بلاگستان

تاریخ اشاعت: سنیچر, August 20, 2011 - 15:33
اس پوسٹ کی آٹھویں قسط یہاںملاحظہ فرمائیں
آسمان پر گہرے سیاہ بادل چھائے ہوئے ہیں، سرد اور تیزہوائیں چل رہی ہیں۔ بادل وقفے وقفےسے گرجتے ہیں تو یوں لگتاہےجیسے گڈو کی موت پر چپکے چپکے رورہے ہیں۔ ننھے گڈو کی میت اُٹھنے کی تیاری ہورہی ہے۔ مسجد سے لایا گیا جنازے کا ڈولا گھر کے باہررکھا ہوا ہےاور چونکہ آنگن میں لگا ٹین کا دروازہ بہت چھوٹا ہے اور ڈولا اندر لایا نہیں جاسکتالہذا پروگرام کے مطابق گڈو کو گود میں اُٹھا کر باہر جنازے کے ڈولے پر لٹایا جائے گااور اُس کے بعد میت قبرستان کی طرف روانہ ہوگی۔
...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, August 17, 2011 - 02:33
بلاگستان کو جنگستان بنانے والی آنکھوں میں نشہ لئَے چھنو آنٹی کا ذکر تو بہت ہوچکا اب زرا انکے قلبی تعلق والے کلب کا بھی ذکر ہو ہی جائے   بلاگستان پہلے امن کا گہوارہ تھا ایک دن اس بلاگستانی محلے میں ایک خارش زدہ کتا داخل ہوا اس کا کام ہر وقت بھونکنا تھا بلاگستان کا ہر بلاگی اس کو دھتکارتا تھا مگر چھنو آنٹی اس کو بہت پسند کرتی تھی ہر طرف کی دھتکار سے       تنگ آکر اس نے چھنو آنٹی کے قدموں میں پناہ لی آنٹی کو ایک ہمراز غمگسار مل گیا ، کتا جب بھونک کے تھک  جاتا تو چھنو آنٹی کے قدموں میں جا بیٹھتا اور قدموں میں سر رکھ کر سارے شکوے کہہ سناتا کہ کس نے...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, August 14, 2011 - 20:08
مصنف: ابو موسیٰ


گاڑی کا سلینسر کافی آواز کر رہا تھا ، سوچا تو یہی تھا کہ میں صبح ، صبح ٹھیک کروا کے وقت پر گھر واپس آجاؤں گا پر آنکھ ہی دھوکھا دے گئی اور بارہ بجے جب مستری کے پاس پہنچا تو لائن کافی لمبی تھی ، خیر میں بھی قطار میں لگ گیا ! تھوڑی دیر میں پھٹ پھٹ کرتی ایک اور کار آئی جس میں تین خواتین سوار تھیں ، چھوٹا بولا : استاد لیڈیز ہیں گرمی بھی ہے انکی گاڑی پہلے لگا دوں ؟ استاد نے جس کار کو ٹھیک کر رہا تھا کے نیچے سے سر باہر نکال کر خواتین کی کار کے درمیانی شیشہ پر لٹکتی صلیب کو دیکھ کر کہا “چھڈ یار چوڑیاں (چمار) نیں ایہنا دا کہڑا روزہ ہے! کھلوتی رہین دے توپپے، واری سرے...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعرات, August 11, 2011 - 21:56
مصنف: عادل بھیا
’’چودہ اگست 1947 کو کیا ہوا؟‘‘’’اِس دِن پاکستان آزاد ہوا تھا‘‘۔ 
 میرے اِس سوال کا  یقیناً یہی وہ جواب ہے جو آپ سب کے دماغوں میں ہوگا۔ ’’لیکن پاکستان کے آزاد ہونے کا کیا مطلب؟‘‘
آپ حیران ہورہے ہوں گے کہ یہ آج بھیا کیسے سوالات کر رہا ہے۔ ’’برصغیر کے مسلمانوں کو اِک علیحدہ سرزمین ملی جہاں وہ سر اُٹھا کر اِک آزاد زندگی گزار سکتے ہیں۔‘‘
مُجھے پورا یقین ہے کہ آپ کے پاس میرے دوسرے سوال کا جواب یہی ہوگا۔’’تو کیا ہم آزاد زندگی گزار رہے ہیں؟؟؟‘‘
یہ وہ سوال ہے جسکا جواب میں صرف اور صرف آپ سے سُننا چاہتا ہوں۔۔۔**************************************************لقمان...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, August 10, 2011 - 22:56
ایسے ہی یہ پوسٹ بھی انٹ کی شنٹ ہے دیکھیں کہ کس، کس کے جاکے لگتی ہے :ڈ

بدصورت ہونا اتنی بری بات نہیں جتنا دماغی طور پر بدصورت ہونا۔ آپ میں یہ دونوں خامیاں اتم طور پر پائی جاتی ہیں۔ کیا آپ اپنی احساس کمتری کا اسی طور پرچارک کرتی رہیں گی؟ ویسے اگر آپ نے بچپن میں اس درخت سے ایک دفعہ بھی ہانڈی کھال لیتی ہوتی تو عقل اور شکل دونوں کو فرق پڑتا۔ 
خیر اب بچھتائے کیا ہوت جب چڑیا چک گئی کھیت۔ 
دراصل آپ کے اندر اتنا گند ہے کہ کینیڈا تو دور کی بات آپ تو جنتی مسلمانوں میں بھی کیڑے نکال دیں۔ وجہ ویسی ہی ہوگی کہ جیسے آپ کینیڈا کے لئے ذلیل ہو خوار ہو کر ویزہ حاصل کر سکیں ویسے ہی...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, August 7, 2011 - 20:51
مصنف: کاشف نصیر
کچھ پڑھنے اور لکھنے کے لئے وقت نکالنا کبھی اتنا مشکل نہ تھا جتنا کہ بیتے کچھ مہینوں میں رہا،تین مہینے ہوتے ہیں کہ کوئی کتاب پڑھی ہو، رواں ماہ رمضان میں مطالعہ قرآن کا حال بھی قابل رحم ہے، کئی تفاسیرمطالعہ گاہ میں دھری ہیں لیکن مجال ہے جو ابتدائیہ سے آگے بڑھ سکا […]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, August 7, 2011 - 18:10
مصنف: ابو موسیٰ


