیک کاٹا گیا اور روایتِ دوستاں کے منکر نہ ٹھہریں، اس لئے اسی کیک سے محفل کے دولہا کا چہرہ "کیک و کیک" کیا۔۔۔ اس کارِ خیر میں سب نے کارِ ثواب کی نیت سے حصہ لیا۔

کسی نے کہا تھاکل ہلکی ہلکی بارش تھیکل تیز ہوا کا رقص بھی تھا
ہوا رقص کرے، پتوں کی پازیب بجے تو کس کافر کا دل مانے گا خاموش رہنے کو۔۔۔ ہتھیلیوں کی تھاپ پہ شروع ہونے والا سفر دل کی لَے پر یادوں کے سُر سنگیت کے ساتھ لفظوں کی "انتاکشری" کا ہم رکاب ہوا۔جب ہر لہر کے پاؤں سے گھنگھرو لپٹے اور بارش کی ہنسی نے تال پہ پازیب چھنکائے تو بخدا درختوں پہ ستارے اتر آئے۔  المختصر یہ کہ رقص کیا اور کبھی شور مچایا۔۔۔ ہم تھے اور ہمارا "پاگل پن" تھا۔۔۔ خیر وقت کو گزرنا، وہ وقت بھی گزر گیا لیکن جاتے جاتے ہمیں کئی حسین یادیں دے گیا۔۔۔

مگر ان یادوں میں خلش رہی کہ سر عمران کا ساتھ میسر نہ آیا۔۔۔ عمران صاحب یاد آئے، دل ماضی کے سفر پر نکل گیا اور دور کہیں سے ذہن میں جھماکا اور ہاتھ جھلمل جھلمل کرتے برقی کی بورڈ پہ چلنے لگے۔۔۔ استادِ مہربان کے لئے خاکسار کا ایک شعرکتنا یاد آتے ہیںبارش، چائے اور تم

 اگلے برس بھی ستائیس جون آئے گی،  ہم نجانے کہاں ہوں گے مگر یہ یادیں اُس روز بھی یہ موسم، یہ محفل یاد دلائیں گی۔۔۔ جیسے پچھلی سترہ جون کو ہم کامسیٹس میں تھے، کالج میں سائیکل اسٹینڈ کے باہر کیک کاٹا اور اِس بار عثمان بھائی کے گھر۔۔۔ جیسے اس بار میں اور عثمان بھائی پچھلی سالگرہ کی یادوں کو تازہ کرتے رہے، اگلے سال یقیناً ہم سب کریں گے مگر اس امید کے ساتھ کہ یہ محفلیں کبھی ختم نہیں ہوں گی، محبتوں کو نہ کبھی زوال آیا نہ آئے گا۔۔۔ہسٹری سوسائٹی کی اس غیر رسمی ملاقات کے  اختتام پہ بشیر بدر یاد آ گئے
کبھی برسات میں شاداب بیلیں سوکھ جاتی ہیں​ہرے پیڑوں کے گرنے کا کوئی موسم نہیں ہوتا​بہت سے لوگ دل کو اس طرح محفوظ رکھتے ہیں​کوئی بارش ہو یہ کاغذ ذرا بھی نم نہیں ہوتا​










 (محمد بلال اعظم)

آؤ مل کر قدرت کے راز کھوجیں!۔۔۔۔ تجسس سائنس فورم۔۔۔۔ تعارف (دوسرا حصہ)


تجسس سائنس فورم کے تعارف کا پہلا حصہ تیزابیت پہ پڑھا جا سکتا ہے۔
آج کے دور میں ملکی و غیر ملکی زبانوں میں تعلیمی ویب سائٹس کسی بھی ملک کی تعلیمی روایات کا ایک اہم حصہ گردانا جاتا ہے اور یہ ویب سائٹس کسی بھی ملک میں سائنس کی ترویج میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔علاوہ ازیں یہ طلباوطالبات کی شخصی،ذہنی،علمی و عملی اور تخلیقی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔سائنس ایک مشکل مگر دلچسپ مضمون کے طور پر جانا جاتا ہے اور اسکی افادیت سے دنیا بخوبی واقف ہے۔مگر طلباوطالبات اس مضمون کے بارے علم تو رکھتے ہیں مگر سمجھ نہیں رکھتے اور یہ عدم توجہی کی وجہ سے ہے۔ شاید کہ طلبا اس مضمون کو بس ایک مضمون سمجھ کر پڑھتے ہیں، اس میں دلچسپی نہیں رکھتے۔ اس کی ایک بڑی وجہ یہ بھی ہے کہ پاکستان میں اکثریت اردو زبان سے وابستہ ہے، انگریزی کو سرکاری اور دفتری زبان کی حیثیت حاصل ہونے کے باوجود طلبا کی اکثریت اردو میڈیم سے وابستہ ہے۔ تجسس سائنس فورم کا مقصد اردو زبان میں سائنس کی ترویج و اشاعت ہے۔پاکستان میں سائنس کی ترویج و اوشاعت اور ترقی کے لئے بہت لوگ کوشاں رہے اور اس شعبہ نے بہت سے صاحبِ علم پیدا کئے۔ جنہوں نے ملکی سطح پر اور شہری سطح پر اپنی خدمات سر انجام دیں اور ابھی تک یہ سلسلہ برقرار ہے اور انشاءاللہ یونہی برقرار رہےگا۔ ڈاکٹر عبدالسلام، ڈاکٹر عبدالقدیر خان، ڈاکٹر ثمر مبارک مند، ڈاکٹر عطاءالرحمان اس کی روشن مثال ہیں۔ سائنس ایک بہت وسیع شعبہ ہے اور اسکو سمجھنے کے لئے دلچسپی اور وقت درکار ہے۔ ویب سائٹ کے زیرِتحت سائنس سے تعلق رکھنے والے تمام طلبا و طالبات اپنے نظریات کو بہتر بنا سکتے ہیں اور اپنے تخلیقی کام کو متعارف بھی کروا سکتے ہیں۔ سائنس دن بدن ترقی میں مصروف ہے مگر ہمارا تعلیمی نظام کچھ ایسا ہے کہ سال ہا سال وہی پرانا نصاب پڑھایا جاتا رہا اور یہ نصاب بھی سائنس کے شعبہ کے کچھ درخشندہ ستاروں کی مرہونِ منّت ہے۔ سائنس میں روزانہ کی بنیاد پہ نئی چیزیں اور نظریات دریافت ہو رہے ہیں مگر ہمارے طلبا و طالبات اس سب سے بے خبر ہیں اورہمارے ہاں ان سب باتوں سے آگاہی کا فقدان ہے حالانکہ طلبا کا ان سب باتوں سے با خبر رہنا وقت کی ضرورت ہے۔لہذا تجسس سائنس فورم اس بات کی کمی کو دور کرنے میں ہمیشہ سے کوشاں رہی ہے اور انشاءاللہ رہے گی۔

ہمارے مقاصد: یوں تو تجسس سائنس فورم کے اغراض و مقاصد بہت ہیں مگر مختصراً کچھ کا ذکر درج ذیل ہے:
1)           سائنس سے متعلقہ مسائل کے حل میں طلبا کی مدد
2)           نئی ایجادات و دریافت سے آگاہی اور سائنس کی دنیا کے عظیم ناموں کے بارے میں اردو زبان میں لکھنا
3)           فورم کے ممبران میں سائنسی و تخلیقی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کے لئے ماہانہ بنیادوں پہ مقابلہ جات کا انعقاد
4)           طلبا کو اس قابل بنانا کہ وہ دوسرے ممالک اور ملکی سطح پر دوسرے اداروں کے طلبا کا سامنا کر سکیں
5)           مختلف موضوعات پر مختلف شعبہ جات کے اساتذہ کی جانب انکی تاریخ اور نظریات میں ترقی پر مبنی لیکچرز کا انعقاد
6)            سائنس سے متعلقہ مطالعاتی دوروں کا انعقاد
7)           سائنس کے بارے میں طلبا میں دل چسپی پیدا کرنا8)           طلبا کو انکے روشن مستقبل کے مواقع کے بارے آگاہ کرنا                  
9)            طلبا کو سائنسی نمونہ جات بنانے کی طرف راغب کرنا اور انکی حوصلہ افزائی
10)         چھوٹی جماعتوں کے طلبا کو سائنس کی افادیت اور اس مضمون سے آگاہ کرنا،اور اساتذہ کی تعلیمی زندگی کا تعارف انکے سامنے رکھنا                       تا کہ وہ انہیں اپنے لئے مثال سمجھیں۔
11)        ایک سائنسی جریدے کی اشاعت کی کوشش کرنا
               لیکن ہمیں ان سب مقاصد کو حاصل کرنے کے لئے بہترین افرادی قوت کی ضرورت ہے کیونکہ یہ کام صرف دو چار لوگوں کا نہیں بلکہ ایک پوری ٹیم کا ہے۔ مگر ہمیں امید ہے کہ اس سفر میں ہم تنہا نہ ہوں گے، آہستہ آہستہ ہم ایک قافلہ کی شکل اختیار کر لیں گے۔ آئیے ہمارا ساتھ دیجیے، تجسس سائنس فورم کے رکن بنیں اور پاکستان میں سائنس کے حوالے سے ایک نئے باب کا در وا کرنے میں ہماری کوشش کا حصہ بنیں۔

میرے کمرے میں کہیں رات پڑی ہو جیسے


میرے کمرے میں کہیں رات پڑی ہو جیسے
سرمئی شام اسے ڈھونڈ رہی ہو جیسے

خواب تو جل کے دھواں کب کا ہوا ہے لیکن
 ایک چنگاری کہیں اب بھی دبی ہو جیسے

ایک گزرے ہوئے لمحے میں پڑا ہوں کب سے
 زندگی رکھ کے مجھے بھول گئی ہو جیسے

ہاتھ میں ہاتھ مگر پھر بھی یہ لگتا ہے مجھے
 تُو بہت دور بہت دور کھڑی ہو جیسے

اشک پلکوں کے کناروں سے  اُمڈ آئے ہیں
 میری آنکھوں سے کوئی بھول ہوئی ہو جیسے

چلتے چلتے ہوئے اکثر میں ٹھٹھک جاتا ہوں
 میں نے پھر سے وہی آواز سُنی ہو جیسے

(اسد قریشی)

عشق کا نام تو آزار بھی ہو سکتا تھا


عشق کا نام تو آزار بھی ہو سکتا تھاہجر سہنا کبھی بیکار بھی ہو سکتا تھا
جرم کی آگ میں جھلسا ہے جو معصوم سا پل اگلے وقتوں کا یہ معمار بھی ہوسکتا تھا
 برف نے ڈھانپ رکھا ہے جسے اب تک سوچو آتشِ قہر کا کوہسار بھی ہو سکتا تھا
ہے عجب رزق کی تقسیم، تو ترسیل عجب جو ہے محدود و بسیار بھی ہو سکتا تھا
 یوں تو دنیا نے دیئے غم ہیں بہت سے مجھ کو ورنہ غم تیرا گراں بار بھی ہوسکتا تھا
خیر ہو قیس کی صحرا کو بنایا مسکن دلِ وحشی تھا یہ خونخوار بھی ہو سکتا تھا
شمع جل کر بھی نہ جل پائی، مگر پروانہ عشق میں تھوڑا سمجھدار بھی ہوسکتا تھا
میں نے چاہا نہ کبھی خود کو نمایاں کرنا میرے قدموں میں یہ سنسار بھی ہوسکتا تھا
 وہ تو اچھا ہے کہ سمجھا نہ زمانہ مجھ کو ورنہ منصور، سرِ دار بھی ہوسکتا تھا
تجھ پہ سایا ہے تری ماں کی دعاؤں کا اسدؔشکر کر راندہِ دربار بھی ہوسکتا تھا
(اسد قریشی)

اس عالمِ حیرت و عبرت میں کچھ بھی تو سراب نہیں ہوتا


اس عالمِ حیرت و عبرت میں کچھ بھی تو سراب نہیں ہوتاکوئی پسند مثال نہیں بنتی، کوئی لمحہ خواب نہیں ہوتا

اک عمر نمو کی خواہش میں موسم کے جبر سہے تو کھُلاہر خوشبو عام نہیں ہوتی، ہر پھول گلاب نہیں ہوتا



اس لمحۂ خیر و شر میں کہیں اک ساعت ایسی ہے جس میںہر بات گناہ نہیں ہوتی، سب کارِ ثواب نہیں ہوتا
میرے چاروں طرف آوازیں اور دیواریں پھیل گئیں لیکنکب تیری یاد نہیں آتی اور جی بیتاب نہیں ہوتا
یہاں منظر سے پس منظر تک حیرانی ہی حیرانی ہےکبھی اصل کا بھید نہیں کھلتا، کبھی سچا خواب نہیں ہوتا
کبھی عشق کرو اور پھر دیکھو، اس آگ میں جلتے رہنے سےکبھی دل پر آنچ نہیں آتی، کبھی رنگ خراب نہیں ہوتا
میری باتیں جیون سپنوں کی، میرے شعر امانت نسلوں کیمیں شاہ کے گیت نہیں گاتا، مجھ سے آداب نہیں ہوتا

(سلیم کوثر)

اُس سمت چلے ہو تو بس اتنا اُسے کہنا

محترم غلام سرور صاحب، جو سرور مجاز کے قلمی نام سے لکھتے تھے، کی ایک بہت خوبصورت غزل آپ سب کی بصارتوں کی نذر
اُس سمت چلے ہو تو بس اتنا اُسے کہنا
اب کوئی نہیں حرفِ تمنّا، اُسے کہنا
اُس نے ہی کہا تھا تو یقیں میں نے کیا تھا
امّید پہ قائم ہے یہ دنیا، اُسے کہنا

دنیا تو کسی حال میں جینے نہیں دیتی
چاہت نہیں ہوتی کبھی رسوا، اُسے کہنا

زرخیز زمینیں کبھی بنجر نہیں ہوتیں
دریا ہی بدل لیتے ہیں رستا، اُسے کہنا

وہ میری رسائی میں نہیں ہے تو عجب کیا
حسرت بھی تو ہے عشق کا لہجہ، اُسے کہنا

کچھ لوگ سفر کے لئے موزوں نہیں ہوتے
کچھ راستے کٹتے نہیں تنہا، اُسے کہنا

(سرور مجاز)

پھر دل میں سلگ اٹھی ہے زنجیر کی خواہش


پھر دل میں سلگ اٹھی ہے زنجیر کی خواہشاب خواب ہیں مطلوب نہ تعبیر کی خواہش
پاگل دلِ ناداں تھا کہ کرتا رہا شب بھرخوابوں کی حویلی میں کسی ہیر کی خواہش

یہ بارِ محبت تو سنبھالے نہیں سنبھلااور اُس پہ سِوا سلسلۂ میرؔ کی خواہش

ناداں تھے وہ انسان، جو ڈھاتے رہے دیوارمعمار تو کرتا رہا تعمیر کی خواہش!

رہتا ہوں مقامِ مہ و انجم سے بھی آگےپر دل میں ہے کچھ اور بھی تسخیر کی خواہش
(محمد بلال اعظم)

ہو جائے کسی طور جو تکمیلِ تمنّا


ہو جائے کسی طور جو تکمیلِ تمنّا
لہجوں میں اتر آئے گی تفضیلِ تمنّا

سنتا رہا تاویلِ جفا اُس کی زباں سے
بہتا رہا آنکھوں سے مری نیلِ تمنّا

اُس صورتِ مریم کو سرِ بام جو دیکھا
سینے میں اتر آئی اک انجیلِ تمنّا

ایسا بُتِ کافر ہے کہ دیکھا نہیں مُڑ کر
ہر چند کہ ہوتی رہی تعلیلِ تمنّا

مدّھم ہوئی آنکھوں میں تو پھر دل میں جلا لی
پر بجھنے نہیں دی کبھی قندیلِ تمنّا

اُس عہدِ اذیّت میں اتارا گیا مجھ کو
جس عہد میں ہوتی رہی تذلیلِ تمنّا

(محمّد بلال اعظم)​

راشد اشرف۔۔۔ اردو دنیا کی ایک قد آور شخصیت


"کتابوں کا اتوار بازار"، "اس ہفتے کی کتاب" اور "ابنِ صفی" جیسے موضوعات پہ لکھنے والی مشہور شخصیت اور سینکڑوں قیمتی کتابوں کو سکین کر کے انٹرنیٹ پہ مہیا کرنے والے محترم راشد اشرف صاحب کا خصوصی انٹرویو، جو کلکتہ کے ایک اخبار کے لئے لکھا گیا تھا، اس کی ان پیج ہمیں بھی موصول  ہوئی ہے۔ جس پہ ہم راشد اشرف صاحب کا دلی شکریہ ادا کرتے ہیں۔
راشد اشرف صاحب


فیس بک پروفائل: https://www.facebook.com/zest70pkوادئ اردو: http://www.wadi-e-urdu.com/اردو محفل پروفائل: http://www.urduweb.org/mehfil/members/%D8%B1%D8%A7%D8%B4%D8%AF-%D8%A7%D8%B4%D8%B1%D9%81.4830/برقی کتب: http://www.scribd.com/zest70pk/documentsای میل: zest70pk@gmail.com
امید ہے ہم سب کو اس قلمی ملاقات سے بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔
سوالنامہ منجاب محترمہ فرزانہ اعجاز، مسقط 
19ستمبر 2013 ۔راشد اشرف
سوال 01: آپ کی پیدائش کہاں کی ہے اور آپ کے اطراف ادبی اور سماجی ماحول کیسا تھا ؟
جواب: پیدائش کراچی کی ہے۔ 70 کی دہائی میں ادبی ماحول کے بارے میں اس لیے وثوق سے کچھ نہیں کہہ سکتا ہوں کہ اس وقت پنگوڑے میں تھا اور پنگوڑے کے اطراف کا ماحول ہمیشہ انتہائی غیر ادبی ہوتا ہے۔ 
سوال 02: آپ نے ابتدائی اور اعلیٰ تعلیم کہاں حاصل کی؟اور تعلیمی زندگی میں کن اساتذہ سے علمی استفادہ کیا؟
جواب: اوائل عمری ہی میں والدین کا بسلسلہ روزگار تبادلہ حیدرآباد سندھ میں ہوگیا تھا جہاں والد ایک بینک سے وابستہ تھے جبکہ والدہ تدریس کے شعبے سے منسلک تھیں اور چند برس قبل پروفیسر آف فزکس کے عہدے سے سبکدوش ہوئی ہیں ۔ابتدائی تعلیم انٹر تک حیدرآباد ہی سے حاصل کی۔ اس کے بعد ‘‘اعلی تعلیم’’ کے حصول کے لیے حیدرآباد سے کراچی کا رخ کیا جہاں سے این ای ڈی یونیورسٹی سے کیمیکل انجینئرنگ کی ڈگری حاصل کی۔ اردو میں لکھنے کا آغاز سولہ برس کی عمر میں کیا۔ یہ بھی گویا ایک المیہ ہی ہے اس لیے کہ بچے عموما ڈھائی تین برس کی عمر میں ہی لکھنا شروع کردیتے ہیں۔ 
تعلیمی زندگی میں اپنے اساتذہ کا احترام راقم کے دل میں شروع ہی سے تھا (اساتذہ منجانب راقم اپنے دلوں میں کتنی قدر و احترام رکھتے تھے، اس بارے میں کچھ کہنا مشکل ہے) خاص کر پبلک اسکول حیدرآباد میں اردو کے استاد سے راقم کو دلی عقیدت تھی۔ ان کا نام نعیم الرحمن جوہر تھا ، نعیم صاحب پہلے ہندو مذہب سے تعلق رکھتے تھے۔ انٹر کی کلاس کے آخری دن نعیم صاحب نے اپنے تمام طالب علموں کے سامنے اپنی داستان حیات بیان کی۔ تمام طالب علم ان سے محبت کرتے تھے اور ان کی باتیں سننے میں محو تھے۔ قبول اسلام سے قبل نعیم الرحمن جوہر، نربھرے رام جوہر تھے، ان کے والد نے انہیں گیتا کے ساتھ ساتھ بائبل اور قران کریم کی تعلیم بھی دی جس کی بنیاد پر آگے چل کر وہ اختیاری طور پر نربھرے رام سے نعیم الرحمن ہوئے۔

سوال 03: راشد صاحب! بتایئے کہ اس وقت اردو زبان اور اردو ادب کی ترقی کی کیا صورت حال ہے؟اور کون سی صنف زیادہ ترقی کر رہی ہے؟
جواب: اس وقت اردو زبان اور اردو ادب کی ترقی کی صورت حال بیک وقت مایوس کن اور خوش کن ہے۔ تفصیل اس اجمال کی یہ ہے کہ انٹرنیٹ کی آمد اور لوگوں کی کثیر تعداد کے اس سے استفادے کے بعد اردو لکھنے کا رجحان کم سے کم ہوتا جارہا ہے۔ ‘‘کٹ اینڈ پیسٹ’’  کا دور دورہ ہے۔ اکثر کہتا ہوں کہ اگر پاکستان میں اگر ‘‘گوگل سرچ انجن’’  کی سہولت بند کردی جائے تو یقین کیجیے کہ اردو کے آدھے اخبار راتوں رات دم توڑ جائیں گے، آدھی صحافت کا صفایا ہوجائے۔ غالباً ہند میں بھی معاملہ مختلف نہ ہوگا۔ دوسری جانب امید افزاء پہلو یہ ہے کہ اس صورت حال میں بھی نئے لکھنے والے تواتر کے ساتھ سامنے آرہے ہیں۔ 
میں سمجھتا ہوں کہ اردو زبان میں حالیہ چند برسوں میں خودنوشت لکھنے کے رجحان میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے اور اس صنف ادب کو کئی لکھنے والوں نے درخوراعتنا جانا ہے۔ یہ الگ بات ہے کہ ان میں سے کئی لکھنے والوں نے اس انداز سے خودنوشت لکھی ہے کہ اپنے قاری کو ‘‘درگور’’ کردیا ہے(یہاں جی چاہ رہا کہ درخور اور درگور کے استعمال کی جانب اسی انداز سے قارئین کی توجہ مبذول کراؤں جیسے محترم بشیر مشاعروں میں بدر ہوا میں ہاتھ لہرا لہرا کر سامعین کی توجہ اپنے اشعار کی جانب کرانے میں یدطولی رکھتے ہیں )۔۔۔۔۔۔
خاکہ نگاری، سفرنامہ اور تنقید میں بھی کثیر تعداد میں کتابوں کی اشاعت کا سلسلہ جاری ہے۔ 
رہا سوال شاعری کا تو اس سلسلے میں خامہ بگوش کا وہ بیان راقم کی نظر میں ہمیشہ تازہ رہے گا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ  ‘‘عہد میر میں دلی میں پانچ ہزار شاعر تھے، آج لاہور کے تھانہ انار کلی کی حدود میں اس سے زیادہ شاعر مل جائیں گے۔‘‘
اردو زبان و ادب میں شاعری ایک ’سنگین ‘ مسئلے کا رخ اختیار کرتی جارہی ہے۔ حالیہ چند دہائیوں میں ایسے شعراء کی تعداد میں خطرناک حد تک اضافہ دیکھنے میں آیا ہے جو محض اپنا کلام شائع کرانے میں دلچسپی رکھتے ہیں اور اس عمل کے دوران شاعری کے معیار کو یکسر نظر انداز کردیا جاتا ہے۔ڈاکٹر گیان چند جین نے شعری مجموعوں کی کثیر تعداد میں اشاعت کے بارے میں کہا تھا: 
’’ میں کسی طرح معاصر ادب کا نقاد نہیں لیکن میرے پاس شعری مجموعے جس کثیر تعداد میں آتے ہیں، میں ان سے سراسیمہ ہوگیا ہوں۔ اکتوبر نومبر 1986 میں چھ ہفتوں کے لیے میں حیدرآباد (دکن) سے باہر گیا۔ اس عرصے میں سات شعری مجموعے وصول ہوئے جن میں پانچ کے خالق ایسے تھے جن کا نام میں نے پہلی بار ان مجموعوں کے طفیل سنا۔ اگر کسی ہفتے کوئی شعری مجموعہ نہ آئے تو میں اسے مبارک جانتا ہوں۔ ایک شامت اعمال ہفتے میں تین مجموعے وصول ہوئے۔ اگر مجھ بے بصیرت کا یہ حال ہے تو جو حضرات اردو کے نامور مبصر اور دیدہ ور نقاد ہیں ، ان کے ہاں تو شعری مجموعوں کی ایسی باڑھ آتی ہوگی کہ گھر میں ان کے بیٹھنے اٹھنے کو ایک جگہ بھی نہ بچتی ہوگی۔‘‘

سوال 04:  کیا کسی زبان کی ترقی محض اس بات پر منحصر ہے کہ اسکو سرکاری تحفظ حاصل ہو؟اگر ایسا نہیں ہے تو زبان اور ادب کے تحفظ اور ترقی کے کیا کیا اسباب ہو سکتے ہیں؟
جواب: کسی زبان کی ترقی ہرگز ہرگز محض اس بات پر منحصر نہیں ہے کہ اس کو سرکاری تحفظ حاصل ہو۔ اردو زبان میں زندہ رہنے اور آگے بڑھنے کی بھرپور قوت ہے۔ یہ تمام تر نامساعد و نامواقف حالات کے باوجود بھی اپنا راستہ بنا رہی ہے۔ ان حالات میں سرکار عوام کو تحفظ دے لے ، وہی بہت بڑی بات ہوگی، ایسی صورت میں عوام خود خوشی خوشی زبان کو تحفظ دے لیں گے۔ 

سوال 05: آپ کی دلچسپی اردو کی کتابیں جمع کرنے میں ہے اور ان میں سے اکثر کتب کو کمپیوٹر پر منتقل کرنے کا محنت طلب کام کرنے کا خیال کیوں کرآیا؟
جواب: انٹرنیٹ پر راقم تادم تحریر پونے تین سو نادر و نایاب کتابیں پیش کرچکا ہے اور ان تمام کتابوں کے دائرہ مطالعہ یا ‘‘ریڈرشپ’’ کا ریکارڈ حیران کن ہے۔ اب تک پوری دنیا میں ایک لاکھ سے زائد افراد ان کتابوں کو پڑھ چکے ہیں جبکہ ڈاؤن لوڈ کرنے والوں کی تعداد علاحدہ ہے۔ اس کام کو سرانجام دینے کے پس پردہ صرف ایک ہی سوچ تھی اور وہ یہ کہ کسی بھی عمدہ و دلچسپ کتاب کو کسی فرد واحد کی ذاتی جاگیر نہیں ہونا چاہیے بلکہ اسے ہرخاص و عام کی دسترس میں ہونا چاہیے۔ 
ایک امریکی اور ایک برطانوی آپس میں گفتگو کررہے تھے۔ برطانوی نے اپنی دوبین سے ساحل کی جانب دیکھتے ہوئے کہا ‘‘وہ دیکھو! سو فٹ د ور کس قدر حسین لڑکی کھڑی ہے’’
امریکی نے جواب دیا ! ‘‘وہ تو ٹھیک ہے مگر سو فٹ دور کھڑی حسینہ کس کام کی ؟ ‘‘
سو کوئی اہم اور تاریخی کتاب اگر کسی صاحب کے کتب خانے میں برسوں سے پڑی ہے اور (معاف کیجیے گا ) وہ اگر اس پر پھن کاڑھے بیٹھے ہیں تو اس کا دوسروں کو کیا فائدہ۔ 
اس کام کو کیے جانے کے پس پردہ اردو زبان کی ترویج کے ساتھ ساتھ یہ سوچ بھی کارفرما تھی کہ اردو کی وہ کتابیں پیش کی جائیں جو ماضی کی گرد میں کہیں چھپ کر نظروں اور ذہنوں سے اوجھل ہوگئی تھیں اور جو فی زمانہ کسی تحقیق کے کام میں ممد و معاون ثابت ہوسکتی ہیں مزید یہ کہ دنیا کے ایسے حصوں میں قیام پذیر لوگ ان سے استفادہ کرسکیں جہاں اردو کی کتابیں پہنچا تو کجا، وہ اردو بولنے کو بھی ترس جاتے ہیں۔ 
بیرون ممالک میں مقیم ایسے ہزارہا لوگ ہیں جنہوں نے مذکورہ کتابوں میں شامل فیروز سنز سے سن ستر کی دہائی میں شائع ہوئے بچوں کے ڈیڑھ سو سے زائد ناولوں کو اپنے بچوں کو اردو سکھانے کی غرض سے ڈاؤن لوڈ کیا ہے۔ راقم کے ذاتی ای میل میں اس سلسلے میں سینکڑوں ای میلز آچکی ہیں، لوگوں نے انہیں خود پڑھا ہے ، اپنے بچوں کو پڑھوایا ہے اور یہ سلسلہ جاری ہے۔ انٹرنیٹ پر درج ذیل لنک کی مدد سے مذکورہ تمام کتب تک بہ آسانی رسائی حاصل کی جاسکتی ہے:
http://www.scribd.com/zest70pk/documents اس بات کا ذکر اہم ہے کہ ان میں زیادہ تر وہ کتابیں ہیں جن کو شائع ہوئے چالیس سے پچاس برس کا عرصہ گزر چکا ہے۔ راقم کا ای میل پتہ یہ ہے، اگر کسی صاحب کو اس سلسلے میں کسی دقت کا سامنا ہو تو براہ راست رابطہ کرسکتے ہیں:
 zest70pk@gmail.com

سوال 06: اس مشکل کام کرنے میں کیا کوئی دوسرا بھی آپ کا مددگار ہے یا آپ اکیلے ہی چلے ہیں جانبِ اردو ادب؟
جواب: واضح رہے کہ ان کتب کو اسکین کرکے انٹرنیٹ پر پیش کرنے کے سلسلے میں میں راقم اکیلا ہی کام کرتا رہا ہے اور ایک اندازے کے مطابق تادم تحریر ایک لاکھ سے زائد اوراق اس سلسلے میں اسکین کرکے پیش کیے جاچکے ہیں۔ یہ دوانے کا سودا ہے، اور اس کام سے کسی مالی فائدے کی امید سے راقم کوسوں دور ہے۔ کتابیں ہر  ‘‘عام و خاص’’ کے لیے ہیں اور دن بدن ان کی تعداد میں اضافہ ہوتا چلا جارہا ہے۔ جب تلک ساغر چلے گا، چلائیں گے۔ جیسا کہ عرض کرچکا ہوں ، کتابوں یا مطلوبہ مواد کی لوگوں کو فراہمی کے پس منظر میں مدد کا جذبہ کارفرما ہے اور اس سلسلے میں راقم، مشفق خواجہ مرحوم، سید معراج جامی اور عقیل عباس جعفری جیسے لوگوں کے نقش قدم پر چلنے کی حقیر سی کوشش کرتا ہے۔ یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے ہمیشہ بنا کسی غرض ، لوگوں کی مدد کی اور کررہے ہیں۔ 