یاجوج ماجوج کا ذکر ، تینوں بڑے الہامی مذاہب کے ساتھ ساتھ دوسرے عقائد میں بھی پایا جاتا ہے. مذہبی عقائد سے قطع نظر اسکے کے یہ قوم کب ، کہاں سے نمورادر ہوگی اور باقی دنیا کے ساتھ کیا کرے گی . یہاں صرف یہ ذکر کرنا چاہوں گا یاجوج ماجوج ایک مقید قوم جو اپنے حصار سے باہر نکلنے کے لیے بیتاب ہے اور ہر وقت اسی مقصد کی با یاوری میں کوشاں رہتی ہے. بعض نظریات کے مطابق یہ قوم سارا دن اپنے حصار کو چاٹ چاٹ کر ختم کرنے کے قریب ہوتی ہی ہے تو رات کا اندیھرا ان کو آن لیتا ہے اور وہ تھک ٹوٹ کر اور نیند کے غلبے کی وجہ سے سو جاتے ہیں اور صبح سورج کی کرنیں ان کی آنکھوں کو اسی طاقت ور اور مظبوط...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعرات, August 4, 2011 - 03:04
مصنف: ابو موسیٰ


زور سے ٹھا کی آواز آئی ، دونوں اپنی اپنی گاڑیوں سے باہر نکلے ، لمحے بھر کو اپنی زخمی سواری کو دیکھا اور ایک دوسرے کے طرف ایسے لپکے جیسے پیچھے سے آواز آئی ہو “یلغار ہو” !

تمھیں دکھائی نہی دیتا؟ پہلا بولا .

چل چل ، نظر تو تم کو چیک کروانی چاہیے ، غلط اور ٹیک تم نے کیا ہے .اپنی حرام کی کمائی کا خیال نہی تو دوسرے کی حلال کا تو خیال کرلو! دوسرے نے جواب دیا .

کیا بولا حرام کی کمائی ؟ ابے روزے سے نا ہوتا تو ابھی بتا دیتا کمائی تو چھوڑ کون حلال اور حرام سے تعلق رکھتا ہے ؟

گالی دیتا ہے ؟ روزہ نا ہوتا تو یہنی تیری بوٹی...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, July 31, 2011 - 17:27
سعودی عرب میں ان شاءاللہ رمضان 1432ھ ، یکم اگست 2011ء سے شروع ہوگا۔
اللہ تعالیٰ ہم تمام کو اس مبارک مہینے کی رحمتوں اور برکتوں سے فیضیاب ہونے کے زیادہ سے زیادہ مواقع نصیب فرمائے ، آمین۔
آپ تمام کو رمضان کریم کی نیک ساعتیں مبارک ہوں۔

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, July 31, 2011 - 14:10
مصنف: عادل بھیا
جیسا کہ ہم سب جانتے ہیں کہ مشہور پاکستانی نعت خواں جنید جمشید اب اشاعتِ دین کا فریضہ سرانجام دے رہے ہیں لہٰذا کاروبار کے ساتھ ساتھ، تبلیغ کے سلسلے میں بھی وہ اکثر پاکستان سے باہر جاتے رہتے ہیں۔ اور ایسے موقعات پر جن اسٹیجوں پر اِن سے گانے کی فرمائیشیں کی جاتی تھیں، اب اُن ہی اسٹیجوں پر نعت خوانی کیلئے فرمائیشیں کی جانے لگی ہیں۔چونکہ یورپ میں بھی پاکستانیوں کی اِک کثیر تعداد موجود ہے لہٰذا وہ لوگ بھی جُنید جمشید سے مِل کر اور انکی زبان سے نعتیں سُن کر اُتنا ہی اچھا محسوس کرتے ہیں جتنا کہ پاکستان میں رہنے والے۔ اگر آپ جُنید جمشید سے کبھی ملے ہوں تو آپکو اِس بات کا بخوبی اندازہ ہوگا کہ وہ ایک...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعرات, July 28, 2011 - 17:23
 ایک غزل کا مطلع مشہور ہے۔

سرفروشی کی تمنا اب ہمارے دل میں ہے
دیکھنا ہے زورکتنا بازوئے قاتل میں ہے

عام طور پر یہ مولانا ظفر علی خان (1873ءتا1956ء) کےنام سےمشہور ہے لیکن یہ مطلع ایک گمنام شاعر بسمل شاہجہانپوری کاہے۔ بسمل شاہجہانپوری نے ایک مذہبی گھرانے میں آنکھ کھولی۔ ہوش سنھبالنے کے بعد دل ودماغ میں یہی تڑپ تھی کہ برطانیہ کی غلامی سے آزاد ہونا چاہیے۔ 1916ء میں ان کا رابطہ انہی خیالات کے حامل ایک اور نوجوانوں کے گروہ سے ہوا۔1918ء میں "مین پوری"سازش کے اہم واقعہ میں بسمل بھی شریک تھے 9اگست 1925ء کو انہوں نے کاکوری (لکھنو کا ایک مشہور قصبہ)ٹرین کی واردات میں حصہ...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, July 27, 2011 - 00:58

السلام علیکم ورحمتہ اللہ
دوستوں چند دن پہلے ٹیلی ویژن پر ایک پروگرام دیکھا جس میں پروگرام کا میزبان سڑکوں پر گھوم کر سب سے اردو کے حروف تہجی سنانے کی فرمائش کر رہا تھا انتہائی افسوس کی بات ہے کہ صرف ایک یا دو کے علاوہ کوئی بھی حروف تہجی نہیں سنا سکا حالانکہ اس میں ایک بڑی تعداد یونیورسٹی کے طلباء کی تھی کتنے دکھ کی بات ہے کہ ہم خود اپنی زبان کو اپنے ہی ہاتھوں سے مسخ کرہے ہیں۔ ہمارے ہر شعبے ميں انگريزی چھائی ہوئی ہے۔ شاید ہم یہ حقیقت بھول چکے ہیں کہ جس قوم کی زبان نہیں رہتی وہ قوم بھی نہیں رہتی۔ اسی لئے جب تک ہم اپنی بول چال میں انگریزی کا تڑکہ نہ لگا دیں ہمیں مزہ ہی نہیں آتا۔اردو...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 26, 2011 - 12:21
اس موضوع پر پروفیسر اختر الواسع (صدر شعبہ علوم اسلامی ، جامعہ ملیہ اسلامیہ ، نئی دہلی) کے ایک طویل مضمون کا مفید اقتباس ذیل میں ملاحظہ فرمائیں۔

طواف کے لغوی معنی گھومنے اور چکر لگانے کے ہیں۔ اسلامی اصطلاح میں اس سے مراد وہ رسم ہے جس میں خانہ کعبہ کے چاروں طرف گھوم کر دعائیں مانگی جاتی ہیں۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے طواف کو نماز قرار دیا ہے اس فرق کے ساتھ کہ جناب رسالت مآب (صلی اللہ علیہ وسلم) کے الفاظ میں :
الطواف حول البيت مثل الصلاة إلا أنكم تتكلمون فيه ، فمن تكلم فيه ، فلا يتكلمن إلا بخير
...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 26, 2011 - 11:58