سوال 07: دنیا کے ہر کونے سے آپ کو کتابیں موصول ہوتی ہیں ،آپ کا کیا تاثر ہے کہ دنیا کے الگ الگ حصوں میں رہنے والے،اردو والے،اور انکی نگارشات ایک جیسی ہیں یا ان میں نمایاں فرق نظر آتا ہے۔ اور یہ کہ خصوصاً برصغیر ہند وپاک میں اردو زبان کاکیا مستقبل نظر آتا ہے۔اور دونوں ملکوں میں لکھے جانے والے ادب اور طباعت میں کیا کیا نمایاں فرق نظر آتا ہے؟
جواب: یہ بات درست ہے کہ راقم الحروف کو دنیا کے ہر کونے سے کتابیں موصول ہوتی ہیں۔ خاص کر ہندوستان سے جہاں سے ہر طرح کی چیز، ہر طرح کا سامان پاکستان آتا ہے سوائے کتابوں اور جرائد کے۔ 
دنیا کے مختلف حصوں سے تعلق رکھنے والوں کی نگارشات ہرگز ہرگز ایک جیسی نہیں ہوتیں۔ ان میں تنوع ہوتا ہے، ہر علاقے اور خطے کا رنگ نمایاں ہوتا ہے، ہر تحریر کا الگ الگ مزہ ہوتا ہے۔ خاص کر خودنوشتوں کے معاملے میں تو بیک وقت کئی ‘ذائقے’ محسوس کیے جاسکتے ہیں۔ ہاں البتہ پاک و ہند سے شائع ہونے والی خودنوشتوں میں ایک قدر مشترک ضرور ہے۔ برصغیر کے نامساعد حالات میں لوگوں کا آگے بڑھنا، زیست کرنا، اس میں درپیش مصائب کا بیان اور ہمت اور عزم سے ان سے نبرد آزما ہونے کا احوال۔ یہ قاری کو ہمت اور حوصلہ دیتا ہے۔ 
حالیہ دنوں میں راقم نے دہلی سے شائع ہوئی ایک ایسی ہی خودنوشت ‘‘پگڈنڈیاں’’ کا مطالعہ کیا اور مصنفہ ‘‘بچنت کور’’ کے دکھ کو اپنے دل میں محسوس کیا۔ اسی طرح خاکہ نگاری کی صنف میں بے شمار لوگوں نے اہم سنگ میل قائم کیے ہیں ، درجنوں معیاری مجموعے منصۂ شہود پر آچکے ہیں۔ منٹو، شورش کاشمیری، چراغ حسن حسرت، نصر اللہ خاں، ماہر القادری، اسلم فرخی، غرضیکہ کس کس کا نام لوں اور کس کا نہیں۔ لیکن حال ہی میں ہندوستانی فلمی صنعت سے وابستہ میرے محترم کرما فرما جاوید صدیقی کے شخصی خاکوں کا مجموعہ ’’روشندان’’ کے عنوان سے شائع ہوا ہے جس کے مطالعے کے بعد راقم کا یہ ماننا ہے کہ خاکہ نگاری کی تیزی سے ماند پڑتی صنف ادب میں گویا اس کتاب نے ایک نئی روح پھونک دی ہے اور اس کی رگوں نیا خون دوڑا دیا ہے۔ ہر حساس دل رکھنے والے کو اسے ضرور پڑھنا چاہیے۔ 
’’پگڈنڈیاں’’ ہو یا ’’روشندان’’، دونوں میں حالات حالات کے شکنجے میں جکڑے ہوئے مجبور انسانوں کی داستانیں موجود ہیں۔ یہ اس خطے کی قسمت ہے جسے برصغیر پاک و ہند کہا جاتا ہے ۔ یہاں کی اکثریت کو نان و جویں کے لیے سنگلاخ پتھروں کا کلیجہ چیرنا پڑتا ہے۔ اپنا آپ داؤ پر لگانا پڑتا ہے تب کہیں جا کر گوہر مقصود ہاتھ آتا ہے اور وہ بھی سب کے نصیب کا حصہ نہیں بنتا۔ 
راقم کی نظر میں برصغیر ہند وپاک میں اردو زبان کا مستقبل تمام تر ناموافق حالات کے باووجود پائدار ہے۔ خاص کر ہندوستان میں جب تک ’’اردو’’ زبان میں فلم بنتی رہے گی، اردو آگے بڑھتی رہے گی۔ یقین کیجیے کہ جب تک چھوٹے چھوٹے اداکار بچے ہندوستان میں بنی ’’چلر پارٹی’’’ جیسی فلموں میں بے عیب، ش قاف کا خیال رکھتے ہوئے اردو بولتے رہیں گے، اردو آگے بڑھتی رہے گی۔جب تک رچی مہتا جسے لوگ ’’عمل’’  جیسی فلموں کو پیش کرتے رہیں گے اور نصیر الدین شاہ جیسے عظیم اداکار مذکورہ فلم میں بے عیب اور بامحاورہ اردو بولتے رہیں گے، اردو کو آگے بڑھنے سے کوئی نہیں روک سکتا۔ یہاں میں ہندوستانی آرٹ فلموں کا ذکر قصداً نہیں کرنا چاہتا کہ وہ میری انتہائی دلچسپی کی چیز ہیں جن پر تفصیلی گفتگو کا یہ متحمل یہ انٹرویو نہیں ہوسکتا۔ لیکن بہرحال اتنا ضرور کہنا چاہوں گا کہ ان فلموں میں سے بہتیری ایسی ہیں جن میں اردو زبان کی صحت کا خیال رکھا گیا ہے اور دیکھنے والوں کو اردو سیکھنے کی ترغیب ملی ہے۔ پاکستان کہنے کو اردو کا گڑھ سمجھا جاتا ہے لیکن یہاں یہ حال ہے کہ انگریزی دان طبقہ اردو کو حقارت کی نگاہ سے دیکھتا ہے۔ پاکستان میں انگریزی بولیے ، رکے ہوئے کام ہوجائیں گے، سامنے والا مرعوب ہوجائے گا۔ یہاں ایسے مناظر دیکھتے ہوئے ایک عمر گزر گئی ہے۔ 
ہند میں انگریزی بولنا باعث فخر نہیں سمجھا جاتا جبکہ یہاں اس کے برعکس ہے۔ 
ادھر یہاں کے ٹی وی چینلز نے وہ ادھم مچایا ہے کہ الامان الحفیظ۔ سب سے زیادہ بگاڑ یہی لوگ پیدا کررہے ہیں۔ خبریں پڑھنے مرد و خواتین سارا دن غلط اردو بولتے ہیں۔ ان میں سے کئی ایسے ہیں جنہوں نے کبھی اردو کی کوئی کتاب کھول کر بھی نہ دیکھی ہوگی۔ محترم آصف جیلانی کی بات دوہرا رہا ہوں کہ لفظ  ‘‘حوالہ’’  پاکستان میڈیا کے اعصاب پر سوا رہوگیا ہے۔ ایک ایک جملے میں چار چار مرتبہ اس لفظ کو دوہرایا جاتا ہے۔ سب سے بڑا چینل ہونے کے دعوے دارٹی وی چینل پر ایک میک اپ میں لتھڑی ہوئی خبریں پڑھنے والی خاتون کا قصہ تو محمود شام صاحب نے راقم سے بیان کیا تھا۔پاکستان میں2009 میں آنے والے سیلاب کے دنوں میں کیے گئے ایک براہ راست پروگرام کے دوران وہ ناظرین سے مدد کی درخواست کرتے ہوئے فرمارہی تھیں کہ ’’آگے بڑھیے! ہم آپ کی دست درازیوں کے منتظر ہیں’’۔ اب کوئی اس سے پوچھتا کہ بی بی ! تمہاری درخواست کے جواب میں یہاں تو پروانوں کی قطار لگ جائے گی۔
افسوس کی بات یہ ہے کہ جوعورت مذکورہ بالا فقرے کے مفہوم اور اس کے ‘نتائج’  سے نابلد تھی، اسے وائس آف امریکہ نے اپنے پروگرام میں بطور میزبان لے لیا تھا۔ 
دونوں ملکوں میں شائع ہونے والی کتابوں کی طباعت میں واضح فرق ہے۔ یہ فرق صاف نظر آتا ہے۔ راقم کو ایک ہندوستانی ناشر نے حال ہی میں بتایا تھا کہ ہند میں سرکار اردو زبان میں شائع ہونے والی کتابوں کو مالی معاونت فراہم کرتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وہاں سے آنے والے رسائل کی قیمت ناقابل یقین حد تک کم ہوتی ہے، اتنی قیمت میں پاکستان میں رسالے کا سرورق ہی بنتا ہوگا۔ یہی حال کتابوں کا ہے۔ ہند سے شائع ہونے والی کتابوں کا کاغذ نہایت عمدہ اور معیاری ہوتا ہے جبکہ یہاں بڑے بڑے نامی گرامی ناشرین کا یہ حال ہے کہ وہ ‘‘میٹ’’ کاغذ (ایک سالخوردہ نظر آنے والا مٹیالا و ملگجا سا شرمناک کاغذ جسے دیکھ دل بیٹھ جاتا ہے) کا استعمال کرنے لگے ہیں۔ حال ہی میں نامور ادیب و براڈکاسٹر رضا علی عابدی کی کتاب ‘‘کتابیں اپنے آباء
کی’’ شائع ہوئی ہے اس قدر عمدہ اور دلچسپ و تاریخی کتاب کی طباعت کا ذرہ بھر بھی خیال نہیں رکھا گیا ہے۔ اس نوعیت کی کئی مثالیں ہیں۔ کتابیں اپنے آباء کی، ‘‘آباء ’’  ہی کے زمانے میں شائع ہوئی کوئی کتاب جان پڑتی ہے۔ 

سوال 08: آ پ کو خود ادب کی کون سی صنف زیادہ پسند ہے اور آپ کس صنف میں اظہار خیال کرنا پسند کرتے ہیں ؟
جواب: خودنوشت، خاکہ اور سفرنامہ۔ راقم الحروف کے خیال سے یہ تینوں اصناف ادب محض اس کی نہیں بلکہ اکثریت کی پسندیدہ ہوتی ہیں۔ پاکستانی ادیبوں کے تحریر کردہ ہندوستان کے سفرناموں سے شیفتگی کا یہ عالم ہے کہ 2011 میں فرزند ابن صفی جناب احمد صفی دلی گئے تو راقم نے انہیں لذت کام و دہن کی آزمائش کے لیے کریم ہوٹل کا نام تجویز کیا اور نتیجہ حسب حال نکلا۔ کریم ہوٹل کے کھانے کھا کر ان کا وزن اور واپسی پر اس کے بیان سے ہماری اشتہا، دونوں میں قابل ذکر اضافہ ہوا تھا۔ اسی طرح اور کئی مثالیں بھی ہیں۔ 
خودنوشت آپ بیتی راقم کی دلچسپی کا ایک خاص موضوع ہے اور اس صنف ادب میں کچھ کام بھی کیا ہے۔ پاک و ہند سے شائع ہونے والی خودنوشت آپ بیتیوں کی فہرست پر راقم گزشتہ چار برس سے کام کررہا ہے، یہ تقریبا مکمل ہوچکی ہے اور امکان ہے کہ کسی موقر(یا غیر موقر) ادبی جریدے میں شائع ہوگی۔ اسی طرح ابن صفی پر دو کتابیں لکھنے کے بعد اب اردو خودنوشتوں پر ایک جامع کتاب لکھنے کا ارادہ ہے لیکن کیا کیجیے کہ راقم کسی ‘‘قدر ناشناس’’ کی تگڑی سی ‘‘زرپرستی’’ کا طلبگار ہے اور ذاتی طور پر سوچتا ہے کہ اگر اس کے بجائے ملکہ شراوت پر کتاب لکھنے کا ارادہ کیا ہوتا تو ناشرین کی قطار لگ چکی ہوتی۔ یہ الگ بات ہے کہ قطار میں موجود ناشرین کی اکثریت میں ‘نا’ اور ‘شر’، دونوں عناصرکا غلبہ ہوتا۔ لیکن صاحب، کیا کیجیے کہ اگلے وقتوں میں زور شرافت پر ہوتا تھا، اب ‘‘شراوت’’ پر ہے۔ 
خیر یار زندہ صحبت باقی بلکہ ناشر زندہ شراوت باقی ۔۔۔۔۔!
رہا سوال اظہار خیال کرنے والی بات کا تو کتابوں بالخصوص خودنوشتوں پر تبصرے ہی عرصہ چار برسوں سے دلچسپی کا موضوع رہے ہیں جو پاک و ہند کے مختلف ادبی جرائد میں شائع ہورہے ہیں۔ راقم اس کوشش کو اپنے باعث فخر نہیں سمجھتا، یوں سمجھ لیجیے کہ دل کی بھڑاس نکالنے کا ایک ذریعہ ہے۔ 

سوال 09: کمپیوٹر کی ایجاد نے اردو والوں کو بہت قریب کردیا ہے ، یہ اچھی علامت ہے یا تصادم کی ؟
جواب: اس بات میں دوسری کوئی رائے نہیں ہوسکتی کہ کمپیوٹر کی ایجاد نے اردو والوں کو قریب کردیا ہے۔ دنیا بھر میں ایسے سماجی رابطوں کی ویب سائٹس اور متفرق فورمز کی تعداد روز بروز بڑھتی جارہی ہے جہاں نئی کتابوں کی اشاعت کی اطلاعات، شاعری، نثری مضامین سبھی کچھ ایک پلک جھپکتے میں ای میل باکس میں پہنچ جاتا ہے، لوگ اسے باقاعدگی سے دیکھتے ہیں اور تبادلہ خیال کرتے ہیں۔ اس سے کتابوں کی فروخت میں نمایاں طور پر اضافہ ہوا ہے۔ ایسے شواہد موجود ہیں کہ راقم الحروف کی، بارے نئی کتابوں کی اشاعت، پیش کی جانے والی خبروں کے ردعمل میں لوگ اردو بازار کراچی کی سب سے بڑی دو دکانوں میں متعلقہ کتاب کے حصول کے لیے راقم کی ‘‘مدلل’’ رائے و تعارف کے احترام میں راقم کا نام لیتے پہنچے۔ البتہ اس بات کا کوئی ریکارڈ نہ مل سکا کہ زر کثیر صرف کرکے کتاب خریدنے اور اسے پڑھنے کے بعد وہی لوگ راقم الحروف کے بارے میں کیا رائے رکھتے تھے۔ سچ پوچھیے تو طبیعت میں پائی جانے والی درویشی اور متاثرین کے متوقع ردعمل کے سبب کبھی ہمیں اس کی تفصیلات جاننے کا شوق بھی نہ ہوا۔ 
بہرحال یہ صحت مندانہ رجحان ہے، حوصلہ افزاء بات ہے۔ سب سے اچھی بات یہ ہے کہ اردو ٹائپنگ یعنی یونی کوڈ (یا ان پیج)کے استعمال میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے اور راقم کے ذاتی علم میں ایسے کئی بزرگ ہیں جو اسی برس سے زیادہ کی عمر میں مہارت سے اس کا استعمال کررہے ہیں۔ مقصود الہی شیخ، پروفیسر اطہر صدیقی، آصف جیلانی۔۔۔۔ کتنے ہی ان جیسے مزید نامور لوگ ہیں جو مذکورہ طرز تحریر میں مہارت رکھتے ہیں۔ 
اس شعبے میں کئی خاموش مجاہد صلے کی تمنا کی پروا کیے بغیر چپ چاپ اپنا کام کیے جارہے ہیں۔ پاکستان میں کئی نام ہیں جیسے فرخ منظور، محمد وارث اور اسی طرح ہند میں اعجاز عبید ہیں جنہوں نے یونی کوڈ میں متفرق موضوعات پر ہزارہا برقی کتابوں کی دستیابی کو ممکن بنایا ہے۔ پاکستان میں ایک صاحب شرجیل نامی نے شکاریات پر ایک عمدہ ویب سائٹ بنائی ہے۔ اعجاز عبید صاحب کو پاکستان سے بھی کئی لوگوں کا تعاون حاصل ہے۔ یہ بہت بڑا کام ہے۔ میرے پاس الفاظ نہیں ہیں کہ ان تمام لوگوں کی ستائش کرسکوں۔ اردو محفل، اردو ویب، اردو سخن وغیرہ کئی ایسی سائٹس ہیں جہاں اراکین اردو میں لکھتے ہیں اور تبادلہ خیال کرتے ہیں۔ 
حال ہی میں ریختہ کے نام سے ہند میں ایک اردو ویب سائٹ کا آغاز کیا گیا ہے جہاں پرانی کتابیں دستیاب ہیں۔ یہ نہایت کارآمد ویب سائٹ ہے جو تیزی سے مقبول ہورہی ہے۔ 
راقم الحروف نے بھی اس سلسلے میں کچھ ٹوٹا پھوٹا کام حسب توفیق و استطاعت کیا ہے اور تادم تحریر متفرق موضوعات پر 282 کتابیں اپ لوڈ کی ہیں۔ ان میں پچانوے فیصد کتابیں ایسی ہیں جن کی اشاعت کو چالیس سے پچاس اور بعض کو ساٹھ برس سے زائد کا عرصہ گزر چکا ہے۔ ان میں خودنوشتیں بھی ہیں، سفرنامے بھی اور خاکوں کے مجموعے بھی ہیں۔ ان کتابوں کے مصنفین کی اکثریت اس دنیا سے جاچکی ہے بصورت دیگر وہ کاپی رائٹ کی اس خلاف ورزی کی صورت میں راقم پر یقیناؐ نالش کردیتے۔
پاک و ہند سے جب کبھی بھی کوئی رابطہ کرکے یہ اطلاع دیتا ہے کہ راقم کی اپ لوڈ کی ہوئی فلاں کتاب اس کے ایم فل یا پی ایچ ڈی کے مقالے کی تکیل کے سلسلے میں کارآمد ثابت ہوئی ہے تو یقین کیجیے کہ یہ خاکسار کے لیے ازحد باعث طمانیت و انبساط ہوتا ہے۔ 

سوال 10:  آخیر میں ان ادیبوں اور شاعروں کے نام بتا ئیے ؟ جو آپکو زیادہ پسند ہیں اورایسے کچھ اشعار سنائیے جو آپ کے دل کے قریب آگئے ۔ 
جواب: یہ سوال دلچسپ ہے۔ اوائل عمری ہی سے بچوں کے ناول لکھنے اور ترجمہ کرنے والے ادیب میرے دل کے قریب رہے تھے۔ یہ مجھے ایک ایسی دنیا میں لے جاتے تھے جو ایک طلسماتی دنیا تھی۔ یہ آگے بڑھنے کا حوصلہ دیتے تھے، ذہنوں کی تعمیر میں اپنا کردار ادا کرتے تھے۔ یہ وہ خاموش مجاہد تھے جن کے اوپر تاحال کوئی تحقیق نہ ہوئی، کوئی مقالہ نہ لکھا گیا، اور تو اور ان میں سے اکثر کا ذکر بعد از مرگ وفیات کی کتابوں میں بھی نہ آیا۔ وہ قلم کی مزدوری کرتے، کسی صلے کی تمنا کے حصول کے بنا، خاموشی سے اس دنیا سے رخصت ہوگئے لیکن مجھ ایسے لاکھوں پڑھنے والوں کے ذہن و قلب میں وہ آج بھی پوری آب و تاب سے زندہ ہیں۔ ان میں مقبول جہانگیر ہیں، سلیم احمد صدیقی، زبیدہ سلطانہ، جبار توقیر، محمد یونس حسرت ہیں۔ راز یوسفی، سعید لخت، سعید احمد سعید، ابو ضیاء اقبال ہیں۔ 
ان میں سید ذاکر اعجاز، شوکت ہاشمی، قمر نقوی، فرخندہ لودھی، عزیز اثری، ذوالفقار احمد تابش، سیف الدین حسام جیسے قلمکار شامل ہیں۔ یہ میرے ہیرو ہیں اور میں ان کو سلام پیش کرتا ہوں۔ 
اور پھر اے حمید مرحوم کو تو کسی طور نظر انداز کیا ہی نہیں جاسکتا ہے۔ کچھ وقت گزرا اور چھٹی جماعت میں پہنچا تو وقت سے قبل ہی ابن صفی مرحوم کو جاپکڑا اور ان کی تحریر کے سحر میں ایسا مبتلا ہوا کہ آگے چل کر ان پر باقاعدہ تحقیق کرڈالی, اور ان پر دو عدد کتابیں لکھیں اور مرتب کیں۔مختصر الفاظ میں کہنا چاہوں گا کہ ابن صفی، اے حمید اور محمد خالد اختر سے میں نے محبت کی ہے۔ ان میں اے حمید مرحوم سے لاہور میں ان کی قیام گاہ پر ملاقات کرنے کا بھی موقع ملا تھا۔ آج بھی ان تینوں ادیبوں کی کوئی بھی کتاب ہاتھ میں تھام کر دنیا و مافہیا، بلکہ کراچی کے حالات کے تناظر میں ‘‘مافیا’’ کہیں تو بہتر ہوگا، سے بے خبر ہوجاتا ہوں۔ 
ان مصنفین کی برسہا برس پرانی تحریر کردہ کتابوں کو دیکھ کر آج بھی میری وہی کیفیت ہوتی ہے جسے محمد خالد اختر نے ایک مرتبہ اپنی پسندیدہ کتابوں کو ایک زمانے بعد اپنے عزیز از جان دوست ،مشہورمزاح نگار شفیق الرحمن کے گھر میں ایک ڈبے میں رکھا دیکھ کر ان الفاظ میں بیان کیا تھا:
’’ چھ سبز چھوٹی سی کتابیں۔کیسے خوبصورت، مسرت بخش essays وہ لکھتا تھا اور ملنے میں وہ کتنا شفیق، ہنس مکھ ، خوش گفتار رفیق ہوگا۔ اب میں نے اس کی کتابیں سالوں کے بعد دیکھیں۔ایک پھانس سی میرے حلق تک آئی اور میں نے انہیں بھیگی ہوئی آنکھوں سے، احترام سے اس گوشے سے اٹھایا۔اپنے ہاتھ سے بار بار تھپکا۔ایلفا، پیارے ایلفا۔تم نے ہمیں ہماری جوانی میں کیا کچھ نہیں دیا۔تمہارے جیسے essays ، زندگی کے حزن،اس کی شادمانی اور خوبصورتی سے دمکتے ہوئے، اب کون لکھ سکے گا’’۔

رہا سوال اشعار کی پسندیدگی کا، تو چند پسند کے اشعار یہ ہیں لیکن خدارا اس سے خاکسار کے ذہنی رجحان، رویوں وغیرہ کا اندازہ نہ لگایا جائے جیسے ماہرینِ تحریر شناسی، تحریر دیکھ کر اور دست شناس ہاتھ کی لکیریں دیکھنے کے بعد الل ٹپ اندازے لگاتے ہیں کہ فلاں شخص نے اب تک کی زندگی میں اتنے قتل اور اتنے عشق کیے ہیں اور مزید اتنے کرنے کا ارادہ رکھتا ہے :

افسردگی سوختہ جاناں ہے قہر میر
دامن کو ٹک ہلا کہ دلوں کی بجھی ہے آگ 

دل کو ہم سمجھا کے لائے کوئے جاناں سے حسن
دل ہمیں سمجھا بجھا کر، کوئے جاناں لے چلا

ہونا تو وہی ہے جو مقدر میں مرے ہے
لیکن وہ مرے خواب، مرے خواب، مرے خواب

کھلا اک عمر میں کار ہوس میں کچھ نہیں رکھا
پھر اس کے بعد میں نے دسترس میں کچھ نہیں رکھا

جمال یار میں رنگوں کا امتزاج تو دیکھ
سفید جھوٹ ہیں ظالم کے سرخ ہونٹوں پر

بے وارث لمحوں کے مقتل میں


محسن نقوی کے غزل اور نظم کے قادر الکلام شاعر ہونے کے بارے میں دو آراء نہیں ہو سکتیں لیکن اس کے ساتھ ہی محسن کی نثر،  جو کہ ان کی کتابوں کے دیباچے کی شکل میں موجود ہے، اس میدان میں بھی محسن کی قادر الکلامی کی دلیل ہے۔محسن نقوی کی کتاب"طلوعِ اشک" کا دیباچہ انتساب کے ساتھ پیشِ خدمت ہے۔

بے وارث لمحوں کے مقتل میں            مجھے ٹھیک سے یاد نہیں کہ مَیں نے پہلا شعر کب کہا تھا۔ (یہ بہت پہلے کی بات ہے)۔ مجھے تو یہ بھی یاد نہیں کہ میں پہلا "سچ" کب بولا تھا؟ (یہ بھی شاید بہت پرانا قصّہ ہے)۔ پہلا شعر اور پہلا سچ کون یاد رکھتا ہے؟۔ اور اتنی دُور پیچھے مُڑ کر دیکھنے کی ضرورت بھی کیا ہے؟ اُدھر کون سی روشنی ہے۔ گھُپ اندھیرے کی ریت پر ہانپتے ہوئے چند بے وارث لمحے۔ پچھتاوے کی زد میں جانے کب اور کہاں کھو گئے۔؟            مجھے ٹھیک سے یاد نہیں۔ کچھ بھی تو یاد نہیں"ماضی" بھی تو کتنا بخیل ہے۔ کبھی کبھی تو حافظے کی غربت کو نچوڑ کر رکھ دیتا ہے۔ اور پھر اندھے کنویں کی طرح کچھ بھی تو نہیں اگلتا۔ اپنے اندر جھانکنے والوں سے پوری بینائی وصول کرتا ہے۔ بِیتے دنوں کے اُس گھُپ اندھیرے میں بھی کیا کچھ تھا۔؟

میرا کچا مکان (جِس کی چھت کی کڑیوں سے میری سانسیں اَڑی ہوئی تھیں۔ اُس مکان میں جلتا ہوا مٹی کا "دیا"۔ جِس کی پھیکی روشنی نے مجھے لفظوں کے باطن میں اترنے کا حوصلہ بخشا۔ گُم صُم گلیوں میں کھیلتی ہوئی آوارہ دھوپ۔ جِس نے مجھے اداس راتوں کے پُرہَول سناٹے سے اُلجھنے کا سلیقہ سکھایا۔ مَیلی دیواروں سے پھسلتی ہوئی چاندنی۔ جو رائیگاں ہونے کی بجائے میرے خوابوں کی بے آواز بستی کا اثاثہ بن گئی۔ دھول میں لپٹی ہوئی بے خوف ہَوا جو میرے مسلسل سفر کی اکیلی گواہی بن کر مجھے دِلاسہ دیتی رہی۔ نا ہَموار آنگن میں ناچتی لُو سے جھلستے چہروں کی مشقّت، جس نے مجھے محرومیوں سے سمجھوتے کا انداز مستعار دیا۔ خشک ہونٹوں پر جمی ہوئی مسکراہٹ۔ جس نے مصائب و آلام کی بارش میں مجھے زندہ رہنے کا اعتماد عطا کیا۔ سہمی صبحیں، گونگی دوپہریں، بہری شامیں اور اندھی راتیں کِتنی کہانیوں کو بُنتے بُنتے راکھ ہو گئیں۔ اور ان کی کہانیوں کا کوئی ایک ریزہ بھی میرے پاس نہیں ہے۔ میرا سب کچھ میرے ماضی کے پاس گروی ہے۔            اِس "سب کچھ" میں میرا ہنستا کھیلتا، پہیلیاں بوجھتا اور شرارتیں سوچتا بچپن بھی شامل ہے، جِسے اُس کے کھلونوں سمیت میرے ماضی نے میری دسترس سے دُور فنا کر اُس کے نقوش کھرچ ڈالے ہیں۔            ماضی کو کون سمجھائے کہ بچپن تو ہوتا ہی یاد کرنے کے لئے ہے۔ مگر میرا بچپن؟ کِسی دیوار کی اوٹ جلتے دہکتے تندور سے باہر جھانکتے شعلوں سے اڑتی چنگاریوں کی طرح جیسے فضا میں بکھر کر کہیں بجھ گیا ہے۔ دُور بہت دُور فضا میں تحلیل ہوتے ہوئے دھویں کے اُس پار کتنی شفیق آنکھیں کتنے صبیح چہروں سے پھوٹتی ہوئی دعاؤں کی کُہر اور کِتنی نیک روحوں کے قُرب کی پاکیزہ خوشبو آج بھی میرے تپتے تپکتے دل کی لَو دیتی رگوں میں برفیلے لمس کی شبنم انڈیلتی محسوس ہوتی ہے۔            اور اب کیا کیجیے۔ کہ اب تو آتے جاتے موسموں کا سَبھاؤ صرف سوچوں کے بہاؤ پر منحصر ہے۔ معصوم جذبوں کا بھولپن اب فقط شکستہ قلم کی شہ رگ سے ٹپکتے ہوئے لہو کے بے ترتیب قطروں میں کبھی کبھی اپنا دھندلا سا عکس دیکھ لیتا ہے۔ اور رائیگاں جاگتی آنکھیں صرف تنہائی کی لوریوں سے بہل کر سو جاتی ہیں یا کہیں کھو جاتی ہیں۔            کُہرام مچاتی سانسوں کے اِس جاں گُداز اور آبلہ نواز سفر میں کیا کیا لوگ اپنا اپنا روگ دل میں لئے دھول اُڑاتے سنّاٹے کا رِزق ہوئے۔ کیسی کیسی رنگ رچاتی محفلیں اپنے توانا ہنگاموں سمیت پلک جھپکتے آنکھ سے اوجھل ہو گئیں۔ کیا کیا کُندن چہرے اب اپنی پہچان کا حوالہ مجھ سے طَلَب کرتے ہیں۔            جیسے مَیں اِن دنوں بے وارث لمحوں کے مقتل سے گزر رہا ہوں۔ لمحوں کا مقتل جس میں شامِ غریباں آہستہ آہستہ اُتر رہی ہے۔لمحوں کے اِس مقتل میں میری مسافت ختم ہوتی ہے نہ شامِ غریباں کا دھواں سرد پرتا ہے۔ میرے پاؤں میں آبلے بندھے ہوئے ہیں۔ جسم بارشِ سنگِ ملامت سے داغ داغ اور ہونٹ مسلسل مصروفِ گفتگو۔ مگر کِس سے؟ شاید رفتگاں کا راستہ بتاتی ہوئی دھول سے یا اپنے تعاقب میں آنے والے اُن رہروؤں کی آہٹوں سے؟ جو سفر کے اگلے موڑ پر مسلط سنّاٹے سے بے خبر ہیں۔ سنّاٹا۔ جو کبھی کبھی دل والوں کی بستی پر شبخوں مار کر ساری سوچیں، تمام جذبے اور کچّے خواب تک نگل لیتا ہے۔            میرا قبیلہ میرے کَرب سے نا آشنا ہے۔ میرے ساتھ جِن ہجر والوں نے سفر آغاز کیا تھا وہ یا تو راستے کی گرد اوڑھ کر سو چکے ہیں، یا مجھ سے اوجھل اپنی اپنی خندقیں کھودنے میں مصروف ہیں۔ اور مَیں کل کی طرح آج بھی "اکیلا" ہوں۔میرے اِرد گِرد خراشوں سے اَٹے ہوئے کچھ اجنبی چہروں کے کٹے پھٹے خدوخال ہیں۔ بھوک سے نڈھال بے نطق و لب ادھوری سوچوں کے پنجر۔ ریزہ ریزہ خوابوں کی چبھتی ہوئی کِرچیاں۔ محرومیوں کے بوجھ تلے رینگتی خواہشوں کی ٹیڑھی میڑھی قطاریں۔ دَم توڑتی محبّتوں کی بے ترتیب ہچکیاں۔ پا بُریدہ حسرتیں۔ سَر بہ زانو واہمے۔            اور بدن دَریدہ اندیشے۔ ایسے اُجاڑ سَفر میں کون میرے دکھ بانٹنے کو میرے ساتھ چلے۔؟ یہاں تو ہَوا کے سہمے ہوئے جھونکے بھی دَبے پاؤں اترتے اور چُپ چاپ گزرتے ہیں۔ یہاں کون میرے مجروح جذبوں پر دلاسوں کے "پھاہے" رکھے؟ کِس میں اتنا حوصلہ ہے کہ میری روداد سُنے؟ کوئی نہیں۔ سوائے میری سخت جان تنہائی کے۔ جو میری خالی ہتھیلیوں پر قسمت کی لکیر کی طرح ثبت ہے۔ میرے رتجگوں کی غمگسار اور میری تھکن سے چُور آنکھوں میں نیند کی طرح بھر گئی ہے۔            سنگلاخ تنہائی کے اِس بنجر پن میں دہکتے مہکتے جذبوں کے گلاب اُگانا اور اُنہیں بے ربط آنسوؤں سے شاداب رکھنا میرا مقصد بھی ہے اور میرا فن بھی۔ بس اِسی دُھن میں سکوت کے ہولناک صحرا میں لمحہ لمحہ سوچوں کی بستیاں بسا کر اُن میں لفظوں کے رنگ رنگ چراغ روشن کرتا ہوں۔ جانے کب سے جانے کب تک؟            ہَوا مجھ سے برہم، سنّاٹا میرے تعاقب میں، حوادث مجھ سے دست و گریباں، صبحیں مجھ سے گریزاں اور شامیں، میری آنکھوں پر اندھیرا "باندھنے" کے لئے مضطرب۔ مگر مَیں (مسافت نصیب، سفر مزاج)۔ "گُزشتہ" کی راکھ پر "آئیندہ" کی دیوار اٹھا اُس کی منڈیر پر اپنی آنکھیں جلا رہا ہوں تاکہ میرے بعد آنے والوں کی تھکن لمحہ بھر کو سستا سکے۔مَیں۔ تلخیاں بانٹتی اور تنہائیاں چھڑکتی ہوئی زندگی سے قطرہ قطرہ "سچ" کشید کرتا اور پھر اِس روشن "سچ" کی دمکتی ہوئی پیشانی سے پھوٹتی شعاعوں کے ریشم سے بُنے ہوئے خیالوں کی رِدا پر "شاعری" کاڑھتا ہوں۔            شعر کہنا میرے لئے نہ تو فارغ وقت کا مشغلہ ہےاور نہ ہی "خود نمائی" کے شوق کی تکمیل کا ذریعہ۔ بلکہ اپنے جذبات و محسوسات کے اظہار کے لئے مجھے "شاعری" سے بہتر اور موثر پیرایہ ملتا ہی نہیں۔ میرے لا شعور کی تہہ میں بکھرے ہوئے تجربے اور مشاہدے حرف حرف اور نقطہ نقطہ شعور کی پلکوں سے حواس کے آئینہ خانے میں اترتے اور "شعر" کی صورت میں بکھرتےچلے جاتے ہیں۔ اور پھر کبھی میرا قلم اور کبھی موجِ صدا کا "زیر و بَم" انہیں امانت کے طور پر بصارتوں، بسیرتوں اور سماعتوں تک پہنچاتا ہے۔ کیا جانے کب سے میری فگار انگلیاں کائنات کے خد و خال کو ذات کے شیشے میں سمیٹنے کا قرض ادا کر رہی ہیں۔ اور میرا "خونچکاں خامہ" اپنے عہد کے انسان کا کرب کرید کر اُس میں پوشیدہ خواہشوں اور حسرتوں کو کاغذی پیرہن پر سجانے میں مصروف ہے؟ مجھے نہیں معلوم کہ فن کے صحرا میں اَب تک مَیں نے کتنا سفر طے کیا ہے؟ مَیں پیچھے مُڑ کر دیکھنے کا عادی نہیں ہوں۔ (جیسے پلٹ کر دیکھنے سے مَیں "پتھر" ہو جاؤں گا)۔            مَیں قدم قدم نئی جہت کی تلاش میں سر گرداں ہوں، (ورنہ کی بجائے) کہ ایک ہی سمت میں ایک ہی انداز سے چلتے رہنے کی یکسانیت اور ایک جیسی رفتار نہ صرف سفر کی کشش کو چاٹ لیتی ہے بلکہ حصولِ منزل کا اعتماد بھی چکنا چُور ہو کر رہ جاتا ہے۔            میرے سفر کی ڈور کا دوسرا سِرا میری سانس سے بندھا ہوا ہے۔ میں لمحہ بھر کو رُک گیا تو یہ ڈور ٹوٹ جائے گی۔کِسی بھی حسّاس اور سنجیدہ فنکار کے لئے مشکل ترین مرحلہ اُس کے اپنے عہد کے تقاضوں کا اِدراک اور ا ن تقاضوں کے مطابق موضوع کا انتخاب ہوا کرتا ہے۔ جو فنکار اپنے عہد سے بے خبر رہ کر تخلیق کی مشقت کرتا ہے، وہ خود کلامی کی بھول بھلّیوں میں بھٹک کر یا تو رجعت پسندی کے مرض میں مبتلا ہو جاتا ہے یا تشکیک کی زد میں ابہام کا شکار ہو کر فکری انتشار کے برزخ کی "بے سمتی" میں اپنا آپ گنوا بیٹھتا ہے۔ میرے نزدیک یہ باتیں کرنا اِس لئے بھی ضروری ہیں کہ            ۔۔۔ عصری جبر، سماجی گھٹن، سیاسی حبس اور طبقاتی تضاد کی دَلدَل میں دھنسے ہوئے جس معاشرے میں مجھے جذبوں کے اظہار کا اِذن مِلا ہے، وہ بذاتِ خود تشکیک و ابہام اور سکوت و تحیّر کی سیاہ چادر اوڑھ کر سانس روکے ہوئے زندگی کی ساعتیں گِن رہا ہے۔ عدل و انصاف کے مقابلے میں ظلم اپنے پَر پھیلائے دَم توڑتے انسان کی ہچکیاں نِگل رہا ہے۔ رستے مقتل بن گئے ہیں، چوراہوں سے بارود اُگ رہا ہے، بازاروں میں درندگی برہنہ رقص رَچا رہی ہے، "سچ" سرِ عام مصلوب اور جھوٹ بَرملا مسند آراء ہے۔ جرم رواج بن گیا ہے۔ غارت گری روایت میں شامل ہو رہی ہے، دہشت گردی سے شہر سہمے ہوئے، وحشت صحراؤں پر مسلط، لہو کے رشتے کچّے دھاگوں کی طرح ٹوٹ رہے ہیں۔            یوں لگتا ہے جیسے ظلم و ستم کی سیاہ رات نے سورج کو چَبا ڈالا ہے۔ دکھ، درد اور کرب کی اِس مسلسل رات، بے یقینی اور مایوسی کی دھول سے اَٹی ہوئی رات میں میری شاعری "طلوعِ اشک" سے زیادہ حیثیت نہیں رکھتی۔"طلوعِ اشک" کی شاعری اپنے عہد میں بڑھتی ہوئی نفرتوں کے خلاف انسانی سانسوں کے ریشم سے بُنے ہوئے اُن نازک جذبوں اور دائمی رشتوں کا ایک دھیما سا احتجاج ہے، جن کی پہچان کا واحد حوالہ محبت ہے۔                        "محبت" جو کدورتوں کی آگ میں جلتے جھلستے جنگلوں کے اُس پار زیتون کی وہ شاخ ہے، جِس کی خوشبو کا دوسرا نام "امن" ہے۔            "طلوعِ اشک" میں نہ تو آپ کو عملی جدوجہد سے محروم کوئی "دعویٰ" نظر آئے گا۔ اور نہ ہی بے مقصد "ہنگامہ آرائی"۔            کیونکہ اپنے چاروں طرف بکھرے ہوئے ظلم، پھیلی ہوئی نفرت اور افراتفری کے با وجود مَیں ابھی تک انسانی رشتوں کی اہمیت، روح کی گہرائی میں پھیلتے پھولتے جذبوں کی توانائی، دائمی اَمن کی عالمگیر کشش، "سچ" کی فتح مندی اور اِدراک و آگہی پر "محبت" کے تسلط سے نہ تو مایوس ہوا ہوں اور نہ ہی منحرف۔            مجھے یقین ہے کہ جب تک کائنات میں انسان کا وجود باقی ہے۔ محبت اپنے توانا جذبوں کی صداقت سمیت باقی رہے گی۔ میں نے محبت کو اپنے احساس، ادراک اور آگہی کی اساس بنایا ہے۔ اِسے دھوپ دھوپ سمیٹا ہے اور پھر اپنے "اشعار" میں رنگ رنگ بکھیرنے کی کوشش کی ہے۔ یہی سب کچھ میرا فن بھی ہے اور متاعِ فن بھی۔جہاں تک اپنے فن کے قد و قامت کی "بے محل" نمود و نمائش کا تعلق ہے، مَیں ہمیشہ اِس سے اجتناب کرتا ہوں، نہ ہی "خود ستائی" کی بوسیدہ قَبا اوڑھ کر "دوسروں" کو اپنی طرف متوجہ کرنا مجھے اچھا لگتا ہے۔            آخر "سَستی شہرت" کے لئے اپنی قیمتی "اَنا" کو چھلنی کرنے کی ضرورت کیا اور شوق کیوں؟ کہ دنیا میں جو ہے، اُسے اپنے "اثبات" کے لئے دلیل کی ضرورت نہیں اور جو "نہیں" ہے، اُس کے "ہونے" پر اصرار بے معنی۔ خیر یہ الگ بحث ہے۔            مجھے اپنے تخلیقی سفر کے آغاز سے اب تک کیسے کیسے صبر آزما مراحل سے گذرنا پڑا؟ کِس جان لیوا کرب کی شدّت میں سانس لینا پڑا؟ کیسی کیسی چوٹ کھا کر مسکرانا پڑا؟ یہ کہانی دہرانے کا وقت ہے نہ فرصت۔ (پھر سہی)            ابھی آپ جلدی میں ہیں۔ اور مجھے بھی اپنا سفر جاری رکھنا ہے۔ میری آنکھیں اندھیروں کا تسلط قبول کرنے سے انکاری ہیں۔ میں اندھی رات کے جَبر کے خلاف کِسی ایک کِرن، کِسی ایک چنگاری، کِسی ایک آنسو کی طلب میں لمحوں کا مقتل جھیل رہا ہوں۔ اور اپنے گِرد بکھری ہوئی دست و پا بُریدہ خواہشوں کی پُرسش میں مصروف بھی۔ اندھی رات کے مسلسل جَبر کے خلاف کوئی جگنو، کرن، چنگاری یا کوئی ایک آنسو مجھے کچھ دیر اور جینے کا حوصلہ دے سکتا ہے۔ مَیں کچھ اور جاگ سکتا ہوں کہ مسلسل جاگتے رہنے کا اعزاز یہ کِسی زندہ، روشن اور دہکتے ہوئے سورج کی صورت نہ سہی، ہلکی روشنی کی علامت کے طور پر ہی میری آنکھوں کو صدیوں تک کے لئے اُجلے خوابوں کی دھنک میں مَست اور مگن رکھ سکتا ہے۔ اگر آپ اندھی رات کے جَبر کے خلاف میرے ساتھ محبت اور امن کی روشنی بُن سکتے ہیں تو اپنی آنکھیں میرے لفظوں میں انڈیل دیں کہ یہی میرے لئے روشنی کا استعارہ بن جائیں۔ ورنہ میری تنہائی میرے بغیر اداس ہو گی۔مُحسنؔ نقوی                                                                                                            جمعرات 28 مئی 1992ء لاہورکتاب: طلوعِ اشک
"طلوعِ اشک" کا انتساب!