پی پی حکومت 50 ارب روپے بےنظیر انکم سپورٹ پروگرام پر خرچ کررہی ہے. اس سے لوگوں کو ایک ہزار روپے ماہانہ ملتے ہیں. بےنظیر انکم سپورٹ پروگرام سےامید تھی کہ اس مستحق بیوہ عورتوں کو جو اسکی ہر شرئط پر پوری اترتی ہیں، تھوڑی ہی سہی مگر کچھ مالی مدد ملے گی مگرافسوس ناک بات یہ ہے کہ اس پروگرام میں صرف پی پی پی کے وزراء، کارکنان اور انکے زیر اثر غیر مستحق خاندانوں کو فوقیت دی جارہی ہے. ایک ہزار روپے بھیک دے کر اگلے انتخابات کے لئے ووٹ اکٹھے کیےجارہے ہیں. اگر50 ارب روپے پیپکو (واپڈا) کو دے دییے جائیں تو پاکستان سے لوڈ شیڈنگ کا مکمل...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, July 25, 2011 - 17:17
پاکستان میں رمضان مبارک کا چاند نظر آنے والا ہے۔ اور رویت ہلال پر صوبہ خیبر پختون خواہ کے "شرانگیز" مولویوں کی دکانیں کھلنے والی ہیں۔ پشاور کی مسجد قاسم علی خان غیر سرکاری رویت ہلال کمیٹی کا مرکز ہے۔ چاند کی زیادہ فکر مسجد قاسم علی خان کے مولوی شہاب الدین پوپلزئی کو ہوتی ہے جوصرف رمضان اور شوال کا چاند دیکھنے کا اہتمام کرتا ہے اورصرف...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, July 25, 2011 - 13:49
بلاگرز ۔۔۔۔۔ ہاں تو آج بات ہوگی کچھ بلاگرز کی اقسام کے بارے میں اور یہ سراسر میری اپنی ذاتی آرا ہیں کوئی اسکو ذاتی نہ لے اور اگر لے بھی لے تو اسکی مرضی ۔۔۔
ویسے تو جی کئی اقسام کے بلاگرز ہیں ۔۔۔ مگر بات ہوگی صرف اردو بلاگرز کی کیونکہ انگریزی بلاگ تو میں پڑھتا نہیں ہوں بس دیکھتا ہوں :)
پچھلے ایک سال سے میں تقریباً روزآنہ کی بیناد پر بلاگ پڑھ رہا ہوں اور کسی بھی بلاگ کو پڑھنے کے لئے اردو سیارہ کا سہارا لیتا ہوں کے وہاں آسانی سے کسی بھی بلاگ کی رسائی ممکن ہوتی ہے ۔۔۔۔۔ اس عرصے میں جو میں نے محسوس کیا بس آج اسکا ہی ذکر خیر ہوگا یہاں۔۔۔۔۔
سب سے پہلے بلاگرز کی اقسام...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سنیچر, July 23, 2011 - 03:04
اندھی نگری۔۔۔۔۔ کراچی!!!

اور آج کراچی پھر کرچی کرچی ہے۔۔۔۔۔۔22 جولائی کو دس بجے تک سکور 12 تک پہنچ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کل23 جولائی کا دن کتنی اور کس کس کی جان لے گا ، شاید ہر کوئی اپنے گھر میں‌یہی سوچ رہا ہو گا!!!

آپ لوگ یقین کریں کہ میں کبھی کراچی نہیں گیا لیکن اس قبیل کی خبریں پڑھ پڑھ کے کہ::
"" حسن سکوائر کے قریب نامعلوم افراد کی فائرنگ سے جواد احمد جان بحق ہو گیا، لاش کو عباسی شہید ہسپتال پہنچایا گیا""
""گلشن اقبال کے علاقے میں محمد علی فائرنگ سے زخمی ہو گیا جو بعد میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے جناح ہسپتال میں چل بسا""

یہ خبریں پڑھ پڑھ کر پچھلے...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 22, 2011 - 17:58
گوگل پیسے کہاں سے کماتا ہے؟ گوگل کے بارے میں تو تقریباً سب کو ہی پتہ ہے کہ وہ اپنی کمائی اشتہارات سے کرتا ہے۔ WordStream میں کام کرنے والے ریسرچرز کے مطابق گوگل اپنی آمدنی کا ستانوے 97 فیصد اشتہارات سے کماتا ہے۔ جس میں سے زیادہ کمائی اسے ایڈ ورڈز کی نیلامی کی [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 22, 2011 - 16:03
مصنف: کاشف نصیر
خدا خدا کرتے کفر توٹا اور ایک عرصے غائب رہنے کے بعد اردو بلاگستان میں واپسی نصیب ہوئی۔ البتہ عرصہ ڈیڑھ سال میں ورڈ پریس سے ڈاٹ کو ڈاٹ سی سی اور پھر واپس وڑد پریس سے ہوتے ہوئے اس نئے زاتی اور قدرے مستقل بلاگ پر آتے آتے بہت کچھ بدل چکا ہے۔ آج […]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, July 20, 2011 - 16:42
اگر آپ ورڈپریس ویب ڈیولوپر ہیں تو آپ کے لئے ایک اطلاع ہے۔
اچھی یا بری جو بھی سمجھ لیں۔
ورڈپریس نے گذشتہ چند ہفتہ قبل انٹرنیٹ اکسپلورر ورژن 6 کے لیے اپنی مطابقت (compatibility) کو ختم کر دیا ہے۔ اب ورڈپریس (ورژن 3.2) سے انٹرنیٹ اکسپلورر براؤزر کے لیے کوئی سپورٹ (support) نہیں دی جائے گی۔
ورڈپریس تازہ ترین ورژن 3.2 کے ڈیش بورڈ کی جھلک ملاحظہ فرمائیں ۔۔۔
...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, July 20, 2011 - 15:13
اس پوسٹ کی ساتویں قسط یہاں ملاحظہ فرمائیں