تُو غزل اوڑھ کے نکلے کہ دھنک اوٹ چھُپے؟لوگ جس روپ میں دیکھیں، تجھے پہچانتے ہیں
یار تو یار ہیں، اغیار بھی اب محفل میںمَیں ترا ذکر نہ چھیڑوں تو بُرا مانتے ہیں
کتنے لہجوں کے غلافوں میں چھپاؤں تجھ کو؟شہر والے مرا "موضوعِ سخن" جانتے ہیں

بہتی چاندنی کا بولتا سُکوت


محسن نقوی کے غزل اور نظم کے قادر الکلام شاعر ہونے کے بارے میں دو آراء نہیں ہو سکتیں لیکن اس کے ساتھ ہی محسن کی نثر،  جو کہ ان کی کتابوں کے دیباچے کی شکل میں موجود ہے، اس میدان میں بھی محسن کی قادر الکلامی کی دلیل ہے۔محسن نقوی کی کتاب"رختِ شب" کا دیباچہ پیشِ خدمت ہے۔
بہتی چاندنی کا بولتا سُکوت            میں خواب دیکھتا ہوں، تعبیروں کی جستجو میں جَلتے بَلتے اور چَکنا چُور ہوتے خواب! یہ ٹوٹتے پھوٹتے خواب میری خواہشوں کی اساس بھی ہیں اور میری آنکھوں کا اثاثہ بھی۔ اپنا اثاثہ کِسے عزیز نہیں ہوتا؟ مجھے بھی اپنے خواب بہت عزیز ہیں۔ زندگی کی طرح۔ زندگی کے چہرے پر دہکتے مہکتے رنگوں اور ان رنگوں میں رقص رچاتی خوشبو کی طرح۔