گڈو کی لاش اگرچہ شام سے گھر میں پڑی ہے لیکن ماں کو اب بھی یقین نہیں آرہا کہ ننھا گڈو اُسے ہمیشہ ہمیشہ  کیلئے چھوڑ کر جا چکا ہے ۔۔۔۔ وہ وقفے وقفے سے دھاڑیں مار مار کر رونے لگتی ہے اور روتے ہوئے ننھے گڈوکے چھوٹے چھوٹے ہاتھوں اور منہ کو بے تابی سے چومنے لگتی ہے۔۔۔۔لیکن ننھے گڈو پر ماں کے رونے کا کوئی اثر نہیں ہوتا ۔۔۔۔
وہ بدستور اپنی ماں کی حالت سے بے خبر پر سکون سویا رہتا ہے وہ ایک بار بھی آنکھیں کھول کر ماں کی طر ف نہیں دیکھتا۔۔۔۔لیکن ماں...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 19, 2011 - 11:37
29 جون1948ء کو چوہدری قادربخش مجسٹریٹ کی عدالت میں ایک عجیب و غریب مقدمہ پیش ہوا اس مقدمے میں مہاجر کیمپ میں مقیم میاں بیوی پر سرکاری خیمے کا کچھ کپڑا کاٹنے کا الزام تھا۔ پولیس کی حراست میں اس جوڑے نے عدالت کو بتایا کہ ہم اس کیمپ میں پچھلے پانچ ماہ سے مقیم ہیں ہمارے جسموں پر پہنے ہوئے کپڑے پرانے اور بوسیدہ ہوکر اس بری طرح پھٹ چکے تھے جس سے ہمارے جسم جگہ جگہ سے بری طرح ننگے ہو رہے تھے اور ہم دن کے وقت کیمپ سے پانی اور کھانا لینے کیلئے باہر بھی نہیں نکل سکتے تھے جب دو دن...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 19, 2011 - 10:53
بہت دن ہو گئے دماغ میں فلسفیاتی موجوں کی دھما چوکڑی مچتے سو آج سوچا کہ ان کو آج کسی طرح سر سے اتار پھینکوں۔ مگر کچھ سمجھ نی آ رہی کہ کروں کیا ۔ پہلے سوچا کہ نائی کے پاس جا کر سر پر استرا پھرا لوں کہ بالوں کے  وزن کی وجہ سے تو کہیں یہ آتش فشانی خیالات نہیں آتے رہتے لیکن فرق اس سے بھی نہیں پڑنا یہ تو کمپنی فالٹ لگتا ہے مجھے اور ویسے بھی مردے کے بال کترنے سے مردے کا تابوت کونسا ہلکا ہو جانا ہے۔ الٹابلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com8
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, July 18, 2011 - 17:59
حضرت عرباض بن ساریہؓ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا: اللہ کے ہاں میرا نام اس وقت سے خاتم النبیین لکھا ہوا تھا جب آدم علیہ السلام ابھی بے روح جسم خاکی میں تھے۔ میں تمہیں ابتداء حال کی خبر دیتا ہوں کہ میں حضرت ابراہیم علیہ السلام کی دعا رَبَّنَا وَابْعَثْ فِیْھِمْ [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سنیچر, July 16, 2011 - 09:02
۳۱ جولائی سے شروع ہونے والے’’ہفتہ شارک‘‘ کو منانے کے لئے ڈسکوری چینل نے اٹلانٹا میں جارجیا ایکوریم کے ساتھ مل کر شارکس کو براہ راست دکھانے کا پروگرام بنایا ہے۔ مندرجہ ذیل براہ راست نشریات 7 اگست تک جاری رہے گی۔ Video streaming by Ustream تریسٹھ لاکھ گیلن پانی پر مشتمل اس تالاب میں [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 15, 2011 - 12:47
کسی شہر میں بارش نہ ہونے کے باعث بہت خشک سالی و قحط تھا  ،شدید گرمی بھوک  اور پیاس سے اموات ہونے لگیں شہر کے  لوگوں نے شہر سے باہر ایک کھلے میدان میں جمع ہونے کا  فیصلہ کیا  کہ جہاں مشترکہ عبادت کی جائے تاکہ خدا آن پر رحم کرے اور آسمان سے بارش برسائے، جس سے قحط سالی دور کرے اور شدید گرمی کا خاتمہ ہو۔شہر کا ہر فرد  امیرو  غریب ،مزہبی اور سیاسی رہنما  مقررہ وقت پر متعین شدہ جگہ کی طرف روانہ ہو گیا بلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com5
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 12, 2011 - 11:03
پختون فکری جرگہ کے چیئرمین امیرحمزہ مروت زندگی کے بہاروں کی نصف صدی کب کی مکمل کرچکے ہیں لیکن جذبے ان کے اب بھی جوان ہیں۔صاحب مطالعہ شخصیت ہیں اور بھرپور سیاسی زندگی گزاری۔خان عبدالولی خان کے قریبی ساتھی رہے، ان کی جماعت کی مرکزی ورکنگ کمیٹی کے رکن رہے ۔ یہ جماعت بدل گئی تو انہوں نے بدلنے سے انکار کیا اور 1995ء میں اسے خیر باد کہہ دیا البتہ جب تک یہاں رہے خان عبدالولی خان کے بااعتماد افراد کی صف میں رہے اور وہ سندھ سے متعلق اہم معاملات ان کے ذریعے نمٹاتے رہے۔ پچھلے دنوں میرے دفتر تشریف لائے ۔ سندھ کے ماضی اور حال پر تفصیل سے گفتگو ہوئی۔تاریخ کے صفحات الٹتے ہوئے انہوں نے بعض ایسے واقعات سنائے...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 12, 2011 - 08:39
وہ ترچھے زاویئے پر تعمیر کیے گئے ایک چھوٹے سے  کمرے میں رہائش پزیر تھا یہ کمرہ مستطیل یا مربع کے بجائے ایک پیرالالوگرام کی شکل آختیار کیئے ہوئے تھا۔کمرے کا کوئی بیرونی دروازہ نہ ہونے کے باعث کمرے میں رہتے ہوئے باہر کا نظآرہ کرنے کا واحد زریعہ ایک چھ بٹا چار کی کھڑکی تھی۔ وہ روزانہ  کمرے کی کھڑکی میں آ کر مشرق کی طرف سمت کر کے باہر کا نظارہ کرتا ، لیکن کمرے کے ترچھے زاویئے پر ہونے کی بناء پر وہ بلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com4
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, July 10, 2011 - 16:26
ماضی قریب میں کراچی کئی بار بدامنی کا شکار بنتا رہا ہے، جب میڈیا حکومت کی توجہ بڑی تعداد میں ہونے والی ہلاکتوں کی جانب دلاتا ہے تو حکومت حرکت میں آتی ہے اور کچھ اقدامات کر کے عارضی طور پر صورتحال پر قابو پاتی ہے کچھ گرفتاریاں اور اسلحہ کی برآمدگی کے بعدپھر خواب خرگوش کے مزے لوٹنے لگتی ہے۔ کچھ عرصے بعد پھر وہی قتل و غارت گری دوبارہ شروع ہو جاتی ہے اور حکومت اپنا آہنی ہاتھ دھونڈنے میں اتنا وقت لگا دیتی ہے کہ درجنوں بے گناہ شہری دہشت گردی کا شکار ہو کر رزق خاک بن جاتے ہیں اور عوام یہی سوچتی رہتی ہے کہ بے گناہ شہریوں کا خون ناحق کب تک بہتا رہے گا اور کب شہر کراچی کو مستقل امن میسر آئے گا...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, July 10, 2011 - 15:46
تاریخ کے فوائد کی طرح اسکے مہلکات بھی کم نہیں۔دور حاضر میں تاریخ کی وجہ سے جتنی گمراہی پھیل رہی ہے وہ ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے۔ ہم دیکھتے ہیں کہ کالجوں اور یونیورسٹیوں میں تاریخ پڑھانے والے بیشتر اساتذہ تاریخ سے بیزار اور اسلاف سے متنفر ہیں ،اسکی تین بڑی وجوہ ہیں مزید پڑھنے [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سنیچر, July 9, 2011 - 21:55
ڈاکٹر فدا  محمد صاحب  مولانا اشرف سلیمانی   پشاوری مرحوم کے خلیفہ مجاز ہیں اور اپنے مرشد کے وفات کے بعد سے اب تک سلسلہ چشتیہ چلا  رہے ہیں۔بندہ کبھی کبھی ڈاکٹر فدا محمد صاحب کی مجلس میں حاضر ہوتا ہے ، اور وہاں روحانی مجلس میں شرکت کرتا ہے۔ مجلس  ظاہرہے روحانی ہوتی ہے لھذا [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 8, 2011 - 16:17
اے لڑکی تو روتی ہے؟ کیوں اپنے باپ کو روتی ہے . وہ باپ جو سر کا سایہ تھا جو تم سب کا سرمایہ تھا قربان ہوا زرداروں پر عصبیت کے دلالوں پر . اے لڑکی تو روتی ہے؟ کیوں اپنے باپ کو روتی ہے . جو باپ سراپا شفقت تھا جو الفت کا ایک...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 8, 2011 - 16:17
اے لڑکی تو روتی ہے؟ کیوں اپنے باپ کو روتی ہے . وہ باپ جو سر کا سایہ تھا جو تم سب کا سرمایہ تھا قربان ہوا زرداروں پر عصبیت کے دلالوں پر . اے لڑکی تو روتی ہے؟ کیوں اپنے باپ کو روتی ہے . جو باپ سراپا شفقت تھا جو الفت کا ایک...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, July 6, 2011 - 15:32
اکتیس مئی آخری دن تھا  ، میز پر پڑی سبھی کمپنیوں کی بیلنس شیٹ میں آخری رقم صفر تھی ۔ ان میں ایسی کمپنیاں  "اے" گروپ بھی تھی جس کا بزنس اربوں میں ہوا  اور "وائے" گروپ بھی جس نے بمشکل چند لاکھ کا ہی کاروبار کیا مگر قدر مشترک دونوں کا اختتامی بیلنس صفر تھا ، یہی حال ساری  کمپینوں کی بیلنس شیٹس کا تھا۔اگرچہ ہر ایک کی ٹرانزیکشن ہسٹری بہت مخلتف تھی اور کسی نے کروڑوں کی منتقلی یومیہ ہوئی تو کوئی کئی کئیبلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com3
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, July 5, 2011 - 09:06
دوسرا ٹیکنیکل فائول کرنے پر ایک کھلاڑی کو تین منٹ کے لیے باہر کر دیا گیا ۔  اب تین منٹ تک اس کے بغیر باقی چار کھلاڑیوں کو باسکٹ بال جیسے برق رفتار کھیل میں  خود کو کھیل میں  رکھنا تھا۔ جو بھی کھلاڑی باہر چلا جاتا ہے وہ محض تین منٹ کے لیے جاتا ہے اس کے بعد وہ خود یا اس کا متبادل مل جاتا ہے۔ اس لیے تین منٹ کا  کا پلان بنانا ہوتا ہے نہ کہ اگلی پوری گیم کا ۔ کیونکہ  پانچویں کھلاڑی نے واپس ضرور آنا بلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com4
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, July 3, 2011 - 23:02
آجکل ساون کا موسم ہے ساون میں زمیں کے اندر سے عجیب عجیب مخلوقات نکل آتی ہیں۔ کیڑوں مکوڑوں کے پر نکل آئے ہیں ۔  آج میں  بال ترزشوانےحجام کے پاس گیا تو اس سیلوں میں کچھ پتنگے گھس آئے۔ حجام نے پہلے تو ہاتھوں سے ان کو دور کرنے کی کو شش کی ، کچھ تو سمجھ گئے باقی دوبارہ واپس آ کر تنگ  کرنے لگے ، دوسری بار جب حجام تنگ ہوا تو اس نے جو سامنے بیٹھتے تھے زرا بھر کو ان کے پروں پر پانی کے قطرے ٹپکا دیئے ان کےبلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com3
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 1, 2011 - 13:53
بہت سے ایسے کام جو ابتک آسٹریلیا میں انجام دینے سے رہ گئے تھے ان میں ایک ہوائی سفر بھی شامل تھا۔ سو مالی سال کے روزِ اول کو یعنی آج یہ کام بھی کر ڈالا۔ مقصد پر بعد میں روشنی ڈالیں گے فی الوقت صرف حالاتِ سفر پیشِ خدمت ہیں۔ہمارے دوست سید فراز علی سے بلاگ کے قارئین بخوبی واقف ہیں ان کی جہاں اور بہت سی بیان کردہ اور ناقابلِ بیان خصوصیات ہیں وہیں ایک خوبی یہ بھی ہے کہ یہ سامان سفر باندھنے جسے انگریزی ایم۔اے۔امینhttp://www.blogger.com/profile/04425754577499948453noreply@blogger.com7http://bayaadesydney....
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, July 1, 2011 - 12:31
قال النبی صل اللہ علیہ سلم:  اِشفَعوُا  فَلتُوجَروا (مُتَفَق عَلیہ) ترجمہ : نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے فرمایا کہ سفارش کرو تاکہ تمہیں سفارش کا ثواب مل جائے۔  تشریح :  کسی کی سفارش کرنا  گویا  اس آدمی سے ہمدردی کرنا ہے۔ اس وجہ سے آپ صل اللہ علیہ [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعرات, June 30, 2011 - 13:57