            مجھے یقین ہے جس دن خواب ختم ہو جائیں گے، انسان سونا چھوڑ دے گا۔ کہ رائیگاں اور خالی نیند کا دوسرا نام تو موت ہے۔ زندگی تو خواہشوں، خراشوں، خیالوں اور خوابوں سے عبارت ہے۔            مجھے سرما کی چاندنی سے اسی لئے اُنس ہے کہ اِس میں دُھل کر خواب کچھ اور اجلے ہو جاتے ہیں۔ اور گرم رُتوں کی دھوپ سے یہ شکایت ہے کہ وہ میری دُکھتی آنکھوں پر سے خوابوں کی پَٹّی کو پگھلا کر رکھ دیتی ہے، اور پھر میری آنکھیں جاگتے دنوں کے الاؤ میں جھلسنے لگتی ہیں، جاگتے دن جو حقیقتوں کے چہرے سے استعاروں کی نقابیں نوچ کر اُن کے خد و خال کا کھُردرا پن اَفشا کر دیتے ہیں۔  خواب بہت میٹھے اور نرم ہوتے ہیں۔بہت ملائم، جبکہ حقیقتیں بہت تلخ ہوتی ہیں، بہت تُند، بہت تیز اور کبھی کبھی بہت عُریاں۔ !حقیقتوں کی تہ میں بکھری ہوئی کڑوی سچائیوں کے ذائقے سے مانوس ہونا میرا منصب سہی۔ مگر ان کی پَرتیں اتارنے کے لئے جتنی زندگیاں صَرف ہوتی ہیں وہ اپنے پاس کہاں؟ میری زندگی تو لمحہ لمحہ سمٹی جا رہی ہے۔ مجھے تو اپنی سانس کی ڈور کا دوسرا سِرا بھی صاف دکھائی دے رہا ہے، مَیں تو حیات تَیر چُکا۔ سامنے دوسرا کنارہ ہے۔ اور دوسرے کنارے سے اُدھر اسرار کا وہ بے کراں محیط ہے۔ جس کی وسعتیں سوچوں کے کئی پاتال پی کر بھی پیاسی ہیں جس کے سینے میں لا تعداد آفاق ہانپ رہے ہیں۔            میرے حواس محدود ہیں۔اور میں "لا محدود" کی زَد میں ہوں! مجھ پر اسرار کا بے کراں کیا کھُل سکے گا۔؟ کہ میری بینائی تو جہاں تھک کر دم توڑ دیتی ہے، میں اُس سے آگے کی گرد کو آسمان سمجھ کر لَوٹ آتا ہوں! میری سماعت میں جہاں سنّاٹا گونجنے لگتا ہے، مَیں فنا کی چاپ وہیں سے تراشنے لگتا ہوں اور میری آواز جہاں گم ہونے لگتی ہے، مَیں اُس سے آگے "بے سمت خلا" کا پھیلاؤ سوچنے لگتا ہوں، میری عقل سے ماوراء سب کچھ میرے لئے "الجھاؤ" سے زیادہ حیثیت نہیں رکھتا۔ پھر مَیں خواب ہی کیوں نہ دیکھوں؟ جن میں بکھری ہوئی تمام "کائناتیں" میری بینائی کی دسترس میں ہوتی ہیں اور جن کے دامن میں محدود سے لا محدود تک کے تمام فاصلے سمٹ جاتے ہیں۔ مَیں خوابوں سے تعلّق توڑ کر اپنی آنکھوں کو لا محدود کی تیز اور پُر اسرار روشنیوں میں دفن کرنا چاہتا ہوں۔ میرے خواب میری خود کلامی سے بہلتے ہیں اور میری خود کلامی ادھوری خواہشوں کی خود ساختہ تکمیل کا عمل ہے! میں بھولنے والے خوابوں کو بے وفا دوستوں کی یادوں کی طرح لا شعور کے تہ خانے میں "حنوط" کر دیتا ہوں مگر یاد رہ جانے والے خواب بہت "ضدّی" ہوتے ہیں۔ یہ آنکھوں میں چبھتے رہتے ہیں۔ کانچ کی کرچیوں کی طرح۔            کبھی کبھی تو ان کی "چُبھن" آنکھوں میں گلاب کھِلا دیتی ہے، پھر دل میں اپنی "دُکھن" اُنڈیل کر روح تک میں اپنا اضطراب گھول دیتی ہے!            یہ "خواب" جب تک آنکھوں میں رہیں محض خواب ہوتے ہیں، مگر جب روح میں اتری ہوئی حقیقتوں سے ہم آہنگ ہو جائیں تو پھر خواب نہیں رہتے، ریزہ ریزہ سچائیوں میں بٹ جاتے ہیں اور کبھی حرف حرف صداقتوں کے صورت گر بن کر سماعتوں اور بصارتوں کے آئینہ خانے میں کرن کرن کھِل اٹھتے ہیں۔ آنکھوں سے روح تک اترنے کا لمحہ۔ خواب و خیال کی تجسیم اور فکری نقش و نگار کی تخلیق کا "لمحہ" ہے، یہی لمحہ میری مسافتِ اِدراک کے لئے "متاعِ یقین" اور میری مشقّتِ آگہی کے لئے "رختِ شب" ہے۔            "رختِ شب" میرے خیالوں کا اقرار نامہ اور میرے خوابوں کا نگار خانہ ہے، اِس کے لفظوں میں میرے چبھتے ہوئے آنسوؤں کی کسک بھی ہے، میرے جاگتے ہوئے زخموں سے پھوٹتی ہوئی شعاعیں بھی ہیں اور میری آنکھوں میں کھِلتے گلابوں کی باس۔ میں رائیگاں نیند نہیں سوتا۔ نہ بے صرفہ دھوپ جاگتا ہوں۔ میں اپنے سچ کو خواب پہناتا اور اپنے خوابوں پر سچ اوڑھتا سانسوں کی چبھتی کرچیوں کے بے نہایت سفر میں مصروف رہتا ہوں، اور اِس سفر میں بگولوں کے ساتھ رقص کرتے غبارِ خاک سے آنکھیں ڈھانپ ڈھانپ کر سورج کے سائے سائے شام کی شفق میں ڈوب جاتا ہوں۔!!            جہاں تک میری شخصیت اور شاعری کا تعلق ہے، مجھے اعتراف کرنا چاہیے کہ مَیں اپنے بارے میں بہت کم جانتا ہوں، اِس سلسلے میں تو میرے احباب بھی مجھ سے کہیں زیادہ بہتر جانتے ہیں۔ کہ میرے شب و روز کی تمام مسافتیں اور کٹھنائیاں، میری شہرتیں اور رسوائیاں، میرے ہنگامے اور تنہائیاں ورَق ورَق اور حرف حرف اُن کے سامنے کھُلتی اور کھِلتی رہیں۔ اِسے میرا عیب سمجھیں یا خوبی کہ مَیں جسے ایک بار "اپنا" سمجھ لوں، اُسے زندگی بھر کے لئے اپنی ذات کا حصّہ سمجھ لیتا ہوں، پھر اُسے لمحہ بھر کے لئے بھی خود سے الگ سمجھنا میرے نزدیک بہت مشکل اور تقریباً نا ممکن ہو جاتا ہے، یہ الگ بات ہے، اپنی مصروفیات کی بنا پر کچھ عرصہ کے لئے میں "اپنوں" سے بچھڑ جاؤں مگر روحانی اور ذہنی قُرب کی شدّت میں کبھی بھی کمی نہیں آ سکتی، میں اپنے دوستوں سے  بھی ملتا ہوں ٹوٹ کر ملتا ہوں اور جتنی دیر اُن کے ساتھ رہتا ہوں، ہمیشگی کی لذّت دل میں بسا کر ساتھ رہتا ہوں، میں تو اپنوں کے زخم بھی "سنبھال" کر رکھتا ہوں کہ یہ زخم بھی مجھے میرے اپنے مہربانوں کی طرح عزیز ہیں اور اُنہی کی طرح پیارے بھی لگتے ہیں، میں دوستی کی رسم عام کرنا چاہتا ہوں، دُشمنی کا لفظ میرے لئے بے حیثیت سا لفظ ہے۔ محبتیں بانٹتا ہوں اور نفرتوں سے نفرت کرتا ہوں۔ زندگی بہت مصروف اور تیز رَو ہے، بیسویں صدی اپنی بوسیدہ روایات سمیت آخری ہچکیاں لے رہی ہے اور اکیسویں صدی لمحہ لمحہ ماہ و سال کے سینے پر دستک دے رہی ہے، زمین اپنے آپ کو سمیٹ رہی ہے، نیا انسان۔ پُرانے آدمی کو پہچاننے سے انکاری ہے، رِشتے رَویّوں کے محتاج ہو رہے ہیں، گروہی تعصّبات، نسلی امتیاز، طبقاتی تضاد اور فرقہ پرستی نئی نسل کے لئے نا قابلِ برداشت جبر کی میراث ہیں، دنیا بھر کے مظلوم اپنے سینے میں ظلم کے خلاف بغاوتوں کو پال پوس کر جوان کر چکے ہیں، تاریخ کے افق پر نئی صدی نئے انقلابی عزائم کے ساتھ طلوع ہونے کے لئے مصروفِ آرائش ہے، میں اور میرے جیسے کروڑوں انسان اُس صدی کے منتظر ہیں جس کے عہد نامے میں انسانی امن اور معاشرتی حُسن کی ضمانت "حرفِ آغاز" کے طور پر رقم ہے۔ جس کا منشور ظلم، جبر، قتل و غارت، بھوک اور افلاس کے خلاف مشترکہ انسانی جہاد کی چکا چوند سے منور اور باہمی محبت و اخلاص سے مُستنیر ہے۔ میرے خواب تعبیر کے انتظار میں سانس لے رہے ہیں۔ میری شاعری بھی ایسے ہی اجلے خوابوں کا جزیرہ ہے۔ جس کے چاروں طرف وہم و تشکیک کا موجیں مارتا ہوا سمندر گونج رہا ہے، مگر میں اپنے اجلے خوابوں کے جزیرے میں خواہشوں کا خیمہ نصب کئے خود کلامی میں مصروف ہوں، مجھے نہیں معلوم کہ میری آواز کہاں تک اپنے دائرے بُن رہی ہے؟ میرے لفظوں کے سینے میں پوشیدہ دعائیں بابِ قبول "وَا" ہونے کی منتظر ہیں۔ میرے دل میں لمحۂ یقین کی شعاعیں مسلسل تسکین و تسلّی کا جہان آباد کرنے میں مصروف ہیں۔ مَیں اپنے "ہونے" کا سراغ ڈھونڈ رہا ہوں۔ مَیں اور میری شاعری مسلسل اندھیروں سے نبرد آزما ہیں، اندھیروں سے نبرد آزما ہونا بھی ہر کسی کے مقدر میں کہاں؟ اور پھر رات بھر کا اندھیرا تو آنکھیں بند کر کے بسر کیا جا سکتا ہے، یہاں تو دوپہروں کے ماتمی لباس نے پہن لیا ہے اور صبحیں مُنہ چھپا چھپا کر طلوع ہو رہی ہیں۔ ایسے تاریک لمحوں سے چاندنی نچوڑنا کتنا جاں گداز عمل ہے؟ اِس کا اندازہ صرف اُنہی آنکھوں کو ہو گا جو کھُلے منظروں میں کھِلی دھوپ سے کھیلتے کھیلتے اچانک بجھ گئی ہوں، اور پھر پلکیں جھپکتے جھپکتے شل ہو چکی ہوں مگر دھوپ کی ایک آدھ کرن کا سراغ بھی نہ مل سکا ہو۔            مَیں بھی "ہونے اور نہ ہونے" کے اِسی "برزخ" سے گزر رہا ہوں، مُنہ زور جذبوں کی زد میں ضبط کے چراغ کی لَو سنبھالنا اور وہم و تشکیک کے موسم میں "یقین" کے خد و خال اُجالنا۔ لمحوں کی نوکیلی کرچیوں میں صدیوں کا کرب ڈھالنا اور صدیوں کی لَب بستہ سیپیوں سے سانس لیتے لمحوں کے موتی نکالنا۔ شاید میری عمر بھر کی مشقت ہے۔ جس کے بغیر "اعتمادِ ذات" کا اعزاز حاصل نہیں ہوتا۔            میں ایک ایسے "مدفُون شہر" کا باسی ہوں جس کی خاک سے کبھی "ذہن" اُگتے تھے، جس کی گلیوں میں کبھی ہَوا، زندگی کی روشنیاں اور رعنائیاں بانٹتی تھی۔ شب و روز شعر و نغمہ کی پائلیں بجاتے اور مَدھر کافیوں کی جھانجھریں جھنجھناتے تھے، جس کے لوگ کبھی ایک دوسرے کے دکھ درد میں شریک ہونا عبادت سمجھتے تھے، جس کے پانی میں محبت کی چاندنی کا اَمرت گھُلتا اور جس کی راتوں میں صبحوں کا سیماب کھُلتا تھا۔ مگر یہ باتیں بہت پرانی ہو چکی ہیں۔ اب وہاں کے بسنے والوں کے خد و خال سے "اجنبیّت" جھانکتی اور گلیوں میں "رُلتی" ہَوا خاک پھانکتی ہے۔! میرا شہر اَب "شہرِ نا پُرساں" ہے کہ وہاں کی تمام رسمیں بدل چکی ہیں، میرے سارے لوگ اَب اپنی اپنی صلیبوں کی کِیلیں شمار کرنے میں مگن ہیں، اُنہیں کچھ نہیں معلوم کہ باہر کیا ہو رہا ہے؟ اُن سے الگ رہ کر کِس کِس نے اُن کی تاریخ کے لئے دَر بدَری شِعار کی، اُنہیں کیا کہ وہ تو ابھی رنگ و نسل کے قَفس سے ادھر دیکھنے کی فرصت ہی نہیں رکھتے، میرے شہر کے سیدھے سادے لوگ! جو کبھی ایک دوسرے کے دکھ میں اپنی آنکھیں نَم رکھتے تھے، اب اپنے ہی شہر میں خالی آنکھیں لئے زندگی کرتے اور اپنی اپنی ذات کا دَم بھرتے ہیں  خیر۔ یوں ہی سہی، مجھے پھر بھی اس شہر کی خاک سے محبت ہے، کہ یہ شہر میری پہچان کا حوالہ تو ہے نا۔ اِس نے مجھے زندہ رہنے کا ہُنر سکھایا۔ یہی احسان غنیمت ہے۔ اب اگر میرے "اعزازِ جراحَت" پہ گُم صُم ہے تو کیا ہوا۔ کہ اِسی شہر کے سنّاٹے نے ہی مجھے اپنا ماتم کرنے کا سلیقہ بخشا۔            اِس شہر کی "اجنبیّت" نے مجھے صحراؤں میں تنہا سفر کرنے کا حوصلہ عطا کیا۔ مَیں اپنے شہرِ نا پُرساں کے ہر دوست کی "بے نیاز" محبت کا مقروض ہوں، میرا جی چاہتا ہے کہ اپنی ہم مزاج ہَوا کے ہاتھ اپنے شہر کے سارے پیارے لوگوں کے نام پیغام بھجواؤں کہ مَیں جہاں بھی ہوں "تمہارا ہوں" اور تمہارے لئے ہوں،۔ میرے شہر کے خاک اُڑاتے راستوں کو "میری آوارگی" کا سَلام پہنچے اور میرے احباب کی محفلوں کو میری تنہائی کی دعائیں راس آئیں۔۔۔            اور اے خاک بَسر ہَوا! میرے شہر کے باسیوں سے کہنا۔ کہ مجھے اب تک صحرا میں بہتی چاندنی کا بولتا سکوت اچھا لگتا ہے!            شفّاف نیلے آسمان کی وسعت میں آزاد پرندوں کی اُڑان اَب بھی مجھے اپنی طرف "بے ساختہ" دیکھنے پر مجبور کرتی ہے۔ اُجلے چہروں کے دہکتے رنگ اور سوتی جاگتی بوجھل آنکھوں میں تیرتے ہوئے سوالوں کے سُرخ ڈورے اب بھی میری بینائی میں انجانے کرب کی پرچھائیاں گھول دیتے ہیں۔            مَیں اَب بھی کڑکتی دھوپ میں پگھلتی سڑک کے سنگلاخ کِناروں پر نوکِیلے پتھر کُوٹنے والے زخمی ہاتھوں کے لئے اُس عہد کا منتظر ہوں جب ان کے زخموں کو مُندمِل کر کے اُنہیں شیشے کے دستانے پہنائے جائیں گے اور اُن کی ہتھیلیوں پہ بکھری ہوئی شکستہ لکیروں میں خوش قسمتی کا سیماب رواں ہو گا، مجھے برف اوڑھے ہوئے پہاڑوں کی ہری بھری چھاتیوں سے پھوٹتے آبشار اب تک اندیشوں کے دشتِ خوف میں پَسپا نہیں ہونے دیتے۔            مَیں آباد بستیوں کے ہنستے بستے گھروں میں جلتے ہوئے چولھوں سے اٹھتے ہوئے دھوئیں پر جان دیتا ہوں اور مجھے اَب بھی "بارود" کے دھوئیں سے شدید نفرت ہے کہ "بارود" اِنسانی بقا کے لئے مہلک ہے! مجھے ہریالیوں کی اوٹ میں تِتلیاں تلاش کرتے بچوں کی معصوم مسکراہٹ دنیا بھر کے خزانوں سے زیادہ قیمتی لگتی ہے۔            میرا بس چلے تو اپنی غربت کے تاریک غاروں میں سانس لینے والوں کو اپنا حکمران تسلیم کروں کہ اُن کی غربت کو احساسِ کمتری میں مُبتلا کر کے بہت سے لوگ اُن سے اُن کی خواہشوں کا خراج لیتے ہیں۔            اور ہاں اے ہر سَمت بھٹکتی ہوئی ہَوا، گر بن پرے تو میرےلوگوں سے کہنا کہ میں نے ابھی تک اپنی "انا" کو کِسی قسم کی مَصلحت کے "سرد خانے" میں ٹھِٹھرنے نہیں دیا۔ نہ رائیگاں شہرت کے حصول کے لئے اپنے فِکر کا "کشکول" اٹھایا ہے۔            میں آج بھی سرخرو ہوں کہ میرے فن نے اپنا قد بڑھانے کے لئے نہ تو کِسی "اُدھار" کی شاخ سے جھُولنے کی اجازت طَلب کی ہے اور نہ ہی اپنے خدّ و خال نکھارنے کے لئے کوئی مانگے کا آئینہ کِسی آنکھ میں چسپاں کیا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ میری شاعری کو پڑھنے والے مجھے محبت سے پڑھتے ہیں اور اس سے زیادہ باعثِ مسرّت بات یہ ہے کہ میرا قاری میری شاعری کے بارے میں کِسی "نقّاد" کی رائے کا محتاج نہیں۔ میں اپنے تجربے کی وُسعت پر اعتماد کرتا ہوں، میرا مشاہدہ اپنے اظہار کے لئے خود سے دائرے بُنتا ہے اور میرے جذبے کی حِدّت اور شِدّت خود سے لفطوں کے انبار میں سے اپنی قبا پر کاڑھنے کے لئے لفظ چُنتی ہے۔            مَیں دائمی اَمن کی بقا کے لئے سوچتا ہوں، اِنسانی محبتوں کے ذائقے میری رگوں میں گونجتے رہتے ہیں۔ ظُلم سے شدید نفرت مجھے میرے شجرے سے ورثے میں مِلی ہے، میں دنیا بھر میں انسان کی عزّت و توقیر پر ایمان رکھتا ہوں، صحرا کی وسعت، آسمان کی بلندی اور نِیل کی گہرائی یں نے اپنی روح میں بسا لی ہیں، اور حُریّتِ فکر میرا منشور ہے۔            "رَختِ شب" میرے مُسلسل فِکری سَفر کی تازہ رُوداد ہے، اِس رُوداد میں اپنی خواہشوں کے اُدھورے دائرے، میری خراشوں کی نا مکمّل لکیریں اور جاگتی راتوں کی کروٹیں آپ کی آنکھوں کے نام کر رہا ہوں، یہ رختِ شب میرے اجلے خوابوں کی متاع ہے۔ میرے جلتے سُلگتے خیالوں کا سرمایہ ہے، مَیں نے جذبوں کی آنچ میں پگھل پگھل کر اور اندھیروں کے سینے میں اُتر اُتر کر اشعار کے یہ جُگنو سنبھالے ہیں۔ آئیے یہ جُگنو میں آپ کی پلکوں پر ٹانک دوں، آپ حقیقتوں کی جھیل میں یہ جُگنو بھگو کر اپنی رُوح کے پاتال میں اُتار سکیں تو میری تنہائی میں بکھری ہوئی دھوپ لمحہ لمحہ تقسیم ہو جائے گی۔ ورنہ آپ کو نیندیں مبارک اور مجھے "خواب" سلامت کہ            "میں خواب بہت دیکھتا ہوں"مُحسنؔ نقوی3 اگست 1994ء لاہورکتاب: رختِ شب

میرا نظریۂ شعر از اختر شیرانی


میرا نظریۂ شعر از اختر شیرانی

                 ۔۔۔ میں نے جب شعر کہنا شروع کیا تو شاعری کے افادی مقاصد کا وہ تصور کہیں موجود نہ تھا جسے آج ترقی پسندی کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ میرے دیکھتے ہی دیکھتے اس تصور نے کافی فروغ پا لیا۔۔۔ شاعر کا کام زندگی کے حسن کو خود دیکھنا اور دوسروں کو دکھانا ہے۔ زندگی کے ناسوروں کے علاج کی کوشش کرنا اس کا کام نہیں۔            ۔۔۔ اس میں شک نہیں کہ موجودہ زمانے نے بعض ایسے نا گزیر مسئلے میرے سامنے لا رکھے ہیں جن سے گریز ممکن ہے نہ مصالحت۔ سیاست میں آواز اور خیالات کا اثر بڑھ گیا ہے، اقتصادی کش مکش ہمہ گیرہوتی جا رہی ہے، تجارتی لوٹ کھسوٹ کی گرم بازاری نے سماج کے ہر ایک طبقے کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے اور بے شمار ملک اور گروہ ہماری دنیا کے خوبصورت جسم کے بڑے بڑے ناسور بن کر رہ گئے ہیں۔ ہم شاعر بھی انسان ہونے کی حیثیت سے ان اثرات کی طرف سے آنکھیں بند نہیں کر سکتے لیکن ہمارا ان ناسوروں کی جراحی کر کے انہیں ٹھیک کرنے کی کوشش کرنا ایک اناڑی کی کوشش سے زیادہ نہ ہو گا۔ ان کا علاج تو سیاسی اور اقتصادی ماہروں کے ہاتھ میں ہے اور انہی پر علاج کا فرض بھی عائد ہوتا ہے۔۔۔            ۔۔۔ شاعری افراد اور اقوام کے لئے ایک لطیف غذا تو بن سکتی ہے جو ان کے ذائقے کی تشفی کرے اور اس کی عمدگی کو برقرار رکھےلیکن اس سے بیمار اور بوڑھی قوموں کے حق میں 'معجونِ شباب آور' کا کام لینا میرے نزدیک بہت بڑی زیادتی ہے۔ ترقی پسندی کی تحریک کو جس قدر بھی فروغ اب تک حاصل ہوا ہے اس کا باعث اس کے بنیادی تصور کی دلکشی نہیں بلکہ اس کے لیبل کی دلکشی ہے۔ اس کے لیبل کو دیکھ کر ذہن سب سے پہلے ترقی پسندوں کے پھیلائے ہوئے جال میں پھنس جاتے ہیں۔۔۔            ۔۔۔ میرے نزدیک شاعر کے لئے اپنے آپ کو کسی سیاسی یا اقتصادی نظام سے وابستہ کرنا ضروری نہیں۔ وہ نظام سرمایہ داری ہو یا اشتراکیت، جمہوریت ہو یا فاشیت، شاعر کے لئے ان میں سے ایک بھی قابلِ توجہ نہیں۔ شاعر کی قدریں ان سب سے الگ اور آزاد ہیں۔                    (1942ء کی ایک ریڈیائی تقریر سے)شاعر: اختر شیرانیماخذ: کلیاتِ اختر شیرانیمُرتّبہ: گوپال متّلناشر: موڈرن پبلشنگ ہاؤس (9 گولا مارکیٹ دریا گنج نئی دھلی)

او دیس سے آنے والے بتا!