استاد: سیاست دان کیا کرتے ہیں؟       

شاگرد ۱: عوام کو دھوکہ دیتے ہیں!

شاگرد ۲: ملکی خزانے کو لوٹتے ہیں!

شاگرد ۳: عوام کو بے وقوف بناتے ہیں!

شاگرد ۴: عوام کے ساتھ جھوٹے وعدے کرتے ہیں!

شاگرد ۵: ملک کے ساتھ غداری کرتے ہیں!

شاگرد ۶: ملک کے ٹکڑے کرتے ہیں!

شاگرد ۷: لوگوں کو قتل کرواتے ہیں!

شاگرد ۸: حرام خوری کرتے ہیں!

شاگرد ۹: بے غیرتی کرتے ہیں! 

شاگرد ۱۰: ……………………...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعرات, June 30, 2011 - 12:27
ہم   فنڈامنٹلسٹ ،   ہم   اتنہا پسند توحید ہے پسند ہمیں ، شرک نا پسند تم ہو صنم پسند  تو ہم ہیں خدا پسند حق کے سوا نہیں ہے کوئی دوسرا پسند    پستی  کے تم مکیں ہو  ،ہمیں آوج سما  پسند                                 [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 29, 2011 - 19:24
مصنف: عادل بھیا
زندگی کے اس سفر میں آئے دن کوئی نیا چہرہ ملتا ہے، بہت سے لوگ آپکی زندگی میں آتے ہیں اور بہت سے لوگ آپکی زندگی سے ہمیشہ کیلئے چلے جاتے ہیں مگر آپ کسی کی خاطر یا کوئی آپکی خاطر رُکتا نہیں، ہر کوئی اپنی منزل کی جانب رواں دواں ہے۔ کہیں کسی ہمسفر کا ملنا آپ کیلئے باعثِ مسرت ہے تو کہیں کسی کا جانا۔۔۔ اسکے برعکس عموماً کسی ہمسفر کے ملنے سے آپ پریشان ہوجاتے ہیں اور اکثر کسی کے جانے سے آپکو اپنی زندگی اُجڑتی ہوئی دِکھائی دینے لگتی ہے۔۔۔ لیکن یہ سفر یوںہی جاری و ساری رہتا ہے۔ انسان اپنی منزل کی جانب لگاتار چلتا جارہا ہے، راہ میں ملنے والے چہروں کی جانب کبھی مُسکرا کر دیکھ لیتا ہے تو کبھی کسی...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 29, 2011 - 09:01
کہتے ہیں کہ ایک چڑا تھا بہت پھرتیلا  اور تیز ترار۔ اس کی سیانف  ( سیانتوپی یا عقلمندی کی اعلی و ارفع فارم، لفظ سیانا سے نکلا ہے)  بہت مشہور تھی۔ ایک دن وہ اپنے دونوں پائوں آسمان کی طرف کر کے زمین پر لیٹ گیا  اور  جب آس پاس سے باقی سب نے چڑے کی یہ حرکت دیکھی تو پوچھا کہ یہ کیا کر کرہے ہو تو وہ بولا  جو میں جانتا ہوں وہ تم لوگ نہیں جان سکتے یہ آسمان کسی بھی وقت گرنے والا ہے میں نے اپنے پائوں اوپر بلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com6
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, June 28, 2011 - 09:33
جاوید چودھری صاحب ایک معروف اور مشہور کالم نگار ہے۔ ایک مشہور روزنامہ میں اکثر کالم لکھتے ہیں۔ انہوں نے فیس بک کی حمایت میں ایک کالم لکھا۔ جس میں انہوں نے فیس بک کے استعمال کی ترغیب ایک مسیحا سمجھ کر دی۔ اور اپنا پیج فیس بک میں بنا ڈالا۔ چنانچہ میں نے مناسب [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, June 26, 2011 - 12:57
اگرچہ مضمون لکھنے کا کوئی خاص ارادہ تو نہیں تھا لیکن چند دن سے کچھ خبریں ایسی پڑھیں،کہ اگر اس پر تھوڑا سا تبصرہ ہوجائے تو برا نہیں ہوگا۔ پہلی خبر: تو لیجئے جناب پہلی خبر یہ ہے کہ امریکہ نے پاکستان کی جھادی تنظیم حرکت المجاہدین پر یہ الزام عائد کیا ہے کہ یہ [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعرات, June 23, 2011 - 20:23
مصنف: عرفانیات
کسی کا حق مارنا، کسی کے پیسے مارنا وغیرہ جیسی غلط کاریاں تو آپ سنتے ہی رہتے ہیں ۔آج میں آپکی توجہ ایک اور اہم معاشرتی مسئلے کی جانب مبذول کروانا چاہتا ہوں۔ وہ ہے ہوا مارنا۔ آپ اپنی گاڑی کسی سروس سٹیشن پر لے کر جاتے ہیں کہ اس کی دحلائی ستھرائی کروا لیں تو وہ لوگ کاروائی کا آغاز ہوا مارنے سے کرتے ہیں۔

گاڑی کے چاروں دروازے کھول دیئے جاتے ہیں اور ایک صاحب ایک پائپ پکڑ کر اس میں سے نکلتی تیز رفتار ہوا گاڑی کے فرش اور تمام کونوں کھدروں میں مارنا شروع کر دیتے ہیں۔اب اپنے گمان کے مطابق تو وہ گاڑی کی صفائی کر رہے ہوتے ہیں لیکن حقیقت میں جو ہو رہا ہوتا ہے وہ یہ ہے کہ گاڑی کے فلور...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 22, 2011 - 17:25
اس پوسٹ کی چٹھی قسط یہاں ملاحظہ فرمائیں

تاریک کمرےکےسامنےکچی اینٹوں کے آنگن میں پائیوں سے محروم چارپائی پر ننھا گڈوصاف ستھرا اور بے داغ کفن اوڑھےابدی نیند سورہا ہے۔ گڈو کے چہرے پر ایک خاص قسم کا اطمینان اور سکون نظر آرہا ہے۔شائد گڈوکو نئی سفید چادر اوڑھ کر سونے کی خوشی ہے۔ ایک ایسی صاف اور بے داغ چادر گڈو نے اپنی زندگی میں کبھی نہیں اوڑھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ یا شائد گڈو اس لئے پرسکون ہے کہ اب جاگنے کے بعد اُسے سوکھی روٹی اور کالی چائے سے ناشتہ نہیں کرنا پڑے گا۔۔۔۔  اور اُسےپھر کبھی بھی بوری لے...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 22, 2011 - 11:25
ہم میں سے  سبھی لوگ کسی نہ کسی سحر کے حصار میں رہنا پسند کرتے ہیں دانستہ یا غیر دانستہ۔ وہ سحر کسی کے خیال کا  ہو یا کسی کے جمال کا ۔ یا کبھی تنہائی میں اپنا ہی  خود ساختہ سحر  جس کا حصار اپنے گرد بن لیتے ہیں اور پھر وہی ہماری دنیا بن جاتی ہے ہمارا تخیل اس حصار سے باہر نہیں جا پاتا ہم اس کے سوا کچھ دیکھ پاتے ہیں کچھ نہ ہی سمجھ پاتے کچھ۔ اسی حصآر میں ہم اپنے سپنے سجاتے ہیں ہر چیز سے ہمارا تعلق اسیبلاامتیازhttp://www.blogger.com/profile/01265011304348792367noreply@blogger.com2
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 22, 2011 - 10:37
شیطان نے فلاسفہ کو دھوکا دیے کر ان پر اسطرح قابو پایا کہ یہ لوگ فقط اپنی رایوں اور عقلوں کے ہو رہے ،  اور اپنے خیالات کے مطابق گفتگو کی۔ انبیاء علیھم السلام کی طرف متوجہ نہ ہوئے ۔ ان میں سے بعض وہ ہیں جو دہریہ فرقہ کے ہم مشرب ہوئے اور کہتے [...]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, June 20, 2011 - 21:06
مصنف: فیصلیات
صاحبو بلاگستان میں بات چلی ہے اردو کی ترقی کی ۔ میری اس تحریر کی وجہ بھی ابو شامل صاحب ہی ہیں (یعنی دعاؤں یا بددعاؤں کا رخ ادھر ہی رکھیے) ۔ نہیں ایسا نہیں کہ یہ پہلی مرتبہ ہے اور نہ ہی آخری مرتبہ ہو گی انشااللہ۔ اب بڑھاپے کا ایک مسئلہ یہ ہوتا […]
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 15, 2011 - 15:56
ویسے تو کئی تحرریں ایسی ہوتی ہیں جو پڑھتے ہی کچھ دیر کے لیئے ہی سہی اپنا اثر کرتی ہیں ۔۔۔۔۔ اور کچھ ایسی ہوتی ہیں جو پہلی مرتبہ پڑھ کر سمجھ میں ہی نہیں آتی ہیں۔

مگر کچھ تحاریر ایسی ہوتی ہیں جنکو انسان غیر ارادی طو پر کئی کئی مرتبہ پڑھتا ہے اس بات سے قطع نظر کہ آیا وہ تحریر اسکو سمجھ آرہی ہے کہ نہیں ۔

لیکن جب سمجھ آتی ہے تو لگتا ہے کہ جیسے شاعر نے میری روزآنہ کی زندگی کو سامنے رکھ کر یہ اشعار لکھے ہیں

کچھ اسطرح کل میرے ساتھ بھی ہوا ۔۔ میں آفس سے نکلا تو ایک صفحہ کسی کاپی کا میری گاڑی کی بونٹ پر پڑا ہوا تھا مین نے اسکو اٹھا کر دیکھا تو اس پر اردو کی نظم تحریر...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: اتوار, June 12, 2011 - 12:11
ہمارا ایک دوست اپنی والدہ کے انتقال کے بعد یتیم ہوگیا اور اسکی والدہ مرتے، مرتے ایک عدد ہر جگہ سینگ پھنسانے والی چیز اسکے حوالے کر گئیں ایسے میں ایک محلے کی آنٹی نے اس سینگ پھنسانے والی چیز کو اپنی زیر تربیت(جامہ نہیں )رکھ رکھا لیا۔ ساتھ ساتھ اسے وہ پڑھا بھی رہی ہیں کہ اسکی والدہ نے اس شعبہ پہ کوئی کام نہیں کیا ہے۔ اس سینگ پھنسانے والی چیز نے استانی محترمہ سے دریافت کیا کہ آپ کے پاس ایسی یہ کیا تکنیک ہے جس سے آپ سامنے والے کو دیوار سے لگا دیتی ہیں۔ بلخصوص احکام اسلام میں تو کوئی آپ کے نقطہ نظر کو کاٹ ہی نہیں سکتا۔ سبکو چپی لگ جاتی ہے(اگر چہ اسکی یہ چپی آپکو پاگل اور نفسیاتی مریض سمجھنے کی وجہ...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, June 10, 2011 - 18:00

وکی لیکس کا پاکستان کے بارے میں ایک اور تازہ ترین انکشاف ملاحظہ فرمائیے:

چند سال قبل پاکستان کی وزاتِ بہبودِ آبادی نے ملک کی تیزی سے بڑھتی ہوئی آبادی کو  روکنے میں ناکامی کا اعتراف کیا۔ وفاقی وزیر نے کابینہ کو بتایا کہ محکمہ اپنے مقاصد میں بری طرح ناکام ہو چکا ہے۔ ملک کی بڑھتی ہوئی آبادی کو روکنا اب اس کے بس میں نہیں رہا۔ وزیر نے سفارش کی کہ ان  کے محکمے کا کام ملک کی سیکیورٹی فورسز کو سونپ دیا جائے کیونکہ وہ لوگ یہ کام زیادہ بہتر طریقے سے سرانجام دے سکتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ خاندانی منصوبہ بندی  کی گولیوں کے پیسے ہمیں دے کر ضائع کرنے کی  بجائے فورسز کو...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: بدھ, June 8, 2011 - 00:09
ہم سب ایک شخص کے نہایت عجیب و غریب استدلال کچھ دنوں سے دیکھ رہے ہیں۔ جہاں پہلے وہ عقل استعمال کرتا ہے۔ پھر کہتا ہے کہ عقل استعمال ہی ایک نیوٹرل بندے اور غیر مسلم کے پوائنٹ آف ویو سے کی تھی۔ پھر وہ خدا کا انٹرویو کر آتا ہے اپنی لاشعوری کوشش کہ اس کو لا دین نہ سمجھا جائے۔ عجب تضاد کا شکار ہے۔ پھر برسوں گمنامی میں سونے والا ایک اور شخص جو کہ نہایت دعووں کے ساتھ گیا تھا پھر نمودار ہوتا ہے اور اپنی لا یعنی باتوں کا آغاز کر لیتا ہے حتی کہ غیروں کی شادی میں عبداللہ دیوانہ کی مانند دوسرے بلاگز پر پرائے پھڑے میں ٹانگ اڑا لیتا ہے اور واپس جا کر مالک کو اپنی کارگزاری سنا رہا ہوتا ہے۔
یہ شخص جا بجا...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, June 7, 2011 - 05:20