او دیس سے آنے والے بتا!
انٹرنیٹ پہ ہر جگہ تلاش کیا مگر یہ نظم اپنی مکمل شکل میں دستیاب نہ ہو سکی۔ لہٰذا اسے "کلیاتِ اختر شیرانی" سے مکمل نقل کر کے پوسٹ کر رہا ہوں۔
یہ نظم اختر شیرانی کی کتاب "اخترستان" میں شامل ہے۔












او دیس سے آنے والے بتا!
او دیس سے آنے والے بتا
کس حال میں ہیں یارانِ وطن
آوارۂ غربت کو بھی سُنا
کس رنگ میں کنعانِ وطن
وہ باغِ وطن، فردوسِ وطن
وہ سرو وطن، ریحانِ وطن
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی وہاں کے باغوں میں
مستانہ ہوائیں آتی ہیں؟
کیا اب بھی وہاں کے پربت پر
گھنگھور گھٹائی چھاتی ہیں؟
کیا اب بھی وہاں کی برکھائیں
ویسے ہی دلوں کو بھاتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی وطن میں ویسے ہی
سر مست نظارے ہوتے ہیں؟
کیا اب بھی سہانی راتوں کو
وہ چاند ستارے ہوتے ہیں؟
ہم کھیل جو کھیلا کرتے تھے
کیا اب بھی وہ سارے ہوتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی شفق کے سایوں میں
دن رات کے دامن ملتے ہیں؟
کیا اب بھی چمن میں ویسے ہی
خوشرنگ شگوفے کھلتے ہیں؟
برساتی ہوا کی لہروں سے
بھیگے ہوئے پودے ہلتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
شاداب و شگفتہ پھولوں سے
معمور ہیں گلزار اب کہ نہیں؟
بازار میں مالن لاتی ہے
پھولوں کے گندھے ہار اب کہ نہیں؟
اور شوق سے ٹوٹے پڑتے ہیں
نو عمر خریدار اب کہ نہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا شام پڑے گلیوں میں وہی
دلچسپ اندھیرا ہوتا ہے؟
اور سڑکوں کی دھندلی شمعوں پر
سایوں کا بسیرا ہوتا ہے؟
باغوں کی گھنیری شاخوں میں
جس طرح سویرا ہوتا ہے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی وہاں ویسی ہی جواں
اور مدھ بھری راتیں ہوتی ہیں؟
کیا رات بھر اب بھی گیتوں کی
اور پیار کی باتیں ہوتی ہیں؟
وہ حُسن کے جادو چلتے ہیں
وہ عشق کی گھاتیں ہوتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
ویرانیوں کے آغوش میں ہے
آباد وہ بازار اب کہ نہیں؟
تلواریں بغل میں دابے ہوئے
پھرتے ہیں طرحدار اب کہ نہیں؟
اور بہلیوں میں سے جھانکتے ہیں
تُرکانِ سیہ کار اب کہ نہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی مہکتے مندر سے
ناقوس کی آواز آتی ہے؟
کیا اب بھی مقدّس مسجد پر
مستانہ اذاں تھرّاتی ہے؟
اور شام کے رنگیں سایوں پر
عظمت کی جھلک چھا جاتی ہے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی وہاں کے پنگھٹ پر
پنہاریاں پانی بھرتی ہیں؟
انگڑائی کا نقشہ بن بن کر
سب ماتھے پہ گاگر دھرتی ہیں؟
اور اپنے گھروں کو جاتے ہوئے
ہنستی ہویہ چہلیں کرتی ہیں
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
برسات کے موسم اب بھی وہاں
ویسے ہی سہانے ہوتے ہیں؟
کیا اب بھی کے باغوں میں
جھُولے اور گانے ہوتے ہیں؟
اور دُور کہیں کچھ دیکھتے ہیں
نو عمر دِوانے ہوتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی پہاڑی چوٹیوں پر
برسات کے بادل چھاتے ہیں؟
کیا اب بھی ہوائے ساحل کے
وہ رس بھرے جھونکے آتے ہیں؟
اور سب سے اونچی ٹیکری پر
لوگ اب بھی ترانے گاتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی پہاڑی گھاٹیوں میں
گھنگھور گھٹائیں گونجتی ہیں؟
ساحل کے گھنیرے پیڑوں میں
برکھا کی ہوائیں گونجتی ہیں؟
جھینگر کے ترانے جاگتے ہیں
موروں کی صدائیں گونجتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی وہاں، میلوں میں وہی
برسات کا جوبن ہوتا ہے؟
پھیلے ہوئے بڑ کی شاخوں میں
جھُولوں کا نشیمن ہوتا ہے؟
اُمڈے ہوئے بادل آتے ہیں
چھایا ہوا ساون ہوتا ہے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا شہر کے گرد، اب بھی ہیں رواں
دریائے حسیں لہرائے ہوئے؟
جُوں گود میں اپنے من کو لئے
ناگن ہو کوئی تھرّائے ہوئے؟
یا نور کی ہنسلی، حُور کی گردن
میں ہو عیاں بل کھائے ہوئے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی فضا کے دامن میں
برکھا کے سمے لہراتے ہیں؟
کیا اب بھی کنارِ دریا پر
طوفان کے جھونکے آتے ہیں؟
کیا اب بھی اندھیری راتوں میں
ملّاح ترانے گاتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی وہاں برسات کے دن
باغوں میں بہاریں آتی ہیں؟
معصوم و حسیں دوشیزائیں
برکھا کے ترانے گاتی ہیں؟
اور تیتریوں کی طرح سے رنگیں
جھولوں پہ لہراتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی اُفق کے سینے پر
شاداب گھٹائیں جھومتی ہیں؟
دریا کے کنارے باغوں میں
مستانہ ہوائیں جھومتی ہیں؟
اور اُن کے نشیلے جھونکوں سے
خاموش فضائیں جھومتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا شام کو اب بھی جاتے ہیں
احباب، کنارِ دریا پر؟
وہ پیڑ گھنیرے اب بھی ہیں
شاداب، کنارِ دریا پر؟
اور پیار سے آ کر جھانکتا ہے
مہتاب، کنارِ دریا پر؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا آم کے اونچے پیڑوں پر
اب بھی وہ پپیہے بولتے ہیں؟
شاخوں کے حریری پردوں میں
نغموں کے خزانے کھولتے ہیں؟
ساون کے رسیلے گیتوں سے
تالاب میں امرس گھولتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا پہلی سی ہے معصوم ابھی
وہ مدرسے کی شاداب فضا؟
کچھ بھُولے ہوئے دن گزرے ہیں
جس میں، وہ مثالِ خواب فضا؟
وہ کھیل، وہ ہمسن، وہ میداں
وہ خواب گہِ مہتاب فضا؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی کسی کے سینے میں
باقی ہے ہماری چاہ بتا؟
کیا یاد ہمیں بھی کرتا ے اب
یاروں میں کوئی، آہ بتا؟
او دیس سے آنے والے بتا
لِللّٰہ بتا، لللّٰہ بتا؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا ہم کو وطن کے باغوں کی
مستانہ فضائیں بھول گئیں؟
برکھا کی بہاریں بھول گئیں
ساون کی گھٹائیں بھول گئیں؟
دریا کے کنارے بھول گئے
جنگل کی ہوائیں بھول گئیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا گاؤں میں اب بھی ویسے ہی
مستی بھری راتیں آتی ہیں؟
دیہات کی کم سن باہوشیں
تالاب کی جانب آتی ہیں؟
اور چاند کی سادہ روشنی میں
رنگین ترانے گاتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی گجر دم چرواہے
ریوڑ کو چرانے جاتے ہیں؟
اور شام کے دھندلے سایوں کے
ہمراہ گھروں کو آتے ہیں؟
اور اپنی رسیلی بانسریوں میں
عشق کے نغمے گاتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا گاؤں پہ اب بھی ساون میں
برکھا کی بہاریں چھاتی ہیں؟
معصوم گھروں سے بھوربھئے
چکّی کی صدائیں آتی ہیں؟
اور یاد میں اپنے میکے کی
بچھڑی ہوئی سکھیاں گاتی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
دریا کا وہ خواب آلودہ سا گھاٹ
اور اُس کی فضائیں کیسی ہیں؟
وہ گاؤں، وہ منظر، وہ تالاب
اور اُن کی صدائیں کیسی ہیں؟
وہ کھیت، وہ جنگل، وہ چڑیاں
اور اُن کی صدائیں کیسی ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی پرانے کھنڈروں پر
تاریخ کی عبرت طاری ہے؟
اَن پورنا کے اجڑے مندر پر
مایوسی و حسرت طاری ہے؟
سنسان گھروں پر چھاؤنی کے
ویرانی و رقّت طاری ہے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
آخر میں یہ حسرت ہے کہ بتا
وہ غارتِ ایماں کیسی ہے؟
بچپن میں جو آفت ڈھاتی تھی
وہ آفتِ دوراں کیسی ہے؟
ہم دونوں تھے جس کے پروانے
وہ شمعِ شبستاں کیسی ہے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
مرجانہ تھا جس کا نام بتا
وہ غنچہ دہن کس حال میں ہے؟
جس پر تھے فدا طفلانِ وطن
وہ جانِ وطن کس حال میں ہے؟
وہ سروِ چمن، وہ رشکِ سمن
وہ سیم بدن کس حال میں ہے؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی رخِ گلرنگ پہ
وہ جنّت کے نظارے روشن ہیں؟
کیا اب بھی رسیلی آنکھوں میں
ساون کے ستارے روشن ہیں؟
اور اُس کے گلابی ہونٹوں پر
بجلی کے شرارے روشن ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
کیا اب بھی شہابی عارض پر
گیسوئے سیہ بل کھاتے ہیں؟
یا بحرِ شفق کی موجوں پر
دو ناگ پڑے لہراتے ہیں؟
اور جن کی جھلک سے ساون کی
راتوں کے سے سپنے آتے ہیں؟
او دیس سے آنے والے بتا!

او دیس سے آنے والے بتا!
اب نامِ خدا، ہو گی وہ جواں
میکے میں ہے یا سسرال گئی؟
دوشیزہ ہے یا آفت میں اُسے
کم بخت جوانی ڈال گئی؟
گھر پر ہی رہی، یا گھر سے گئی
خوشحال رہی، خوشحال گئی؟
او دیس سے آنے والے بتا!


شاعر: اختر شیرانی
ماخذ: کلیاتِ اختر شیرانی
مُرتّبہ: گوپال متّل
ناشر: موڈرن پبلشنگ ہاؤس (9 گولا مارکیٹ دریا گنج نئی دھلی)

سو بسو تذکرے اے میرِؐ امم تیرے ہیں از حفیظ تائب


نعت رسولِ مقبول ﷺ از حفیظ تائب

سو بسو تذکرے اے میرِؐ امم تیرے ہیںاوجِ قوسین پہ ضَو ریز عَلَم تیرے ہیں
وقت اور فاصلے کو بھی تری رحمت ہے محیطسب زمانے ترے، موجود و عدم تیرے ہیں

جیسے تارے ہوں سرِ کاہکشاں جلوہ فشاںعرصۂ زیست میں یوں نقشِ قدم تیرے ہیں
اہلِ فتنہ کا تعلّق نہیں تجھ سے کوئیقافلے خیر کے اے خیر شیم تیرے ہیں
ہیں تری ذات پہ سو ناز گنہگاروں کوکیسے بے ساختہ کہتے ہیں کہ ہم تیرے ہیں
ہم کو مطلوب نہیں مال و منالِ ہستیہم طلبگار فقط تیری قسم تیرے ہیں
ناز بردارئ دنیا کی مشقّت میں نہ ڈالہم کہ پروردۂ صد ناز و نعم تیرے ہیں
ان کی خوشبو سے مہک جائے مشامِ عالممیرے دامن میں جو گلہائے کرم تیرے ہیں٭٭٭


بحر اور تقطیع:

بحر: بحر رمل مثمن مخبون مخذوف مقطوعافاعیل: فاعِلاتُن فَعِلاتُن فَعِلاتُن فَعلُن
اشاری نظام: 2212 / 2211 / 2211 / 22اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان ایک ساتھ استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے ۔

تقطیع:2212 / 2211 / 2211 / 22سو بسو تذکرے اے میرِؐ امم تیرے ہیںسو ب سو تذ/ ک رَ اے می/رِ اُ مم تے/ رے ہے
2212 / 2211 / 2211 / 22اوجِ قوسین پہ ضَو ریز عَلَم تیرے ہیںاو جِ قو سے/ن پَ ضو رے/ز عَ لم تے/رے ہے



ایک زمین ۔۔۔ پانچ شعراء (حفیظ تائب، نصیر الدین نصیر ، سراج دکنی، قمر جلالوی، احمد فراز)


تعلیمی مصروفیات کے سبب ایک عرصے کی غیر حاضری کے بعد آج پہلی پوسٹ ہے۔ سو پیشِ خدمت ہے۔
استادِ شاعر سراج اورنگ آبادی دکنی کی زمین میں جناب قمر جلالوی، جناب حفیظ تائب، جناب نصیر الدین نصیر اور جناب احمد فراز نے بھی طبع آزمائی کی ہے۔ میں نے کوشش کی ہے کہ یہ پانچوں شاہکار ایک جگہ جمع کر سکوں۔ سراج دکنی اور قمر جلالوی کی غزلیں اردو محفل سے لی گئی ہیں جبکہ نصیر الدین نصیر کی نعت استادِ محترم جناب اعجاز عبید صاحب (بابا جانی) کی لائبریری سے حاصل کردہ کتاب سے لی ہے اور احمد فراز کی غزل "اے عشق جنوں پیشہ" اور حفیظ تائب کی نعت "کلیاتِ حفیظ تائب" سے ٹائپ کی گئی ہیں۔
نعت رسولِ مقبول ﷺ از حفیظ تائب
رہی عمر بھر جو انیسِ جاں، وہ بس آرزوئے نبیؐ رہیکبھی اشک بن کے رواں ہوئی، کبھی درد بن کے دبی رہی
شہِؐ دیں کے فکر و نگاہ سے مٹے نسل و رنگ کے تفرقےنہ رہا تفاخرِ منصبی، نہ رعونتِ نسبی رہی
سرِ دشتِ زیست برس گیا، جو سحابِ رحمتِ مصطفےٰؐنہ خرد کی بےثمری رہی، نہ جنوں کی تشنہ لبی رہی
تھی ہزار تیرگئ فتن، نہ بھٹک سکا مرا فکر و فنمری کائناتِ خیال پر نظرِ شہِؐ عربی رہی
وہ صفا کا مہرِ منیر ہے، طلب اُس کی نورِ ضمیر ہےیہی روزگارِ فقیر ہے، یہی التجائے شبی رہی
وہی ساعتیں تھیں سُرور کی، وہی دن تھے حاصلِ زندگیبحضورِ شافعِؐ امّتاں مری جن دنوں طلبی رہی٭٭٭
نعت رسولِ مقبول ﷺ از نصیر الدین نصیر
کوئی جائے طور پہ کس لئے کہاں اب وہ خوش نظری رہینہ وہ ذوق دیدہ وری رہا ، نہ وہ شان جلوہ گری رہی
جو خلش ہو دل کو سکوں ملے ، جو تپش ہو سوز دروں ملےوہ حیات اصل میں کچھ نہیں ، جو حیات غم سے بری رہی
وہ خزاں کی گرم روی بڑھی تو چمن کا روپ جھلس گیاکوئی غنچہ سر نہ اٹھا سکا ، کوئی شاخ گل نہ ہری رہی
مجھے بس ترا ہی خیال تھا ترا روپ میرا جمال تھانہ کبھی نگاہ تھی حور پر ، نہ کبھی نظر میں پری رہی
ترے آستاں سے جدا ہوا تو سکونِ دل نہ مجھے ملامری زندگی کے نصیب میں جو رہی تو دربدری رہی
ترا حسن آنکھ کا نور ہے ، ترا لطف وجہ سرور ہےجو ترے کرم کی نظر نہ ہو تو متاع دل نظری رہی
جو ترے خیال میں گم ہوا تو تمام وسوسے مٹ گئےنہ جنوں کی جامہ دری رہی ، نہ خرد کی درد سری رہی
مجھے بندگی کا مزا ملا ، مجھے آگہی کا صلہ ملاترے آستانہ ناز پر ، جو دھری جبیں تو دھری رہی
یہ مہ و نجوم کی روشنی ترے حسن کا پرتو بدل نہیںترا ہجر ، شب کا سہاگ تھا ، مرے غم کی مانگ بھری رہی
رہ عشق میں جو ہوا گزر ، دل و جاں کی کچھ نہ رہی خبرنہ کوئی رفیق نہ ہم سفر ، مرے ساتھ بے خبری رہی
ترے حاسدوں کو ملال ہے ، یہ نصیر فن کا کمال ہےترا قول تھا جو سند رہا ، تری بات تھی جو کھری رہی٭٭٭
غزل از سراج دکنی
خبرِ تحیرِ عشق سن، نہ جنوں رہا، نہ پری رہی
نہ تو تُو رہا، نہ تو میں رہا، جو رہی سو بے خبری رہی