جان لینن انگریزوں کے ایک مشہور سنگر گزرے ھیں جنہوں نے ساٹھ کی دھائی میں بیٹلز کے نام سے بینڈ بنایا تھا۔

کفار کے گانے سننے والے اس بینڈ سے ناواقف نہیں کہ فرنگی میوزک کی تاریخ اس بینڈ کے بغیر مکمل نہیں۔ اس  بینڈ کے گانوں نے کمائی کے تمام ریکارڈ توڑ دے تھے۔ ابھی بھی فرنگی دنیا میں ان کے گانے بڑے شوق سے گائے جاتےھیں۔ اور گانوں کی آمدن اسی طرح آ رھی ھے جیسے ستر کے عشرے میں آ رہی تھی۔ اسی لیے مائکل جیکسن نے 1985 میں انویسٹمنٹ کے طور پر بیٹلز کے تمام گانوں کے حقوق 50 ملین ڈالر دے کر خرید لیے۔(بعد میں 1995 میں  مائیکل جیکسن نے آدھے حقوق 90 ملین ڈالر کے...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, June 6, 2011 - 19:30
ایک مینڈکی نے خفیہ طور پر اپنا نام نا ظاہر کرنے کی شرط پر ہمارے اوے چینل کے نمائندے کو اپنا اعترافی اور اقبالی بیان ارسال کیا ہے جس کو من و عن آپک قارئین کی خدمت میں پیش کیا جا رہا کسی بھی قسم کی مماثلت کو غیر اختیاری مماثلت سمجھا جائے

بقول اور فعل مینڈکی کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آپ میں سے اکثر لوگ مجھے اچھی طرح جانتے اور پہچا نتے ہیں اور جو نہیں جانتے میں ان کو بتا دینا چاہتی ہوں کہ میں ایک مینڈکی ہوں۔

آئیے میں آپ کو مزید اپنے بارے میں بتاتی ہوں۔

میرا مسکن پانی کے قریبی علاقوں میں ہوتا ہے۔ میدانی اور پہاڑی علاقوں اور وہاں کی مخلوقات سے مجھے سخت نفرت ہے۔...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, June 6, 2011 - 18:07
جاوید اقبال کے ایک پرانے کالم سے ۔۔۔۔۔

مجھے مکہ مکرمہ کے ایک دوست نے فون کر کے قصہ سنایا۔ کہانی یوں ہے کہ رمضان المبارک (2008ء) کے آغاز پر مکہ مکرمہ میں کام کرنے والی بجلی کی ایک کمپنی کو حکم ملا کہ پاکستان کے ایک عالیجناب وزیر 21 تا 23 رمضان عمرہ کے خواہشمند ہیں اس لئے ان کیلئے کسی ہوٹل میں کمرے مخصوص کرائے جائیں۔ ان دنوں خاصا اژدھام تھا اسلئے ایک فور اسٹار ہوٹل میں ہی کمرے ملے۔ پاکستان میں وزارتی حکام یہ سنتے ہی سیخ پا ہو گئے۔ چنانچہ دوبارہ بھاگ دوڑ کر کے ہوٹل تبدیل کیا گیا اور فائیو اسٹار صفا ٹاور میں چار ہزار ریال فی کمرہ روزانہ کے نرخ پر کمرے حاصل کئے گئے۔ اب بہتر تھا...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: سوموار, June 6, 2011 - 00:00
مصنف: عادل بھیا
ہم تو سوچتے ہیں کہ باباجی کے کوئی درجن ایک شہزادے ہوتے تو سبھی کمپنی کے کسی نہ کسی عہدے پر براجمان ہوتے۔ جی ہاں۔۔۔۔ کمپنی کے اکاونٹس مینیجر اپنا تجربہ بیان کرتے ہیں کہ اِک ماہ کی آخیر تاریخوں میں ہم نے حسبِ معمول کمپنی کے عملہ کی تنخواہوں کو مرتب کیا تو باباجی ہم سے مُخاطب ہوئے کہ کیا اس فہرست میں ہمارے چھوٹے شہزادے کا نام بھی ہے؟ نفی میں جواب دینا تو کُجا، ہم تو آنکھیں پھاڑے باباجی کی جانب تکنے لگے۔ جواب ملا کہ کیا آپکو نہیں معلوم ہمارا سترہ سالہ شہزادہ ہماری کمپنی کا نیا ڈرافٹس مین ہے۔ وہ اس ماہ ہماری کمپنی کے فلاں ڈیلر کے پاس بیٹھ کر اپنی خدمات سرانجام دیتا رہا ہے۔ لہٰذا اُسکی...
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: جمعہ, June 3, 2011 - 20:36

بہت دنوں سے میری طبیعت کافی بوجھل سی تھی۔ اداسی دور کرنے کیلیے آج صبح میں نے ریڈیو پر اپنے شہر کا واحد ایف ایم سٹیشن آن کیا تاکہ روح کو کچھ غذا مل سکے اور طبیعت بہل سکے۔  ریڈیو سٹیشن پر بھینس  مارکہ صابن اور جوئیں مار شیمپو کے اشتہار چل رہے تھے۔ اشتہارات کے اختتام پر حکیم سلیمان تشریف لائے اور بیمار قوم کو مفید طبی مشوروں سے نوازنے لگے۔ ان کے چند مشوروں کے بعد مجھے یقین سا ہو گیا کہ میرے مسئلے کا حل بھی یقیناً ان کے پاس ہو گا۔ میں نے فون اٹھایا اور ان سے رابطہ کر کے اپنا مسئلہ کچھ یوں بیان کیا۔

“حکیم صاحب   میرا مسئلہ کچھ نفسیاتی نوعیت  کا ہے۔ میں موجودہ...

زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, May 31, 2011 - 17:45
مصنف: عرفانیات
زمرہ: اردو بلاگ
تاریخ اشاعت: منگل, May 31, 2011 - 16:08
 اردو بلاگستان کے ایک محترم دوست جواد خان نے نبی کریم صل اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے بارے میں کفار واغیار کے تعریفی خطبوں کو جمع کیا ہے۔ اور ظاہر ہے کہ اسکے لئے اسکو کافی محنت کرنی پڑی ہوگی۔ہم اللہ تعالیٰ سے دعاء کرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ اس کوشش کے سبب جواد صاحب [...]
زمرہ: اردو بلاگ

Pages

Subscribe to بلاگستان فیڈز