شۂ بے خودی نے عطا کیا، مجھے اب لباسِ برہنگی
نہ خرد کی بخیہ گری رہی، نہ جنوں کی پردہ دری رہی

چلی سمتِ غیب سے اک ہوا کہ چمن ظہور کا جل گیا
مگر ایک شاخِ نہالِ غم جسے دل کہیں سو ہری رہی

نظرِ تغافلِ یار کا گلہ کس زباں سے کروں بیاں
کہ شرابِ حسرت و آرزو، خمِ دل میں تھی سو بھری رہی

وہ عجب گھڑی تھی کہ جس گھڑی لیا درس نسخۂ عشق کا
کہ کتاب عقل کی طاق پر جو دھری تھی سو وہ دھری رہی

ترے جوشِ حیرتِ حسن کا اثر اس قدر ہے یہاں ہوا
کہ نہ آئینے میں جِلا رہی، نہ پری میں جلوہ گری رہی

کیا خاک آتشِ عشق نے دلِ بے نوائے سراج کو
نہ خطر رہا، نہ حذر رہا، جو رہی سو بے خطری رہی٭٭٭
غزل از قمر جلالوی
مجھے باغباں سے گلہ یہ ہے کہ چمن سے بے خبری رہی
کہ ہے نخلِ گلُ کا تو ذکر کیا کوئی شاخ تک نہ ہری رہی

مرا حال دیکھ کے ساقیا کوئی بادہ خوار نہ پی سکا
تِرے جام خالی نہ ہو سکے مِری چشمِ تر نہ بھری رہی

میں قفس کو توڑ کے کیا کروں مجھے رات دن یہ خیال ہے
یہ بہار بھی یوں ہی جائے گی جو یہی شکستہ پری رہی

مجھے علم تیرے جمال کا نہ خبر ہے تیرے جلال کی
یہ کلیم جانے کہ طور پر تری کیسی جلوہ گری رہی

میں ازل سے آیا تو کیا ملا جو میں جاؤں گا تو ملے گا کیا
مری جب بھی در بدری رہی مری اب بھی در بدری رہی

یہی سوچتا ہوں شبِ الم کہ نہ آئے وہ تو ہوا ہے کیا
وہاں جا سکی نہ مری فغاں کہ فغاں کی بے اثری رہی

شبِ وعدہ وہ جو نہ آسکے تو قمر کہوں گا یہ چرخ سے
ترے تارے بھی گئے رائگاں تری چاندنی بھی دھری رہی٭٭٭
غزل از احمد فراز
ترا قرب تھا کہ فراق تھا وہی تیری جلوہ گری رہی
کہ جو روشنی ترے جسم کی تھی مرے بدن میں بھری رہی

ترے شہر میں چلا تھا جب تو کوئی بھی ساتھ نہ تھا مرے
تو میں کس سے محوِ کلام تھا؟ تو یہ کس کی ہمسفری رہی؟

مجھے اپنے آپ پہ مان تھا کہ نہ جب تلک ترا دھیان تھا
تو مثال تھی مری آگہی تو کمال بے خبری رہی

مرے آشنا بھی عجیب تھے نہ رفیق تھے نہ رقیب تھے
مجھے جاں سے درد عزیز تھا انہیں فکرِ چارہ گری رہی

میں یہ جانتا تھا مرا ہنر ہے شکست و ریخت سے معتبر
جہاں لوگ سنگ بدست تھے وہیں میری شیشہ گری رہی

جہاں ناصحوں کا ہجوم تھا وہیں عاشقوں کی بھی دھوم تھی
جہاں بخیہ گر تھے گلی گلی وہیں رسمِ جامہ دری رہی

ترے پاس آ کے بھی جانے کیوں مری تشنگی میں ہراس تھا
بہ مثالِ چشمِ غزال جو لبِ آبجو بھی ڈری رہی

جو ہوس فروش تھے شہر کے سبھی مال بیچ کے جا چکے
مگر ایک جنسِ وفا مری سرِ رَہ دھری کی دھری رہی

مرے ناقدوں نے فرازؔ جب مرا حرف حرف پرکھ لیا
تو کہا کہ عہدِ ریا میں بھی جو بات کھری تھی کھری رہی٭٭٭
بحر اور تقطیع:
بحر: بحر کامل مثمن سالمافاعیل: مُتَفاعِلُن مُتَفاعِلُن مُتَفاعِلُن مُتَفاعِلُناشاری نظام: 21211-21211-21211-21211
تقطیع:21211-21211-21211-21211رہی عمر بھر جو انیسِ جاں، وہ بس آرزوئے نبیؐ رہیر ہِ عم ر بر- جَ ا نی سِ جا – وَ ب سا ر زو- ئے ن بِ ر ہی
21211-21211-21211-21211کبھی اشک بن کے رواں ہوئی، کبھی درد بن کے دبی رہیک بِ اش ک بن- کِ ر وا ہُ ئی- ک بِ در د بن- کِ د بی ر ہی

ایک زمین۔۔۔دو شاعر (فیض احمد فیض، محسن نقوی)۔۔۔ دو غزلیں

ایک زمین۔۔۔دو شاعر (فیض احمد فیض، محسن نقوی)۔۔۔ دو غزلیں


اردو شاعری کے دو بڑے نام، فیض احمد فیض اور محسن نقوی کی دو خوبصورت غزلیں، جو ایک ہی زمین میں ہیں۔
فیض احمد فیض کی غزل ان کی کتاب "شامِ شہر یاراں" میں شامل ہے، جو مکتبۂ کارواں لاہور نے 1978ء میں شائع کی تھی جبکہ محسن نقوی کی غزل اُن کی کتاب "طلوعِ اشک" میں شامل ہے، جو 1992ء  میں شائع ہوئی تھی۔
اس لیے زیادہ قرینِ قیاس بات یہی ہے کہ محسن نقوی نے فیض احمد فیض کی زمین میں غزل لکھی ہے۔
دونوں غزلوں بیحد خوبصورت ہیں اور پیشِ خدمت ہیں۔

فیض احمد فیض کی غزل:

حسرتِ دید میں گزراں ہیں زمانے کب سے
دشتِ اُمّید میں گرداں ہیں دوانے کب سے

دیر سے آنکھ پہ اُترا نہیں اشکوں کا عذاب
اپنے ذمّے ہے ترا قرض نہ جانے کب سے

کس طرح پاک ہو بے آرزو لمحوں کا حساب
درد آیا نہیں دربار سجانے کب سے
سر کرو ساز کہ چھیڑیں کوئی دل سوز غزل
"ڈھونڈتا ہے دلِ شوریدہ بہانے کب سے"
پُر کرو جام کہ شاید ہو اِسی لحظہ رواں روک رکھا ہے جو اک تیر قضا نے کب سے
فیضؔ پھر کب کسی مقتل میں کریں گے آباد لب پہ ویراں ہیں شہیدوں کے فسانے کب سے


محسن نقوی کی غزل:

جستجو میں تیری پھرتا ہوں نجانے کب سے؟
آبلہ پا ہیں مرے ساتھ زمانے- کب سے!

میں کہ قسمت کی لکیریں بھی پڑھا کرتا تھا
کوئی آیا ہی نہیں ہاتھ دکھانے کب سے

 
نعمتیں ہیں نہ عذابوں کا تسلسل اب تو!
مجھ سے رُخ پھیر لیا میرے خدا نے کب سے


جان چھٹرکتے تھے کبھی خود سے غزالاں جن پر
بھول بیٹھے ہیں شکاری وہ نشانے کب سے


وہ تو جنگل سے ہواؤں کو چُرا لاتا تھا
اُس نے سیکھے ہیں دیے گھر میں جلانے کب سے؟


شہر میں پرورشِ رسمِ جنوں کون کرے؟
یوں بھی جنگل میں یاروں کے ٹھکانے کب سے؟


آنکھ رونے کو ترستی ہے تو  دل زخموں کو
کوئی آیا ہی نہیں احسان جتانے کب سے


جن کے صدقے میں بسا کرتے تھے اُجڑے ہوئے لوگ
لُٹ گئے ہیں سرِ صحرا وہ  گھرانے کب سے


لوگ بے خوف گریباں کو کُھلا رکھتے ہیں
تِیر چھوڑا ہی نہیں دستِ قضا نے کب سے


جانے کب ٹوٹ کے برسے گی ملامت کی گھٹا؟
سر جھکائے ہوئے  بیٹھے ہیں دِوانے کب سے


جن کو آتا تھا کبھی حشر جگانا  محسؔن
بختِ خفتہ کو نہ آئے وہ جگانے کب سے!


دونوں غزلوں کی بحر:
بحر - بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوعافاعیل - فاعِلاتُن فَعِلاتُن فَعِلاتُن فَعلُن
اشاری نظام - 2212 / 2211 / 2211 / 22اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان ایک ساتھ استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے ۔


ایک زمین۔۔۔دو شاعر (ساغر صدیقی، بشیر بدر)۔۔۔ دو غزلیں


ایک زمین۔۔۔دو شاعر (ساغر صدیقی، بشیر بدر)۔۔۔ دو غزلیں
ساغر صدیقی کی غزل:

چراغِ طور جلاؤ ! بڑا اندھیرا ہے
ذرا نقاب اٹھاؤ ! بڑا اندھیرا ہے

ابھی تو صبح کے ماتھے کا رنگ کالا ہے
ابھی فریب نہ کھاؤ ! بڑا اندھیرا ہے

وہ جن کے ہوتے ہیں خورشید آستینوں میں
انہیں کہیں سے بلاؤ ! بڑا اندھیرا ہے

مجھے تمہاری نگاہوں پہ اعتماد نہیں
مرے قریب نہ آؤ ! بڑا اندھیرا ہے

فرازِ عرش سے ٹوٹا ہوا کوئی تارا
کہیں سے ڈھونڈ کے لاؤ بڑا اندھیرا ہے

بصیرتوں پہ اجالوں کا خوف طاری
مجھے یقین دلاؤ ! بڑا اندھیرا ہے

جسے زبانِ خرد میں شراب کہتے ہیں
وہ روشنی سی پلاؤ ! بڑا اندھیرا ہے

بنامِ زہرہ جبینانِ خطہء فردوس
کسی کرن کو جگاؤ ! بڑا اندھیرا ہے



بشیر بدر کی غزل:
ہمارے پاس تو آؤ، بڑا ندھیرا ہےکہیں نہ چھوڑ کے جاؤ، بڑا اندھیرا ہے
اُداس کر گئے بے ساختہ لطیفے بھی
اب آنسوؤں سے رُلاؤ ، بڑا اندھیرا ہے


کوئی ستارہ نہیں پتھروں کی پلکوں پر
کوئی چراغ جلاؤ، بڑااندھیرا ہے

حقیقتوں میں زمانے بہت گزار چکے
کوئی کہانی سناؤ ، بڑا اندھیرا ہے

کتابیں کیسی اٹھا لائے میکدے والے
غزل کے جام اٹھاؤ ، بڑا اندھیرا ہے

غزل میں جس کی ہمیشہ چراغ جلتے ہیں
اسے کہیں سے بلاؤ ، بڑا اندھیرا ہے

وہ چاندنی کی بشارت ہے حرفِ آخر تک
بشیر بدر کو لاؤ ، بڑا اندھیرا ہے

کتھے مہر علیؔ کتھے تیری ثناء اور ترجمہ




کتھے مہر علیؔ کتھے تیری ثناء 



اَج سک متراں دی ودھیری اے
کیوں دلڑی اداس گھنیری اے
لوں لوں وچ شوق چنگیری اے
اج نیناں لائیاں کیوں جھڑیاں
اَلْطَّیْفُ سَریٰ مِنْ طَلْعَتِہٖوالشَّذُو بَدیٰ مِنْ وَفْرَتَہٖفَسَکَرْتُ ھُنَا مِنْ نَظْرَتِہٖ
نیناں دیاں فوجاں سر چڑھیاں
مکھ چند بدر شعشانی اے
متھے چمکے لاٹ نورانی اے
کالی زلف تے اکھ مستانی اے
مخمور اکھیں ہن مدھ بھریاں
دو ابرو قوس مثال دسن
جیں توں نوک مژہ دے تیر چھٹن
لباں سرخ آکھاں کہ لعل یمن
چٹے دند موتی دیاں ہن لڑیاں

اس صورت نوں میں جان آکھاں
جانان کہ جانِ جہان آکھاں
سچ آکھاں تے رب دی شان آکھاں
جس شان تو شاناں سب بنیاں

ایہہ صورت ہے بے صورت تھیں
بے صورت ظاہر صورت تھیں
بے رنگ دسے اس مورت تھیں
وچ وحدت پھٹیاں جد گھڑیاں

دسے صورت راہ بے صورت دا
توبہ راہ کی عین حقیقت دا
پر کم نہیں بے سوجھت دا
کوئی ورلیاں موتی لے تریاں

ایہا صورت شالا پیش نظر
رہے وقت نزع تے روزِ حشر
وچ قبر تے پل تھیں جد ہوسی گذر
سب کھوٹیاں تھیسن تد کھریاں

یُعْطِیُکَ رَبُّکَ داس تساں
فَتَرْضیٰتھیں پوری آس اساں
لج پال کریسی پاس اساں
والشْفَعْ تُشَفَّعْ صحیح پڑھیاں

لاہو مکھ تو  بردِ یمن
من بھانوری جھلک دکھلاؤ سجن
اوہا مٹھیاں گالیں الاؤ مٹھن
جو حمرا وادی سن کریاں

حجرے توں مسجد آؤ ڈھولن
نوری جھات دے کارن سارے سکن
دو جگ اکھیاں راہ دا فرش کرن
سب انس و ملک حوراں پریاں

انہاں سکدیاں تے کرلاندیاں تے
لکھ واری صدقے جاندیاں تے
انہاں بردیاں مفت وکاندیاں تے
شالا آون وت بھی اوہ گھڑیاں

سُبْحَانَ اللہ مَا اجْمَلَکَمَا اَحْسَنَکَ مَا اَکمَلَکَ
کتھے مہر علی کتھے تیری ثنا
گستاخ اکھیں کتھے جا اڑیاں
(پیر مہر علی شاہ گولڑوی شریف)
ترجمہ
ہے آج سجن کی پیاس بہتکیوں دل مسکیں ہے اداس بہت؟نس نس میں ہے شوق کی باس بہتآنکھوں سے لگی ہیں کیوں جھڑیاں؟
مکھڑا اِک بدر ہے شعثانیماتھے پہ ہیں لاٹیں نورانیزلفیں کالی، اور مستانیآنکھیں ہیں نشیلی مَدھ بھریاں
دو ابرو مثالِ قوس لگیںجن سے مژگاں کے تیر چلیںلب لعلِ یمن کی سرخی دیںاور دانت ہیں موتیوں کی لڑیاں
اس صورت کو میں جان کہوںجانان کہ جانِ جہان کہوںسچ کہوں تو رب کی شان کہوںجس شان سے ہے ہر شان عیاں
یارب! ہو یہ صورت پیشِ نظرجب نزع لگے، جب ہو محشرجب قبر میں ہو اور پُل پہ گزرسب کھوٹے بھی ہوں گے کھرے جہاں
آؤ حجرے سے مسجد پیارےانک نوری جھلک مانگیں سارےہیں آنکھیں بچھائے متوارےسب اِنس و ملک حوریں پریاں
ان روتے ہوئے دیوانوں پران صدقے اترتی جانوں پربے دام غلام انسانوں پرپھر آئیں خدایا! وہ گھڑیاں
سُبْحَانَ اللہ مَا اجْمَلَکَمَا اَحْسَنَکَ مَا اَکمَلَکَکہاں مہرؔ علی، کہاں تیری ثناگستاخ نظر جا ٹھہری کہاں
(پروفیسر کرم حیدری (کرم داد خان))

سُبْحَانَ اللہ مَا اجْمَلَکَسبحان اللہ! آپ ﷺ کتنے جمیل ہیںمَا اَحْسَنَکَ مَا اَکمَلَکَآپ ﷺ کتنے حسین ہیں، آپ ﷺ کتنے کامل ہیں

Pages